Alislam Archived Sermons - 2017

In the Name of Allah, The Most Gracious, Ever Merciful.

Love for All, Hatred for None.

Browse Al Islam

Archives of 2017 Friday Sermons

Delivered by the Head of the Ahmadiyya Muslim Community

Televised via Satellite by MTA International

Browser by year

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
08-Dec-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Arabic (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)

Title: Seeking the pleasure of Allah
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English
Summary by Wakil Ala: English
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
01-Dec-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Arabic (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Pushto (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: The Excellent Exemplar - Muhammad
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English
Summary by Wakil Ala: English
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
24-Nov-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Arabic (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)German (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Proofs of Truth
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
17-Nov-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Arabic (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: The need for The Imam
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
10-Nov-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Arabic (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Pushto (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Truth and Justice
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | Powerpoint | PDF
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

اﷲ تعالیٰ نے مسلمانوں کو ہر معاملہ میں عدل قائم کرنے کی تلقین کی ہے لیکن آج عام مسلمانوں اور علماء میں یہ معیار عموما دیکھنے میں نہیں آتے مثلا گھریلو معاملات میں اپنے حقوق لینے کیلئے سچائی سے کام نہیں لیتے اور عدالت میں جھوٹ بولتے ہی ۔ اور اس طرح قومی سطح پر برائیاں پھیلتی چلی جاتی ہیں اور ہر طبقہ پر انصاف کے معیاروں کو روندا جاتا ہے۔ دعویٰ تو یہ ہے کہ ہم خیر امت ہیں لیکن وہ ایسی صورت میں کہ اگر وہ اﷲ تعالیٰ کی تعلیم پر عمل کریں۔ پس حالات جیسے بھی ہوں مومن کی گواہی ہمیشہ سچی اور اﷲ تعالیٰ کیلئے ہونی چاہئے ۔ اور یہ اسی وقت ہی ہوگا جب اسکا ایمان پکا ہوگا۔ یہ اسی وقت ہی ہوگا جب انسان ضرورت پڑنے پر اپنے یا اپنے والدین یا اپنے خاندان کے خلاف بھی گواہی دینے کیلئے تیار ہو۔ افسوس اس بات کا ہے بعض اوقات ہم میں بھی ایسی باتیں دیکھی جاتی ہی۔ مثلا قضا یا لین دین کے معاملات۔ بعض دین کا علم رکھنے والے بھی ایسی حرکتیں کر جاتے ہی ۔ لیکن ہمیں یاد رکھنا چاہئے کہ اﷲ تعالیٰ کو دھوکہ نہیں دیا جا سکتا۔ ہمارے تمام اعمال ہمارے سامنے رکھے جائیں گے۔ جس امام کو ہم نے مانا ہے انہوں نے تو انصاف کے اعلیٰ معیار کی مثال ہمارے لئے قائم کی ہے ۔ حضرت مسیح موعودؑ کے متعلق ذکر ہے کہ جوانی کے زمانہ میں ایک مقدمہ میں آپ نے اپنے والد کے خلاف گواہی دی باوجود اس کے کہ وکیل نے آپ کو بتایا تھا کہ اس طرح آپ کیس ہار جائیں گے۔ اور کیس ہارنے کے بعد آپ ایسی مسکراہٹ سے نکلے کہ گویا آپؑ نے کیس جیت لیا ہو۔ پس ایسی اعلیٰ مثال ہمیں اپنے سامنے رکھنی چاہئے۔ مثلا بعض لوگ کمائی کو چھپا کر ٹیکس سے بچنے کی کوشش کرتے ہیں۔ اور پکڑے جانے پر اپنی بھی اور جماعت کی بھی بے عزتی کا موجب بنتے ہیں۔ اگر ہم اپنے اعمال اﷲ تعالیٰ کی تعلیم کے مطابق رکھیں تو اﷲ تعالیٰ بہترین رزق عطا فرمانے والا ہے۔ اسی طرح بعض لوگ رشتہ کے معاملات میں جھوٹ بولتے ہیں۔ بعض لوگ طلاق کے بعد ایک دوسرے کے خلاف جھوٹ بول کر ان کو بدنام کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ یہ نہایت غلط باتیں ہیں۔ مذہبی اختلاف کی وجہ سے کسی سے زیادتی نہیں کرنی چاہئے۔ مومن کا کام تو یہ ہے کہ ہر معاملہ میں امن اور انصاف کی مثال کی قائم کرے۔ آجکل مسلمانوں کی نا انصافیوں کو مغرب میں بہت اچھالا جاتا ہے کہ کس طرح مسلمان ایک دوسرے پر ظلم کر رہے ہیں اور حکمران اپنے ہی لوگوں پر ظلم کر رہے ہیں۔ اور پھر یہاں مغربی ممالک میں آکر بھی بعض ظلم کرتے ہیں اور اس کا یہ جواز پیش کرتے ہیں کہ ان لوگوں نے ہمارے لوگوں پر ظلم کیا ہے۔ حالانکہ اس ظلم میں بھی اصل قصور وار مسلمان ہی تھے۔ پس اس طرح یہ دشمنیاں بڑھتی جائیں گی۔ یہ بات قرآن کریم کی اس تعلیم کے خلاف ہے کہ کسی قوم کی دشمنی تمہیں اس بات پر آمادہ نہ کرے کہ تم انصاف نہ کرو۔ لیکن افسوس کہ آجکل کے علماء نے مسلمانوں کو گمراہ کر دیا ہے۔ اور یہ ہماری ذمہ داری ہے کہ اسلام کی حقیقی تعلیم ان لوگوں کو بتائیں اور آنحضرت ﷺ کا حقیقی اسوہ بیان کریں۔ ایک مرتبہ رسول اﷲ ﷺ نے بعض مسلمانوں کو خبر رسانی کیلئے بھیجا۔ حرم کے علاقہ میں بعض لوگوں نے ان کو دیکھ لیا۔ اس ڈر سے کہ یہ لوگ دوسروں کو بتا دیں گے مسلمانوں نے دو لوگوں کے قتل کیا۔ مقتولین کے لوگ شکایت کرتے ہوئے آنحضرتﷺ کے پاس پہنچے۔ آنحضرتﷺ نے یہ نہیں فرمایا کہ تم لوگ بھی ظلم کرتے رہے ہوبلکہ کہا کہ ہاں تمہارے ساتھ زیادتی ہوئی ہے۔ اور دستور کے مطابق مقتولین کا خون بہا ادا کیا جائے گا۔ اور ان صحابہ سے خفا ہوئے۔ پس وہ معیار جن پر ہم نے چلنا ہے اور جس کو قائم کرنے کیلئے حضرت مسیح موعودؑ کو بھیجا گیا۔ اور ان معیار کو قائم کئے بغیر ہم حقیقی تبلیغ نہیں کرسکتے۔ ورنہ غیر ہمیں کہیں گے کہ پہلے اپنے معاملات تو درست کرو۔ اﷲ کرےکہ ہم اﷲ تعالیٰ کی تعلیم پر چلنے والے ہوں اور دوسروں کیلئے انصاف کا نمونہ بننے والے ہوں۔ حضور انور نے مکرم حسن محمد خان صاحب سابق نائب وکیل التبشیر کے نماز جنازہ کا اعلان فرمایا۔ موصوف موصی تھے اور تبلیغ کا بہت شوق رکھتے تھے۔ 1953 میں موصوف اسیر راہ مولیٰ بھی رہے۔ کینیڈا آنے کے بعد 2006 تک مدیر احمدیہ گزٹ بھی رہے ۔

Allah has enjoined Muslims to establish justice in every matter, but today we see that general Muslim population and scholars are not abiding by this teaching. For example, people tell lies in court [i.e. perjury] in domestic matters to get their rights. This is how corruption spreads in society and justice is overlooked. The claim of Muslims is that we are the best of nations [Khair-e-Ummat], but this can only be the case if we follow the teachings of Islam. As such, irrespective of the situation, the testimony of a believer must always be based on truth and should be given for the sake of Allah. And this can only happen when a person has true faith in God. And he is even willing to testify against himself, his parents and his family. It is sad to see that, from time to time, injustice even takes place amongst us in the matters of Qaza and business dealings. Even those who possess religious knowledge are sometimes guilty of this. We should remember that God cannot be deceived and all our actions will be put forward in front of us on the Day of Judgment. The Promised Messiah (as) has set high standards for us. It is mentioned that in his days of young age, the Promised Messiah (as) gave testimony against his own father in a court case. This was despite the fact that the lawyer had told him he would lose if he gave this testimony. After having lost the case, the Promised Messiah (as) left the court with such jubilance, as if he had won the case. We should keep such examples in front of us. Some people evade taxes by hiding their income and become a source of disgrace after getting caught. If we act according to the teachings of God, He is the best of Sustainers. Some people lie in matrimonial matters. Some people try to disgrace their ex-husband or ex-wife after divorce. Such matters are against the standards of justice expected of Ahmadi Muslims. We should never wrong anyone based on difference of religion. A true believer is he who upholds justice and peace in every matter. The injustices of Muslims are highlighted a lot in the western world; that is, how Muslims are killing each other, and how Muslim rulers are oppressing their own people. Some Muslims even commit atrocities when they come to western countries. They justify such wrongful actions by saying they are taking revenge from the western people, when in fact the real culprits are the Muslim leaders who are behind the oppression. For example, drones and bombings were done with the agreement of local Muslim leaders. This type of thinking only creates further enmities. And it is against the teaching of the Holy Quran, which states that the enmity of a nation should not incite you to be unjust towards them. Unfortunately, the Muslim clerics of today have misguided the Muslim masses. It is our responsibility to explain the true teachings of Islam and the true character of the Holy Prophet (saw). Once the Holy Prophet (saw) sent some Muslims to spy on the enemies during the time of war. In the sacred area around Kaaba, some people saw these Muslims. Afraid of being exposed, Muslims killed two of the people. People came to the Holy Prophet (saw) to complain about the murders. The Holy Prophet (saw) did not say that you have also been oppressing us [i.e these killings are justified]; rather, he said that you have been wronged, and gave blood-money as per the custom of that time. And the Holy Prophet (sa) severely reprimanded those Muslims. Such are the standards which we must follow. The Promised Messiah (as) was sent to re-establish such standards among Muslims. We cannot do true Tabligh without first establishing such standards of justice amongst us. Otherwise, the world would tell us to first look after our own affairs. May Allah enable us to follow his teachings and may he enable us to become a role-model for others in establishing justice! Huzoor Anwar (aa) announced the funeral prayer of Respected Hasan Muhammad Khan sahib, former Naib Wakilut-Tabshir in Pakistan, and a Waqf-e-Zindagi, who held many offices. He was a Musi and had immense passion for Tabligh. He was imprisoned in God’s way in 1953. After arrival in Canada, he served as Editor of Ahmadiyya Gazette until 2006.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
03-Nov-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)German (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Swahili (mp3)Turkish (mp3)

Title: Tehrik Jadid 84th year
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | Powerpoint | PDF
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

اﷲ تعالیٰ نے قرآن کریم میں وہ مضمون بھی بیان فرمایا ہے جس کو مالی قربانی کرنے والے اچھی طرح سمجھتے ہیں۔ سب سے بڑھ کر اس میں آنحضرتﷺ کے اصحاب شامل ہیں جنہوں نے بڑھ چڑھ کر مالی قربانی پیش کر کے تقویٰ اور اﷲ تعالیٰ کی رضا کی حصول کی کوشش کی۔ ایک صحابیؓ کے متعلق روایت ہے کہ انہوں نے رسول اﷲﷺ سے فرمایا کہ مسجد نبوی کے قریب میرا ایک باغ ہے جو مجھے سب سے زیادہ پیارا ہے۔ آج میں اسے اﷲ تعالیٰ کی راہ میں قربان کرتا ہوں۔ آج ان قربانیوں کو دنیا میں حضرت مسیح موعودؑ کی جماعت زندہ رکھے ہوئے ہے اور احمدی اپنے مالوں میں سے قربانیاں پیش کر رہے ہیں۔ یہ سب حضرت مسیح موعودؑ کی دی ہوئی تعلیم اور پرورش کا نتیجہ ہے۔ ایک موقع پر آپؑ نے فرمایا کہ دنیا میں انسان مال سے بہت زیادہ محبت کرتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ حقیقی اتقاء اور ایمان کے حصول کیلئے اﷲ تعالیٰ نے فرمایا کہ حقیقی نیکی کو ہرگز نہ پاؤ گے جب تک کہ تم عزیز ترین کو خرچ نہ کرو گے۔ پس احمدی اس روح کے ساتھ قربانی بھی کر رہے ہیں اور امید رکھتے ہیں کہ اﷲ تعالیٰ انہیں اس کا اجر بھی دیگا اور ان کے اموال میں برکت بھی دیگا۔آنحضرتﷺ نے ایک مرتبہ فرمایا کہ جس شخص نے پاک کمائی میں سے ایک کھجور بھی اﷲ تعالیٰ کی راہ میں دی اﷲ تعالیٰ اس کھجور کو دائیں ہاتھ سے قبول فرمائیگا اور اس کو بڑھاتا جائیگا یہاں تک کہ وہ پہاڑ جتنی ہوجائے گی اور ہم جانتے ہیں کہ یہ پرانے قصے نہیں ہیں بلکہ آج بھی احمدی ان چیزوں کو تجربہ کر رہے ہیں۔ کیمرون کے مبلغ لکھتے ہیں کہ ایک احمدی جو پچھلے سال بے روزگار تھے اور کافی غربت کا سامنا تھا۔ ایک دن مسجد میں انہوں نے چندہ تحریک جدید کے بارہ میں سنا تو ان کی جیب میں 10,000 فرانک تھے جو انہوں نے چندہ میں دے دیئے۔ کچھ دن بعد وہ واپس آئے اور بتایا کہ اﷲ تعالیٰ نے میرا چندہ قبول کرلیا ہے اور ایک پرائیویٹ کمپنی نے مجھے ایک لاکھ فرانک کی نوکری دی ہے جو میرے چندہ سے دس گنا زیادہ ہے۔ اس لئے اب میں اپنے پہلے ماہ کی تنخواہ بھی اس راہ میں پیش کرونگا۔ کینیڈا کے امیر جماعت لکھتے ہیں کہ لجنہ کی ایک ممبر جو پارٹ ٹائم کام کر رہی تھیں، ان کو چندہ تحریک جدید کیلئے ایک ماہ کی آدھی رقم پیش کر نے کیلئے توجہ دلائی گئی تو انہوں نے کچھ رقم کا وعدہ کیا لیکن اس خواہش کا اظہار بھی کیا کہ اگر فل ٹائم نوکری مل جائے تووہ پوری تنخواہ پیش کریں گی۔ اس کے فورا بعد ہی اﷲ تعالیٰ کے فضل سے ان کو فل ٹائم نوکری مل گئی جس کی تنخواہ پانچ ہزار ڈالر تھی۔ اﷲ تعالیٰ کے فضل سے یہ نظارے ہم جماعت کی ابتداء سے دیکھ رہے ہیں ۔ احمدیوں کی اکثریت اس بات کا ادراک رکھتی ہے کہ یہ زمانہ تکمیل اشاعت ہدایت کا زمانہ ہے جو مساجد کی تعمیر، لٹریچر، جامعات وغیرہ کے ذریعہ سے ہورہا ہے اور ان سب چیزوں کے لئے مالی قربانی کی ضرورت ہے۔ اسی طرح حضرت مسیح موعودؑ نے فرمایا ہے کہ مخلوق کی ہمدردی بھی جزو ایمان ہے۔ اس لحاظ سے سکول ہسپتال وغیرہ بھی مخلصین کی قربانیوں سے چلتے ہیں۔ اﷲ کرے کہ قیامت تک جماعت میں ایسے مخلصین پیدا ہوتے چلے جائیں جو اﷲ تعالیٰ کی راہ میں اپنے اموال پیش کرنے والے ہوں۔ حضور نے فرمایا کہ عام طریق کے مطابق میں آج تحریک جدید کے 84 ویں سال کا اعلان کرتا ہوں، 83 ویں سال کے کوائف درج ذیل ہیں: کل رقم 1 کروڑ 25 لاکھ 80 ہزار پاؤنڈ۔ یہ وصولی پچھلے سال سے 15 لاکھ پاؤنڈ زیادہ ہے۔ کل شاملین 16 لاکھ سے زیادہ ہے جو پچھلے سال کی نسبت دو لاکھ سے زیادہ ہے۔ اﷲ تعالیٰ تمام شاملین کے اموال میں بے انتہا برکت ڈالے۔ اس کے بعد حضور انور ایدہ اﷲ تعالیٰ نے برطانیہ کیلئے خصوصا اور عام طور پر پوری دنیا کے با اختیاراحمدیوں کو مسجد بیت الفتوح کی تحریک فرمائی۔ دو سال قبل مسجد بیت الفتوح کے کچھ حصہ میں آگ لگی تھی اور اب اس کی از سر نو تعمیر کیلئے تقریبا 11 ملین پاؤنڈ خرچ ہونگے جس میں سے آدھی رقم تو پہلے سے موجود ہے اور باقی رقم کیلئے جماعت میں عام تحریک کی جاتی ہے۔ اپنے وعدے تین سال میں پورے کریں لیکن کم از کم تیسرا حصہ پہلے سال ہی میں مکمل کریں۔ آخر پر حضور انور نے عادل حمید صاحب آف یمن کے نماز جنازہ غائب کا اعلان فرمایا ۔ موصوف نمازوں کے پابند تھے اور اپنی اولاد کو ہمیشہ دین کی اہمیت اور جماعت سے مضبوط تعلق کی طرف توجہ دلاتے تھے۔

