بِسۡمِ اللّٰہِ الرَّحۡمٰنِ الرَّحِیۡمِِ

Al Islam

The Official Website of the Ahmadiyya Muslim Community
Muslims who believe in the Messiah,
Hazrat Mirza Ghulam Ahmad Qadiani(as)Muslims who believe in the Messiah, Hazrat Mirza Ghulam Ahmad Qadiani (as), Love for All, Hatred for None.

CHAPTER 33

Al-Ahzab

(Revealed after Hijrah)

Title, Date of Revelation and Context

The Surah takes its title from the word احزاب i.e. the confederated tribes (v. 21). The whole of Arabia instigated by Banu Nadir, the banished Jewish tribe of Medina, had formed itself into a grand confederacy and had marched against Medina to deliver a crushing blow to the rising power of Islam. The confederates totally failed in their nefarious design and Islam came out of this ordeal with its power and prestige greatly enhanced.

The whole of the Surah was admittedly revealed at Medina. There is sufficient internal evidence to show that its revelation ranged from 5th to 7th year of the Hijrah, possibly up to the 8th or 9th.

In the preceding few Surahs of the الم group, the prophecy was repeatedly and emphatically made that Islam would continue to make progress and gather strength, and disbelief would face defeat and discomfiture till the whole of Arabia would accept Islam, and idolatry would disappear from the country, never to return. In the immediately preceding Surah, As-Sajdah, it was stated that Muslims would be favoured with all sorts of physical comforts and material prosperity. They would enjoy prosperity and prestige for a thousand years and then darkness would enshroud the world and divine light would ascend to heaven and Muslims would fall on evil days and Islam would decline. Towards the end of that Surah the disbelievers had tauntingly asked as to when the prophecy about the victory of Islam and its great spread and expansion would be fulfilled. That question has received an emphatic answer in the present Surah. It is stated that prophecy about the rise and progress of Islam has already been clearly fulfilled and Islam has become a great power. A somewhat detailed description is given of the Battle of the Ditch in order to show that, having realised that Islam was fast gaining ground and that it was for them the question of now or never, the forces of darkness made one last attempt to deliver Islam a coup de grace. The whole of Arabia rose like one man and a mighty force of 10,000 to 20,000 strong marched on Medina. But the disbelievers totally failed in their evil design. The confederated armies were completely routed and dispersed. Henceforward the idol worshippers of Arabia never had the courage to take the field against Islam. They quite despaired of arresting its progress and Islam was now definitely in the ascendant.

Summary of Subject Matter

With the accession to Islam of great political power and prestige and with its emergence as a full-fledged State, the ordinances of the Shari‘ah began to be revealed in quick succession to guide Muslims in political and social matters. The Surah embodies several such ordinances. It opens with an injunction to the Holy Prophet to put complete trust in God as very hard days were still ahead of him. He is warned that his enemies will conduct a false campaign of calumny and vilification against him and Islam will meet some of its greatest crises. At the outset, the Surah abolishes a deep-rooted custom of the Arabs. The abolition, later on, was to prove a source of great mental anguish and worry to the Holy Prophet. It says that mere calling a person one’s son cannot make him one’s real son, neither can mere words of the mouth evoke in one’s mind the feelings which one entertains for one’s real son nor can such words alter hard facts of life. After abolishing the custom of adoption, the Surah proceeds to refer to a very deep and real spiritual relationship that subsists between the Holy Prophet and Muslims. In his capacity as their spiritual father he stands closer to them than even their own selves, and his wives being their spiritual mothers should be treated by them with greater regard and respect than the mothers that have given them birth, because spiritual relationship stands on a much higher plane than physical relationship.

