In the Name of Allah, The Most Gracious, Ever Merciful.

Love for All, Hatred for None.

Al Islam Home Page > Urdu Home Page > Al Islam Urdu Library
اردو » الاسلام اردو لائبریری » خطبات » حضرت خلیفۃ المسیح الخامس ایدہ اللہ تعالیٰ » 2008ء »

خدا تعالیٰ ہی مشکلات دور کرنے اور اپنے بندوں کی صحیح راہنمائی کرنے والا ہے

ایک مومن کاکام ہے کہ عالم الغیب سے مدد مانگے ، کسی خواہش میں اپنی پسند کو دخل نہ دے۔ قادیان سمیت تمام دنیا میں بسنے والے احمدیوں کیلئے دعا کریں اللہ تعالیٰ ہر شر سے محفوظ رکھے۔ سیدنا حضرت خلیفۃ المسیح الخامس ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز کے خطبہ جمعہ فرمودہ 5 دسمبر 2008ءبمقام بھارت کاخلاصہ

سیدنا حضرت خلیفۃ المسیح الخامس ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے مورخہ 5 دسمبر 2008ءکوبھارت میں خطبہ جمعہ ارشاد فرمایا۔ حضور انور کا یہ خطبہ جمعہ مختلف زبانوں میں تراجم کے ساتھ ایم ٹی اے انٹرنیشنل پر براہ راست ٹیلی کاسٹ کیا گیا۔

حضور انور نے فرمایا کہ ہر انسان کی اس دنیا میں خواہشات ہوتی ہیں لیکن ایک مومن کو ہر کام ، ہر خواہش ، ہر مشکل اور آسائش میں اللہ تعالیٰ کی طرف رجوع کرنے کی طرف توجہ پیدا ہوتی ہے اور ہونی چاہئے کیونکہ اگر خدا تعالیٰ کی مرضی نہیں ہو گی تو ہر قسم کی آسائش کے باوجود ایسے حالات پیدا ہو سکتے ہیں کہ اس کی خواہش پوری نہ ہو سکے۔ پس اس کا فضل مانگتے ہوئے کسی بھی خواہش کی تکمیل کی کوشش کرنی چاہئے۔

حضور انور نے فرمایا کہ حضرت مسیح موعود نے اللہ تعالیٰ کی ذات کے متعلق عرفان حاصل کرنے کیلئے جماعت کو توجہ دلائی کہ خدا تعالیٰ کو پہچانو۔ آپ فرماتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ انہی کو پیار کرتا ہے اور انہی کی اولاد بابرکت ہوتی ہے جو اس کے احکامات کی تعمیل کرتے ہیں۔ہر شخص پر ضرور ایسی مشکلات پڑتی ہیں جن میں انسان بالکل عاجز رہ جاتا ہے اور نہیں جانتا کہ اب کیا کرنا چاہئے، اس وقت دعا کے ذریعے سے مشکلات دور ہوتی ہیں ہر حالت میں خدا تعالیٰ کو یاد رکھنے کی ضرورت ہے کیونکہ وہی مشکلات دور کرنے والا اور اپنے بندوں کی صحیح راہنمائی کرنے والا ہے۔

حضور انور نے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ نے اس اصولی بات کی طرف توجہ دلائی کہ تم بعض کاموں کو اپنے لئے بہتر اور خیر کا باعث سمجھتے ہو لیکن اللہ تعالیٰ کے نزدیک اس میں تمہارے لئے خیر نہیں ہوتی یا اس میں عارضی روک ہوتی ہے کیونکہ اللہ تعالیٰ بہتر جانتا ہے اور تم نہیں جانتے پس ایک مومن کا کام ہے کہ کسی خواہش کی تکمیل میں اپنی پسند کو دخل نہ دے بلکہ عالم الغیب خدا جس نے اھدنا الصراط کی دعا سکھائی ہے اس سے مدد مانگے۔

حضور انور نے فرمایا کہ گزشتہ دنوں ممبئی انڈیا میں دہشت گردی کی جو واردات ہوئی ہے اس نے پورے ملک میں ایک بے چینی پیدا کر دی ہے۔ بہرحال یہاں موجودہ حالات کی وجہ سے میں نے باہر سے جلسہ سالانہ قادیان پر آنے والے احمدیوں کو روک دیا ہے۔ ہمیں یہی تعلیم دی گئی ہے کہ ہمیشہ ابتلاﺅں اور مشکلات سے بچنے کیلئے دعا کرو اور ان جگہوں سے بھی بچو۔ اس کے لئے مسنون دعائیں بھی ہیں ، اسی طرح اللہ تعالیٰ نے قرآن کریم میں دعائیں سکھائی ہیں ،حضرت مسیح موعود کی بھی دعائیں ہیں ۔ حضور انور نے آنحضرت کی ایک دعا کا ذکر کے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ ہماری دعاﺅں کو قبول فرمائے اور ہر احمدی کوہر شر سے محفوظ رکھے ان کی توجہ مزید اللہ تعالیٰ سے پختہ تعلق پیدا کرنے کا ذریعہ بن جائے ، ایمان اور ایقان میں ہر احمدی کو بڑھائے۔ ان کی توجہ دعاﺅں کی طرف پہلے سے بڑھ کر ہو۔ پس ہمیشہ ہمیں ہر تکلیف کے بعد پہلے سے بڑھ کر خدا تعالیٰ کے سامنے جھکنے والا بننا چاہئے۔ اگر اللہ تعالیٰ نے چاہا توخدا تعالیٰ بہتر حالات میں ہمیں جلسے میں شرکت کی توفیق دے گا۔

حضور انور نے فرمایا کہ قادیان کے احمدیوں کو بھی دنیا میں بسنے والے احمدی اپنی دعاﺅں میں یاد رکھیں اور یہاں ہندوستان میں رہنے والے احمدی بھی اپنے لئے اور یہاں کے بسنے والوں کیلئے بھی دعائیں کریں کہ اللہ تعالیٰ ہر ایک کو ہر شر سے محفوظ رکھے، دنیا اپنے پیدا کرنے والے خدا کو پہچانے اور اللہ تعالیٰ دنیا میں ہر شخص کو حقیقی انسانیت پر قائم کر دے ۔

حضور انور نے خطبہ ثانیہ کے دوران مکرمہ امۃ الرحمن صاحبہ اہلیہ مکرم چوہدری محمد احمد صاحب درویش قادیان کی وفات کا تذکرہ فرمایا اور نماز جمعہ کے بعد ان کی نماز جنازہ غائب پڑھانے کا بھی اعلان فرمایا۔