Allah has explained in Holy Quran the condition of those who spend their wealth in the way of God. The companions of the Holy Prophet (saw) were forefront in this field as they presented numerous sacrifices to adopt Taqwa and to win the pleasure of Allah. It is narrated about one companion (ra) that he said to the Holy Prophet (saw) that I have a garden near the Prophet’s mosque which is dearest to me. Today I present it in the way of Allah. Today, the community of the Promised Messiah (as) is keeping these traditions alive. Ahmadis continue to give numerous sacrifices from their hard earned wealth. All of this is due to the teachings and training given by the Promised Messiah (as). He once said: Man dearly loves wealth in this world. This is why to attain real virtue and faith, Allah has said that you will never be able to attain true righteousness unless you spend what is most dear to you. So Ahmadis are presenting sacrifices with this spirit and hope to receive their reward from Allah. The Holy Prophet (saw) once said that whoever presents one date out of his legitimate earnings, Allah will accept this date with his right hand and will continue to increase it until it becomes like a mountain. We are well aware that these aren’t tales of past as Ahmadis are experiencing such blessings today as well. A Missionary of Cameroon writes that an Ahmadi was unemployed for a year and was living in poverty. One day he heard about Chanda Tahrik Jadid. He had 10,000 franc in his pocket which he paid towards Chanda. A few days later, he returned and said that God has accepted my sacrifice. A private company has employed me with a monthly salary of 100,000 franc, which is ten times more than my sacrifice. Therefore, I will present my salary of first month in this way. Amir Sahib Canada writes that a Lajna member, who was employed part-time, was encouraged to pay half of her income of one month towards Tahrik Jadid. She promised some amount, but expressed her desire to find a full-time employment and thus pay one full month salary. Thereafter, by the grace of God, she found a full time employment with a monthly salary of $5000. We have been witnessing these blessings of God since the inception of Jama’at. Most Ahmadis are well aware that this is the age of propagation of Islam which is being done through construction of mosques, literature, Jamia etc. Similarly, the Promised Messiah (as) has written that sympathy of mankind is also part of our faith. Therefore, schools, hospitals, clinics etc. are also operated through these sacrifices. May Allah grant such loyal servants to Jama’at until the Day of Judgment who continue to present enormous financial sacrifices! As per practice, today I am announcing the start of 84th year of Tahrik Jadid. The figures from the 83rd year are as follows: Total participation: Over 12.58 million pounds, an increase of over 1.5 million from last year. Total participants: Over 1.6 million, an increase of over 200,000 from last year. May Allah bless the wealth of all participants! Huzoor Anwar also announced a new Tahrik (plan) for reconstruction of Baitul Futuh Mosque. He advised all UK Ahmadis in particular and all able Ahmadis worldwide to participate in this Tahrik. This mosque caught fire 2 years ago and its reconstruction requires 11 million pounds, half of which is already present. For the remaining half, Ahmadis should present their sacrifices. You should fulfil the entirety of your promises within 3 years, but 1/3rd should be paid within the first year. Huzoor Anwar announced the funeral prayer of Aadil Hameed sahib of Yemen. He was regular in daily prayers and always enjoined his children about faith and having strong connection with Jama’at.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
27-Oct-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Arabic (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Pushto (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Vie with each other in good deeds
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu | Indonesian
Slide Deck: Powerpoint | Powerpoint | PDF
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے اپنی تحریرات میں اس حوالہ سے تفصیل سے بیان کیا ہے کہ حقیقی نیکی کیا ہے اور اس میں کس طرح ترقی کی جاسکتی ہے۔ آپ علیہ السلام نے فرمایا کہ نیکی ایک زینہ ہے خدا اور اسلام کی طرف چڑھنے کا۔ لیکن یاد رکھو کہ نیکی کیا چیز ہے۔ شیطان ہر راہ میں لوگوں کو بہکاتا ہے۔ مثلا فرمایا کہ تازہ روٹی کے ہوتے ہوئے فقیر کو بھوسہ کھانا دینا حقیقی نیکی کے خلاف بات ہے۔ پس حقیقی نیکی کیلئے ہر معاملہ میں باریکی اور توجہ نہایت ضروری ہے۔ اور یہ حقیقی نیکی کس طرح پیدا ہوتی ہے۔فرمایا حقیقی نیکی کیلئے ضروری ہے کہ خدا کے وجود پر ایمان ہو اور ایمان یہ ہو کہ اللہ تعالیٰ کی ہر چیز پر نظر ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام فرماتے ہیں: یہ کافی نہیں کہ انسان اتنی ہی بات پر خوش ہو جاوے کہ زنا نہیں کیا یا چوری نہیں کی۔ یہ تو کوئی بڑی بات نہیں۔ بلکہ جب تک کہ وہ بدیاں چھوڑ کر نیکیوں کو اختیار نہیں کرتا اس روحانی زندگی میں زندہ نہیں رہ سکتا۔ نیکیاں بطور غذا کے ہیں یعنی جس طرح غذا کے بغیر انسان زندہ نہیں رہ سکتا اسی طرح نیک اعمال کے بغیر انسان روحانی طور ر زندہ نہیں رہ سکتا۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نےفرمایا کہ حقیقی نیک وہ ہے جسکا ظاہر و باطن ایک جیسا ہو۔ فرمایا کہ نیکی کی اصل جڑ خدا تعالیٰ پر ایمان لانا ہے۔ جس قدر انسان کا ایمان کم ہو اسی قدر انسان کے نیک اعمال میں کمی پیدا ہوتی ہے۔ پس ہماری جماعت کا پہلا فرض یہ ہے کہ وہ اللہ تعالیٰ پر سچا ایمان حاصل کریں۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ یہ ہمارا ٹارگٹ ہونا چاہئے کہ اللہ تعالیٰ پر ایمان کو مضبوط کریں۔ تب ہی ہم نیک اعمال بجا لائیں گے اور تب ہی خیرِ بریہ میں شامل ہونے والے ہوں گے۔ اسی طرح حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے اس بات کو بھی کھول کر بتایا کہ نیک لوگ جائز چیزوں میں بھی اعتدال سے کام لیتے ہیں اور حد سے نہیں بڑھتے۔ ایسا ہرگز نہیں ہے کہ انسان اچھی چیزوں سے فائدہ نہ اٹھائے۔ اللہ تعالیٰ نے انبیاء کو بھی اچھی اور بہترین چیزوں کے استعمال سے منع نہیں کیا۔ ہاں وہ لوگ ان چیزوں میں منہمک نہیں ہوئے یعنی ان کا حقیقی مقصد بہرحال دین اور قربتِ الہی ہوتا ہے۔ پھر حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے نیکی کے متعلق فرمایا کہ یاد رکھو ہمدردی کا دائرہ میرے نزدیک بہت وسیع ہے۔ میں آجکل کے جاہلوں کی طرح یہ نہیں کہتا کہ تم اپنی ہمدردی کو صرف مسلمانوں سے ہی مخصوص کرو۔ میں کہتا ہوں کہ تم خدا تعالیٰ کی ساری مخلوق سے ہمدردی کرو۔ خواہ وہ ہندو ہو یا مسلمان ہو۔ میں کبھی ایسے لوگوں کی باتیں پسند نہیں کرتا جو ہمدردی کو اپنی ہی قوم سے مخصوص کرنا چاہتے ہوں۔ اللہ تعالیٰ ہمیں توفیق دے کہ نیکیوں کو اللہ تعالیٰ کی رضا کی خاطر کرنے والے ہوں ۔ حضورِ انور نے مندرجہ ذیل 3 اشخاص کے نمازِ جنازہ غائب کا بھی اعلان فرمایا۔ مکرم حامد مقصود صاحب مربی سلسلہ ۔مکرم علی سیدی صاحب سابق امیر جماعت تنزانیہ۔ مکرمہ نصرت بیگم صاحبہ ۔

The Promised Messiah (as) has explained in detail about true virtue and how one can progress in this way. He writes that virtuous actions are a means towards God and Islam. But you should remember what true virtue is. Satan attempts to misguide people from every path. For example, if a person has fresh food, giving old, rotten food to a beggar would be against true virtue according to the teachings of Holy Quran. To attain true virtue, one must be very careful in all matters. And to attain this true virtue, one must have faith in the being of God and that God watches over everything. Promised Messiah (as) says that true Taqwa is to discard even the smallest of immoral actions. However, Taqwa is not that one did not committed adultery or theft. True virtue is to serve mankind and demonstrate perfect devotion and loyalty in the way of God. Virtue cannot be achieved by just leaving immoral actions; it must be accompanied by righteous actions. The Promised Messiah (as) says that man shouldn’t become happy or content that he hasn’t committed adultery or hasn’t stolen anything. This isn’t something significant. Unless he acquires good actions after having left immoral actions, he cannot stay alive in the spiritual world. Good actions are like food. Just like man cannot stay alive without food, he cannot stay alive spiritually without virtuous actions. The Promised Messiah (as) says that a truly virtuous person is he whose inner condition matches his outward state. The root of virtue is faith in God. As man starts to decrease in faith, his good actions diminish as well. Therefore, the foremost duty of our Jama’at is to acquire true faith in Allah. Huzoor Anwar (aa) said that this should be our target that we strengthen our belief in God. Only then would we be able to do good actions and be considered among the best of people as mentioned in the Holy Quran. Promised Messiah (as) says that man can only stay away from immoral actions if he has faith in God. Then the second stage should be to look for ways followed by those who attained closeness to God, meaning Prophets and Saints. These ways can be learned by studying how God treated such people. The Promised Messiah (as) has also explained that even in use of things that are permissible, virtuous people adopt a moderate way and do not exceed bounds. It is not such that man should not benefit from good things. Allah has not even forbidden Prophets from using comfortable and good things. However, these people are not overtaken by such possessions meaning their true and primary purpose is always their faith and attaining closeness to God. The Promised Messiah (as) writes about true virtue: Remember, in my estimation the scope of sympathy is very wide. One should not exclude any group or individual. I do not say––like the ignorant people of this age––that you should limit your kindness to only Muslims. I say that you should have sympathy for all of God’s creation no matter who they are, whether a Hindu, or a Muslim, or something else. I never approve the words of such people who wish to limit sympathy only to their own people. May Allah enable us to carry out righteous actions for the sake of Allah’s pleasure! Huzoor Anwar (aa) announced the following three funeral prayers in absentia: Hamid Maqsood sahib (Murabbi Silsila), Ali Saidi Sahib (Former Ameer Tanzania) and Nusrat Begum Sahiba.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
20-Oct-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Kyrgyz (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: True Obedience to The Prophet (sa)
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | Powerpoint | PDF
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

حضرت مسیح موعودؑ نے فرمایا کہ اگر مسلمانوں کی ایمانی حالت ایسی خراب نہ ہوتی تو میرے آنے کی ضرورت ہی کیا تھی ۔ یہ لوگ سمجھتے ہیں کہ جب ہم لا الہ الاﷲ کہتے ہیں اور نمازیں پڑھتے ہیں اور روزے رکھتے ہیں تو ہم میں کس چیز کی کمی ہے۔ لیکن میں کہتا ہوں کہ ان کے اعمال اعمال صالحہ نہیں ہیں ورنہ کیوں ان کے پاک نتائج ظاہر نہیں ہوتے ۔ حضور انور نے فرمایا کہ آج ہم دیکھتے ہیں کہ سب سے زیادہ فساد مسلمانوں میں ہے اور آپس میں ایک دوسرے کی گردنیں کاٹ رہے ہیں۔ اور مذہب کا نام سیاست چمکانے کیلئے استعمال کر رہے ہیں۔ یہ یقینا قرآن کریم کی تعلیم کے خلاف ہے۔ حضرت عائشہ ؓ نے فرمایا کہ آنحضرت ﷺ کے اخلاق تو قرآن کریم کے مطابق تھے۔ پس ہمیں قرآن کریم پڑھنے کی ضرورت ہے اور ہمیں اپنا جائزہ لینا چاہئے کیونکہ یہ شرائط بیعت کا بھی حصہ ہے۔ حضرت مسیح موعودؑ کے آنے کا مقصد ہی یہ تھا کہ قرآن کریم اور آنحضرت ﷺ کی ذات کی حقیقی معرفت سے دنیا کو آگاہ کریں ۔ اور اب اس کے علاوہ مسلمانوں کے پاس کوئی راہ نہیں ۔ اپنی بقاء کیلئے اور اپنے ملکوں میں امن کیلئے ضروری ہے کہ اس زمانہ میں حقیقی اسلام کی تعلیم پر عمل کریں ۔ حضرت مسیح موعودؑ نے فرمایا کہ اس دنیا میں تفرقہ کا باعث حب دنیا ہی ہے ۔ اگر حقیقی طور پر مسلمان ہوتے تو آسانی سے سمجھ سکتے تھے کہ کون سے فرقہ کی تعلیم سب سے اعلیٰ ہے لیکن اب لوگوں نے حب اﷲ اور حب رسول کی بجائے حب دنیا کو مقدم کیا ہوا ہے ۔ حضور انور نے فرمایا کہ نہ صرف مسلمان ممالک ایک دوسرے سے لڑ رہے ہیں بلکہ غیروں کے ساتھ مل کر دوسرے مسلم ممالک کے خلاف تدابیر کرتے ہیں۔ گزشتہ دنوں امریکی صدر نے ایران کے خلاف جو بیان دیا ہے اس پر ساری دنیا اس بیان کے خلاف ہے۔ سوائے تین ممالک کے۔ ایک امریکہ خود، ایک اسرائیل اور ایک سعودی عرب۔ مسلمانوں کی یہ حالت حقیقت اسلام سے دور ہونے کے باعث ہے ۔ حضرت مسیح موعودؑ نے فرمایا کہ کوئی شخص حقیقی نیکی کو نہیں پاسکتا جب تک وہ رسول اﷲﷺ کی اتباع میں کھویا نہ جائےجیسا کہ اﷲتعالیٰ نے قرآن کریم میں فرمایا ہے ۔ حضرت مسیح موعودؑ نے فرمایا کہ اس زمانہ میں اس کی زندہ دلیل میں ہوں ۔ حضور انور نے فرمایا کہ جھوٹے الزام لگانے والوں کو سوچنا چاہئے کہ آپؑ کا دعویٰ ہے کہ یہ مقام مجھے آنحضرت ﷺ کی پیروی کے باعث ملا ہے ۔ پھر حضرت مسیح موعودؑ نے فرمایا کہ اﷲ تعالیٰ سے ملاقات کے واسطے ہمیں ایک وسیلہ کی ضرورت ہے ۔ اور یہ وسیلہ رسول اﷲﷺ ہیں۔ جو آپکو چھوڑتا ہے وہ کبھی بامراد نہ ہوگا۔ اگر تم چاہتے ہو کہ آنحضرت ﷺ سے وابستہ فیوض کو حاصل کرو تو ضروری ہے کہ ان کے غلام ہوجاؤ اور آپ کی راہ میں فنا ہوجاؤ۔ اﷲ تعالیٰ کو خوش کرنے کی راہ یہ ہے کہ رسول اﷲﷺ کی پیروی کی جائے ۔ اس اتباع کا نتیجہ یہ ہوگا کہ اﷲتعالیٰ تم سے محبت کریگا اور تمہارے گناہ بخش دیگا۔ اس زمانہ میں حضرت مسیح موعودؑ ہی ہیں جنہوں نے اسلام کا حقیقی دفاع کیا ۔ بہت سے غیر احمدی علماء نے بھی اس بات کا اعتراف کیا ۔ آپ نے اس زمانہ میں حضرت عیسیٰ ؑ کی وفات ثابت کر کےاسلام سے عیسائیوں کے مقابلوں کا دفاع کیا۔ آپ آنحضرت ﷺ کے حقیقی عاشق تھے جس کی وجہ سے اﷲتعالیٰ نے آپ سے محبت کی ، آپکو امتی نبی کا مقام بخشا اور آپؑ کی مقبولیت لوگوں میں پھیلائی جس کا ثبوت ہم آج بھی دیکھتے ہیں کہ دور دراز کے ممالک میں لوگ آپ پر ایمان لا رہے ہیں ۔ اﷲتعالیٰ ہمیں بھی آنحضرت ﷺ کی پیروی کرنے والا بنائے ۔ اور مسلمانوں کو بھی اس بات کی توفیق دے کہ وہ اس عاشق رسولﷺ کو ماننے والے بنیں۔ آمین

