بِسۡمِ اللّٰہِ الرَّحۡمٰنِ الرَّحِیۡمِِ

Al Islam

The Official Website of the Ahmadiyya Muslim Community
Muslims who believe in the Messiah,
Hazrat Mirza Ghulam Ahmad Qadiani(as)Muslims who believe in the Messiah, Hazrat Mirza Ghulam Ahmad Qadiani (as), Love for All, Hatred for None.

CHAPTER 57

Al-Hadid

(Revealed after Hijrah)

Title, Date of Revelation, and Context

This is the first of the last ten Medinite Surahs of the Quran which end with chapter 66. It seems to have been revealed after the Conquest of Mecca or the Treaty of Hudaibiyyah, as is clear from the mention of الفتح (the Victory) in v. 11 which refers to the Fall of Mecca or, according to some, more appropriately to the Treaty of Hudaibiyyah. The series of the Meccan Surahs which began with Surah As-Saba’ and which, with the exception of the three intervening Medinite chapters, i.e. Muhammad, Al-Fath and Al-Hujurat, had continued without interruption ended with the preceding chapter. This series completes the subject matter of the Meccan Surahs. With the present Surah, however, begins a new series of Medinite chapters which end with Surah At-Tahrim. The Surah takes its title from the word الحدید (the iron) occurring in v. 26.

In the preceding Surah (v.79) it was stated that the Quran is کتاب مکنون (well-preserved Book), which among other things signifies that the teachings of the Quran are in perfect harmony with natural laws and with the dictates and demands of human nature, reason and common-sense. The present Surah opens with the Divine attributes: the Mighty, the Wise. And quite naturally, the Being Who is Wise and Mighty must have revealed a Book whose teachings are consistent with the laws of nature and with human reason and conscience. And, befittingly the Surah opens with the words "Whatever is in the heavens and the earth declares the glory of Allah," and this is because the preceding Surahhad ended on the Divine command, viz. "So glorify the name of thy Lord, the Incomparably Great." It is significant that five, out of these ten Medinite Surahs, open with the words, "Whatever is in the heavens and in the earth declares the glory of Allah, the Mighty, the Wise."

Subject Matter

In the previous seven Meccan Surahs, especially in the three immediately preceding—Al-Qamar, Ar-Rahman, and Al-Waqi‘ah—it was repeatedly declared, in forceful though metaphorical language, that a great reformation, a veritable resurrection, was about to be brought about by the Holy Prophet among a people who for long centuries had grovelled in dust and dirt; and who because they had no living relation with civilized society, were looked down upon as pariahs among the comity of great nations. The present Surah points out that the great day of the phenomenal progress and power of that pariah nation—the Arabs—has already dawned and that the eventual victory of truth over falsehood is in sight. The Surah opens with a declaration of the power, might and knowledge of God, the Revealer of the Quran. "His is the kingdom of the heavens and the earth (v. 2)," says the Surah, "and it is He who causes the light of truth to penetrate the darkness of falsehood and the darkness of falsehood to disappear" (v.7), hinting thereby that the hour of the Victory of Islam had approached near. But there were essential conditions to be fulfilled before that consummation could take place, i.e. there must be on the part of Muslims a firm and invincible faith in the truth of Islamic ideals and a preparedness to make necessary sacrifice of life and property for the furtherance of the cause of truth. This is how, the Surah proceeds to say, God gives life to earth after it is dead (v. 18), i.e. He raises a people morally corrupt and politically unsettled to spiritual eminence and material power and greatness. The believers, however, are warned that after they have acquired power and prosperity they should not neglect moral ideals and should not indulge in the pursuit of transitory material pleasures because that would lead them to a life of sin and vice.

The Surah continues the theme namely, that from time immemorial God’s Messengers have been appearing in the world to lead men to the goal of their lives and that God has created "iron" (v. 26) which of all metals is perhaps of greater utility for mankind and which causes great violence and destruction. Next, the Surah very briefly traces back the account of Divine revelation to the time of Noah and the Prophets of Israel and closes by warning Muslims that God’s pleasure is not to be sought by leading a life of renunciation or flight from the world, as Jesus’s followers had mistakenly thought and practised, but by making proper use of powers and faculties bestowed by God on man, and of the things God has created for his benefit.

