In the Name of Allah, The Most Gracious, Ever Merciful.

Love for All, Hatred for None.

Al Islam Home Page > Urdu Home Page > Al Islam Urdu Library
اردو » الاسلام اردو لائبریری » تبلیغ ، دعوت الی اللہ، نومبایعین » تبلیغی حوالے، فولڈرز اور پمفلٹ » PDF ڈاؤن لوڈ کریں PDF ڈاؤن لوڈ کریں

فرقہ ناجیہ

آنحضرت ﷺ نے اپنے صحابہؓ کو یہ خبر دی کہ ایک وقت میں میری امت 73 فرقوں میں بٹ جائے گی ۔ اور ان میں سے ایک فرقہ جنتی ہوگا۔ تو

صحابہؓ نے پوچھا۔ یا رسول اللہ! ﷺ اس ناجی فرقہ کی علامت کیا ہوگی؟ تو آپ ﷺ نے دو علامتیں بیان فرمائیں۔

(۱) الجماعۃ وہ ایک منظم جماعت ہوگی

(۲) ما انا علیہ و اصحابی وہ میرے اور میرے صحابہؓ کے نقش قدم پر چلنے والا ہوگا

آج بلاشبہ امت مسلمہ 73 فرقوں میں بٹ چکی ہے۔ مگر وہ کون سا فرقہ ہے جو نجات یافتہ ہے؟ تاکہ ہر مسلمان اس سے وابستہ ہوکر دنیا اور آخرت میں

سرخرو ہو۔

عالمگیر جماعت

آنحضرت ﷺ کی طرف منسوب ہونے والے فرقوں میں سے ایک صرف جماعت احمدیہ ہے جو عالمگیر جماعت ہے۔ اس کی تعداد 15 کروڑ کے لگ بھگ

ہے ۔ 193 سے زیادہ ملکوں میں پھیل چکی ہے مگر ایک امام کے ہاتھ پر اکٹھی ہے اور تنظیم اور اتحاد میں بے مثال ہے۔ یہی وہ جماعت ہے جو

آنحضرت ﷺ اور آپ کے صحابہؓ کے نقش قدم پر چل کر دین کی خاطر حیرت انگیز قربانیاں پیش کررہی ہے جس کا اعتراف مسلمان فرقوں کے لیڈروں

اور غیر مسلموں کو بھی ہے۔

حکیم برہم صاحب ایڈیٹر مشرق گورکھپور

ہندوستان میں صداقت اور اسلامی سپرٹ صرف اس لئے باقی ہے کہ یہاں روحانی پیشواؤں کے تصرفات باطنی اپنا کام برابر کررہے ہیں اور کچھ عالم بھی

اس شان کے ہیں جو عبدالدرہم نہیں ہیں اور سچ پوچھو تو اس وقت یہ کام جناب مرزا غلام احمد صاحب مرحوم کے حلقہ بگوش اسی طرح انجام دے رہے

ہیں جس طرح قرون اولیٰ کے مسلمان سر انجام دیا کرتے تھے ۔ (مشرق 24 جنوری 1929ء)

یہی اخبار مزید لکھتا ہے:

اس وقت ہندوستان میں جتنے فرقے مسلمانوں میں ہیں سب کسی نہ کسی وجہ سے انگریزی یا ہندوؤں یا دوسری قوموں سے مرعوب ہورہے ہیں ۔ ایک

احمدی جماعت ہے جو قرون اولیٰ کے مسلمانوں کی طرح کسی فرد یا جمعیت سے مرعوب نہیں ہے اور خاص اسلامی کام سر انجام دے رہی ہے۔ (مشرق

23ستمبر1927ء)

سکھ سکالر سردار شمشیر سنگھ صاحب

یہ ایک تسلیم شدہ حقیقت ہے کہ احمدی مسلمانوں نے اپنے دین اسلام کی تبلیغ کے لئے عملی صورت میں جتنی سرتوڑ کوشش کی ہے وہ شاید ہی عرب کے

خلفاء (راشدین) کے بعد کسی اور اسلامی جماعت نے کی ہو۔ (ماہنامہ پنجابی جیون پریتی پٹیالہ مارچ 1963ء)

صحابہؓ رسول کی راہ

اب تک اس جماعت کے سو سے زائد افراد کو دین کے نام پر دنیا کے مختلف خطوں میں شہید کیا جاچکا ہے۔ 1984ء سے کلمہ طیبہ مٹانے کی تحریک

میں اس جماعت کو صحابہ کی طرح قربانیاں دینے کی توفیق ملی۔ ربوہ میں قریباً 50ہزار احمدی بستے ہیں ۔ اور ان تمام پر کلمہ پڑھنے کے جرم میں مقدمہ

قائم کیا گیا ہے۔ (نوائے وقت 21دسمبر1989ء)

اصغر علی گھرال ایڈووکیٹ ہائی کورٹ

اسلام کی ڈیڑھ ہزار سالہ تاریخ کے مختلف ادوار میں یہ الزام تو لگتا رہا کہ مسلمانوں نے زبردستی کافروں کو کلمہ طیبہ پڑھوایا۔ البتہ پڑھنے والوں کو بنوک

