بِسۡمِ اللّٰہِ الرَّحۡمٰنِ الرَّحِیۡمِِ

Al Islam

The Official Website of the Ahmadiyya Muslim Community
Muslims who believe in the Messiah,
Hazrat Mirza Ghulam Ahmad Qadiani(as)Muslims who believe in the Messiah, Hazrat Mirza Ghulam Ahmad Qadiani (as), Love for All, Hatred for None.

CHAPTER 29

Al-`Ankabut

(Revealed before Hijrah)

Date of Revelation

This Surah is generally considered to have been revealed at Mecca, though according to some scholars, Ibn ‘Abbas being one of them, the first ten verses were revealed at Medina. A large majority of them, however, are inclined towards placing its revelation in the middle or the late middle Meccan period.

The Surah seems to derive its title from v. 40 in which the falsity and futility of polytheistic beliefs of idolaters is brought home to them by a beautiful parable. It is stated that these beliefs are like a spider’s web and being as frail and brittle as the web they cannot stand intelligent criticism.

Connection with the Preceding Surah

Towards the end of the preceding Surah Muslims were told that they would meet strong opposition and severe persecution in the discharge of their great and difficult task of preaching the Unity of God, but they should not get discouraged and dismayed by the hardships and privations they will have to suffer. When everything except God is subject to decay and death, why should they be afraid of disbelievers and why should they not establish their connection with Him by turning to Whom man can get eternal life and peace which knows no end or diminution?

Subject Matter

The present Surah continues and develops this theme and proceeds to say that the great favours and blessings which are to be bestowed upon believers in this and the next life will not be conferred upon them unless their belief is put to a severe test. They are warned that they will have to pass through the crucible of fire and blood to deserve them. On the other hand, those who oppose truth and do evil deeds will never be able to frustrate God’s plan and escape His punishment, and if they entertain any such foolish hope, they are doomed to severe disillusionment. It is only by true and sincere repentance and by turning to God with a humble and contrite heart and by bringing about real and abiding reformation in one’s conduct and behaviour that a man can earn God’s forgiveness and become entitled to His boons and blessings.

Reverting to the subject of the persecution of believers the Surah proceeds to say that no amount of hardships and privations should be allowed to stand in the way of accepting the truth; even children are exhorted to place their loyalty to God above the loyalty to their parents when the two loyalties clash and conflict. But it is to be regretted that fear of men and consideration of worldly connections and relationships are shown greater regard than the fear of God’s displeasure. Then brief references are made to the life-stories of the Prophets Noah, Abraham, Lot and some other Divine Messengers, to show that persecution can never arrest or retard the progress of the true Faith and that compulsion in matters of religion never pays and a people cannot be compelled permanently to continue to subscribe to views forcibly imposed upon them. The Surah further says that polytheistic beliefs being as frail as a spider’s web cannot stand intelligent and searching criticism, therefore the votaries of false gods have never been known to succeed in their evil designs to frustrate God’s plan and purpose.

Next, disbelievers are told that they have no reason or justification to continue to hold idolatrous beliefs when a Book like the Quran has been revealed which fully meets all the moral needs and requirements of man and is eminently fitted to raise him to the highest pinnacles of spiritual glory. The Surah further disposes of an oft-quoted objection of disbelievers that the Quran has been composed by the Holy Prophet. They say that it is unbelievable that a man who could neither read nor write and therefore legitimately was not expected to possess knowledge of the old revealed Scriptures, should have been able to produce a Book which not only contains what is of permanent value in earlier Books but comprises all those universal truths and teachings that are calculated to satisfy the moral and spiritual needs and requirements of humanity for all time to come. The Quran is then presented as the greatest divine miracle in answer to the disbelievers’ demand for Signs and miracles, and after arraigning and reprimanding them for demanding punishment instead of accepting the Holy Prophet, it tells them that, while it is God alone Who decides when to send punishment, when punishment came, it "would overwhelm them from above them and from under their feet."

The Surah closes with the subject with which it had begun. The believers are consoled and comforted that if they remained steadfast under the persecution to which they are subjected a great and bright future lies in store for them. They will have wealth, comforts and honour far in excess of what they had to give up for the sake of God. The Surah ends on the note that the believers will have to take up the sword in defence of Islam and to conduct vigorous jihad against the forces of evil but the real Jihad, it says, does not consist in killing and being killed but in striving hard to win the pleasure of God and in preaching the Message of the Quran by peaceful means.