After this, the Surah gives a somewhat detailed description of the Battle of the Ditch which was the fiercest encounter in which the Muslims had so far been engaged. The whole of Arabia had risen like one man against Islam and a well-equipped army, numbering from 10,000 to 20,000 strong, had marched on Medina. The Muslims were a paltry 1200, though, according to some writers the total number of those employed in digging the Ditch including women and children was in the neighbourhood of 3000. The combat was quite unequal. The Muslims were in sore straits. Their apparently hopeless condition is graphically portrayed in the Quranic words: "They came upon you from above you, and from below you, and your eyes became distracted, and your hearts reached to the throats, and you thought diverse thoughts about Allah. There and then were the believers sorely tried and they were shaken with a violent shaking" (11-12). When matters came to such a pass, God sent His hosts and the powerful enemy was routed and scattered.

In the next few verses the Surah refers to the well-known historical phenomenon that while in a religious community there is no dearth of sincere and devoted followers, there are also to be found in its ranks hypocrites and the weak of faith. It is to these hypocrites in Medina that the Surah refers in vv. 13-28. They loudly professed to be true followers of Islam but when Medina was attacked by a mighty force, they asked to be excused from fighting on the side of Muslims on very lame excuses. They broke their plighted word and, therefore, were warned that by violating their most solemn pledge they would not be able to avert the terrible fate that was in store for them. The Banu Quraizah dishonoured their pledge and left Muslims in the lurch when the latter were hemmed in on all sides and the very fate of Islam was hanging in the balance. After the confederates dispersed, the Holy Prophet marched against them and they received condign and the deserved punishment.

As a result of the Battle of the Ditch and of the subsequent banishment of the Banu Quraizah, large booty fell into the hands of Muslims. They were promised more conquest and wealth. From a persecuted and economically very poor minority they had grown into a rich, powerful and prosperous community. But material wealth brings in its train, worldly-mindedness, a desire for ease and comfort and a disinclination towards service and sacrifice. This is a state of affairs which a Reformer has specially to guard against. As love of ease and comfort generally makes appearance first in the domestic circle and as the members of the Holy Prophet’s household were to serve as a model in social behaviour, it was in the fitness of things that they should have been required to set an example in self-denial. It is to this life of self-abnegation on the part of the Holy Prophet’s wives that reference has been made in the Surah. The Holy Prophet’s wives were asked to make a choice between a life of comfort and ease, and the austere Companionship of the Holy Prophet; and they lost no time in making their choice. They preferred the Prophet’s company. They were further told to set an example in piety, righteous and pious conduct, as befitted the wives of the greatest of God’s Prophets, and in preserving the dignity and decorum of their exalted position by keeping to their houses and by teaching to Muslims the precepts and commandments of their religion.

The Surah, then, proceeds to make a reference to Zainab’s marriage with Zaid, the Holy Prophet’s freed slave. The failure of Zainab’s marriage with Zaid and her subsequent marriage with the Holy Prophet, served a double purpose. The Prophet by giving in marriage Zainab, his own cousin and a full-blooded Arab lady, intensely proud of her ancestry and exalted social position, to a freed slave, had sought to level to the ground all those invidious class distinctions and divisions from which Arabian society had suffered. According to Islam all men are free and all are equal in the sight of God. The Prophet carried into actual practice this noble ideal of Islam by giving the hand of his own cousin to a freed slave.

Next, the Surah goes on to remove a possible misgiving to which the abolition of the custom of adoption might have given rise, viz. that in the absence of real sons the Holy Prophet will die issueless and thus his Movement will wither and die out for want of an heir. It says that it was God’s own plan that the Prophet should have no male issue; but this did not mean that he would be issueless since he was the spiritual father of the whole of mankind. This was not an empty claim. As practical proof of this claim he would bring into being a community of righteous and most loyal spiritual sons.

The Surah further says that since the Holy Prophet is the spiritual father of the Faithful, his wives are their spiritual mothers, and therefore marriage with them, after the death of the Prophet, is a grievous sin. The Holy Prophet himself is told that he is not to divorce any one of his existing wives, nor to add to their number. The wives of the Holy Prophet then, are enjoined that, being consistent with their dignity as "Mothers of the Faithful," they should observe certain rules regarding dress, etc. when going out. This injunction enjoining privacy and decorum applies equally to all Muslim women.

