In the Name of Allah, The Most Gracious, Ever Merciful.

Love for All, Hatred for None.

Al Islam Home Page > Urdu Home Page > Al Islam Urdu Library
اردو » الاسلام اردو لائبریری » کتبِ سلسلہ » اختلافی مسائل اور اعتراضات کے جواب » PDF ڈاؤن لوڈ کریں PDF ڈاؤن لوڈ کریں

احمدیہ مسئلہ قومی اسمبلی میں

اللہ وسایا کی کتاب "پارلیمنٹ میں قادیانی شکست" پر تبصرہ (مجیب الرحمن ، ایڈوکیٹ)
+ فہرست مضامین

قطع وبرید اور تحریف کا شاہکار

زیرِ نظر کتاب کی اشاعت اوّل جولائی ۲۰۰۰ء ظاہر کی گئی ہے مگر اللہ وسایا صاحب کی طرف سے رقم کردہ دیباچہ کے آخر میں اس کتاب کو ’’جدید اور خوبصورت ایڈیشن‘‘ قرار دیا گیا ہے۔ جس سے ظاہرہوتا ہے کہ یہ کتاب کی اشاعتِ اوّل نہیں ہے۔امر واقع یہی ہے کہ اس سے پہلے۱۹۹۴ ء میں اللہ وسایا صاحب کی طرف سے ایک کتاب ’’قومی اسمبلی میں قادیانی مقدمہ ۱۳ روزہ کارروائی‘‘ کے نام سے شائع ہو چکی ہے۔ اس وقت اﷲ وسایا صاحب نے جو مقدمہ تحریر کیا اس میںیہ لکھا:۔

’’اس وقت اسمبلی کے اراکین مفکر الاسلام مولانا مفتی محمود ، شیر اسلام مولانا غلام غوث ہزاروی‘ شیخ الحدیث حضرت مولانا عبدالحق اور دوسرے اکابر سے اسمبلی کی کارروائی کے متعلق زبانی اور تحریری جو معلومات حاصل ہوتی رہیں۔ ممبران اسمبلی سے سوالات و جوابات کی تفصیل قلمبند ہوتی رہی۔ مولانا محمد شریف جالندھری اور مولانا محمد حیات فاتح قادیان کی یادداشتوں سمیت جو کچھ بن پڑا حاضر خدمت ہے۔‘‘

گویا اس بات کے تو اللہ وسایا صاحب خود اقبالی ہیں کہ قومی اسمبلی کی تیرہ دن کی جو مبینہ کارروائی ا نہوں نے شائع کی تھی اسے اسمبلی کے ریکارڈ سے مرتب نہیں کیا تھا۔ بلکہ یہ بھان متی کا کنبہ انہوں نے زبانی اور تحریری معلومات اور مختلف اراکین سے حاصل کردہ یادداشتوں سے جوڑا تھا۔ حالانکہ اسمبلی کے قواعد کی رو سے موصوف کے اکابرین اللہ وسایا صاحب کو یہ معلومات مہیا کرنے کے مجاز ہی نہیں تھے۔ لہذا اللہ وسایا صاحب نے یا تو ان مرحوم اکابرین پر قواعد کی خلاف ورزی کا داغ لگایا ،یا خود جھوٹ کے مرتکب ہوئے ۔

۱۹۹۴ ء کی اشاعت کے مقدمہ میں اﷲوسایا صاحب نے مزیدلکھا:

’’میں یہ تو عرض کرنے کی پوزیشن میں تو نہیں کہ تحریک ختم نبوت 74کی یہ دوسری جلد قومی اسمبلی کی مکمل کارروائی پر مشتمل ہے ‘تاہم اگر کسی دن قدرت کو منظور ہوااور یہ کارروائی حکومت نے شائع کر دی تو انشاء اﷲالعزیز ہمیں اپنی دیانت پر اتنا اعتماد ہے کہ آپ کو سوائے تفصیل اور اجمال کے اور کوئی فرق نظر نہیں آئیگا۔‘‘

یہ ان کا دوسرا 5 اقرار تھا کہ کارروائی مکمل نہیں بلکہ بقول انکے صرف ’’اجمال‘‘ ہے ۔ حالانکہ در اصل جسے وہ اجمال قرار دے رہے تھے وہ اجمال نہیں قطع و برید اور تحریف کا شاہکار تھا۔

اب اسی کارروائی کو، جسے’’ اجمال‘‘ کے پردے میں شائع کیا گیا تھا بڑی ڈھٹائی سے’’ مکمل روداد‘‘کے نام سے شائع کر دیا گیا ہے۔چنانچہ زیر نظر کتاب میں اللہ وسایا کا یہ دعویٰ ہے کہ:

’’آج سے سالہا سال پہلے جنوبی افریقہ میں قادیانیوں کے بارہ میں ایک کیس تھا۔ اس کیس کی پیروی کے لئے رابطہ عالم اسلامی مکہ مکرمہ نے صدر پاکستان جناب محمد ضیاء الحق صاحب مرحوم سے وفد بھجوانے کی درخواست کی۔ پاکستانی حکومت نے مولانا تقی عثمانی‘ جناب محمد افضل چیمہ‘ سید ریاض الحسن گیلانی‘ مولانا مفتی زین العابدین ‘ جناب پروفیسر غازی محمود احمد کو افریقہ بھجوا دیا۔ عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت کی طرف سے حضرت مولانا محمد یوسف لدھیانوی شہید ختم نبوت‘ حضرت مولانا عبدالرحیم اشعر اور عبدالرحمن یعقوب باوا کیس کی پیروی کیلئے افریقہ گئے۔ قومی اسمبلی میں قادیانی اور لاہوری مرزائیوں پر جو جرح ہوئی تھی‘ جناب جنرل ضیاء الحق صاحب نے اپنے خصوصی آرڈر سے پاکستانی وفد کو اس کی’’مکمل کاپی ‘‘ فراہم کر دی۔ حضرت مولانا مفتی محمود مرحوم‘ حضرت مولانا غلام غوث ہزاروی مرحوم‘ مولانا عبدالحق صاحب مرحوم کی یادداشتوں اور ان کو بحیثیت ایک ممبر قومی اسمبلی جو کارروائی کی کاپیاں ملتی تھیں اس مواد سے زیر نظر کتاب کو جنوبی افریقہ بھیجی جانے والی اصل کارروائی کے ساتھ ملا کر کتاب کو فائنل کر دیا گیا ہے۔‘‘

گویا اب بھی موصوف واضح طور پر یہ نہیں کہہ رہے کہ یہ اصل کارروائی کا مکمل ریکارڈ ہے۔ بلکہ ان کا کہنا یہ ہے کہ ’’یادداشتوں کو‘‘ ضیاء الحق صاحب کی فراہم کردہ ’’مکمل کاپی‘‘ اورجنوبی افریقہ بھیجی جانے والی ’’اصل کارروائی کے ساتھ ملا کر کتاب کو فائنل کر دیا گیا ہے‘‘۔ مگر یہ بات بھی جھوٹ سے خالی نہیں۔

جنوبی افریقہ کی سپریم کورٹ میں تین مقدمات زیر سماعت آئے جن کی تفصیل یہ ہے۔

۱۔ مقدمہ نمبر: 10058/82

عنوان: اسمعیل پیک بنام مسلم جوڈیشل کونسل ۔

عدالت: سپریم کورٹ جنوبی افریقہ

Cape of Good Hope

پراونشل ڈویژن

۲۔ مقدمہ نمبر: 1438/86

عنوان: محمد عباس جسیم بنام شیخ ناظم محمد وغیرہ

عدالت: سپریم کورٹ جنوبی افریقہ

Cape of Good Hope

پراونشل ڈویژن

۳۔ مقدمہ نمبر: 201/92

عنوان: شیخ ناظم محمدوغیرہ بنام محمد عباس جسیم

عدالت: سپریم کورٹ جنوبی افریقہ اپیل ڈویژن

اللہ وسایا صاحب کا کہنا یہ ہے کہ آج سے سالہا سال پہلے جنرل ضیاء الحق نے اپنے خصوصی آرڈر سے پاکستانی وفد کو اس کارروائی کی مکمل کاپی فراہم کر دی۔ جناب اللہ وسایا نہ تو پاکستانی وفد میں شریک تھے اورنہ ہی ان علماء میں ان کا نام دکھائی دیتا ہے جو عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت کی طرف سے جنوبی افریقہ گئے اور نہ ہی وہ یہ بتاتے ہیں کہ وفد کے کس رکن سے انہوں نے جنوبی افریقہ بھیجی جانے والی کارروائی حاصل کی۔

جنوبی افریقہ والے مقدمات 1994 ء سے بہت پہلے سے تعلق رکھتے ہیں اور پاکستانی وفد بہت پہلے جنوبی افریقہ جا چکا تھا لہذا اگر جنوبی افریقہ والے مقدمہ کی پیروی کے دوران کارروائی کی نقل حاصل ہو چکی تھی تو اللہ وسایا صاحب نے اس وقت یہ ذکر کیوں نہ کیا؟اس وقت’’ مکمل ‘‘روداد 5 دستیاب تھی تو ’’اجمال ‘‘کا نقاب اوڑھنے کی کیا ضرورت

تھی ؟اور ضیاء الحق صاحب نے کس اختیار کے تحت چپکے چپکے اسمبلی کی کارروائی ان کے حوالہ کر دی؟ اور کی بھی یا نہیں اس کی سند کیا ہے؟

وزیر قانون کا ریزولیوشن اور حزب اختلاف کی تحریک ۳۰ جون ۱۹۷۴ ء کو پیش کئے گئے تھے۔ اﷲ وسایا صاحب نے کارروائی کا آغاز’’ ۵؍اگست ۱۹۷۴ء کی کارروائی ‘‘ سے کیا ہے۔ ۵؍ اگست سے تو جر ح کا آغاز ہوا ۔ ۳۰؍ جون اور ۵؍ اگست کے درمیانی عرصہ کی کارروائی بھی غائب ہے ۔ وہ بیان جس پر جرح کی گئی وہ بھی غائب ہے۔ الغرض یہ بات تو واضح ہے کہ اﷲ وسایا کی شائع کردہ کتاب قومی اسمبلی کی خصوصی کمیٹی کی’’ مکمل کارروائی‘‘ ہرگز نہیں ۔ اسے مکمل کارروائی قرار دینا جھوٹ اور تلبیس کے سوا کچھ نہیں۔

صفحہ نمبر: 2 (کل صفحات: 14)