57. الحدید

یہ سورت مدینہ میں نازل ہوئی اور بسم اللہ سمیت اس کی تیس آیات ہیں۔

 اس کا آغاز اس اعلان کے ساتھ ہوتا ہے کہ زمین و آسمان اور جو کچھ ان میں ہے سب اللہ ہی کی تسبیح کر رہے ہیں اور اوّل بھی وہی ہے اور آخر بھی وہی اور ظاہر بھی وہی اور باطن بھی وہی۔ یعنی اس کے جلوے ظاہر و باہر ہیں مگر جو آنکھ ان کو نہ دیکھ سکے اس کے لئے وہ ہمیشہ باطن ہی رہیں گے۔ 

اس سورت میں ایک آیت میں حیاتِ دنیا کی مثال بیان کرتے ہوئے فرمایا گیا ہے کہ یہ تو محض کھیل کود اور لہو و لعب ہے۔ یہ کوئی باقی رہنے والی چیز نہیں۔ جب انسان اپنی موت کے قریب پہنچے گا تو لازماً تسلیم کرے گا کہ وہ تو چند دن کے عیش تھے۔ 

پھر اسی سورت میں یہ عظیم الشان آیت ہے جس سے ثابت ہوتا ہے کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ و سلم پر اللہ تعالیٰ نے یہ بات روشن فرما دی تھی کہ جنت اور جہنم کا ظاہری تصور درست نہیں۔ چنانچہ آیت کریمہ نمبر ۲۲ میں فرمایا کہ اللہ تعالیٰ کی مغفرت اور اس کی اس جنت کی طرف پیش قدمی میں ایک دوسرے سے سبقت لے جانے کی کوشش کرو جس جنت کی وسعت زمین و آسمان پر محیط ہے۔ جب آنحضور صلی اللہ علیہ و سلم نے یہ آیت تلاوت فرمائی تو ایک صحابیؓ نے سوال کیا کہ یا رسول اللہ! اگر جنت ساری کائنات پر پھیلی ہوئی ہے تو جہنم کہاں ہے؟ آپؐ نے فرمایا: وہ بھی وہیں ہوگی۔ یعنی اسی کائنات کی وسعتوں میں موجود ہوگی جس میں جنت ہے لیکن تمہیں اس بات کا شعور نہیں ہے کہ یہ کیسے ہوگا۔ ایک ہی جگہ جنت اور جہنم بس رہے ہیں اور ایک کا دوسرے سے کوئی بھی تعلق نہیں۔ اس سے واضح طور پر ثابت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم کو اس زمانہ میں ایکRelativity کا تصور عطا فرمایا گیا تھا یعنی ایک ہی جگہ میں ہوتے ہوئے Dimensionبدل جانے سے دو چیزوں کا آپس میں کوئی تعلق قائم نہیں رہتا۔ 

سورۃ الحدید کی مرکزی آیت وہ ہے جس میں اعلان فرمایا گیا کہ ہم نے لوہے کو نازل فرمایا۔ لفظ نزول کا جو ترجمہ عامّۃالناس کرتے ہیں اس کی رو سے لوہا گویا آسمان سے برسا ہے حالانکہ وہ زمین کی گہرائیوں سے کھود کر نکالا جاتا ہے۔ اس آیتِ کریمہ سے لفظِ نزول کی اصل حقیقت معلوم ہوجاتی ہے کہ وہ چیز جو اپنی جنس میں سب سے زیادہ فائدہ مند ہے اس کے لئے قرآن کریم میں لفظِ نزول استعمال ہوا ہے۔ چنانچہ اسی پہلو سے مویشیوں کے متعلق بھی نزول کا لفظ آیا ہے۔ لباس کے متعلق بھی نزول کا لفظ آیا ہے اور سب سے بڑھ کر یہ کہ حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے متعلق فرمایا: قَدْ اَنْزَلَ اللّٰہُ اِلَیْکُمْ ذِکْرًا رَّسُوْلًا (الطلاق: ۱۱-۱۲)کہ یقینا اللہ نے تمہاری طرف مجسم ذکرِالٰہی رسول نازل کیا ہے۔ اور تمام علماء متفق ہیں کہ ظاہری بدن کے ساتھ آپؐ آسمان سے نہیں اترے۔ پس سوائے اس کے اور کوئی معنی نہیں کہ تمام رسولوں سے بنی نوع انسان کو سب سے زیادہ فیضان پہنچانے والا  رسول حضرت محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہی تھے۔ 