Then the Surah says that though by the great accession to the political power and prestige of Islam, consequent on the defeat and dispersion of the confederated armies and the virtual elimination of the Banu Quraizah—the last Jewish tribe in Medina—the capacity of disbelievers for creating mischief has greatly decreased, the hypocrites will not desist from indulging in evil designs against Muslims but they will always meet with complete frustration and failure and the Islamic State will become firmly established and will continue to prosper.

Towards its close, the Surah points to the high destiny of man and his great responsibilities. It purports to say that man is the acme and apex of God’s creation. He has been endowed with great powers and capabilities which have been denied to other beings and, therefore, he alone among all creation can, by acting upon the laws of the Shari‘ah, imbibe and demonstrate in his person Divine attributes. It is for the achievement by man of this noble object of his creation that God has been sending His Messengers and Prophets, but when these Prophets come, some people accept them and receive Divine favours while others choose the path of denial and incur His displeasure.

33. الاحزاب

یہ سورت مدنی ہے اور بسم اللہ سمیت اس کی چوہتر آیات ہیں۔

 اس سورت کے شروع میں ہی گزشتہ سورت کی آخری آیت والے مضمون کو پیش کیا گیا یعنی یہ کہ کفار اور منافقین تجھے اپنے مسلک سے ہٹانے کی کوشش کریں گے، تُو اُن سے اعراض کر اور اُن کی اطاعت نہ کر اور اس کی پیروی کر جو تیری طرف وحی کیا جاتا ہے۔ 

آیت کریمہ نمبر ۵ میں یہ دائمی اصول بیان فرمادیا گیا کہ انسان بیک وقت دو الگ الگ وجودوں سے بعینہٖ ایک جیسی محبت نہیں کرسکتا۔ اس میں اس طرف اشارہ ہے کہ تیرے دل پر اللہ تعالیٰ کی محبت ہی غالب ہے اور دنیا میں جو تُو محبت کرتا ہے وہ محض اللہ تعالیٰ کی محبت کی بنا پر ہی ہے۔ چنانچہ وہ حدیث اس مضمون کو کھول رہی ہے جس میں فرمایا کہ اگر تُو بیوی کے منہ میں لقمہ بھی اللہ تعالیٰ کی محبت کی بنا پر ڈالے تو یہ بھی عبادت ہوگی۔ 

اس کے بعد عربوں کی اس رسم کا ذکر ہے جو اپنے منہ سے اپنی بیویوں کو مائیں کہہ دیا کرتے تھے۔ اس رسم کا قلع قمع کرتے ہوئے توجہ دلائی گئی کہ ماں اور بیٹے کا تعلق تو اللہ کے بنائے ہوئے قوانین کے مطابق پیدا ہوتا ہے، تم اپنے مونہوں سے کیسے اس تعلق کو تبدیل کرسکتے ہو۔ اسی طرح اگر کسی کو بیٹا کہہ کر پکارا جائے تو وہ بیٹا نہیں بن سکتا۔ بیٹا وہی ہے جو خونی رشتہ میں بیٹا ہو۔ بیٹا کہہ کر پکارنا صرف ایک پیار کا اظہار ہے اس سے زیادہ کچھ نہیں۔ 

پھر اسی مضمون کا اعادہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ دلوں میں ایک ہی اَولیٰ یعنی سب سے زیادہ محبت کا حقدارہوتا ہے اور جہاں تک مومنوں کا تعلق ہے رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم سب سے اَولیٰ ہونے چاہئیں اور اس کے بعد  درجہ بدرجہ دیگر قرابت داروں کا ذکر ہے کہ وہ ایک دوسرے پر تمہارے قرب کے لحاظ سے فضیلت رکھتے ہیں۔ 

