بِسۡمِ اللّٰہِ الرَّحۡمٰنِ الرَّحِیۡمِِ

Al Islam

The Official Website of the Ahmadiyya Muslim Community
Muslims who believe in the Messiah,
Hazrat Mirza Ghulam Ahmad Qadiani(as)Muslims who believe in the Messiah, Hazrat Mirza Ghulam Ahmad Qadiani (as), Love for All, Hatred for None.

CHAPTER 39

Az-Zumar

(Revealed before Hijrah)

Date of Revelation and Context

Most authorities including Ibn ‘Abbas and ‘Ikrimah agree that this is a Meccan Surah. Like the preceding five Surahs with which it has great resemblance in style and subject matter, this Surah was revealed early in the Holy Prophet’s ministry. Some writers like Rodwell and Muir assign it to the late Meccan period. They base their opinion on v. 11, which, according to them, embodies a reference to the Hijrah of the Holy Prophet to Medina. But the reference, as some other writers think, might as well be to the migration to Abyssinia which took place in the 4th year of the Call. The latter view seems to be nearer reality. Predominance of scholarly opinion is, as stated above, in favour of the Surahhaving been revealed early in the Holy Prophet’s life at Mecca but some verses also support Rodwell’s view.

The Surah is the last of the group of chapters beginning with Saba’ which have a striking resemblance in style and subject matter. The principal theme of these Surahs is Divine revelation with special reference to the revelation of the Quran and the doctrine of the Unity of God. The fact that there is One Designer and One Controller and Creator of the whole universe is inescapably inferable from the order, adaptation, proportion and coordination which pervade the whole universe and to which all the sciences bear undeniable testimony. The success of Divine Messengers with their extremely meagre resources against very powerful enemies constitutes another argument to prove God’s existence and Unity. To reinforce this argument a study of the accounts of different peoples to whom God’s Messengers preached their Messages is strongly recommended. The study shows how a people steeped deep in sin and iniquity and stuck fast in the morass of moral turpitude, by following a Divine Prophet, rise to the pinnacles of spiritual glory. This rising of a morally defunct community to a vigorous spiritual life is indeed a strong argument in favour of النشور i.e. the rising to life of the physically dead in the Hereafter. These subjects form the main theme of the present Surah as also of its five predecessors.

In the immediately preceding Surah the Holy Prophet was represented as saying that he asked for no reward for inviting men to God and for showing them the way to eternal life and that he sought no honour or aggrandisement for himself, but only wished for the welfare and well-being of all. The present Surah opens with the declaration that the Quran has been revealed by the Wise and Almighty God and that those alone achieve true honour and real success who accept and live up to its teaching as it contains all eternal truths. God has decreed that principles and ideals taught by the Quran will become established in the world and that the Holy Prophet has been commissioned to spread its teaching. So why should he seek any reward from men when God Himself is his Rewarder?

Subject Matter

The Surah opens with the subject of Quranic revelation and proceeds to deal with the need, purpose and supreme object of all revealed Books and Divine Prophets which is the establishment of Unity of God on earth. The greatest impediment that bars the way to the achievement of this great and noble object, lies in the fact that man is prone to worship false gods—the idols of his own creation. Of all forms of idolatry, perhaps the most hideous and most prevalent, and which has done the greatest injury to man’s spiritual development, is the belief that Jesus is the son of God. God, however, being the sole Creator and Controller of the whole universe, does not need a son to help Him in the conduct of affairs of the world. The Surah cites the most beautiful and consummate design and order in the universe as a further argument in support of the belief that there is only one Designing Mind behind all existence. Three stages of the نطفة (sperm drop), علقة (clot) and مضغة (lump of flesh) through which a man passes before his birth, are adduced as an additional argument. It is such a God, says the Surah, Who deserves and demands our adoration and to Whose worship man is invited by the Quran. It is to be regretted, however, that whenever a Prophet had invited men to God, only a small minority accepted his message.