The Promised Messiah(as) has said that, if the condition of the faith of Muslims had not become so awful, there would have been no need for my coming. They [muslims] think that they are not missing anything since they already say the Kalima, offer the prayers and keep the fasts. However, let me tell you, their actions are not pious (Saliha) actions; otherwise, why would they not experience the spiritual rewards of their actions? Huzoor Anwar (aa) said that today we see Muslims engulfed in disorder and killing each other. They use religion for their political agendas. This is certainly against the teachings of the Holy Qur’an. Hazrat Aisha (ra) has said that the morals of the Holy Prophet (sa) were exactly the teachings of the Holy Qur’an. Therefore, we need to read and study the Holy Qur’an as this is also part of the conditions of Bai‘at. The purpose of the Promised Messiah’s (as) coming was to give a true understanding of the Holy Qur’an and the character of the Holy Prophet (saw) to this world. Now, this is the only way for Muslims. If they want to safeguard themselves and maintain peace in their countries, it is vital that they follow the teachings of true Islam in this age. The Promised Messiah (as) has said that mutual fighting exists among Muslims due to love of this world. If they were true Muslims, they would easily have understood which party among the Muslims put forth the best teachings. But people give precedence to this world over love of Allah and His Messenger (saw). Huzoor Anwar (aa) said that the condition of Muslims is such that, not only are they fighting each other, but are joining other nations to devise plans against each other. A few days ago, the American President gave a strict statement against Iran hinting at withdrawal from the deal. The whole world condemned this statement except three countries; USA, Israel and Saudi Arabia. Muslims are in this condition due to moving away from the essence of Islam. The Promised Messiah (as) has said that no one can achieve true righteousness without completely following the Holy Prophet (saw), as Allah has clearly stated in the Holy Qur’an. In this age, I am the living proof of this. Huzoor Anwar (aa) said that those who level false charges against the Promised Messiah (as) should ponder the fact that whatever he has achieved is because of his perfect obedience and subordination to the Holy Prophet (saw). The Promised Messiah (as) has said that in order to meet God Almighty, we require a means of approach. This source or means of approach is the Holy Prophet (saw). Whoever leaves him will never attain success. If you want to achieve the blessings associated with the Holy Prophet (sa), become his servant and lose yourself in his obedience. The way to please Allah is to follow the Holy Prophet (saw). As a result, He will love you and forgive your sins. In this age, it is the Promised Messiah (as) who truly defended the honor of Islam. Even various non-Ahmadi scholars have accepted this reality. He defended Muslims against the attacks of Christian missionaries by proving the death of Prophet Jesus (as). He was a true lover and devotee of the Holy Prophet (sa). As a result, Allah loved him, granted him the status of Umati Prophethood and granted him acceptance far and wide in this world, which we continue to witness to this day. May Allah also enable us to follow the example of the Holy Prophet (sa) and enable the Muslims to accept this true devotee of the Holy Prophet (saw).

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
13-Oct-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Kyrgyz (mp3)Malayalam (mp3)Pushto (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: True Concept of Khataman Nabiyyeen
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | Powerpoint | PDF
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

پاکستان میں کسی نہ کسی بہانہ سے وقتا فوقتا علماء اور سیاستدان جماعت کے خلاف ابال نکالتے رہتے ہیں اور وہ جماعت کے مسئلہ کو استعمال کر کے اپنی شہریت بڑھانے کی کوشش کرتے ہیں۔ جب بھی وہ مسائل میں گرفتار ہوں تو لوگوں کی ہمدردی حاصل کرنے کیلئے وہ احمدیوں کو برا بھلا کہنا شروع کر دیتے ہیں اور اس کیلئے ختمِ نبوت کو استعمال کرتے ہیں۔ یہ کام ان کے سیاسی مقاصد کیلئے ہوتا ہے اور اس سب کے دوران احمدی کچلے جاتے ہیں اور ظلم کا نشانہ بنتے ہیں۔ جہاں تک جماعت کا تعلق ہے نہ ہی ہم نے کبھی کسی غیر ملکی حکومت سے اور نہ پاکستان کی حکومت سے درخواست کی ہے کہ جماعت کے خلاف قوانین کو بدلا جائے۔ ہمیں کسی اسمبلی یا حکومت سے مسلمان ہونے کے سرٹیفیکیٹ کی ضرورت نہیں ہے۔ ہم مسلمان ہیں اور تمام ارکانِ اسلام پر ایمان رکھتے ہیں اور آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کو خاتم النبیین مانتے ہیں۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے صاف لکھا ہے کہ جو شخص ختم نبوت کو نہیں مانتا میں اسے بے دین اور اسلام سے خارج سمجھتا ہوں۔ پس یہ الزام کہ ہم ختم نبوت کو نہیں مانتے نہایت جھوٹا الزام ہے۔ پھر یہ الزام بھی لگایا جاتا ہے کہ احمدی تو قرآن کو بھی نہیں مانتے اور مرزا صاحب کے الہامات کو قرآن سے بڑھ کر مانتے ہیں۔ یہ حج نہیں کرتے اور ان کا قبلہ اور ہے۔ بہت سے عرب جب احمدی ہوتے ہیں تو وہ بتاتے ہیں کہ کس طرح یہ جھوٹ اور پروپیگنڈا جماعت کے خلاف کیا جاتا ہے۔ یہ کس طرح ممکن ہے کہ ہم قرآن کو نہ مانیں جب حضرت مسیح موعود علیہ السلام تمام بھلائی کی جڑ قرآن کو سمجھتے ہیں۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام کے الہام قرآن کریم کے خادم ہیں۔ آپکا ایک الہام یہ بھی ہے کہ اَلْخَیْرُ کُلُّهُ فِی الْقُرآن۔ اسی طرح فرمایا کہ جو لوگ قرآن کو عزت دیں گے وہ آسمان پر عزت پائیں گے۔ اگر ہم قرآن کے مخالف ہوتے تو کیوں پیسے خرچ کے کر 75 زبانوں میں تراجم کر کے انھیں شائع کرتے ہیں۔ وہ لوگ جو جماعت پر الزام لگاتے ہیں ان سے پوچھنا چاہئے کہ انھوں نے کیا خدمات کی ہیں۔ اسی طرح آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے خاتم النبیین ہونے کے متعلق حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے بارہا بیان فرمایا ہے۔ آپکا ایک الہام بھی ہے کہ : صَلِّ عَلٰی مُحَمَّد وَ آلِ مُحّمَّد سَیِّدِ وُلْدِ آدَم وَ خَاتَمِ الَّنبِیِّیْن یعنی محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اور آپکی آل پر درود بھیجو جو آدم کی اولاد کا سردار اور خاتم النبیین تھے۔ اسی طرح آپکا ایک الہام ہے کہ کل برکة من محمد صلی اللہ علیہ وسلم یعنی تمام برکات و فیوض حضرت محمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وسلم کے ہی باعث ہیں۔ پھر آپ نے اپنی کتاب تجلیاتِ الہیہ میں فرمایا کہ اگر میں آنحضرت صلی اللہ کی امت نہ ہوتا اور آپکی پیروی نہ کرتا تو بیشک میرے اعمال پہاڑ کے برابر ہوتے میں یہ مرتبہ ہرگز نہ پاتا کیونکہ اب بجز محمدی نبوت کے تمام نبوتیں بند ہیں۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام فرماتے ہیں:۔ ’’مجھ پر اور میری جماعت پر جو یہ الزام لگایا جاتا ہے کہ ہم رسول اللہ ﷺ کو خاتم النبییّن نہیں مانتے یہ ہم پر افترائے عظیم ہے۔ ہم جس قوّت ،یقین ، معرفت اور بصیرت سے آنحضرت ﷺ کو خاتم الانبیاء یقین کرتے ہیں اس کا لاکھواں حصہ بھی دوسرے لوگ نہیں مانتے اور ان کا ایسا ظرف بھی نہیں ہے۔ وہ اس حقیقت اور راز کو جو خاتم الانبیاء کی ختمِ نبوّت میں ہے سمجھتے ہی نہیں ہیں ، انہوں نے صرف باپ دادا سے ایک لفظ سنا ہوا ہے مگر اس کی حقیقت سے بے خبر ہیں۔ اسی طرح ختم نبوت اور اپنے مقام کے متعلق حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا کہ: جو لفظ مرسل یا رسول یا نبی کا میری نسبت آیا ہے۔ وہ اپنے حقیقی معنوں پر مستعمل نہیں ہے۔ اور اصل حقیقت جس کی میں علی رؤس الاشہاد گواہی دیتا ہوں یہی ہے جو ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم خاتم الانبیاء ہیں۔ اور آپ کے بعد کوئی نبی نہیں آئے گا نہ کوئی پرانا اور نہ کوئی نیا۔ ۔۔۔۔ غرض ہمارا مذہب یہی ہے کہ جو شخص حقیقی طور پر نبوت کا دعویٰ کرے اور آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے دامن فیوض سے اپنے تئیں الگ کرکے اور اس پاک سرچشمہ سے جدا ہوکر آپ ہی براہ راست نبی اللہ بننا چاہتاہے تو وہ ملحد بے دین ہے۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ پس یہ لوگ جو ہمیں کافر کہتے ہیں حقیقت میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی حدیث کے مدِ نظر یہ کفر انھیں پر لوٹتا ہے۔ پس ہمیں ان لوگوں سے ہمدردی کرتے ہوئے انھیں حقیقت سمجھانی چاہئے۔ اور یہ خوش آئین بات ہے کہ پاکستان کی اسمبلی میں جماعت کے خلاف تقریر کے بعد وہاں کے شرفاء نے اپنی آواز اٹھائی ہے اور ایک طبقہ ان نام نہاد علماء کے مقابل پر کھڑا ہو رہا ہے ۔ آج پاکستان میں احمدی ہی ہیں جو حب الوطن ہیں اور اس کے مطابق عمل کرتے ہیں۔ ہم مذہب کے نام پر سیاست کرنے والے نہیں ہیں۔ ہر احمدی کا فرض بنتا ہے کہ دعا کرتے رہیں کہ اس ملک کو جس کو پانے کیلئے احمدیوں نے بھی بہت قربانیاں کی ہیں اللہ تعالیٰ ہمیشہ سلامت رکھے۔ آمین۔

In Pakistan, from time to time, both politicians and religious scholars speak out against Jama’at in order to gain popularity in masses. Whenever facing any trouble or criticism, they use this issue to gain the sympathy of ordinary Muslims. For this purpose, they use the issue of Khatme Nabuwwat or finality of Prophethood. They do this for political gains, however, innocent Ahmadis are the ones who end up paying a heavy price for those propagandas. As far as Jama’at is concerned, we aren’t working with any foreign or Pakistan’s government to change their laws against us. We do not require a certificate from any government or National Assembly to be a Muslim. We are Muslims and believe in all pillars of faith and consider the Holy Prophet (saw) to be Khatam an-Nabiyyin. The Promised Messiah (as) has clearly written that whosoever doesn’t believe in Khatme-Nabuwwat, I consider him as a faithless person. Therefore, this is a false claim against us that we do not believe in finality of Prophethood or that we do not respect the Holy Quran and consider the revelations of the Promised Messiah (as) to be higher than the Holy Quran, or that we do not perform Hajj, or that our Qibla in prayer is different. Many Arab Ahmadis tell me how they heard such propaganda from Muslim scholars before their conversion to Ahmadiyyat. How can we not believe in the Holy Quran when the Promised Messiah (as) considered it the root of all goodness. His own revelations are subservient to the Holy Quran. One of his revelations points towards the fact that all goodness lies in the Holy Quran. Then he said that whosoever honors the Holy Quran in this life will be honored by Allah in the Afterlife. If we did not honor the Holy Quran, why would we spend so much money in propagation and translation of the Holy Quran in 75 languages? The scholars speaking against Jama’at should tell us what services have they provided for the service of Holy Quran. The Promised Messiah (as) has written extensively about the finality of Prophethood of the Holy Prophet (sa). One of his revelations from Allah is ‘send blessings upon Muhammad (saw) and his followers, who was the leader of children of Adam and Seal of the Prophets.’ Another revelation of his is ‘all blessings are due to the Holy Prophet (saw)’. Then the Promised Messiah (as) has written that if I was not from the followers of the Holy Prophet (saw) and did not follow his example, I could never have achieved this status even if my actions were as high as mountains. The reason being that all prophethoods have now come to end except the Prophethood of the Holy Prophet (saw). The Promised Messiah (as) has said: The allegation charged against me and my followers that we do not believe in the Holy Prophet (saw), as Khataman Nabiyyin, is a scandalous lie. Those, who blame us, do not positively believe in him with even the millionth part of the zeal, conviction, insight and dead certainty with which we believe him to be the Khatamal Anbiya. They do not comprehend the deeper insights of the Holy Prophet (saw) being Khatamal Anbiya and have only heard this term from their forefathers. Regarding the finality of Prophethood of the Holy Prophet (saw) and his own status, the Promised Messiah (as) says: The word Mursal or Rasool or Nabi which has been used for me doesn’t apply in its real meaning. The reality is that the Holy Prophet Muhammad (saw) is the Khatamal Anbiya after whom no new or old Prophet would come. Our view is that a person who claims to be a Prophet in its actual sense (Law-Bearing Prophethood) or separates himself from the blessings of the Holy Prophet (saw) or seeks to be a Prophet having separated himself from this pure fountain (Prophet Muhammad (saw)), he is a nonbeliever and without faith. Huzoor Anwar (aa) said that according to the Hadith of the Holy Prophet (saw), these people who declare us Kafir, their fatwa returns upon themselves. We should be sympathetic towards these people and explain to them the reality. It’s good to see that after a speech was made in the National Assembly of Pakistan against Jama’at, a group has stood up and challenged the narrative of these anti-Jama’at scholars and politicians. Today, it is Ahmadis in Pakistan who dearly love their country and do not play politics over religion. Ahmadis gave numerous sacrifices for the independence of Pakistan; therefore it is the responsibility of every Ahmadi to pray that may Allah safeguard this country. Ameen

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
06-Oct-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Pushto (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Divine Faith Builders
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