اسی سورت میں جس میں آیت خاتم النبیین بھی ہے اور بعض عرفان سے عاری علماء اس کا مطلب یہ لیتے ہیں کہ آپؐ آخری نبی ان معنوں میں ہیں کہ آپؐ کے بعد کبھی کسی قسم کا کوئی نبی نہیں آئے گا، اس غلط عقیدے کا ردّ فرما دیا گیا اور اس میثاق کا ذکر فرمایا جو ہر نبی سے لیا جاتا رہا کہ اگر تمہارے بعد کوئی ایسا نبی آئے جو تمہاری باتوں کی تصدیق کرتا ہو تو تمہاری امّت کا فرض ہے کہ وہ اس نبی کا انکار کرنے کی بجائے اس کی تائید کرنے والی ثابت ہو۔ اس سورت میں آنحضرت صلی اللہ علیہ و سلم کے متعلق فرمایا وَ مِنْکَ کہ ہم نے یہ عہد تجھ سے بھی لیا ہے۔ پس آپؐ کی امت پر یہ فرض عائد فرمایا گیا کہ اس شرط کے ساتھ کہ نبوت کا دعویٰ کرنے والا سو فیصد حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم کا تابع ہو اور اُس نے فیضِ محمدی سے ہی نبوت کا انعام پایا ہو اور وہ آپؐ ہی کی تعلیم بلاتغیر و تبدّل پیش کرنے والا ہو اور اُسی کے حق میں جہاد کر رہا ہو تو پھر نہ صرف یہ کہ اس کی مخالفت تم پر حرام ہے بلکہ اس کی نصرت کرنا لازم ہے۔ 

اس کے بعد احزاب کے بنیادی معنی کو ملحوظ رکھتے ہوئے اس میں جنگِ خندق کا ذکر ہے جس میں تمام عرب کے احزاب مدینہ پر حملہ کے لئے امڈ آئے تھے اور ان سے بچاؤ کی کوئی ظاہری صورت ممکن نہیں تھی۔ اس وقت اللہ تعالیٰ نے آپؐ کے حق میں یہ معجزہ دکھایا کہ ایک خوفناک آندھی کے ذریعہ آپؐ کی نصرت فرمائی جس نے کفار کی آنکھوں کو اندھا کردیا اور وہ افراتفری میں بھاگ کھڑے ہوئے اور بہت سی سواریاں جو بندھی ہوئی تھیں ان کو کھولنے تک کا انہیں وقت نہ ملا۔ پس اپنی سواریوں سمیت وہ بہت سا ساز و سامان پیچھے چھوڑ گئے، اور وہ خوفناک غذا کی قلت جو مسلمانوں کو درپیش تھی اس کی وجہ سے وہ بھی دور ہوئی۔ 

اس واقعہ سے پہلے اہل یثرب کی جو حالت تھی اس کا بھی ذکر فرمایا گیا ہے کہ اتنی خوفناک مصیبت اور تباہی انہیں دکھائی دے رہی تھی کہ خوف سے ان کی آنکھیں پتھرا گئی تھیں اور منافقین مدینہ کے مسلمانوں سے کہہ رہے تھے کہ اب تمہارے لئے کوئی جائے پناہ نہیں رہی۔ اس وقت مومنوں نے انہیں یہ جواب دیا کہ ہمارا ایمان تو پہلے سے بھی زیادہ قوی ہوگیا ہے کیونکہ احزاب کے اس خوفناک حملے کی اس سے پہلے ہمیں خبر دے دی گئی تھی۔ ان کا اشارہ سورۃالقمر کی طرف تھا جس میں یہ آیت آتی ہے کہ سَیُھْزَمُ الْجَمْعُ وَیُوَلُّوْنَ الدُّبُر۔ پس اس جنگ میں مومنوں نے اپنے عہد کو پورا کر دکھایا اور ان میں کچھ ایسے لوگ بھی تھے جو اس وقت ساتھ شامل نہیں تھے لیکن انتظار کر رہے تھے کہ کاش ان کو بھی  جنگِ احزاب میں شامل ہونے والے آنحضور صلی اللہ علیہ و سلم کے صحابہ کی طرح ثبات قدم اور قربانیوں کی توفیق عطا ہو۔ 