29. العنکبوت

یہ سورت مکی ہے اور بسم اللہ سمیت اس کی ستر آیات ہیں۔

 اس سورت کا آغاز ایک دفعہ پھر الٓمٓ سے کیا گیا ہے جس میں یہ اشارہ بھی مضمر ہوسکتا ہے کہ ایک دفعہ پھر اللہ تعالیٰ سورۃ البقرہ کے مضامین کو نئے انداز میں دہرائے گا۔ چنانچہ جیسا کہ سورۃ البقرۃ میں یہود کا ذکر تھا کہ اُن کا ایمان لانا اس وقت تک اللہ تعالیٰ کو قبول نہ ہوا جب تک وہ آزمائشوں پر پورا نہ اُترے۔ اب اِس سورت میں بھی اسی مضمون کا اعادہ ہے۔ اِس دور یعنی آنحضرت صلی اللہ علیہ و سلم کے دور میں بھی پہلے لوگوں کی طرح محض ایمان کا دعویٰ کرنا کافی نہیں ہوگا بلکہ لازماً تمام آزمائشوں سے گزرنا ہوگا جن سے پہلی قوموں کو گزارا گیا۔ 

اس کے بعد اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ بعض لوگوں کو اپنے ماں باپ کی طرف سے بھی کڑی آزمائش کا سامنا ہوتا ہے جو مشرک ہونے کی بنا پر اپنے بچوں کو شرک کی طرف بلاتے ہیں۔ مگر انسان کو یاد رکھنا چاہئے کہ ماں باپ جن کے حق میں اللہ تعالیٰ نے احسان کی تعلیم دی ہے ان سے بہت بڑھ کر اللہ کا اپنے بندوں پر احسان ہے اس لئے کسی قیمت پر بھی وہ ماں باپ کی خاطر شرک کو قبول نہ کریں۔ 

جس طرح سورۃ البقرۃ کے آغاز میں ہی منافقین کا ذکر ملتا ہے اور ان کی اندرونی بیماریوں سے پردہ اٹھایا گیا ہے اسی طرح اس سورت میں بھی اب منافقین کا ذکر چلتا ہے اور ان کی طرح طرح کی روحانی بیماریوں کا تجزیہ فرمایا جا رہا ہے۔ 

ایمان کا دعویٰ کرنے والے اس آزمائش میں سے بھی گزرتے ہیں کہ ان کے بڑے لوگ ان کو کہتے ہیں کہ ہمارے پیچھے لگ جاؤ۔ اگر ہمارا مسلک غلط بھی ہوا تو ہم تمہارے بوجھ اٹھالیں گے۔ حالانکہ یہ دعویٰ کرنے والے تو نہ صرف اپنا بوجھ اٹھائیں گے بلکہ اپنے متبعین کو گمراہ کرنے کا بوجھ بھی اٹھائیں گے اور اس امر کا فیصلہ قیامت کے دن ہی ہوگا کہ وہ اللہ تعالیٰ پر کیسے کیسے افترا باندھا کرتے تھے۔ 

اس کے بعد حضرت نوحؑ، حضرت ابراہیمؑ، حضرت لوطؑ اور بہت سے ایسے گزشتہ انبیاء کی قوموں کا ذکر ہے جو اپنے وقت کے رسولوں کی مخالفت کی وجہ سے ہلاک کی گئیں اور ان کے نشانات اس زمین میں آج تک باقی ہیں۔ آثارِ قدیمہ کا علم رکھنے والے بہت سی قوموں کا کھوج لگا بھی چکے ہیں اور بہت سی قوموں کا کھوج لگانا ابھی باقی ہے۔ یہاں تک کہ کشتیٔ نوح کے متعلق بھی دعویٰ کیا جاتا ہے کہ آثارِ قدیمہ کے علماء اس کی کھوج سے غافل نہیں اور ضرور ایک دن کھوج نکال لیں گے۔ 

اس کے بعد اس سورت کی مرکزی آیت (نمبر۴۲) میں، جس کا سورت کے عنوان العنکبوت سے تعلق ہے، یہ ذکر فرمایا جا رہا ہے کہ جو لوگ بھی اللہ کے سوا معبود ٹھہراتے ہیں ان کی مثال تو ایک مکڑی کی سی ہے جو ایک بہت پیچ دار جالا بُنتی ہے۔ اسی طرح ان لوگوں کے استدلال بھی نہایت پیچ دار مگر فی الحقیقت نہایت احمقانہ ہیں۔ اور ان میں پھنسنے والوں کی مثال بھی ان احمق مکھیوں کی طرح ہے جو مکڑی کے جالے میں پھنس کر اس کا شکار ہو جاتی ہیں اور انہیں علم نہیں کہ مکڑی کے جالے سے کمزورتر اَور کوئی پھندا نہیں۔ 

مکڑی کے جالے میں یہ تضاد پایا جاتا ہے کہ اگرچہ اس کے لعاب سے پیدا ہونے والے دھاگے میں اتنی طاقت ہوتی ہے کہ اس موٹائی اور وزن کے لوہے کے دھاگے میں بھی ویسی طاقت نہیں ہوتی مگر اس کے باوجود وہ ایک کمزور ترین پھندا ثابت ہوتا ہے۔ پس دشمنوں کے لئے ایک چیلنج ہے کہ وہ مضبوط پھندے بھی بناکر دیکھ لیں ان کا حشر مکڑی کے بنائے ہوئے پھندے کے سوا کچھ نہیں ہوگا جو بظاہر مضبوط ہے مگر حقیقتاً انتہائی کمزور ثابت ہوتا ہے۔ 