حضور ِ انور ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے تشہد ، تعوذ اور سورہ فاتحہ کی تلاوت کے بعد فرمایا: بعض پیدائشی احمدی لکھتے ہیں کہ نئے آنے والوں کی ایمانی حالت اور اللہ تعالیٰ سے ان کا تعلق کے واقعات سن کر ہمیں شرمندگی ہوتی ہے کہ ہم بھی ایمان میں بڑھیں۔ اسی طرح بعض نو مبائعین بھی اس بات کا اظہار کرتے ہیں کہ ان واقعات سے ہمارے ایمانوں میں اضافہ ہوتا ہے۔ لیکن اس کے ساتھ ایسے لوگ بھی ہیں جو ان ممالک میں رہتے ہیں اوراپنے آپ کو ترقی یافتہ سمجھتے ہیں۔ وہ اللہ کی عبادت کی طرف توجہ نہیں دیتے یا اتنی تھوڑی کہ نہ ہونے کے برابر ہے۔ دینی حالت کی بہتری کے لئے سوچتے نہیں یا بہت کم سوچتے ہیں۔ وہ کہتے ہیں کہ یہ واقعات جو ایمان لانے کے ہیں یہ صرف افریقہ اور غریب ممالک کے ہوتے ہیں مغربی اور ترقیاتی ممالک میں کیوں ایسے واقعات نہیں ہیں۔ حضور نے فرمایا: کہ یہاں بھی ایسے ایمان افروز واقعات ہوتے ہیں، یہاں برطانیہ میں ہی ایسے بہت سے نومبائع ہیں جو ایسی کیفیات سے گزرے ہیں، جن کو اللہ تعالیٰ نے احمدیت کی سچائی کے نشان دکھائے ہیں۔ لیکن یاد رکھیں کہ اللہ تعالیٰ صرف اُسے راستہ دکھاتا ہو جو خود اُس کی طرف جاتا ہے۔ نبیوں کی تاریخ سے یہی پتہ چلتا ہے کہ کمزور اور غریب لوگ ہی زیادہ نبیوں پر ایمان لاتے ہیں اور روحانیت میں ترقی کرتے ہیں۔ حضور نے فرمایا: برکینا فاسو کے ایک گاؤں میں ہمارےایک معلم تبلیغ کے لئے گئے تو وہاں صرف ایک بڑھی خاتوں نے بیعت کی۔ ہماری مسجد وہاں سے 15 کلومیٹر دور ہے۔ برساتی نالہ درمیان میں ہونے کی وجہ سےراستہ دشوار اور مشکل تھا۔ وہ خاتون ہر دفعہ جمعہ پڑھنے جاتی مگر نالہ کی وجہ سے اُس کے کنارے پر بیٹھ کر جائے نماز بچھا کر خود ہی پڑھ لیتی۔ ایک مہینہ کے بعد جب معلم صاحب کو پتہ چلا تو انھوں نے اُس خاتون کے ایمان کا یہ واقعہ گاؤں والوں کو سنایا تو 130 افراد نے بیعت کرلی۔ بینن کے مبلغ سلسلہ لکھتے ہیں کہ ایک گاؤں میں دو سو بیعتیں ہوئیں۔ وہاں کے صدر کی بیٹی شدید بیمار ہوگئی۔ ہر طرف سے مایوسی ہوگئی تھی۔ اور حالت خراب تھی۔ لڑکی نے حرکت کرنا اور بولنا چھوڑ دیا تھا۔ وہاں انہیں دعا کی تحریک کی۔ دعا کروائی اور مجھے بھی دعا کے لئے لکھا۔ اللہ کے فضل سے ایک دن بعد لڑکی کی حالت بالکل صحیح ہوگئی۔ حضور نے فرمایا: میں نے اسائلم سیکر زکو کہا تھا کہ وہ تبلیغ کیا کریں۔ ایک اسائلم سیکر نے لکھا کہ میری فائنل پیشی میں جج نے مجھ سے پوچھا کہ کیا تم اپنی جماعت کے لیف لیٹس تقسیم کرتے ہو؟ میں نے کہا کہ ہاں کرتا ہوں۔ جج نے پوچھا کہ کس کس جگہ کرتے ہو؟ تو میں نے کچھ جگہوں کےنام بتائے تو اس نے کہا کہ ٹھیک ہے فلاں جگہ پر میں نے بھی لیا تھا۔ جاؤ تمہارا کیس پاس ہے۔ تو اس طرح خداتعالیٰ اپنے بندوں کی مدد کرتا ہے۔ اللہ تعالیٰ نے حضرت مسیح موعودعلیہ السلام کو فرمایا تھا کہ تیلے لئے زمانہ ایسا آئے گا کہ تو عالم میں مشہور ہو جائے گا۔ یہ 1883ء میں پہلی بار الہام ہوا جب آپ کو کوئی نہیں جانتا تھا۔ یہ محض اللہ کا فضل ہے کہ تعارف بڑھ رہا ہے اور لوگ بیعتیں کررہے ہیں۔ فرمایا ایک زمانہ آئے گا کہ لوگ تیرے سلسلہ میں داخل ہوں گے۔ آج ہم اس کے نظارے دیکھ رہےہیں۔ آج 210 ممالک میں احمدیت کا نفوذ ہے۔

Huzoor said: Some Ahmadis who were born into Ahmadiyyat write to me that they, themselves, feel ashamed at seeing the level of faith and relationship with Allah, of those who have newly converted to Ahmadiyyat. Those who have newly converted also say that such incidents increase their faith as well. But there are also such people living in these developed countries who do not pay any or very little attention to the worship of their Creator. Such people do not think or worry about their own religious state and say that these faith enhancing incidents take place only in 3rd world countries, and why not in these western or developed countries? Huzoor Anwar (aa) said such faith inspiring incidents, in fact, also take place in these western countries. For instance, many new converts here in Britain are shown the signs of truthfulness by Allah. We should remember that Allah shows His way to those who seek it. When we look at the history of prophets, we see that weak and poor people believe in the prophet of the time and in result increase in spirituality. One of our Missionaries went to preach in a village in Burkina Faso and an elderly lady converted from that village. Our Mosque is 15 Kilometers from that village and there is a stream of flood water in the middle due to which it was difficult to reach the mosque. This elderly lady used to go for Friday Prayers every week but due to this water stream, she would offer her Friday Prayers at the bank of the stream by herself. The Missionary came to know of this a month later. He mentioned this incident and the level of faith of this woman to the people of the village and 130 people converted. Missionary of Benin writes that 200 people converted in a village. The daughter of the president in that village became sick and everyone had given up hope. She could not move or speak. The Missionary told the people to pray and also wrote to me for prayers and by the Grace of Allah, the girl was fine only a day after. Huzoor Anwar (aa) said that I had instructed the Asylum Seekers that they should do Tabligh. One Asylum Seeker wrote that the on his final hearing, the judge asked him, do you hand our leaflets of your Jama’at? He replied in the affirmative. The Judge then asked, where do you hand out these leaflets? He said I mentioned the names of a few places and the Judge said yes, I also took a leaflet from you at a certain place. You may go; your case has been accepted. This is how Allah helps those who work in His way. Allah revealed to the Promised Messiah (as) that a time will come when you would become known to the people. This was first revealed in 1883 when no one knew him. Only Allah knows the unseen and He said that people would enter your Jama’at and it is by His Grace that people are converting. Today Ahmadiyyat is established in 210 countries of the world.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
29-Sep-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Pushto (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Tamil (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Salat - The path to success and salvation
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu | Indonesian
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

آج سے مجلس انصار اللہ یوکے کا اجتماع شروع ہو رہا ہے۔ انصار کو خاص طور پر نماز کی طرف توجہ دینی چاہئے۔ چالیس سال کی عمر کے بعد انسان کو اس بات کا احساس زیادہ ہونا چاہئے کہ ہماری عمر کے ایام کم ہو رہے ہیں اور مرنے کے بعد ہم نے اپنے رب کے حضور حساب دینا ہے۔ ہمیں فکر ہونی چاہئے کہ ایسی حالت میں اللہ تعالیٰ کے حضور حاضر ہوں کہ دونوں حقوق اللہ اور حقوق العباد کو ادا کرنے والے ہوں۔ نماز کے متعلق یاد رکھنا چاہئے کہ اللہ تعالیٰ نے نمازقائم کرنے کا حکم دیا ہے جسکا مطلب ہے کہ ایک تو نماز کو باجماعت ادا کیا جائے اور دوسرا یہ کہ وقت پر ادا کی جائے۔ پس انصار کو خاص طور پر اس طرف توجہ دینی چاہئے اور وہ حقیقی انصار اللہ یعنی اللہ کے مددگار اسی وقت بن سکتے ہیں جب یہ فرائض پورے کرنے والے ہوں۔ حضرت مسیح موعود نے فرمایا ہے کہ ہماری فتح کا ہتھیار دعا ہے تو نماز میں باقاعدگی کے بغیر ہم کس طرح آپکے مشن میں مددگار ہوسکتے ہیں۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا کہ نمازوں کو باقاعدگی سے پڑھو۔ بعض لوگ دن میں صرف ایک نماز پڑھ لیتے ہیں۔ نماز ہرگز معاف نہیں ہوتی یہاں تک کہ انبیاء کو بھی معاف نہیں ہوتیں۔ ایک مرتبہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس ایک جماعت آئی جس نے نماز کی معافی چاہی۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ جس مذہب میں عمل نہیں اس میں کچھ نہیں۔ پھر نماز کی حقیقت بیان کرتے ہوئے فرمایا کہ نماز کیا ہے؟ ایک خاص دعا ہے لیکن لوگ اس کو بادشاہوں کا ٹیکس سمجھتے ہیں۔ نادان یہ نہیں سمجھتے کہ خدا کو اس کا کیا فائدہ ہے۔ اس سے انسان کا ہی فائدہ ہے کہ اس کے ذریعہ وہ اپنے حقیقی مقصد تک پہنچ جاتا ہے۔ پھر فرمایا کہ نماز ایسی چیز ہے کہ اس سے دنیا بھی سنور جاتی ہے اور دین بھی۔ لیکن اکثر لوگ ایسی نماز پڑھتے ہیں کہ نماز ان پر لعنت بھیجتی ہے۔ نماز تو ایسی چیز ہے کہ وہ ہر بدعمل سے بچایا جاتا ہے اور ایسی نماز اللہ تعالیٰ کی مدد کے بغیر حاصل نہیں ہوتی۔ اور اس کیلئے اللہ کے حضور دعاؤں اور خشوع و خضوع کی ضرورت ہے۔ پس تمہارا کوئی دن دعا سے خالی نہ ہو۔ پھر فرمایا کہ میں دیکھتا ہوں کہ لوگ نمازوں میں غافل اس لئے ہوتے ہیں کہ ان کو اس لذت کی اطلاع نہیں جو اللہ تعالیٰ نے نماز میں رکھی ہے۔ پس اللہ تعالیٰ سے نہایت سوز سے دعا کرنی چاہئے کہ جس طرح پھل میں مزہ رکھا ہے اسی طرح ایک دفعہ نماز کی لذت کا بھی مزہ چکھا دے ۔ کھایا ہوا انسان کو یاد رہتا ہے۔ فرمایا کہ میں دیکھتا ہوں کہ ایک شرابی کو جب نشہ نہیں آتا تو وہ شراب کے پیالے پی جاتا ہے۔ ایک عقلمند انسان اس سے فائدہ اٹھا سکتا ہے۔ یعنی اگر انسان کو نماز میں لذت پیدا نہ ہو تو نماز پر دوام کرے یعنی جب تک مزہ نہ آئے وہ پڑھتا جاوے یہاں تک کہ اس کو سرور آجاوے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا کہ انسان جب نماز میں سستی دکھاتا ہے تو اس کی حقیقی وجہ یہ ہے کہ انسان کی توجہ اللہ تعالیٰ کی بجائے دوسری چیزوں کی طرف ہے۔ اسی لئے نماز کی عادت اور باقاعدہ رجوع الی اللہ بہت ضروری ہے۔ اس سے آہستہ آہستہ وہ وقت آجاتا ہے کہ طبعی میلان پیدا ہو جاتا ہے اور ایک خاص نور انسان کو عطا ہوتا ہے۔ نماز میں وساوس پیدا ہونے کے متعلق فرمایا کہ جن لوگوں کا جھکاؤ پوری طرح اللہ تعالیٰ کی طرف نہیں ہوتا ان کے دل میں اور خیال پیدا ہوتے ہیں۔ فرمایا کہ ایک قیدی کو دیکھو کہ کس طرح حاکم کے آگے پوری توجہ سے کھڑا ہوتا ہے ۔ اسی طرح انسان جب سچے دل سے اللہ تعالیٰ کی طرف توجہ کرے تو کیا مجال شیطان کی کہ دل میں وساوس پیدا کرسکے۔ لہ تعالیٰ نے قرآن کریم میں فرمایا ہے کہ وَالَّذِیْنَ جَاھَدُوْا فِیْنَا لَنَھْدِیَنَّھُمْ سُبُلَنَا یعنی جو لوگ ہماری راہ میں کوشش کرتے ہیں ہم ضرور انھیں اپنی راہوں کی طرف ہدایت دیں گے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا کہ پوری کوشش سے اللہ تعالیٰ کی راہ میں لگے رہو تو منزلِ مقصود تک پہنچ جاؤ گے۔ نماز ہی ایسی چیز ہے جو مراتب کے معراج تک پہنچا دیتی ہے۔ یہ ہے تو سب کچھ ہے۔ اسی طرح حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے جماعت کو نمازِ تہجد کی طرف بھی توجہ دلائی ہے۔ اور انصار اللہ کو خاص طور پر اس طرف توجہ کرنی چاہئے۔ فرمایا کہ اس زندگی کے کل انفاس اگر دنیوی کاموں میں گزار دئے تو آخرت کیلئے کیا اکٹھا کیا۔ تہجد کیلئے اٹھو اور خاص ذوق و شوق سے اس کو ادا کرو۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے کہ قرۃ عیني فی الصلوۃ یعنی میری آنکھوں کی ٹھنڈک نماز ہی میں ہے۔ اللہ تعالیٰ ہم سب کو اپنی نمازوں کی حفاظت کرنے کی توفیق دے اور ہم پر سرور نمازیں ادا کرنے والے ہوں۔ آمین۔

The Ijtima of Majlis Ansarullah UK is starting from today. Ansar should pay special attention towards daily prayers. As one crosses the age of 40, he should realize that his days in this world are numbered and we will be held accountable in front of our God after our death. We should be worried that we go to our Lord in such condition that we are fulfilling both the rights of Allah and the rights of His creation. We should remember that Allah has asked us to establish prayer which means that it should be offered in congregation and should be offered on time. Therefore, members of Ansarullah should pay special attention towards this as they cannot become true Ansarullah (helpers of Allah) without fulfilling these obligations. The Promised Messiah (as) has said that the weapon of our victory is prayer, so how can one aid in his mission without being regular in prayers. The Promised Messiah (as) has said that you should be regular in offering prayers. Some people only pray once a day. Salaat is never forgiven, even for the Prophets of God. Once a group of people came to the Holy Prophet (saw) to excuse themselves from daily prayer. The Holy Prophet (saw) denied their request saying that a religion without practical actions amounts to nothing. Explaining the reality of prayer, the Promised Messiah (as) says that what is Salaat? It’s a special prayer, but people consider it like a tax from king. These unwise people do not comprehend that what benefit and need is there for God for our prayers? In reality, it is beneficial for the man himself as he achieves his true purpose through prayer. Then he says that Salaat is such that it benefits one’s worldly life and his faith. But the majority of people offer such prayer that it becomes a curse for them. Salaat is such that it safeguards man from every evil act, but such prayer cannot be achieved without Allah’s help. And for this, you need to pray and demonstrate extreme heartfelt pain and restlessness in front of God. Therefore, none of your days should be empty of prayers. The Promised Messiah (as) says that people become lazy in Salaat because they aren’t aware of that pleasure which Allah has placed in prayer. One should pray to Allah that just like we taste the sweetness you have placed in fruits, similarly enable us to experience the pleasure in prayer. Man always remembers what he himself has tasted. Then Promised Messiah (as) says that I see that when a drunkard doesn’t become intoxicated, he keeps drinking more and more. A wise person can benefit from this. This means that if man doesn’t experience pleasure in prayer, he should stay consistent and continue to offer prayers until he experiences that enjoyment. The Promised Messiah (as) says that when man displays laziness in daily prayers, it is because he is inclined to things other than God. This is why the habit of prayers and turning towards Allah is extremely important. This gradually leads to such condition that man is naturally inclined towards prayer and a special light is bestowed upon him. About different thoughts and distractions in prayer, the Promised Messiah (as) says that these thoughts come to those who have not yet perfected their inclination and attention towards God. For example, look at how a criminal stands in front of a judge and pays attention to every word. Similarly, if man concentrates towards God, Satan would not be able to distract him with such thoughts. In the Holy Quran, Allah says that those who struggle towards us, we will surely guide them towards our ways. The Promised Messiah (as) says that if you continue to struggle in the way of Allah with complete effort, you will eventually reach your ultimate goal. The Promised Messiah (as) has also drawn our attention to Tahajjud prayer. Members of Ansarullah should pay special attention towards this. He said that if man spends all his breaths seeking this world, what has he collected for the hereafter? Wake up for Tahajjud and offer it with absolute zeal and passion. The Holy Prophet (sa) has said that the delight of my eyes lies in prayer. May Allah enable us to offer and safeguard our daily prayers.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
22-Sep-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Essence of Quality Meetings and Ijtema gatherings
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | Powerpoint | PDF
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