اس سورت کی آیت نمبر ۳۸ میں اللہ تعالیٰ نے آپؐ کو منہ بولے بیٹے کی مطلقہ سے نکاح کا حکم دیا اور یہ حکم آنحضرت صلی اللہ علیہ و سلم پر بہت گراں گزر رہا تھا اور اس کے نتیجہ میں منافق جو اعتراضات کر سکتے تھے ان کا بھی کچھ خوف دامنگیر تھا۔ اس لئے آپ اس شادی کے معاملہ میں سخت متردد تھے مگر اللہ کے حکم پر عمل کرنا بہرحال لازم تھا۔ 

اس کے بعد ایک ایسی آیت (نمبر ۴۱) ہے جسے اس سورت کا معراج کہنا چاہئے اور اس کا تعلق حضرت زیدؓ کے واقعہ سے بھی ہے۔ یہ اعلانِ عام فرمایا گیا کہ محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم حقیقتاً نہ زیدؓ کے باپ تھے، نہ تم جیسے انسانوں کے باپ ہیں بلکہ وہ تو خَاتَم النبیین ہیں۔ یعنی آپؐ کو نبیوں کی روحانی اَبُوَّت عطا فرمائی گئی۔ سیاق و سباق سے تو یہی ترجمہ نکلتا ہے لیکن خاتم النبیین کے اور بہت سے معانی ہیں جو تمام تر اس قرآنی آیت کا منطوق ہیں۔ اور ہر معنی کے لحاظ سے آنحضورصلی اللہ علیہ و سلم خَاتَم النبیین ثابت ہوتے ہیں۔ مثال کے طور پر خَاتَم کا ایک معنی مُصدِّق کا بھی ہے اور تمام شرائع میں سے صرف ایک حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم کی شریعت ہے جس میں گزشتہ تمام نبیوں کی اور ہر زمانہ کے نبیوں کی تصدیق فرمائی گئی ہے۔ دنیا کی کوئی مذہبی کتاب اس شان کی آیت کریمہ پیش نہیں کرسکتی۔ 

 اس کے بعد کی آیت حضرت زکریا علیہ الصلوٰۃ والسلام کی اس دعا کی یاد دلاتی ہے جو انہیں بیٹے کی خوشخبری عطا کرنے کے بعد اللہ تعالیٰ نے ان پر وحی فرمائی کہ صبح و شام اللہ تعالیٰ کی تسبیح کرو۔  

اس کے بعد آیات ۴۶-۴۷ میں آنحضرت صلی اللہ علیہ و سلم کے شاہد، مبشر، نذیر ہونے کا ذکر فرما دیا گیا۔ آپؐ اپنے سے پہلے عظیم الشان نبی موسیٰ علیہ الصلوٰۃ والسلام کی صداقت پر بھی شاہد تھے اور اپنے آنے والے غلام کی صداقت پر بھی شاہد تھے۔ آپؐ کی شان کی مثال سورج سے دی گئی ہے جو سب جہانوں کو روشن کرتا ہے اور چاند بھی اسی سے روشنی پاتا ہے۔ پس مقدر ہے کہ کوئی چاند رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم کی روشنی ہی کو اس وقت جب رات کی تاریکی چھا چکی ہو پھر بنی نوع انسان تک پہنچائے۔ سو اس میں یہ پیشگوئی ہے کہ آئندہ کے اندھیرے زمانوں میں ایسا ہی ہوگا۔ 

اس کے بعد مومنوں کو تقویٰ کے آداب سکھائے گئے ہیں اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم کا جو عظیم مقام بیان فرمایا گیا تھا اس کو ملحوظ رکھتے ہوئے ان پر فرض فرما دیا گیا ہے کہ انتہائی ادب سے کام لیں۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم بعض مواقع پر اپنے عزیزوں اور صحابہ کرام کو اپنے گھر کھانے کی دعوت پر بلایا کرتے تھے۔ ان آیات میں صحابہؓ کو نصیحت کی گئی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم جب ایسی دعوت کریں تو اسے عام دعوتوں کی طرح سمجھتے ہوئے وقت سے پہلے آپؐ کے گھر پہنچ کر کھانے کے پکنے کا انتظار نہ کیا کرو۔ جب کھانا تیار ہو اور تمہیں بلایا جائے تو جایا کرو اور اس کے بعد اجازت لے کر اپنے گھروں کو جاؤ۔ اور اگر کھانے کے دوران تمہیں کسی چیز کی ضرورت پڑے تو پردے کے پیچھے سے اُمَّہات المومنین کو اپنی ضرورت کی اطلاع دو۔ یہاں پاکیزگی کی تاکید ازواجِ مطہرات کو عام مسلمان خواتین سے بہت زیادہ کی گئی ہے کیونکہ اُن کا بلند مرتبہ تقاضا کرتا ہے کہ ان کی وجہ سے آنحضرت صلی اللہ علیہ و سلم کو ادنیٰ سی تہمت بھی نہ سننی پڑے۔ 