After having briefly discussed the need and purpose of Divine revelation the Surah proceeds to give two very strong and sound arguments in support of that phenomenon: (1)  That those who invent lies against God, and those who reject truth, never succeed in life. Failure and ignominy dog their footsteps. (2)  The Prophets of God and those who accept them and follow their lead always meet with success and their cause prospers. These two arguments constitute an infallible criterion to judge the truth of a claimant to Divine revelation. Judged by these standards, the claim of the Holy Prophet as a Divine Messenger, and of the Quran as heavenly revelation, stands unchallenged and proved beyond doubt. The Surah gives one more argument in support of the truth of the Quran and of the Holy Prophet, viz. that while their true followers succeed in winning the pleasure of God and worldly power, prosperity, and prestige, disbelievers meet with failure, frustration and disgrace in life and end by drawing upon themselves the wrath of God.

After having warned them of the consequences of a sinful life, the Surah holds out to the sinners a message of hope and good cheer that, however deep they might fall into sin, they are never beyond redemption. The God of Islam is a Merciful, Gracious, Kind and Forgiving God. He can and does forgive the sins of His servants. His mercy encompasses all things. He only requires change of heart on the part of the sinner; He then turns to him with forgiveness and mercy. But this message of solace and comfort is also attended with a firm warning that the sinner has to work out his own destiny. No vicarious sacrifice can save him. He is vouchsafed many opportunities to repent and reform, but if he continues to walk in evil ways deliberately he is severely punished.

Towards the close the Surah devotes quite a few verses to the description of the Day of Resurrection; how at the first blowing of the trumpet all men will fall into a swoon and at the second they will find themselves standing before God’s Judgement Seat, waiting to hear the Divine judgement, after which the good and the righteous will be escorted to Paradise where they will be greeted with the greetings of peace by the angels in Heaven, and the guilty ones will be driven to Hell where they will burn in scorching fire.

39. الزمر

یہ سورت مکی ہے اور بسم اللہ سمیت اس کی چھہتر آیات ہیں۔

 اس سے پہلی سورت کے آخر میں دین کو اللہ کے لئے خالص کرنے والے ایسے بندوں کا ذکر ہے جنہوں نے شیطان کی عبادت کا انکار کیا اور خالصۃً اللہ تعالیٰ کی عبادت میں سربسجود رہے۔ اور اِس سورت کے آغاز ہی میں یہ اعلان ہے کہ اے رسول! دین کو اللہ کے لئے خالص کرتے ہوئے اسی کی عبادت کر۔ یقینا اللہ تعالیٰ خالص دین کو ہی قبول فرماتا ہے۔  

اس کے بعد مشرکین کی ایک دلیل کا ردّ فرمایا گیا ہے۔ وہ بت پرستی کی عموماً یہ توجیہ پیش کرتے ہیں کہ یہ مصنوعی خدا ہمیں اللہ سے قریب کرنے کا وسیلہ بنتے ہیں۔ فرمایا ہرگز ایسا نہیں بلکہ وسیلہ تو وہی بنے گا جس کا دین آنحضور صلی اللہ علیہ و سلم کی طرح خالص ہے اور اس میں شرک کا کوئی شائبہ تک نہیں۔ 

اس کے بعد اس حقیقت کا اعادہ فرمایا گیا ہے کہ انسانی زندگی کا آغاز نفسِ واحدہ سے ہوا تھا۔ پھر جب انسان ماں کے رِحم میں بطور جنین اپنی ترقی کی منازل طے کرنے لگا تو وہ جنین تین اندھیروں میں چھپا ہوا تھا۔ پہلا اندھیرا ماں کے پیٹ کا اندھیرا ہے جس نے رِحم کو ڈھانکا ہوا ہے۔ دوسرا اندھیرا خود رِحم کا اندھیرا ہے جس میں جنین پرورش پاتا ہے اور تیسرا اس پلیسنٹا (Placenta) کا اندھیرا ہے جو رِحمِ مادر کے اندر جنین کو سمیٹے ہوئے ہوتا ہے۔ 