دنیا میں بہت سی قسموں کی مجالس مختلف مقاصد کیلئے منعقد ہوتی ہیں۔ مثلا حکومتی مجالس، کاروباری مجالس وغیرہ۔ اور ان میں لوگ مل کر بیٹھتے اور سوچتے ہیں۔ یہ سب مجالس دنیا کیلئے ہوتی ہیں خدا کیلئے یا خدا تعالیٰ کی خوشنودی کیلئے نہیں ہوتیں۔ لیکن بعض ایسی مجالس بھی ہوتی ہیں جو دینی اغراض کیلئے ہوتی ہیں۔ لوگوں کو اللہ تعالیٰ کے قریب کرنے کیلئے ہوتی ہیں۔ ان مجالس کا مقصد صرف یہ ہوتا ہے کہ ہمارا جو کام بھی ہو اور جو پروگرام بھی بنائیں انکا مقصد اللہ تعالیٰ کی رضا ہو۔ ایسی مجالس خدا تعالیٰ کو پسند ہیں۔ اور ان میں شاملین کو اللہ تعالیٰ اس دنیا میں بھی اور آخرت میں بھی نوازتا ہے۔ بس ایک مومن کا کام ہے کہ وہ اس کوشش میں لگا رہے کہ ہم نے اپنی روحانیت میں کس طرح بڑھنا ہے۔ مسلمان اللہ تعالیٰ کے اس فرمان کے خلاف چل رہے ہیں۔ ان کے دل آپس میں پھٹے ہوئے ہیں۔ ان کے مشورے اور معاہدے تمام کے تمام اللہ تعالیٰ اور اس کے رسول کے خلاف ہیں اور تقویٰ کے خلاف ہیں۔ اور ان کے یہ کام ظاہر کرتے ہیں کہ انکا اللہ تعالیٰ پر ایمان ختم ہو گیا ہے۔ یہ حالت دونوں سیاسی اور مذہبی لیڈروں کی ہے۔ پس آج یہ ہماری ذمہ داری بنتی ہے کہ نہ صرف اپنے آپکو تقویٰ میں بڑھائیں بلکہ جس حد تک ممکن ہو مسلمانوں کو بھی سمجھانا چاہئے۔ ان کو بتانا چاہئے کہ یہ حالت تمہیں دنیا والوں کا بھی غلام بنا دیگی اور اللہ تعالیٰ سے بھی سزا پاؤ گے۔ پس ان باتوں کو ذہن میں رکھتے ہوئے ہمیں اپنا بھی جائزہ لینا چاہئے۔ یہ یاد رکھنا چاہئے کہ جماعت کی ترقی کو دیکھ کر شیطان کبھی بھی آرام سے نہیں بیٹھتا۔ پس وہ لوگ جو نظامِ جماعت کے خلاف مجالس میں شامل ہوتے ہیں وہ شیطان کے دھوکہ میں آ جاتے ہیں۔ یہ یاد رکھنا چاہئے کہ ان کی کم سمجھی کی وجہ سے اپنے خیال میں بعض دفعہ یہ لوگ جماعت کی ہمدردی کے خیال کے تحت ایسا کرتے ہیں۔ اگر کسی شخص کو عہدیداران یا امیر کے خلاف شکایت ہو تو خلیفہ وقت کو لکھ دینا چاہئے اور اس کے بعد خلیفۂ وقت پر چھوڑ دینا چاہئے کہ اس کے متعلق کیا کرنا ہے۔ مجالس میں ان باتوں کے ذکر سے کچھ فائدہ حاصل نہیں ہوتا۔ ہاں انسان کو ان امور کے متعلق دعا ضرور کرنی چاہئے۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم اور آپکے غلامِ صادق حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے ہمیں سمجھایا ہے کہ کس طرح کی مجالس میں ہمیں شامل ہونا چاہئے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام فرماتے ہیں کہ ہمارا مذہب تو یہ ہے کہ انسان بات کرے تو پوری کرے ورنہ خاموش رہے۔ جب دیکھو کہ کسی مجلس میں اللہ اور رسول کے خلاف ٹھٹھا ہو رہا ہے تو یا تو اٹھ کر چلے جاؤ یا کھول کر جواب دو۔ تیسرا طریق نفاق کا ہے یعنی مجلس میں بیٹھے بھی رہنا اور دبے دبے الفاظ میں جواب دینا۔ پس حضور نے فرمایا کہ احمدیوں کو نفاق سے بچنا چاہئے اور بےغیرتی نہیں دکھانی چاہئے۔ لوگوں کو بتانا چاہئے کہ اگر کوئی شکایت ہے تو خلیفہ ٔوقت کو لکھیں ورنہ خاموش رہیں۔ ایک مرتبہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے کسی نے پوچھا کہ مجھے کوئی نصیحت کریں۔ آپ نے فرمایا کہ اللہ کا تقویٰ اختیار کرو۔ اور جب تم کسی مجلس میں جاؤ اور وہ نیکی کی باتیں کر رہے ہو تو وہاں ٹھہرجاؤ اور اگر ایسی مجلس میں جاؤ جسے تم ناپسندیدہ پاؤ تو ایسی مجلس کو چھوڑ دو۔ پھر ایک اور حدیث میں آتا ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے دریافت کیا گیا کہ ہم کن لوگوں کی مجلس میں بیٹھیں۔ آپ نے فرمایا کہ ایسی مجالس جن سے خدا یاد آئے اور دینی علم میں اضافہ ہو اور آخرت کا خیال ذہن میں آئے۔ پس جماعتی نوجوانوں اور انکے والدین کو خاص طور پر اس طرف توجہ دینی چاہئے کہ وہ ایسی مجالس میں شامل نہ ہوں جو اسلام کی حدود سے باہر ہیں۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ انسان کو یاد رکھنا چاہئے کہ مجلس کا اثر آہستہ آہستہ انسان پر ہوتا رہتا ہے۔ مثلا اگر کوئی شخص روز شراب خانہ میں جائے تو ایک دن آئیگا کہ وہ شراب پی بھی لیگا۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ کے فضل سے جماعت کو مختلف پروگرام مثلا جلسہ ،اجتماع، اجلاس وغیرہ کو منعقد کرنے کا موقع ملتا ہے جو حقیقی رنگ میں اسلامی مجالس ہیں۔ پس ان مجالس میں زیادہ سے زیادہ شامل بھی ہونا چاہئے اور اللہ تعالیٰ کا تقویٰ اختیار کرتے ہوئے ان مجالس کا حق بھی ادا کرنا چاہئے۔ اللہ تعالیٰ ہمیں توفیق دے کہ ہمیشہ بری مجالس سے بچتے رہیں۔ اور ہمیشہ ہمیں نظامِ جماعت اور خلافتِ احمدیہ سے منسلک رکھے۔ حضور نے آخر پر مکرم بلال عبدالسلام صاحب آف امریکہ کے نمازِ جنازہ کا بھی اعلان فرمایا۔

Different kinds of gatherings take place in this world to achieve various purposes, For example governmental gatherings, business meetings etc. People sit and ponder over different matters. These gatherings are usually for worldly purposes and not for gaining the pleasure of Allah. Then there are also such gatherings which are religious gatherings and are held for the sake of Allah. They make plans and programs to win the pleasure of Allah. These gatherings are loved by God and their participants will be rewarded in this life and in the hereafter. A true believer should always be in search of trying to increase his spirituality. In this age, we see that Muslims are acting opposite to this teaching of God. Their hearts are shattered, not united. Their mutual consultations and contracts are against Allah and His Messenger and contrary to the principles of Taqwa. Such actions of theirs demonstrate their lack of faith in Allah. Both the political and religious leaders of Muslims are acting in this manner. Therefore, it is our responsibility to not only increase ourselves in Taqwa, but also guide Muslims according to our capacity. We should tell them that such conduct will make you subservient of people in this world and you will become worthy of punishment from Allah. We should also ponder over our own conditions. Remember that seeing the progress of Jama’at, Satan will never sit idle. Those people who participate in gatherings held against Nizam-e-Jama’at (administrative system of Jama’at) are in reality deceived by Satan. Sometimes, due to lack of understanding, these people do so out of their perceived sympathy for Jama’at. If any person has any complaint against any office bearer or against the Ameer of Jama’at, he should write to the Khalifatul Masih and leave the matter to him. There is no benefit of discussing these matters in private gatherings. However, one should continue to pray for these matters to be resolved. The Holy Prophet (saw) and his servant in this age, the Promised Messiah (as), have explained for us the etiquettes of participation in gatherings. The Promised Messiah (as) says that our point of view is this that when one speaks, he should either make his point in entirety or stay silent. When you see Allah and His Messenger being mocked in any gathering, either leave swiftly or reply boldly. The third way is of hypocrisy where one continues to sit, somewhat agrees and also tries to partially respond. Huzoor (aba) said that Ahmadis should stay away from hypocrisy and demonstrate pride for Jama’at. We should tell people that if they have any complaints, they should either write to the Khalifa or stay silent. Once a companion asked the Holy Prophet (saw) to advise him. The Holy Prophet (saw) said to observe Taqwa and when you enter any gathering, stay there if they are discussing something good and leave it if you find the gathering to be repulsive. Another Hadith states that the Holy Prophet (saw) was asked that what kind of gatherings should we attend? He replied that you should go to such gatherings which remind you of Allah and the hereafter, and which increase your religious knowledge. Therefore, the youth of our Jama’at and their parents should be especially careful that they do not participate in any such gathering which falls outside of limits set by Islam. The Promised Messiah (as) has said that we should always remember that one’s company and gatherings has gradual impact on him. For example, if one goes to liquor shop every day, a day will certainly come when he will also start consuming liquor. Huzoor said that by the grace of Allah, Jama’at organizes many gatherings, such as Ijlaas, Ijtima, Jalsa Salana etc, which are true Islamic gatherings. Therefore, we should participate in these gatherings and try to increase ourselves in Taqwa and righteousness. May Allah enable us to always stay away from harmful and sinful gatherings and keep us attached to Nizam-e-Jama’at and Khilfate-e-Ahmadiyya. Ameen Huzoor also announced the funeral prayer in absentia of Respected Bilal Abdus Salaam of USA Jama’at.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
15-Sep-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Pushto (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Proofs of Truth
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

آجکل مغربی میڈیا سوال کرتا ہے کہ تم کو اسلام کی امن پسند تعلیم کی باتیں کرتی ہو لیکن اکثر مسلمان تو ایسی تعلیم کی بات نہیں کرتے اور نہ باقی مسلمان آپکو مسلمان سمجھتے ہیں۔ ہمارا جواب یہی ہوتا ہے کہ ہم جو اسلام کی تعلیم کی بات کرتے ہیں اسے ہم قرآن اور حدیث سے ثابت کرتے ہیں۔ ہماراموقف آجکل کے حالات دیکھ کر نہیں ہے بلکہ ہمیشہ سے اسلام نے حقوق اللہ اور حقوق العباد کی تعلیم دی ہے۔ جہاں تک یہ سوال ہے کہ ہم باقی مسلمانوں کو کس طرح اس تعلیم کی طرف لیکر آئیں گے تو وہ اس طرح کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی پیشگوئی کے مطابق اس زمانہ میں مسیح موعود علیہ السلام کا نزول ہوا جنہوں نے اسلام کی پستی کے بعد دبارہ اسکو زندہ کیا۔ الہی جماعتیں اور انبیاء کی جماعتیں دنوں میں ترقی نہیں کر جاتیں بلکہ یہ انقلاب آہستہ آہستہ آتا ہے۔ اور یہی حال جماعت کا ہے کہ باقی مسلمانوں کے فرقوں میں سے لوگ حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی تعلیم کو سمجھ کر اس جماعت میں داخل ہوتے جارہے ہیں۔ اور یہ باوجود اس کے کہ ہمارے وسائل باقیوں کی نسبت بہت کم ہے۔ بہت سے ایسے لوگ ہیں جنکو خود اللہ تعالیٰ براہِ راست اس طرف ہدایت دیتا ہے مثلا بذریعہ خواب وغیرہ۔ بعض جماعت کی مخالفت دیکھ کر قبول کر لیتے ہیں۔ بعض کو اللہ تعالیٰ مختلف نشان دکھاتا ہے۔ اللہ تعالیٰ نے حضرت مسیح موعود علیہ السلام کو یہ الہاماً بتایا تھا کہ میں تجھےعزت دونگا اور بڑھاؤنگا۔ اسی طرح اللہ تعالیٰ نے آپکو فرمایا کہ کَتَبَ اللہُ لَاَغْلِبَنَّ اَنَا وَ رُسُلِي کہ اللہ تعالیٰ نے لکھ دیا ہے کہ غلبہ میرا اور میرے رسولوں کا ہے ۔آج ان وعدوں کے نتیجہ میں اس شخص کی جماعت پوری دنیا میں قائم ہو چکی ہے اور ہر روز نئے لوگ اس جماعت میں شامل ہو رہے ہیں۔ یہ نشانات آج بھی جاری ہیں اور مختلف رنگوں میں رو پذیر ہوتے ہیں۔ فرانس سے ایک خاتون بتاتی ہیں کہ میرے سارے خاندان میں احمدیت کا پیغام پہنچ چکا تھا ۔ ایک دن میں نے خدا کے حضور دعا کی کہ اے خدا،تو مجھے بھی بتا اگر احمدیت حقیقتاً سچی جماعت ہے۔ کہتی ہیں کہ اگلی تین راتیں یکے بعد دیگرےاللہ تعالیٰ نے مجھے خواب دکھائیں۔ مثلا ایک خواب میں دیکھا کہ قیامت کا دن ہے اور میرے وہ بہن بھائی جو احمدی ہو چکے ہیں وہ بالکل امن میں ہیں اور میں چیخ و پکار کر رہی ہوں۔ میں خواب میں ہی ان کے ساتھ چمٹ جاتی ہوں۔ پھر دوسری رات خواب میں دیکھا کہ میری بہن جو احمدی ہو چکی ہے وہ مجھ سے کہتی ہے کہ نماز پڑھو یہی ایک راہ ہے۔ اسی طرح اگلی رات اللہ تعالیٰ نے پھر جماعت کے حق میں خواب دکھائی اور اب ہمارا سارا خاندان بیعت کر کے جماعت میں داخل ہو گیا ہے۔ کانگو سے ایک صاحب لکھتے ہیں کہ مجھے 2014 کے جلسہ میں پہلی بار یہ پیغام ملا کہ حضرت عیسیٰ ؑ وفات پا چکے ہیں اور یہ بھی پتہ چلا کہ اسلام کی تنزلی کے زمانہ میں مسیح موعود علیہ السلام نے آنا تھا۔ اس کے بعد میں نے جماعتی لٹریچر کا مطالعہ شروع کیا۔ رمضان میں میں نے خواب دیکھی کہ میں بس پر ایک اعلیٰ راستہ پر سفر کر رہا ہوں جس سے مجھے جماعت کی صداقت پر تسلی ہو گئی۔ مختلف ممالک اور مختلف زبانیں بولنے والوں کو پوری دنیا میں اس راستہ کی طرف ہدایت مل رہی۔ یہ ہدایت یقینا اللہ تعالیٰ کی طرف سے ہے۔ سینیگال کا ایک واقعہ ہے کہ وہاں کے تین گاؤں میں جماعت کا نفوذ ہوا۔ اس پر وہاں کے بعض امام اور چیف نے مل کر جماعت کی ہلاکت کیلئے بد دعا کی۔ اس کے کچھ دن بعد وہاں کے سب سے بڑے امام کو سانپ نے کاٹ لیا۔ مولویوں کی دعاؤں کے باوجود اس کی وفات ہو گئ۔ پھر چند دن بعد چیف کو بھی سانپ نے کاٹ لیا۔ لوگوں کو احساس پیدا ہونا شروع ہوا کہ یہ احمدیوں کے خلاف بد دعا کی وجہ سے ہے لیکن مولویوں نے اس واقعہ کا الزام جنوں پر ڈال دیا۔ کچھ دن بعد وہاں کے نائب چیف کو بھی سانپ نے کاٹ لیا۔ پھر وہ لوگ مبلغ کے پاس آئے اور انھیں سارا ماجرا بتایا۔ اور اب اللہ تعالیٰ کے فضل سے یہ تینوں گاؤں احمدیت کے آغوش میں آگئے ہیں۔ پس اللہ تعالیٰ لوگوں کو اسلام کی حقیقی تعلیم کی طرف لا رہا ہے اور ایک دن حضرت مسیح موعود علیہ السلام کے قائم کردہ مشن کے ذریعہ اسلام کا غلبہ ضرور ہو گا۔ اللہ تعالیٰ ہم سب کو تبلیغ کے اہم فرض کو بھی ادا کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔ آمین۔ آخر میں حضورِ انور ایدہ اللہ نے مندرجہ ذیل دو مرحومین کی نمازِ جنازہ کا اعلان فرمایا: مکرمہ خورشید رقیہ صاحبہ ۔ ڈاکٹر صلاح الدین صاحب۔