جس طرح آنحضرت صلی اللہ علیہ و سلم کو منافقین بہتان تراشیوں کے ذریعہ ایذا پہنچاتے تھے اسی طرح حضرت موسیٰ علیہ الصلوٰۃ والسلام کو بھی بہتان تراشی کے ذریعہ ایذا دہی کا نشانہ بنایا گیا تھا۔ پس اس سورت کے اختتام پر یہ مضمون دہرایا گیا کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ و سلم کو آپ سے پہلے جلالی نبی موسیٰ علیہ الصلوٰۃ والسلام کے ساتھ بکثرت مشابہتیں ہیں۔ اور جس طرح حضرت موسٰیؑ کو بتایا گیا تھا کہ اللہ کے نزدیک وہ بہرحال وجیہ ہیں اسی طرح رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم کو تسلی دلائی گئی کہ ان بہتان تراشیوں کے نتیجہ میں تیرا کوئی بھی نقصان نہیں کیونکہ تُو اللہ تعالیٰ کے نزدیک وَجِیْھًا فِی الدُّنْیَا وَالْآخِرَۃ ہے۔ 

اس سورت کی آخری دو آیات میں ایک دفعہ پھر حضرت موسیٰ علیہ الصلوٰۃ والسلام کی طرف اشارہ کرتے ہوئے فرمایا کہ جو بارِ امانت تجھ پر ڈالا گیا ہے وہ موسٰیؑ پر ڈالے جانے والے بارِ امانت سے بہت زیادہ ہے۔ پہاڑ بھی اس کے رعب سے ریزہ ریزہ ہوجاتے ہیں۔ لیکن تُو اس بارِ امانت کو اٹھانے کے لئے آگے بڑھا جس کے نتیجہ میں تجھے اپنے نفس پر بے انتہا ظلم کرنا پڑا لیکن تُو نے ہرگز پروا نہیں کی کہ اس کے عواقب کیا ہوں گے۔ 


[33:1]   
English
In the name of Allah, the Gracious, the Merciful.
اُردو
اللہ کے نام کے ساتھ جو بے انتہا رحم کرنے والا، بِن مانگے دینے والا (اور) بار بار رحم کرنے والا ہے۔

[33:2]   
English
O thou Prophet, seek protection in Allah, and follow not the wishes of the disbelievers and the hypocrites. Verily, Allah is All-Knowing, Wise.
اُردو
اے نبی! اللہ کا تقویٰ اختیار کر اور کافروں اور منافقوں کی بات نہ مان۔ یقیناً اللہ دائمی علم رکھنے والا (اور) بہت حکمت والا ہے۔

[33:3]   
English
And follow that which is revealed to thee from thy Lord. Verily Allah is well aware of what you do.
اُردو
اور ا س کی پیروی کر جو تیری طرف تیرے ربّ کی طرف سے وحی کیا جاتا ہے۔ یقیناً اللہ، اس سے جو تم کرتے ہو، خوب باخبر ہے۔

[33:4]   
English
And put thy trust in Allah, and Allah is sufficient as a Guardian.
اُردو
اور اللہ پر توکل کر اور اللہ ہی کار ساز کے طور پر کافی ہے۔