پھر آنحضرت صلی اللہ علیہ و سلم کو یہ اعلان کرنے کا اذن دیا کہ مجھے تو یہی حکم دیا گیا ہے کہ مَیں عبادت کو اسی کے لئے خالص کر دوں۔ اس کے بعد فرمایا کہ تُو کہہ دے کہ اللہ ہی ہے جس کے لئے مَیں اپنے دین کو خالص کرتے ہوئے عبادت کرتا رہوں گا۔ تم اپنی جگہ اس کے سوا جس کی چاہے عبادت کرتے پھرو۔ اور ان کو بتا دے کہ اگر وہ ایسا کریں گے تو یہ بہت گھاٹے والا سودا ہوگا کیونکہ وہ اپنے آپ کو بھی اور اپنی آئندہ نسلوں کو بھی اس کجی کے ذریعہ گمراہ کرنے کا موجب بنیں گے۔ 

اس کے بعد یہ سوال اٹھایا گیا ہے کہ کیا وہ شخص جس کا سینہ اللہ تعالیٰ نے اپنے ذکر کے لئے کشادہ فرما دیا ہو یا دوسرے لفظوں میں جسے شرح صدر عطا فرمادیا گیا ہو۔ اس کا جواب ظاہراً مذکور نہیں مگر اس سوال میں ہی مضمر ہے اور وہ یہ ہے کہ ایسے شخص سے بہتر اور کوئی نہیں ہوسکتا۔ پس بہت ہی بدقسمت ہیں وہ لوگ جو اپنے ربّ کے ذکر سے غافل رہتے ہیں۔

 اس سورت کی آیت نمبر ۲۴ میں یہ اعلان فرمایا گیا ہے کہ اللہ تجھ سے ایک بہت ہی دلکش بات بیان فرماتا ہے جو یہ ہے کہ اللہ نے تجھ پر ایک بار بار پڑھی جانے والی کتاب نازل فرمائی ہے جس میں بعض ایسی آیات بھی ہیں جو متشابہات ہیں اور وہ جوڑا جوڑا ہیں۔ مگر ان کی تشریح میں بعینہٖ اس سے ملتی جلتی اَور بھی آیات موجود ہیں جو حق کی جستجو کرنے والوں کو متشابہ آیات سمجھنے کی توفیق عطا فرمائیں گی۔ یہ وہی مضمون ہے جو یُفَسِّرُ بَعْضُہٗ بَعْضًا میں بیان ہوا ہے۔ ایک دوسری جگہ فرمایا کہ جو رَاسِخُوْنَ فِی الْعِلْمِ ہیں ان کے سامنے تو کوئی آیت بھی متشابہ نہیں رہتی۔ 

اسی سورت میں وہ آیتِ کریمہ بھی ہے جو حضرت مسیح موعود علیہ السلام کو الہام ہوئی تھی اور حضور نے ایک انگوٹھی تیار کرواکر اس کے نگینہ میں اسے کندہ کرایا تھا یعنی اَلَیْسَ اللّٰہُ بِکَافٍ عَبْدَہ‘ (کیا اللہ اپنے بندہ کے لئے کافی نہیں )۔ اسی مناسبت سے احمدی ایسی انگوٹھیاں تبرکاً اور نیک فال کے طور پر اپنی انگلیوں میں پہنتے ہیں۔ 

اس سورت کی آیت نمبر ۴۳ میں ایک عظیم الشان راز سے پردہ اٹھایا گیا ہے کہ نیند بھی ایک قسم کی موت ہے جس میں روح یا شعور بار بار ڈوبتا ہے اور پھر اللہ تعالیٰ نے ایسا نظام مقرر فرما دیا ہے کہ عین معیّن وقت پر دماغ کی تہ سے ٹکرا کر پھر واپس ابھر آتا ہے۔ سائنس دانوں نے اس پر تحقیق کی ہے اور بتایا ہے کہ یہ واقعہ معیّن وقت میں ایک سوئے ہوئے شخص سے بار بار پیش آتا رہتا ہے۔ اس معیّن وقت کو ایک اٹامک گھڑی سے بھی ناپا جاسکتا ہے اور اس مدّت میں کسی قسم کا کوئی فرق نظر نہیں آئے گا۔ پھر جب اللہ تعالیٰ اس نفس کو ڈوبنے کے بعد دوبارہ واپس نہیں بھیجتا تو اسی کا نام موت یا وفات ہے۔ 