Many media members in the West ask this question that Ahmadis preach a peaceful message of Islam. However, majority of Muslims neither adhere to this peaceful message of Islam nor do they consider Ahmadis as Muslims. Our reply is always that our peaceful message of Islam is in reality taken from the Holy Quran and Ahadith of the Holy Prophet (saw). This is not an interpretation in light of today’s circumstances. Islam has always promoted the rights of God and rights of human beings. As far as this question is concerned that how will we bring other Muslims towards this interpretation of Islam? For this purpose, as per the prophecy of the Holy Prophet Muhammad (saw), Allah has sent the Promised Messiah (as) in this age for the revival of Islam. We should remember that the divine revolution brought by the communities of Prophets do not take effect overnight; rather it manifests itself gradually. Similar is the case of Jama’at that Muslims of other denominations continue to enter this Jama’at after having understood the message of the Promised Messiah (as). And all of this is happening despite the fact that our resources are paltry as compared to other Muslim groups. There are many people who are directly guided by Allah himself; for example through dreams among other means. Some accept Jama’at after witnessing the opposition faced by Ahmadis. Some are shown signs of truthfulness by Allah. Allah had foretold the Promised Messiah (as) that I will give you honor and will cause you to grow. Similarly, Allah told him that کَتَبَ اللہُ لَاَغْلِبَنَّ اَنَا وَ رُسُلِي Allah has decreed that He and His Messengers will always be victorious. As a result of these promises, today we see that this Jama’at has been established throughout the world and new people continue to enter this Jama’at every day. These signs continue to take place to this day and manifest themselves in various ways. A lady from France writes that all of my family had received the message of Ahmadiyyat. One day I prayed to God that if Jama’at is indeed true, then show me its truthfulness. She says that after my prayer, Allah showed me three dreams in a row over the next three nights in favor of Jama’at. In my first dream, I saw that I was present on the Day of Judgment. Everybody was restless including me, but my brothers and sisters, who had accepted Ahmadiyyat, were completely at peace. I clanged to them in my dream. Then I saw a dream on the second night that my Ahmadi sister advised me to say my prayer as this is the only way to success. Then Allah again showed me a dream in favor of Jama’at on the third night. Huzoor (aba) said that now the whole family has done bai’at and joined the fold of Ahmadiyyat. A person from Congo says that in their Jalsa of 2014, I heard for the first time about the death of Prophet Jesus (as) and the coming of the Promised Messiah (as). Thereafter, I started studying the literature of Jama’at. I saw a dream in the month of Ramadan that I am traveling by bus on a beautiful pathway. This is how I became satisfied upon the truthfulness of Ahmadiyyat. Huzoor (aba) says that people of different nations speaking different languages are being guided towards this path. Who else but Allah is the source of this this guidance! There is an incident from Senegal where Jama’at was established in three villages. After having seen this, a few Imams and Chiefs came together to pray against Jama’at for its destruction. A few days later, their most senior Imam was bit by a snake and passed away despite the prayers of other Imams. Then after a few days, their chief was also bit by a snake. People started to realize that this is due to their prayer against Jama’at, but their clerics blamed these incidents on Jinns. A few days later, their vice-Chief was also bit by a snake, after which the local people rushed towards the local Missionary of Jama’at. After he explained the truthfulness of the Promised Messiah (as), all three villages joined the fold of Ahmadiyyat. This is how Allah himself is guiding people towards Ahmadiyyat in this age and one day we will see the victory of Islam through the mission established by the Promised Messiah (as). May Allah also enable us to fulfill the responsibility of spreading the message of Islam Ahmadiyyat. Ameen Huzoor (aba) also announced the funeral prayer of the following two individuals: Mukarrama Khursheed Rukayya sahiba and Mukarram Dr. Salahuddin sahib.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
08-Sep-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Arabic (mp3)Bengali (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Invite to Allah with wisdom and goodly exhortation
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu | Bengali
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

بہت سے ملک اپنی مجلسِ شورٰی میں اس تجویز پر غور کرتے ہیں کہ کس طرح ہم جماعت کا پیغام احسن رنگ میں لوگوں تک پہنچا سکتے ہیں۔ ہمیں یاد رکھنا چاہئے کہ بیشک تبلیغ کا کام ہو یا کوئی بھی اور منصوبہ ہو جب خلیفۂ وقت کی طرف سے اسکی منظوری دے دی جائے تو مجلسِ شوریٰ کے ممبران اور ہر سطح کے عاملہ کے ممبران کا کام ہے کہ ان پر عمل کروایا جائے۔ اور جہاں تبلیغ کے متعلق منصوبہ ہو تو یہ ہر عہدہ دار کا کام ہے کہ اس میں حصہ لے نہ صرف یہ کہ سیکرٹری تبلیغ پر اس کو چھوڑا جائے۔ جب تمام عہدہ دار تبلیغ کے کام میں شامل ہوں گے تو اس سے باقی جماعت کیلئے بھی نمونہ قائم ہو گا اور سب مل کر اس کام کیلئے کوشش کرنے والے ہوں گے۔ حکمت کا ایک یہ مطلب بھی ہے کہ حقائق اور واقعات کے مطابق بات کرنی چاہئے۔ اگر غلط بات کی جائے تو بعد میں وہ کسی نہ کسی رنگ میں کھل ہی جاتی ہے۔ ۔ اسی طرح ایک مطلب یہ ہے کہ موقع اور مناسبت کے لحاظ سے تبلیغ کرنی چاہئے یعنی ایسی دلیل نہیں دینی چاہئے جس سے دوسرے لوگ غصہ میں آجائیں اور فاصلے مزید بڑھ جائیں۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے بھی یہ فرمایا ہے کہ لوگوں کے فہم و ادراک کے مطابق ان سے بات کرنی چاہئے۔ پھر ایک اور اہم بات یہ ہے کہ تبلیغ کیلئے ضروری ہے کہ پورا سال تبلیغ کیلئے کونٹیکٹ بنانےاور ان کو تبلیغ کرنے کی ضرورت ہے۔ سال میں دو یا تین مرتبہ پمفلٹ دیکر تبلیغ کی ذمہ داری ادا نہیں ہوسکتی۔ آج جو دنیا کے حالات ہیں احمدی ہی دنیا کو بتا سکتے ہیں کہ یہ اللہ تعالیٰ سے دوری کا نتیجہ ہے۔ پس اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے کہ ان باتوں کو مدِ نظر رکھتے ہوئے تبلیغ کرنا ہمارا کام ہے اور ہدایت دینا اللہ تعالیٰ کا کام ہے۔ انسان عالم الغیب نہیں ہے اس لئے ہم نہیں جانتے کہ کس شخص پر اثر ہو گا اس لئے ہم نتائج کے بارہ میں ذمہ دار نہیں ہیں۔ ہم سے بس اتنا پوچھا جائیگا کہ کیا ہم نے اپنے فرض پورا کیا اور اپنی حثیت کے مطابق لوگوں تک اسلام کا پیغام پہنچایا یا نہیں۔ اسی طرح بعض لوگ بعض اوقات سوال کرتے ہیں کہ تم نے کتنے احمدی کر لئے یا اس طور پر تبلیغ کرنے سے کتنے سال لگ جائیں گے۔ ہمارا یہی جواب ہونا چاہئے کہ ہمیں تبلیغ کا حکم ہے جس کو ادا کرنے سے ہم ہرگز نہیں رکیں گے۔ اس کا نتیجہ اللہ تعالیٰ نے دکھانا ہے اور ہم اس امید پر قائم ہیں کہ ایک دن اکثریت ہماری ہو جائیگی۔ اسی طرح یہ بھی یاد رکھنا چاہئے کہ حکمت کا مطلب بزدلی نہیں ہے یا غلط باتوں سے ہاں میں ہاں ملانا نہیں ہے۔ اس لئے حکمت سے سچائی بیان کرنی چاہئے۔ ہم نے لڑنا نہیں ہے لیکن حکمت سے اپنی تعلیم ضرور بیان کرنی چاہئے۔ ابھی حال ہی میں عورتوں سے ہاتھ ملانے پر یا ہم جنسی کے متعلق میرے بعض بیانات پر جرمنی پر منفی تبصرہ بھی کیا گیا۔ فرمایا کہ ابھی حال ہی میں انگلستان کے ایک سیاستدان اس وجہ سے اپنی پارٹی سے الگ ہو گئے کہ وہ ابارشن اور ہم جنسی کی تعلیم کے خلاف تھے۔ فرمایا کہ اگر دنیوی سیاستدان ان معاملات میں بزدلی نہیں دکھاتے تو ہمارا کس قدر مضبوط ایمان ہونا چاہئے اور دنیوی وجوہات کی وجہ سے سچائی سے ہٹنا نہیں چاہئے۔ مخالفت کی پروا نہیں کرنی چاہئے کیونکہ مخالفت حق کی راہ کھولتی ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے بھی فرمایا ہے کہ حق کی جس قدر مخالفت ہو حق اس قدر ہی زیادہ چمکتا ہے اور اپنی شوکت دکھاتا ہے۔ اسی طرح تبلیغ کیلئے ضروری ہے کہ ہمارا قول اور فعل ایک جیسا ہے۔ ہماری باتوں کا اثر اس وقت ہی ہوگا جب ہمارا قول اور فعل برابر ہوگا ۔حضرت مسیح موعود علیہ السلام فرماتے ہیں کہ اگر انسان کی گفتگو سچے دل سے نہ ہو اور اسے میں عملی طاقت نہ ہو تو وہ اثر پذیر نہیں ہوتی۔ ہماری باتیں عند اللہ کوئی وقعت نہیں رکھتیں جبتک عمل نہ ہو۔ اللہ تعالیٰ ہمیں اس کے مطابق عمل کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔

Many countries in their Majlis Shura ponder over this matter that how can we convey the message of Islam in a better way. We should remember that whether it is for Tabligh or any other project, once it has been approved by the Khalifa of the time, it is the duty of the members of Majlis Shura and all office bearers to get it implemented. When it comes to Tabligh projects, it is the duty of all office bearers to participate in these efforts and not leave them to only Secretary Tabligh. When all office bearers will participate in Tabligh, they will become models for members of Jama’at and therefore everyone will contribute. Another meaning of Hikmat is to do Tabligh keeping the facts and reality in mind. If wrong things are mentioned during Tabligh, eventually everything gets exposed. Then another meaning is to do Tabligh according to the circumstances meaning such arguments shouldn’t be presented which may anger or frustrate people. The Holy Prophet (sa) has also said that you should always speak to people according to their intellect and understanding. Then another important matter about Tabligh is that we need to make contacts throughout the year and do Tabligh to them. It is not enough to merely do flyer distribution two or three times a year. The conditions of the world today are due to humanity moving away from Allah and it is only Ahmadis who can bring them back. Therefore, Allah has asked us to deliver the message keeping these points in mind. Guidance comes from Allah alone. We do not know the unseen, and therefore do not know who will get influenced by our Tabligh. We will not be held responsible for the results of our Tabligh; we will be questioned over whether or not we fulfilled our responsibility and gave the message of Islam according to our capacities. Some people ask that how many people have you converted or how many years will it take if you continue with this kind of Tabligh? Our answer should be that we have been commanded to do Tabligh and we will always continue to do so. It is Allah who will show the fruits of our efforts and we are certain that one day we will be in majority throughout the world. We should also remember that wisdom doesn’t mean cowardice or agreeing with something fundamentally wrong. We do not fight with anyone, but should always express our teachings and point of view with wisdom. Recently, some of my comments about shaking hands with women and homosexuality attracted negative commentary in Germany. Recently, a politician in England separated from his party because he was against abortion and homosexuality. Huzoor (aba) said that if worldly politicians do not show cowardice in these matters, how strong should our faith be? We should never leave truthfulness for worldly reasons. Do not worry about opposition as it opens the avenues for truthfulness. The Promised Messiah (as) has said that the more truthfulness is opposed, the more it shines and shows its majesty. It is also important for Tabligh that our actions and claims should be equal, meaning we do what we say. Only then will our Tabligh affect the hearts of people. The Promised Messiah (as) has said that if man doesn’t speak with an honest heart and doesn’t back it with practical example, his speech will carry no influence. Our claims hold no weight in the sight of Allah without our actions. May Allah enable us to act according to these guidelines. Ameen

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
01-Sep-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Bengali (mp3)Bulgarian (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Pushto (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Blessings of MTA Intl. : Jalsa Salana Germany 2017
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | Powerpoint | PDF
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