[33:5]   
English
Allah has not made for any man two hearts in his breast; nor has He made those of your wives, from whom you keep away by calling them mothers, your real mothers, nor has He made your adopted sons your real sons. That is merely a word of your mouths; but Allah speaks the truth, and He guides to the right path.
اُردو
اللہ نے کسی انسان کے سینے میں دو دل نہیں بنائے۔ اسی طرح اس نے تمہاری اُن بیویوں کو جنہیں تم ماں کہہ کر اپنے اوپر حرام کر لیتے ہو تمہاری مائیں نہیں بنایا۔ نہ ہی تمہارے منہ بولوں کو تمہارے بیٹے بنایا ہے۔ یہ محض تمہارے منہ کی باتیں ہیں اور اللہ حق (بات) بیان کرتا ہے اور وہی ہے جو (سیدھے) راستے کی طرف ہدایت دیتا ہے۔

[33:6]   
English
Call them by the names of their fathers. That is more equitable in the sight of Allah. But if you know not their fathers, then they are your brothers in faith and your friends. And there is no blame on you in any mistake you may unintentionally make in this matter, but what matters is that which your hearts intend. And Allah is Most Forgiving, Merciful.
اُردو
ان کو ان کے آباءکے نام سے یاد کیا کرو۔ یہ اللہ کے نزدیک انصاف کے زیادہ قریب ہے۔ اور اگر تم ان کے آباءکو نہ جانتے ہو تو پھر وہ دینی معاملات میں تمہارے بھائی اور تمہارے دوست ہیں۔ اور اس معاملہ میں جو تم غلطی کر چکے ہو اس کا تم پر کوئی گناہ نہیں۔ ہاں مگر وہ (گناہ ہے) جو تمہارے دلوں نے باِلارادہ کمایا اور اللہ بہت بخشنے والا (اور) بار بار رحم کرنے والا ہے۔

[33:7]   
English
The Prophet is nearer to the believers than their own selves, and his wives are as mothers to them. And blood relations are nearer to one another, according to the Book of Allah, than the rest of the believers from among the Helpers as well as the Emigrants, except that you show kindness to your friends. That also is written down in the Book.
اُردو
نبی مومنوں پر اُن کی اپنی جانوں سے بھی زیادہ حق رکھتا ہے اور اُس کی بیویاں اُن کی مائیں ہیں۔ اور جہاں تک رِحمی رشتے والوں کا تعلق ہے تو ان میں سے بعض اللہ کی کتاب میں (مندرج احکام کے مطابق) بعض پر اوّلیت رکھتے ہیں بہ نسبت دوسرے مومنین اور مہاجرین کے۔ سوائے اس کے کہ تم اپنے دوستوں سے (بطور احسان) کوئی نیک سلوک کرو۔ یہ سب باتیں کتاب میں لکھی ہوئی موجود ہیں۔

[33:8]   
English
And remember when We took from the Prophets their covenant, and from thee, and from Noah, and Abraham, and Moses, and Jesus, son of Mary, and We indeed took from them a solemn covenant;
اُردو
اور جب ہم نے نبیوں سے ان کا عہد لیا اور تجھ سے بھی اورنوح سے اور ابراہیم اور موسیٰ اور عیسیٰ ابن مریم سے۔ اور ہم نے ان سے بہت پختہ عہد لیا تھا۔

[33:9]   
English
That He may question the truthful about their truthfulness. And for the disbelievers He has prepared a painful punishment.
اُردو
تاکہ وہ سچوں سے ان کی سچائی کے متعلق سوال کرے اور کافروں کے لئے اس نے دردناک عذاب تیار کیاہے۔

[33:10]   
English
O ye who believe! remember the favour of Allah on you when there came down upon you hosts, and We sent against them a wind and hosts that you saw not. And Allah sees what you do.
اُردو
اے لوگو جو ایمان لائے ہو! اپنے اوپر اللہ کی نعمت کو یاد کرو جب تمہارے پاس لشکر آئے تھے تو ہم نے ان کے خلاف ایک ہَوا بھیجی اور ایسے لشکر بھیجے جن کو تم دیکھ نہیں رہے تھے۔ اور یقیناً اللہ جو تم کرتے ہو اس پر گہری نظر رکھنے والا ہے۔