بِسۡمِ اللّٰہِ الرَّحۡمٰنِ الرَّحِیۡمِِ

Al Islam

The Official Website of the Ahmadiyya Muslim Community
Muslims who believe in the Messiah,
Hazrat Mirza Ghulam Ahmad Qadiani(as)Muslims who believe in the Messiah, Hazrat Mirza Ghulam Ahmad Qadiani (as), Love for All, Hatred for None.

CHAPTER 95

At-Tin

(Revealed before Hijrah)

General Remarks

This is an early Meccan Surah. That is the view of ‘Abdullah bin ‘Abbas and Ibn Zubair. Nöldeke places it after chapter 85.

In the preceding Surah arguments based on reason and common sense were given in support of the claim that the Holy Prophet’s future would be very glorious as he possessed all those qualities which are necessary for making a success of one’s mission. In the present Surahexamples of some Divine Messengers have been cited to show that as the Holy Prophet’s circumstances resembled the circumstances of these Messengers, therefore, like them he too will achieve success. In chapters 89-94 the Holy Prophet’s Migration to Medina and his subsequent success were hinted at in one form or another—in some by implication, in others by oblique references, and in yet others in clear words. In the Surah under comment it is hinted that the former Prophets also had to leave their homes for the sake of their missions.

95. التین

یہ سورت مکی ہے اور بسم اللہ سمیت اس کی نو آیات ہیں۔

 سورۃ الانشراح کے بعد سورۃ التین آتی ہے جو دراصل اس بات کی تشریح ہے کہ فَاِنَّ مَعَ الْعُسْرِ یُسْرًا o اِنَّ مَعَ الْعُسْرِ یُسْرًا

 اس میں ایک لامتناہی ارتقاء کی خبر دی گئی ہے۔ اس میں تِیْن اور زَیتُون کو گواہ ٹھہرایا گیا یعنی آدم اور نوح علیہما الصلوٰۃ والسلام کو اور طُوْرِ سِینِین یعنی حضرت موسیٰ علیہ الصلوٰۃوالسلام کے اُس پہاڑ کو جس پر اللہ تعالیٰ کی تجلی ہوئی اور پھر اس بَلَدِ اَمین کو جو آنحضرت صلی اللہ علیہ و سلم کی آماجگاہ تھا۔ اس تدریجی روحانی ترقی کے ساتھ یہ اعلان فرمادیا کہ اسی طرح ہم نے انسان کو ادنیٰ حالتوں سے ترقی دیتے ہوئے انسان کی آخری ارتقائی منزلوں تک پہنچایا ہے۔ لیکن جو بدنصیب اس سے استفادہ نہ کرے اسے ہم نچلے درجہ کی طرف لَوٹنے والوں میں سب سے نیچے لَوٹادیا کرتے ہیں۔ گویا ایک لامتناہی ترقی ٔ معکوس کا ذکر ہے۔ لیکن وہ جو ایمان لائیں اور نیک اعمال بجا لائیں اُن کی روحانی ترقیات لامحدود ہوں گی۔ پس جو اس کے بعد بھی دین کے معاملہ میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو جھٹلائے تو اللہ تعالیٰ اس کے معاملہ میں سب سے بہتر فیصلہ کرنے والا ہے۔


[95:1]   
English
In the name of Allah, the Gracious, the Merciful.
اُردو
اللہ کے نام کے ساتھ جو بے انتہا رحم کرنے والا، بِن مانگے دینے والا (اور) بار بار رحم کرنے والا ہے۔

[95:2]   
English
By the Fig and the Olive,
اُردو
قَسم ہے انجیر کی اور زیتون کی۔

[95:3]   
English
And by Mount Sinai,
اُردو
اور طورِ سینین کی۔

[95:4]   
English
And by this Town of Security,
اُردو
اور اس امن والے شہر کی۔

[95:5]   
English
Surely, We have created man in the best make;
اُردو
یقیناً ہم نے انسان کو بہترین ارتقائی حالت میں پیدا کیا۔

[95:6]   
English
Then, if he works iniquity, We reject him as the lowest of the low,
اُردو
پھر ہم نے اُسے نچلے درجے کی طرف لَوٹنے والوں میں سب سے نیچے لَوٹا دیا۔

[95:7]   
English
Except those who believe and do good works; so for them is an unending reward.
اُردو
سوائے اُن کے جو ایمان لائے اور نیک اعمال بجا لائے۔ پس اُن کے لئے غیرمنقطع اجر ہے۔

[95:8]   
English
Then what is there to give the lie to thee after this with regard to the Judgment?
اُردو
پس اس کے بعد وہ کیا ہے جو تجھے دین کے معاملہ میں جھٹلائے ؟

[95:9]   
English
Is not Allah the Best of judges?
اُردو
کیا اللہ سب فیصلہ کرنے والوں میں سے سب سے زیادہ اچھا فیصلہ کرنے والا نہیں؟