شمشیر اس سے باز رکھنے کی کوئی مثال پہلے نہیں ملتی ۔ (اسلام یا ملاازم صفحہ 146)

حسین شاہ صاحب ایڈووکیٹ

ایک وہ زمانہ تھا جب مسلمان کلمہ طیبہ کی تبلیغ اور صوم صلوٰۃ کے قیام کے لئے دنیا کے کونے کونے میں پھیل گئے اور ایک دن یہ ہے کہ اگر کوئی

قادیانی صدق دل سے بھی کلمہ طیبہ پڑھنا چاہے تو نہیں پڑھ سکتا کیونکہ اس کے لئے کلمہ طیبہ پڑھنے پر پابندی ہے بلکہ ایساکرناتعزیری جرم بھی ہے۔

(آمریت کے سائے ، صفحہ 384)

قربانیوں کی کہکشاں

اپریل 1984 ؁ء سے لے کر مارچ 2011 ؁ء تک پاکستان میں شہید کئے جانے والے احمدی: 205

اپریل 1984 ؁ء سے لے کر دسمبر 2009 ؁ء تک :

جن پر قاتلانہ حملے کئے گئے 120

احمدیوں کی قبریں اکھیڑنے کے واقعات 28

عام قبرستانوں میں تدفین میں رکاوٹ ڈالنے کے واقعات 47

کلمہ طیبہ لکھنے اور بیج لگانے پر مقدمات 764

آذان دینے پر مقدمات 38

تبلیغ کرنے پر مقدمات 719

مسلمان ظاہر کرنے پر مقدمات 434

اسلامی شعار استعمال کرنے پر مقدمات 161

صدسالہ جوبلی 1989منانے پر مقدمات 27

صدسالہ جوبلی سورج چاند گرہن 1994 ؁ء 50

ایک حرف ناصحانہ تقسیم کرنے پر مقدمات 27

مباھلہ کا اعلان تقسیم کرنے پر مقدمات 148

قرآن کریم کی بے حرمتی کے جھوٹے اور ناپاک الزام پر مقدمات 27

السلام علیکم کہنے ، قرآن کی تلاوت یا قرآن کی اشاعت اور اسلام کی تعلیمات پر عمل کرنے پر مقدمات: 938

نماز پڑھنے پر مقدمات 93

توہین رسالت کے جھوٹے اور ناپاک الزام پر مقدمات 295

جماعت احمدیہ کے اخبارات و رسائل پر مقدمات 103

ضبط شدہ کتب و رسائل کی تعداد 462

جتنے احمدیوں کو ان مقدمات میں سزا ہوئی 112

مسجدیں جو مکمل شہید کردی گئیں 22

مسجدیں جو جزوی طور پر گرادی گئیں 11

مسجدیں جو سیل کر دی گئیں 22

مسجدیں جن پر قبضہ کرلیا گیا 14

مسجدیں جن کی تعمیر میں رکاوٹ پیدا کی گئی 41

(ماخوز از دی پرسیکیوشن ویب سائٹ ThePersecution.org )

اپریل 1984 ؁ء سے لے کر 1992 ؁ء تک:

مسجدیں جن کی پیشانیوں سے کلمہ طیبہ مٹایا گیا 66

جتنے احمدیوں کو نوکری سے نکال دیا گیا 31

ربوہ میں احمدیوں کی جتنی زمین پر مخالفین نے قبضہ کرلیا 245کنال

(ماخوز از ہفت روزہ لاہور 28نومبر 1992ء)

تاج محمد بھٹی صاحب ناظم اعلیٰ تحفظ ختم نبوت کوئٹہ

نے عدالت میں یہ بیان دیا کہ یہ درست ہے کہ حضور ﷺ کے زمانے میں جو آدمی نماز پڑھتا تھا آذان دیتا تھا یا کلمہ پڑھتا تھا اس کے ساتھ مشرک یہی

سلوک کرتے تھے جو اب ہم احمدیوں سے کررہے ہیں۔ (بحوالہ جدید علم کلام کے عالمی تاثرات صفحہ 27)

جماعت احمدیہ کے شدید معاند مولوی ثناء اللہ امرتسری صاحب

نے جماعت احمدیہ کے ایک امام کولکھا کہ ہمارا حق ہے یا نہیں کہ ہم آپ پر (یعنی حضرت مسیح موعود علیہ السلام) کے مشن پر وہ سوالات کریں جو آپ

کے رسول کے رسالت کے منافی ہوں جس طرح عیسائی اور آریہ وغیرہ آنحضرت ﷺ کی رسالت پر اعتراض کرتے ہیں ۔ (اخبار اہلحدیث 24مارچ

1911ء صفحہ 2)

سچائی کھل گئی

ان بیانات سے یہ بات خوب روشن ہے کہ جماعت احمدیہ کا کردار صحابہؓ رسول اللہ ﷺ کے نقش قدم پر ہے اور اس کے مخالفین منفی کردار ادا کررہے

ہیں ۔ حق اسی طرح ظاہر ہوتا ہے۔ آج نجات امام مہدی اور مسیح موعود کی جماعت سے وابستہ ہے ۔ جلد آؤ اور اس میں شامل ہوجاؤ۔