In the Name of Allah, The Most Gracious, Ever Merciful.

Love for All, Hatred for None.

Al Islam Home Page > Urdu Home Page > Al Islam Urdu Library
اردو » الاسلام اردو لائبریری » اعتراضات، وساوس کا جواب » حضرت مسیح موعود ؑ پر اعتراضات » ذات پر اعتراضات »

حج پر نہ جانے پر اعتراض

Objection of not going to Hajj

حج کے لئے نہ جانے کی وجہ ایک شخص نے عرض کی کہ مخالف مولوی اعتراض کرتے ہیں کہ مرزا صاحب حج کو کیوں نہیں جاتے؟

فرمایا:۔

یہ لوگ شرارت کے ساتھ ایسا اعتراض کرتے ہیں۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ و سلم دس سال مدینہ میں رہے۔ صرف دو دن کا راستہ مدینہ اور مکہ میں تھا مگر آپ نے دس سال میں کوئی حج نہ کیا۔ حالانکہ آپ سواری وغیرہ کا انتظام کر سکتے تھے۔ لیکن حج کے واسطے صرف یہی شرط نہیں کہ انسان کے پاس کافی مال ہو بلکہ یہ بھی ضروری ہے کہ کسی قسم کے فتنہ کا خوف نہ ہو۔ وہاں تک پہنچنے اور امن کے ساتھ حج ادا کرنے کے وسائل موجود ہوں۔ جب وحشی طبع علماء اس جگہ ہم پر قتل کا فتویٰ لگا رہے ہیں اور گورنمنٹ کا بھی خوف نہیں کرتے تو وہاں یہ لوگ کیا نہ کریں گے لیکن ان لوگوں کو اس امر سے کیا غرض ہے کہ ہم حج نہیں کرتے۔ کیا اگر ہم حج کریں گے تو وہ ہم کو مسلمان سمجھ لیں گے؟ اور ہماری جماعت میں داخل ہو جائیں گے؟ اچھا یہ تمام مسلمان علماء اوّل ایک اقرار نامہ لکھ دیں کہ اگر ہم حج کر آویں تو وہ سب کے سب ہمارے ہاتھ پر توبہ کر کے ہماری جماعت میں داخل ہو جائیں گے اور ہمارے مرید ہو جائیں گے۔ اگر وہ ایسا لکھ دیں اور اقرار حلفی کریں تو ہم حج کر آتے ہیں۔ اللہ تعالیٰ ہمارے واسطے اسباب آسانی کے پیدا کر دے گا تاکہ آئندہ مولویوں کا فتنہ رفع ہو۔ ناحق شرارت کے ساتھ اعتراض کرنا اچھا نہیں ہے۔ یہ اعتراض ان کا ہم پر نہیں پڑتا بلکہ آنحضرت صلی اللہ علیہ و سلم پر بھی پڑتا ہے کیونکہ آنحضرت صلی اللہ علیہ و سلم نے بھی صرف آخری سال میں حج کیا تھا۔ (ملفوظات جلد پنجم صفحہ248)

Someone asked that opponent maulvis object as to why Mirza sahib does not go to Hajj?

The Promised Messiah said:

“These people raise this objection out of mischief. The Holy Prophet (saw) lived ten years in Medina. It was only two days travel between Medina and Mecca, but Holy Prophet (saw) did not perform Hajj for ten years, even though he could have arranged for conveyance. It is not the only condition for Hajj that one has sufficient wealth but it is also important that there is no danger of mischief and there should be means available to reach there with peace and to perform Hajj. When beasts like maulvis issue fatwa of death here and do not fear the government, then what else could they not do there? But these people have no interest that we do not perform Hajj. If we perform Hajj then will they consider us Muslims? And will they join our Jama’at? Well, firstly all these Muslim scholars should write a declaration that if we perform Hajj then all of them will repent on our hand and will enter our Jama’at and will become our followers. If they write as such and take an oath then we will perform Hajj. Allah (swt) will arrange means of convenience for us so that in future the mischief of maulvis ends. It is no good to object mischievously. This objection of theirs does not come on us but on Holy Prophet (saw) as well because Holy Prophet (saw) performed Hajj in his last year only.” (Malfoozaat, Vol. 5, p. 248)