کیونکہ یہاں اللہ تعالیٰ کے حضور حاضرہونے کا اور اس دنیا سے ہمیشہ کی جدائی کا ذکر آ رہا ہے اس لئے وہ جو جوابدہی کا خوف رکھتے ہیں ان کو یہ خوشخبری بھی دیدی گئی ہے کہ اللہ تعالیٰ ہر قسم کے گناہوں کو معاف کرنے کی قدرت رکھتا ہے کیونکہ وہ بہت بخشنے والا اور بار بار رحم کرنے والا ہے۔ پس اللہ کے حضور جھکو اور اسی کے سپرد ہو جاؤ پیشتر اس سے کہ وہ عذاب تمہیں آپکڑے اور پھر توبہ سے پہلے تمہاری موت واقع ہو جائے اور انسان حسرت سے یہ اعلان کرے کہ کاش مَیں اللہ تعالیٰ کے پہلو میں یعنی اس کی نظر کے سامنے اس قدر گناہوں کی جرأت نہ کرتا۔ 

اس سورت کا نام الزُّمَر ہے اور آخر پر دو آیات میں زُمَر (گروہ) کو دو حصوں میں تقسیم فرمایا گیا ہے۔ ایک وہ ہیں جو گروہ در گروہ جہنم کی طرف لے جائے جائیں گے اور ایک وہ جو گروہ در گروہ جنت کی طرف لے جائے جائیں گے۔


[39:1]   
English
In the name of Allah, the Gracious, the Merciful.
اُردو
اللہ کے نام کے ساتھ جو بے انتہا رحم کرنے والا، بِن مانگے دینے والا (اور) بار بار رحم کرنے والا ہے۔

[39:2]   
English
The revelation of this Book is from Allah, the Mighty, the Wise.
اُردو
اس کامل کتاب کا نزول کامل غلبہ والے (اور) بہت حکمت والے اللہ کی طرف سے ہے۔

[39:3]   
English
Surely it is We Who have revealed the Book to thee with truth; so worship Allah, being sincere to Him in obedience.
اُردو
یقیناً ہم نے تیری طرف (اس) کتاب کو حق کے ساتھ اتارا ہے۔ پس اللہ کی عبادت کر اُسی کے لئے دین کو خالص کرتے ہوئے۔

[39:4]   
English
Hearken, it is to Allah alone that sincere obedience is due. And those who take for protectors others beside Him say, ‘We serve them only that they may bring us near to Allah in station.’ Surely, Allah will judge between them concerning that wherein they differ. Surely, Allah guides not him who is an ungrateful liar.
اُردو
خبردار! خالص دین ہی اللہ کے شایانِ شان ہے اور وہ لوگ جنہوں نے اُس کے سوا دوست اپنا لئے ہیں (کہتے ہیں کہ) ہم اس مقصد کے سوا اُن کی عبادت نہیں کرتے کہ وہ ہمیں اللہ کے قریب کرتے ہوئے قرب کے اونچے مقام تک پہنچادیں۔ یقیناً اللہ اُن کے درمیان اُس کا فیصلہ کرے گا جس میں وہ اختلاف کیا کرتے تھے۔ اللہ ہرگز اُسے ہدایت نہیں دیتا جو جھوٹا (اور) سخت ناشکرا ہو۔

[39:5]   
English
If Allah had desired to take to Himself a son, He could have chosen whom He pleased out of what He creates. Holy is He! He is Allah, the One, the Most Supreme.
اُردو
اگر اللہ چاہتا کہ وہ کوئی بیٹا اپنائے تو اُسی میں سے جو اس نے پیدا کیا ہے جسے چاہتا اپنا لیتا۔ وہ بہت پاک ہے۔ وہی اللہ واحد (اور) صاحبِ جبروت ہے۔

[39:6]   
English
He created the heavens and the earth in accordance with the requirements of wisdom. He makes the night to cover the day, and He makes the day to cover the night; and He has pressed the sun and the moon into service; each pursues its course until an appointed time. Hearken, it is He alone Who is the Mighty, the Great Forgiver.
اُردو
اس نے آسمانوں اور زمین کو حق کے ساتھ پیدا کیا۔ وہ دن پر رات کا خول چڑھا دیتا ہے اور رات پر دن کا خول چڑھا دیتا ہے۔اور اُسی نے سورج اور چاند کو مسخر کیا۔ ہر ایک اپنی مقررہ میعاد کی طرف متحرک ہے۔ خبردار وہی کامل غلبہ والا (اور) بہت بخشنے والا ہے۔