اس سورت کی آخری آیت میں اللہ تعالیٰ ان لوگوں کو جو اُسے اخلاص سے تلاش کرتے ہیں یہ خوشخبری دیتا ہے کہ ان کا کوئی بھی مسلک ہو، اگر اللہ چاہے تو انہیں بالآخر صراطِ مستقیم تک پہنچادے گا۔ اور دنیا کے ہر مذہب میں وہ سچائیاں موجود ہیں کہ ان پر غور کرنے کے نتیجہ میں بالآخر اسلام کی سچائی اور صراطِ مستقیم کی طرف ان کی ہدایت ممکن ہے، اگر اللہ چاہے۔ 


[29:1]   
English
In the name of Allah, the Gracious, the Merciful.
اُردو
اللہ کے نام کے ساتھ جو بے انتہا رحم کرنے والا، بِن مانگے دینے والا (اور) بار بار رحم کرنے والا ہے۔

[29:2]   
English
Alif Lam Mim.
اُردو
اَنَا اللّٰہُ اَعلَمُ: میں اللہ سب سے زیادہ جاننے والاہوں۔

[29:3]   
English
Do men think that they will be left alone because they say, ‘We believe,’ and that they will not be tested?
اُردو
کیا لوگ یہ گمان کر بیٹھے ہیں کہ یہ کہنے پر کہ ہم ایمان لے آئے وہ چھوڑ دیئے جائیں گے اور آزمائے نہیں جائیں گے؟

[29:4]   
English
And We did test those who were before them. So Allah will surely distinguish those who are truthful and He will surely distinguish the liars from the truthful.
اُردو
اور ہم یقیناً اُن لوگوں کو جو اُن سے پہلے تھے آزمائش میں ڈال چکے ہیں۔ پس وہ لوگ جو سچے ہیں اللہ انہیں ضرور شناخت کر لے گا اور جھوٹوں کو بھی ضرور پہچان جائے گا۔

[29:5]   
English
Or do those who commit evil deeds think that they will escape Us? Evil is what they judge.
اُردو
کیا وہ لوگ جو برے اعمال بجا لاتے ہیں گمان کر بیٹھے ہیں کہ وہ (سزا سے بھاگ کر) ہم پر سبقت لے جائیں گے؟ بہت بُرا ہے جو وہ فیصلہ کرتے ہیں۔

[29:6]   
English
Whoso hopes to meet Allah, let him be prepared for it, for Allah’s appointed time is certainly coming. And He is the All-Hearing, the All-knowing.
اُردو
جو بھی اللہ کی لِقاء چاہتا ہے تو (اُس کے لئے) اللہ کا مقرر کردہ وقت ضرور آنے والا ہے اور وہ بہت سننے والا (اور) دائمی علم رکھنے والا ہے۔

[29:7]   
English
And whoso strives, strives only for his own soul; verily Allah is Independent of all creatures.
اُردو
اور جو جہاد کرے تو وہ اپنی ہی خاطر جہاد کرتا ہے۔ یقیناً اللہ تمام جہانوں سے مستغنی ہے۔

[29:8]   
English
And as to those who believe and do good works, We shall surely remove from them their evils, and We shall surely give them the best reward of their works.
اُردو
اور وہ لوگ جو ایمان لائے اور نیک اعمال بجا لائے ہم لازماً اُن کی بدیاں ان سے دور کر دیں گے اور ضرور اُنہیں اُن کے بہترین اعمال کے مطابق جزا دیں گے جو وہ کیا کرتے تھے۔

[29:9]   
English
And We have enjoined on man kindness to his parents; but if they strive to make thee associate that with Me of which thou hast no knowledge, then obey them not. Unto Me is your return, and I shall inform you of what you did.
اُردو
اور ہم نے انسان کو تاکیدی نصیحت کی کہ اپنے والدین سے حُسنِ سلوک کرے اور (کہا کہ) اگر وہ تجھ سے جھگڑیں کہ تو میرا شریک ٹھہرائے، جس کا تجھے کوئی علم نہیں، تو پھر اُن دونوں کی اطاعت نہ کر۔ میری ہی طرف تمہارا لوٹ کر آنا ہے پس میں تمہیں ان باتوں سے آگاہ کروں گا جو تم کرتے تھے۔

[29:10]   
English
And those who believe and do good works — them We shall surely admit into the company of the righteous.
اُردو
اور وہ لوگ جو ایمان لائے اور نیک اعمال بجا لائے ہم انہیں ضرور نیک لوگوں میں داخل کریں گے۔