اللہ تعالیٰ نے اپنے فضل سے دنیائے احمدیت کو ایم ٹی اے کے ذریعہ سے اکٹھا کر دیا ہے اور خلیفۂ وقت کے دوروں اور تقاریر کے سننے کیلئے رسائل وغیرہ کا انتظار نہیں کرنا پڑتا۔ ہر پروگرام ساتھ ساتھ ہی ہر جگہ پہنچتا ہے۔ جرمنی کے جلسہ کے متعلق اور اور ملکوں کے دوروں کے متعلق بہت سے لوگوں کی آراء آتی ہیں۔ یہ اللہ تعالیٰ کا فضل ہے کہ کس طرح اللہ تعالیٰ نے حضرت مسیح عود علیہ السلام کی جماعت کو ایک لڑی میں پرو دیا ہے اور اس کیلئے ہمیں اللہ تعالیٰ کا شکر ادا کرنا چاہئے اور ایم ٹی اے کے کارکنان کا بھی شکریہ ادا کرنا چاہئے۔ اسی طرح مختلف شعبہ جات میں بہت سے لوگ جلسہ کے دوران بے لوث خدمت بجا لاتے ہیں۔ ان کی تعداد اب ہزاروں میں ہے جس میں مرد، خواتین اور بچے شامل ہیں۔ پس تمام رضاکاروں کا بھی ہمیں شکر ادا کرنا چاہئے۔ جلسہ کا غیر احمدی احباب پر بے انتہا اثر ہوتا ہے ۔ یہ بھی درحقیقت جلسہ کی برکات میں شامل ہیں اور ان کو سن کر ہمیں جلسہ کی ہمیت کا احساس بھی ہوتا ہے اور اللہ تعالیٰ کا شکر ادا کرتے ہوئے اپنی حالتوں کو بدلنے کی طرف بھی توجہ پیدا ہوتی ہے۔ ایک عرب دوست جو جلسہ میں شامل ہوئے انھوں نے بتایا کہ مسلمانوں کی باہمی منافرت کی وجہ سے میں اسلام کا دفاع نہ کر پاتا تھا۔آج آپ کا باہمی اتحاد اور خلیفۂ وقت سے محبت کو دیکھ کر میں نے ایسی جماعت کو دیکھ لیا ہے جو پر امن طریق سے اسلام کا پیغام پیش کررہی ہے۔ اور اب میں آپ کی مثال پیش کر کے اسلام کا دفاع کر سکتا ہوں۔ ایک جرمن دوست نے بتایا کہ میں اخبارات میں پڑھا کرتا تھا کہ احمدیہ جماعت بڑی پر امن جماعت ہے لیکن جلسہ میں آکر حقیقی طور پر اس بات کو دیکھ لیا ہے کہ آپ لوگ واقعی اپنی تعلیم کے عین مطابق ہیں۔ ایک جرمن خاتون نے کہا کہ جلسہ کے بعد میرے سوال سارے حل ہو گئے ہیں ۔ اب میں زیادہ لمبا عرصہ مہمان کےطور پر یہاں نہیں آؤنگی بلکہ میری خواہش ہے کہ بیعت کر کے اس جماعت میں شامل ہو جاؤں۔ بلغاریا سے 52 لوگوں کا وفد جلسہ جرمنی میں آیا۔ ان کے ایک مہمان نے کہا کہ یہ ایک ایسا منفرد جلسہ ہے جہاں اللہ تعالیٰ کی محبت اور لوگوں کی خدمت اور ان سے محبت کا پیغام دیا جاتا ہے۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ مولویوں کی مخالفت کی وجہ سے بلغاریا میں جماعت کی رجسٹریشن کو منسوخ کیا گیا ہے۔ یہاں کی جماعت کیلئے دعا کریں کہ اللہ تعالیٰ جماعت کیلئے آسانیاں پیدا فرمائے۔ لتھووینیا کےایک مہمان کہتے ہیں کہ مسلمانوں کو اتنا قریب سے دیکھ کر مجھے بہت اچھا لگا اور اسلام کی بہتر سمجھ کے ساتھ اب میں اپنی زندگی بہتر طور پر گزار سکوں گا۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ جلسہ کا اگر غیروں پر اتنا اثر ہے تو ہم جو احمدی میں ان پر کس حد تک یہ اثر ہونا چاہئے۔ ایک شام کے غیر احمدی کہتے ہیں کہ جہاں جلسہ میں اور چیزں مجھے بہت پسند آئیں ایک چیز جس کو میں معجزہ سمجھتا ہوں وہ یہ ہے کہ تین دنوں میں کوئی لڑائی نہیں ہوئی بلکہ کوئی شخص دوسروں سے اونچی آواز میں بھی نہ بولتا تھا۔ اللہ تعالیٰ کے فضل سے جلسہ سالانہ ہمیشہ بہت لوگوں کے سینے کھولتا ہے اور ان کے سوالات اس کے ذریعہ سے حل ہوتے ہیں۔ اللہ تعالیٰ ان برکات کو ہمیشہ بڑھاتا چلا جائے۔ آمین۔ اسی طرح نیشنل اور انٹرنیشنل میڈیا کے ذریعہ کروڑوں لوگوں تک اسلام احمدیت کا پیغام پہنچا۔ آخر میں حضورِ انور نے بعض ڈیپارٹمنٹس میں بعض کمزوریوں کا ذکر کر کے فرمایا کہ ان کی طرف اگلے سال سے توجہ دینی چاہئے۔ حضورِ انور نے ایک مسجد کے افتتاح کا بھی ذکر فرمایا۔

With his immense grace, Allah has unified the world of Ahmadiyyat through MTA. Now, the magazines of Jama’at aren’t needed for people to read about the addresses and tours of Khalifatul-Masih; rather each program reaches worldwide instantly. Many people write to me about programs worldwide, including recently concluded Jalsa Germany. Allah has unified the Jama’at of the Promised Messiah (as) and we should be grateful to Allah and the volunteers of MTA. Similarly, thousands of people serve in different departments of Jalsa Salana. These volunteers include men, women and children. We should be grateful to all such volunteers. Jalsa Salana always has a positive influence upon non-Ahmadis, which in reality is a blessing of Jalsa. When we witness these accounts of non-Muslims, it makes us realize the importance of Jalsa Salana, enables us to be thankful to Allah and we are drawn towards improving our own inner condition. A non-Ahmadi Arab, who participated in Jalsa Germany, said that due to mutual enmity of Muslims, I was never able to defend Islam against different accusations. Now, after having seen your mutual unity and love of Khalifa, I have witnessed an Islamic Community who is giving the peaceful message of Islam. Now, by citing your example, I will be able to defend Islam. A German friend said that I used to read in newspapers that Ahmadis are very peaceful. Now after having attended Jalsa, I can confirm that you are in fact peaceful and exactly as per your teachings and claims. A German lady said that all of my questions have been answered after having attended Jalsa Salana. I will not come to Jalsa much longer as a guest; my wish is to do Bai’at and become part of this Jama’at. A delegation of 52 people from Bulgaria participated in Jalsa Germany, including 20 Ahmadis. One guest commented that this is such a unique Islamic gathering where love of Allah and sympathy and service of mankind is taught. Hazoor Anwar (aa) said that the enmity of some clerics in Bulgaria has resulted in cancellation of Jama’at’s registration, therefore we should pray that may Allah make everything easy for Jama’at in this country. A guest from Lithuania said that I feel great to have experienced Muslims from up close. A better understanding of Islam will enable me to live a better life. Huzoor Anwar (aa) said that if Jalsa has such an immense effect upon non-Ahmadis, then its impact on us Ahmadis should be even greater. A Syrian non-Ahmadi guest commented that where I enjoyed many aspects of Jalsa, I consider one aspect to be a miracle. This aspect is that there was no fighting or quarrelling in the three days of Jalsa. I didn’t even see anyone talking to others in a loud, rude manner. By Allah’s grace, Jalsa opens the hearts of many people for Jama’at and many of their questions are answered. May Allah continue to increase these blessings! Ameen. Similarly, the message of Islam Ahmadiyyat reached millions of people via national and international media coverage of Jalsa Salana. Hazoor Anwar (aa) also mentioned a few weaknesses in a few departments and instructed that they should be rectified in the future years. He also mentioned the inauguration of a new mosque during his visit to Germany.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
25-Aug-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Malayalam (mp3)Pushto (mp3)Sindhi (mp3)Tamil (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Faith and Good Deeds - Jalsa Salana Germany 2017
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

آج سے جلسہ سالانہ جرمنی کا آغاز ہو رہا ہے۔ ہر احمدی جانتا ہے کہ یہ کوئی دنیوی میلہ نہیں ہے بلکہ روحانیت اور ایمان کو بڑھانے اور عملی حالت میں تبدیلی لانے کا موقع ہے۔ غیر احمدی مسلمان تو شاید یہ کہہ سکتا ہے کہ ہم اللہ اور اس کے بندوں کے حقوق کو نہیں جانتے لیکن ایک احمدی یہ ہرگز نہیں کہہ سکتا کیونکہ بار بار یہ باتیں بیان کی جاتی ہیں۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے حقوق اللہ اور حقوق العباد کے متعلق ایک عظیم ذخیرہ ہمارے لئے چھوڑا ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام فرماتے ہیں کہ اس جماعت کو قائم کرنے کا مقصد ہی یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ کی معرفت حاصل ہو اور تقویٰ اور دعا کی اصلیت کو اپنایا جائے۔ فرمایا کہ دعا کی حقیقت یہ ہے کہ اپنی طرف سے پوری کوشش بھی کی جائے اور پھر اس کا انجام دعا کے ذریعہ اللہ تعالیٰ سے مانگے۔ فرمایا کہ آجکل یورپ اور جدید تعلیم کے نتیجہ میں لوگ دعا کی حقیقت سے دور ہو گئے ہیں اور لوگ خدا سے دور ہٹ رہے ہیں۔ اسی ایمان کو قائم کرنے کے واسطے اور دعا کی حقیقت لوگوں کو سمجھانے کے واسطے اللہ تعالیٰ نے یہ سلسلہ قائم کیا ہے۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ احمدیوں کو آجکل کے فلسفہ سے متاثر نہیں ہونا چاہئے بلکہ اپنے ایمان کو بڑھانے کی کوشش کرنی چاہئے۔ اس کیلئے ضروری ہے کہ سمجھا جائے کہ اللہ تعالیٰ ہم سے کیا چاہتا ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا کہ اتنا کافی نہیں ہے کہ رسمی طور پر بیعت کی جائے۔ نجات کیلئے ضروری ہے کہ اللہ تعالیٰ کو حقیقی طور پر اپنا رب مانا جائے، آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم اور قرآنِ مجید کو وہ اعلیٰ درجہ دیا جائے جو ان کا حق ہے۔ اور اس بات کو سمجھا جائے کہ اس زمانہ میں مخلوق کو اللہ تعالیٰ سے دور پا کر مجھے اس نے مامور کر کے بھیجا ہے۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ ایسے احمدی بھی ہیں جو پانچ وقت نمازیں ادا نہیں کرتے۔ یہ تو ایک بنیادی چیز ہے۔ اس لئے اپنے لئے کوشش کریں اور اپنے لئے دعا کریں اور پانچ نمازوں کو ادا کریں۔ اسی طرح جو بندوں کے حقوق ہیں اور جتنے بھی اخلاقِ فاضلہ ہیں ان کا معراج ہمیں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم میں نظر آتا ہے اور ان اقدار کو اس زمانہ میں حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے قائم فرمایا۔ پس ان تعلیمات پر عمل کرنا ہمارا فرض ہے تا ہم اللہ تعالیٰ سے تعلق پیدا کرنے والے ہوں۔ نماز اس وقت حقیقی نماز کہلاتی ہے جب خدا تعالیٰ سے حقیقی تعلق ہے اور خدا کی راہ میں جان دینے کیلئے وہ تیار ہو۔ جب تک ایسی اطاعت اور وفا کا تعلق اللہ تعالیٰ سے پیدا نہیں ہوتا تو اس کی نماز حقیقی نماز نہیں ہے۔ فرمایا کہ حقیقی ایمان کا نشان یہ ہے کہ انسان دنیا سے بالکل علیحدہ ہو جاتا ہے اور پوری طرح دنیا سے کٹ جاتا ہے۔ حضور علیہ السلام نے یہ بھی فرمایا ہے کہ حقیقی نیکی یہ نہیں ہے کہ بڑے بڑے گناہ مثلا قتل، زنا وغیرہ سے دور رہا جائے بلکہ حقیقی نیکی یہ ہے کہ ان باریک راہوں، اعلیٰ اخلاق اور تعلیمات (مثلا جھوٹ سے پرہیز، پردوپوشی وغیرہ) پر عمل کیا جائے جنکا ذکر اللہ تعالیٰ نے کیا ہے۔ فرمایا کہ جو شخص اعلیٰ اخلاق پر قائم نہیں ہوتا، مجھے اس کے ایمان کا خطرہ ہے۔ آخر پر حضورِ انور نے شاملین جلسہ کو پوری توجہ سے جلسہ کی کاروائی سننے کی ہدایت فرمائی اور کارکنان کو پوری لگن اور اطاعت سے ڈیوٹی بجا لانے کی نصائح فرمائیں۔

Jalsa Salana of Germany is starting from today. Every Ahmadi knows that this isn’t a worldly festival; rather it is a golden opportunity to increase our spirituality and faith and to improve our practical condition. Non-Ahmadi Muslims might say that we aren’t aware of the rights of God and His creation. But an Ahmadi can never say this because these matters are constantly repeated for us. The Promised Messiah (as) has left a treasure for us about the rights of Allah and rights of human beings. The Promised Messiah (as) says that the purpose of creation of this Jama’at is to get a deeper understanding of God and the reality of Taqwa and prayer. The reality of prayer is that one makes his or her full effort and then ask Allah for the best possible result. He says that due to impacts of modern European education, people have moved away from the reality of prayer and moved away from God. This Jama’at has been founded to re-establish this true faith and reality of prayer among the people of this world. Huzur-e-Anwar (aba) said that Ahmadis shouldn’t be affected by modern philosophy; rather they should try to increase their faith. For this to happen, it is important to understand that what does God desire of us? The Promised Messiah (as) has said that it is not enough that one does the customary Bai’at. In order to achiever salvation, it is essential to accept God with full heart and give due status to the Holy Prophet Muhammad (sa) and to the Holy Quran. It is also vital to understand that having found mankind far from God in this age, He has sent me as his messenger. Huzur-e-Anwar said that there are such Ahmadis who don’t pray five times a day. This is a very basic matter. You should make an effort in this regard and pray for yourself and offer five prayers every day. Similarly, we should follow the example of the Holy Prophet (saw) who reached the pinnacle of high morals and fulfilling the rights of human beings. These standards have been re-established in this age by the Promised Messiah (as). It is our duty to follow these teachings to establish a relationship with Allah. The Promised Messiah(as) has said that in order to attain true Salaat or prayer, we must have a relationship and connection with Allah and he is willing to even give his life in the way of Allah. Until he reaches this level of obedience and loyalty towards Allah, his prayer cannot be deemed as real prayer. He says that the sign of a true faith is that man becomes completely free and separated from this world. The Promised Messiah (as) said that the true goodness doesn’t mean to stay away from major sins such as murder, adultery etc.; rather achieving true goodness means to follow all of the teachings of God and adopt high morals in every regard such as staying away from falsehood, covering others’ mistakes and sins etc. He says that a person who doesn’t achieve high morals, I fear that he might eventually lose his faith altogether. At the end, Huzur-e-Anwar advised the participants of Jalsa Germany to attentively listen to its proceedings and directed the volunteers to carry out their assigned duties with absolute devotion and obedience.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
18-Aug-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Arabic (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)