[39:7]   
English
He created you from a single being; then from that He made its mate; and He has sent down for you eight head of cattle in pairs. He creates you in the wombs of your mothers, creation after creation, in threefold darkness. This is Allah, your Lord. His is the kingdom. There is no God but He. Whither then are you being turned away?
اُردو
اس نے تمہیں ایک جان سے پیدا کیا پھر اُسی میں سے اُس نے اس کا جوڑا بنایا۔ اور اس نے تمہارے لئے چوپایوں میں سے آٹھ جوڑے نازل کئے۔ وہ تمہیں تمہاری ماؤں کے پیٹوں میں تین اندھیروں میں ایک خَلق کے بعد دوسری خَلق عطا کرتے ہوئے پیدا کرتا ہے۔ یہ ہے اللہ تمہارا ربّ۔ اسی کی بادشاہی ہے اس کے سوا اور کوئی معبود نہیں۔ پس تم کہاں اُلٹے پھرائے جاتے ہو؟

[39:8]   
English
If you are ungrateful, surely Allah is Self-Sufficient being independent of you. And He is not pleased with ingratitude in His servants. But if you show gratefulness, He likes it in you. And no bearer of burden shall bear the burden of another. Then to your Lord is your return; And He will inform you of what you have been doing. Surely, He knows full well all that is hidden in the breasts.
اُردو
اگر تم انکار کرو تو یقیناً اللہ تم سے مستغنی ہے اور وہ اپنے بندوں کے لئے کفر پسند نہیں کرتا اور اگر تم شکر کرو تو وہ اسے تمہارے لئے پسند کرتا ہے۔ اور کوئی بوجھ اٹھانے والی کسی دوسری کا بوجھ نہیں اٹھائے گی۔ پھر تم سب کو اپنے ربّ کی طرف لوٹنا ہے۔ پس وہ تمہیں ان اعمال سے باخبر کرے گا جو تم کیا کرتے تھے۔ یقیناً وہ سینوں کے رازوں کو خوب جانتا ہے۔

[39:9]   
English
And when an affliction befalls a man, he calls upon his Lord, turning penitently to Him. Then, when He confers upon him a favour from Himself, he forgets what he used to pray for before, and begins to assign rivals to Allah, that he may lead men astray from His way. Say, ‘Benefit thyself with thy disbelief a little while; thou art surely of the inmates of the Fire.’
اُردو
اور جب انسان کو کوئی تکلیف چھو جاتی ہے تو وہ اپنے ربّ کو اس کی طرف جھکتے ہوئے پکارتا ہے پھر جب وہ اسے اپنی طرف سے کوئی نعمت عطا کرتا ہے تو وہ اس بات کو بھول جاتا ہے جس کے لئے وہ پہلے دعا کیا کرتا تھا اور وہ اللہ کے شریک ٹھہرانے لگتا ہے تاکہ اس کی راہ سے گمراہ کر دے۔ تُو کہہ دے کہ اپنے کفر سے کچھ تھوڑا سا عارضی فائدہ اٹھا لے۔ یقیناً تُو اہلِ نار میں سے ہے۔

[39:10]   
English
Is he who prays devoutly to God in the hours of the night, prostrating himself and standing, and fears the Hereafter and hopes for the mercy of his Lord, like him who does not do so? Say, ‘Are those who know equal to those who know not?’ Verily, only those endowed with understanding will take heed.
اُردو
کیا وہ جو رات کی گھڑیوں میں عبادت کرنے والا ہے (کبھی) سجدہ کی حالت میں، اور (کبھی) قیام کی صورت میں، آخرت سے ڈرتا ہے اور اپنے ربّ کی رحمت کی امید رکھتا ہے(صاحبِ علم نہیں ہوتا؟) تو پوچھ کہ کیا وہ لوگ جو علم رکھتے ہیں اور وہ جو علم نہیں رکھتے برابر ہو سکتے ہیں؟ یقیناً عقل والے ہی نصیحت پکڑتے ہیں۔