پھر اسی سورت میں صحابہ رضوان اللہ علیہم کے متعلق یہ ذکر ہے کہ ان کا نور اُن کے آگے بھی چلتا تھا اور اُن کے دائیں بھی گویا وہ اپنے نور سے اپنی راہ دیکھ رہے ہوتے تھے۔ 


[57:1]   
English
In the name of Allah, the Gracious, the Merciful.
اُردو
اللہ کے نام کے ساتھ جو بے انتہا رحم کرنے والا، بِن مانگے دینے والا (اور) بار بار رحم کرنے والا ہے۔

[57:2]   
English
Whatever is in the heavens and the earth glorifies Allah; and He is the Mighty, the Wise.
اُردو
اللہ ہی کی تسبیح کرتا ہے جو آسمانوں اور زمین میں ہے۔ اور وہ کامل غلبہ والا (اور) صاحبِ حکمت ہے۔

[57:3]   
English
His is the kingdom of the heavens and the earth; He gives life and He causes death; and He has power over all things.
اُردو
آسمانوں اور زمین کی بادشاہت اُسی کی ہے۔ وہ زندہ کرتا ہے اور مارتا ہے اور وہ ہر چیز پر جسے وہ چاہے دائمی قدرت رکھتا ہے۔

[57:4]   
English
He is the First and the Last, and the Manifest and the Hidden, and He knows all things full well.
اُردو
وہی اوّل اور وہی آخر، وہی ظاہر اور وہی باطن ہے اور وہ ہر چیز کا دائمی علم رکھتا ہے۔

[57:5]   
English
He it is Who created the heavens and the earth in six periods, then He settled Himself on the Throne. He knows what enters the earth and what comes out of it, and what comes down from heaven and what goes up into it. And He is with you wheresoever you may be. And Allah sees all that you do.
اُردو
وہی ہے جس نے آسمانوں اور زمین کو چھ زمانوں میں پیدا کیا۔ پھر اس نے عرش پر قرار پکڑا۔ وہ جانتا ہے جو زمین میں داخل ہوتا ہے اور جو اس میں سے نکلتا ہے اور جو آسمان سے اُترتا ہے اور جو اس میں چڑھ جاتا ہے۔ اور وہ تمہارے ساتھ ہوتا ہے جہاں کہیں بھی تم ہو۔ اور جو تم کرتے ہو اللہ اس پر ہمیشہ گہری نظر رکھنے والا ہے۔

[57:6]   
English
His is the kingdom of the heavens and the earth; and to Allah are all affairs referred.
اُردو
اسی کی بادشاہت ہے آسمانوں اور زمین کی اور اللہ کی طرف ہی تمام امور لوٹائے جاتے ہیں۔

[57:7]   
English
He causes the night to pass into the day and causes the day to pass into the night; and He knows full well all that is in the breasts.
اُردو
وہ رات کو دن میں داخل کرتا ہے اور دن کو رات میں داخل کرتا ہے۔ اور وہ سینوں کی باتوں کا بھی ہمیشہ علم رکھتا ہے۔

[57:8]   
English
Believe in Allah and His Messenger, and spend in the way of Allah out of that to which He has made you heirs. And those of you who believe and spend will have a great reward.
اُردو
اللہ اور اس کے رسول پر ایمان لے آؤ اور خرچ کرو اس میں سے جس میں اس نے تمہیں جانشین بنایا۔ پس تم میں سے وہ لوگ جو ایمان لے آئے اور (اللہ کی راہ میں) خرچ کیا ان کے لئے بہت بڑا اجر ہے۔

[57:9]   
English
Why is it that you believe not in Allah, while the Messenger calls you to believe in your Lord, and He has already taken a covenant from you, if indeed you are believers?
اُردو
اور تمہیں کیا ہوگیا ہے کہ تم اللہ پر ایمان نہیں لاتے؟ اور رسول تمہیں بلا رہا ہے کہ تم اپنے ربّ پر ایمان لے آؤ جبکہ (اے بنی آدم!) وہ تم سے میثاق لے چکا ہے۔ (بہتر ہوتا) اگر تم ایمان لانے والے ہوتے۔

[57:10]   
English
He it is Who sends down clear Signs to His servant, that He may bring you out of every kind of darkness into the light. And verily, Allah is Compassionate and Merciful to you.
اُردو
وہی ہے جو اپنے بندے پر روشن آیات اُتارتا ہے تاکہ وہ تمہیں اندھیروں سے نور کی طرف نکال لے جائے اور یقیناً اللہ تم پر بہت مہربان (اور) بار بار رحم کرنے والا ہے ۔