Title: Forgiveness and Reconciliation
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Persian
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | Powerpoint | PDF
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ خدا چاہتا ہے کہ تمہاری ہستی پر پورا پورا انقلاب آئے۔ اور ایک موت کے بعد دوسری زندگی تمہیں عطا ہو. تم میں سے زیادہ بزرگ وہی ہے جو اپنے بھائی کے زیادہ گناہ معاف کرتا ہے اور آپس میں صلح پیدا کرتا ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ سچے ہو کر جھوٹوں کی طرح تذلل اختیار کرو۔ اگر دوسری پارٹی ضد پر قائم رہے تو تم اپنی پوری کوشش کے بعد معاملہ اللہ تعالیٰ پر چھوڑ دو۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے کتابچہ ہماری تعلیم میں اپنی توقعات کو بیان کیا ہے۔ حضرت مسیح موعود کی بیعت میں آکر یہ عہد ہم سب نے کیا ہے کہ ہم فساد نہیں کریں گے اور نفسانی جوش پر قابو پائیں گے۔ پھر فرمایا ہے کہ بدبخت ہے وہ جو ضد کرتا ہے اور نہیں بخشتا۔ ایسا شخص جماعت سے کاٹا جائیگا۔ فرمایا کہ جو صلح نہیں کرتے اور ضد کرتے ہیں تو وہ عہد بیعت سے دوری ہے۔ حضور علیہ السلام نے ہمیں نصیحت فرمائی ہے کہ صرف لفظوں سے اپنے آپ کو سچے احمدی نہ ثابت کرتے رہیں بلکہ اندرونی تبدیلی پیدا کرنی چاہیئے، عہد بیعت کو پورا کرنا چاہئے۔ اگر اندرونی تبدیلی نہیں تو تم میں اور غیر میں کوئی فرق نہیں۔ پھرحضورعلیہ السلام نے نصیحت فرمائی کہ دو باتوں کو یاد رکھو ایک خدا سے ڈرو، دوسرے اپنے بھائیوں سے ایسی ہمدردی کرو جیسے اپنے نفس سے کرتے ہو۔ اور کسی سے کوئی غلطی ہو جائے تو اسے معاف کرنا چاہیے نہ کہ اس پر اور زور دیا جاوے. آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے بھی فرمایا ہے کہ طاقتور وہ نہیں جو لڑائی میں جیتے بلکہ اصل پہلوان وہ ہے جو غصے کے وقت اپنے آپ پر قابو رکھتاہے۔ یہی وہ مومنانہ شان ہے جو حضور علیہ السلام ہم میں پیدا کرنا چاہتے ہیں۔ فرمایا کہ ہماری جماعت کو ایسے لوگوں کی ضرورت نہیں جو جسمانی طور پر پہلوان اور طاقتور ہوں۔ ہماری جماعت میں ایسی قوت رکھنے والے مطلوب ہیں جو تبدیلی اخلاق کرنے والے ہوں اعلیٰ اخلاق کے مالک ہوں۔ فرمایا کہ ہر وہ شخص جو برے اخلاق اور بری عادتوں کو چھوڑتا ہے اور اچھے اخلاق اور عادتوں کو حاصل کرتا ہے اس کے لئے یہی کرامت اور معجزہ ہے۔ حضور نے فرمایا ہے کہ اللہ تعالیٰ کے فضل کے سوا نفسانیت کے کیڑے انسان کے اندر سے نہیں نکل سکتے ۔خدا کا فضل مانگتے رہنا چاہئے۔ جن لوگوں کو یہ فضل حاصل نہیں ہوتا وہ نہ حقوق اللہ ادا کرتے ہیں اور نہ حقوق العباد۔ فرمایا کہ جو شخص لوگوں کے حقوق مارتا ہے میں نہیں سمجھتا کہ وہ توحید پر ایمان رکھتا ہے۔ آپ علیہ السلام نے فرمایا کہ اس جماعت کو تیار کرنے میں غرض یہی ہے کہ زبان ، کان، آنکھ اور ہر عضو میں تقوی سرایت کر جائے۔ غصہ اور آپسی جھگڑے بالکل ختم ہو جائیں۔ جب تک تبدیلی نہ ہو گی خدا کے نزدیک تمہاری کوئی قدر نہیں۔ ہمارا مقصد خدا کو راضی کرنا ہے اور اس کے لئے اعلیٰ اخلاق کو اپنانا ہو گا اور حقوق اللہ اور حقوق العباد قائم کرنے ہوں گے۔ ہمارا کام ہے کہ زمین پر صلح پھیلائیں تا کہ اس سے دین اسلام پھیلے اور تبلیغ کے راستے کھلتے چلے جائیں۔ اللہ تعالٰی ہمیں توفیق دے کہ ہم حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی تعلیم پرعمل کرتے ہوئے بنی نوع سے ہمدردی کرنے والے ہوں۔ آمین

The Promised Messiah (as) has said that God desires that a complete revolution takes place within you so that you are granted another life after this death upon yourself. The most righteous among you is he who forgives his brothers' faults and establishes peace among yourselves. He has said that despite being truthful, you should always stay humble like someone who is lying. Despite all your efforts for peace, if the other party stays rigid and doesn't incline towards peace, then leave your matter to Allah. The Promised Messiah (as) has outlined his expectations from us in the book 'Our Teachings'. After having done bai'at, we have all pledged to always stay away from disorder and control our emotions at all times. Huzur (as) has said that unfortunate is that person who is rigid and doesn't forgive as he will get cut off from this community. People who do not forgive and do not strive to establish peace are far from their promise of bai'at. The Promised Messiah (as) has advised us that mere words do not prove you to be Ahmadi; rather you should bring about an inner change and fulfil the conditions of Bai'at. Without an inner pure change, you are no different than others. You should always remember two things; fear Allah and love your brothers as you love yourself. If someone commits a mistake, you should forgive him and not continue to stress upon his wrongdoings. The Holy Prophet (sa) has said that a strong person isn't he who wins a physical fight; a strong person is he who controls himself in anger. This is the true behaviour of a believer which the Promised Messiah (as) wants to see in us. He said our Jama'at doesn't need individuals who are strong physically; we need such fighters who possess the strength to bring about a pure change in their moral conditions. He said a person who leaves bad habits and adopts righteousness and good morals, that in itself is a miracle for him. The Promised Messiah (as) said that one cannot rid himself of the disease of his self and ego without the grace of Allah. You should always seek God's grace as you cannot fulfil the rights of God or mankind without it. He said that a person who violates the rights of fellow humans, I do not believe that he has faith in Tauheed or Oneness of Allah. The Promised Messiah (as) said that in order to be established upon true Tauheed and commands of Allah, you must never violate others' rights. You must let go of arrogance, pride, mutual enmity, jealousy etc, as one cannot fully believe in oneness of Allah without breaking these idols. Huzur said that the essence or summary of these teachings is that whoever doesn't seek to end all mutual enmities and doesn't seek to establish peace amongst each other, he cannot have true faith in Tauheed or oneness of Allah. The Promised Messiah (as) advised that the purpose of creation of this Jama'at is to display Taqwa through ears, eyes and all organs of the body. Anger and mutual quarrels should vanish away. You cannot attain a high status in the eyes of God without bringing about a change in yourself. Our purpose is to please God for which we require excellent morals and fulfilling the rights of God and His creation. Our job is to spread peace on earth so the religion of Islam continues to flourish and new avenues of Tabligh may open for us. May Allah enable us to follow these teachings of the Promised Messiah (as) by displaying love and sympathy towards all of humanity. Ameen

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
11-Aug-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: True Compliance with Conditions of Bai'at
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

ہر احمدی جو حضرت مسیح موعود علیہ السلام کو ماننے والا ہے وہ اپنی اصلاح کا بھی عہد کرتا ہے۔ اس زمانہ میں اللہ تعالیٰ نے ایم ٹی اے کی برکت سے نوازا ہے جس کے ذریعہ سے تمام احمدی تجدیدِ بیعت بھی کرتے ہیں۔ اس تجدید کے بعد ضروری ہے کہ شرائطِ بیعت کو سامنے رکھا جائے تا ہماری زندگی کے ہر پہلو میں ایک غیر معمولی بہتری پیدا ہو۔ لیکن ہم میں سے بہت سے ہیں جو ان میعاروں سے بہت دور ہیں جن پر حضرت مسیح موعود علیہ السلام اپنی جماعت کو دیکھنا چاہتے ہیں۔ مثلا شرائط بیعت میں شامل ہے کہ جھوٹ، ظلم نہیں کرنا، نفسانی جوشوں سے مغلوب نہیں ہونا، تکبر نہیں کرنا، بنی نوع انسان کو فائدہ پہنچانا ہے اور تکلیف نہیں دینی وغیرہ۔ پس ضروری ہے کہ ہم سب ان شرائط کی طرف توجہ دیں۔ ہم میں سے اکثر ان باتوں کو مانتے تو ہیں لیکن وقت آنے پر ان پر عمل نہیں کرتے۔ مثلا بعض لوگ جھوٹ بول دیتے ہیں خاص طور پر کاروباروں میں، اپنے حقوق کیلئے ظلم بھی کر لیتے ہیں اور خلق اللہ کی حقوق تلفی بھی کر لیتے ہیں۔ خاص طور پر قضا کے معاملات میں دیکھا گیا ہے کہ لوگ عاجزی سے فیصلہ تسلیم نہیں کرتے اور ایک دوسرے کے حقوق مارنے کی کوشش کرتے ہیں۔بعض لوگ اپنی مرضی کے فیصلہ نہ آنے پر حضورانور کو بھی لکھ دیتے ہیں۔ ان جھگڑوں کو ختم کرنے کیلئے ضروری ہے کہ دونوں فریقین ضد سے بعض آئیں اور اپنے حقوق چھوڑنے کیلئے بھی تیار ہوں۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں تعلیم دی ہے کہ تم دنیا میں لوگوں پر رحم کرو اور معاملات میں نرمی کرو تو اللہ بھی تمہارے ساتھ نرمی کریگا۔ ہمیں یاد رکھنا چاہئے کہ ایک دن ہمارا بھی حساب ہونا ہے۔اگر ہم اللہ تعالیٰ سے تو مہلت اور آسان حساب اور مغفرت کی توقع رکھتے ہیں تو ہمیں بھی ایسا ہی برتاؤ اپنے بھائی کے ساتھ کرنا چاہئے۔ فرمایا کہ میں یہ نہیں کہتا کہ قضا کے فیصلہ 100 فیصد درست ہوتے ہیں لیکن 80 سے 85 فیصد درست ہوتے ہیں لیکن بہرحال نیک نیتی سے فیصلہ کرتے ہیں۔ بعض لوگ قاضی پر بھی الزام لگانا شروع کر دیتے ہیں۔ اسی طرح عائلی معاملات میں مالی معاملات چلتے ہیں مثلا حق مہر وغیرہ۔ یہ بہرحال مرد پر قرض ہے لیکن لڑکے کے حالات دیکھنا بھی قضا کیلئے ضروری ہے۔ ان معاملات میں تقویٰ اور انصاف سے کام لینا چاہئے۔ حق لینے والے کو نرمی دکھانی چاہئے اور حق دینے والے کو بہرحال فکر ہونی چاہئے۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ آسانی پیدا کرنے والے پر رحم فرمائے جب وہ کاروبار کرتا ہے اور جب قرض کا تقاضا کرتا ہے۔ پھر آپ نے فرمایا کہ جس شخص نے تنگ دست مقروض کے قرض میں آسانی کی یا معاف کر دیا تو اللہ تعالیٰ قیامت کے دن اس کو اپنے عرش کے نیچے سایہ عطا فرمائیگا۔ پس جن کو توفیق ہو ان کو آسانی پیدا کرنی چاہئے نہ یہ کہ عدالتوں میں وقت ضائع کیا جائے۔ لیکن اس کے ساتھ یہ بھی یاد رکھنا چاہئے کہ جن لوگوں کے ذمہ کوئی قرض یا حق ہو اس کیلئے اس کو ادا کرنا ضروری ہے۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ دولتمند کا قرض ادا نہ کرنا ظلم ہے۔ اسے مجبور کر کے قرض کی ادائیگی کروانی چاہئے۔ حضور نے فرمایا کہ اگر ایسا نہ کیا جائے تو حق مارنے والے اور دلیر ہوں گے۔ اسی لئے حق مارنے والوں کو نظامِ جماعت بھی سزا دیتا ہے۔اسی لئے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم ایسے شخص کی نمازِ جنازہ نہیں پڑھتے تھے جو دوسروں کا مقروض ہو۔ اس لئے قرض سے بچنا چاہئے اور اس بارہ میں فکر کرنی چاہئے۔ حضرت مصلح موعود رضی اللہ عنہ نے فرمایا ہے کہ قرض سے بچنے کیلئے استغفار کرنا چاہئے ، فضول خرچی سے بچنا چاہئے اور اگر ایک پیسہ بھی ملے تو ساتھ ساتھ قرض ادا کرنا چاہئے۔ حضور نے فرمایا کہ بعض لوگ فضول خواہشات کی وجہ سے قرض لے لیتے ہیں یا تجربہ کے بغیر قرض لیکر کاروبار کرلیتے ہیں اور پھر مقروض اور محتاج ہو جاتے ہیں۔ ان چیزوں سے اپنے آپکو بچاتے ہوئے قرض سے جس حد تک ممکن ہو دور رہنا چاہئے۔ اللہ تعالیٰ ہمیں اپنی زندگیاں حقیقی مومنانہ رنگ میں بسر کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔

Every Ahmadi who claims to follow the Promised Messiah (as) also promises to reform himself. Allah has blessed us with MTA in this age, through which all Ahmadis revive their promise of Bai’at. Thereafter, it is important to keep the conditions of Bai’at in mind to bring reform in all aspects of our lives. But sadly, many of us are far from the standards expected by the Promised Messiah (as) of his community. For example, the conditions of Bai’at include staying away from falsehood, oppression, not being overpowered by our desires, and working for the better of mankind. We accept such matters, but often fall short of obeying these teachings when faced with these situations. For example, some people lie from time to time especially for business matters, some people oppress others to get their own rights etc. It has been seen that some people do not accept the decisions of Qaza with humility and try to violate each other’s rights. Some people also write to Huzur only because the decision came against them. For such matters to be resolved amicably, it is important that both parties act selflessly and be willing to let go of some of their rights. The Holy Prophet (sa) has taught us that if you are merciful towards people in this world and deal with them gently in all matters, then Allah will also be merciful to you. We should always remember that we will also be accounted for by Allah. If we hope for ease, mercy and forgiveness from Allah, we should also behave in similar terms towards others. Huzur (aba) said that I do not say that 100% of Qaza decisions are correct, but 80 – 85% are accurate. In any case, decisions are always taken by Qaza with righteous intentions. Some people start blaming Qazis or judges if the decision is against them. Similarly, in matrimonial matters, different financial situations are brought forward such as payment of dowry. Dowry is like a mandatory debt on man, but his conditions also need to be taken into account by Qaza. Such matters should be dealt with righteousness and justice. The receiving party should always be tender and sympathetic and the party in debt should always consider it a burden and try to pay it as soon as possible. The Holy Prophet (sa) has said that may Allah provide comfort to such a person who provides ease while doing business and when he demands for repayment of a loan. Then the Holy Prophet (sa) said that whoever provides ease or forgives the loan of a poor person, Allah will give him shelter on the day of judgment. Therefore, as per our resources, we should try to provide ease and comfort rather than wasting time in courts. But we should remember that whoever owes anything or is in debt, it is compulsory for him to return it. The Holy Prophet (sa) has said that it is unjust or oppression if a wealthy person doesn’t repay his debt. He should be forced to repay it. Huzur-e-Anwar said that if it isn’t enforced, people will become prone to violating other’s rights. This is why Jama’at also punishes people who violate other’s rights by not repaying their debts. The Holy Prophet (sa) did not used to offer the Janaza prayer of someone who was in debt to others. Therefore we should stay away from loans and be mindful towards this. Hazrat Musleh Maud (ra) has advised Jama’at to do three things to stay away from loans; 1. Istighaar or seek forgiveness from Allah - 2. Stay away from overspending or spending aimlessly 3. Repay one’s loan in small portions as soon as one receives any money. Huzoor said some people take loans for vain desires (such as new models of car) or start businesses on loan without any experience. As a result, they fall under heavy burden. We should be aware of such matters and keep ourselves away from loans and debts as much as possible. May Allah enable us to live our lives as true believers. Ameen

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
04-Aug-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)

Title: Blessings of Jalsa Salana UK 2017
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Persian
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

اللہ تعالیٰ کا بڑا حسان ہے کہ جماعت احمدیہ یو کے کا جلسہ سالانہ خیر خیریت سے منعقد ہوا۔ ہمارے لئے ضروری ہے کہ اللہ تعالیٰ کا شکر ادا کریں۔ اور حقیقی شکر تب ہی ہو سکتا ہے جب ہم ہر لمحہ اللہ تعالیٰ کی رضا حاصل کرنے کی کوشش کریں۔ کارکنان کو بھی شکر کرنا چاہئے اور شامل ہونے والوں کو بھی تا ان کی زندگیوں میں پاک تبدیلیاں پیدا ہوتی چلی جائیں۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے کہ جو شخص بندوں کا شکر ادا نہیں کرتا وہ خدا کا شکر بھی نہیں کرتا۔ جلسہ کا ایک مقصد یہ بھی ہے کہ ایک دوسرے کیلئے بھائی چارہ اور شکر کے جذبات پیدا ہوں۔ اور یہ چیزیں آنے والے مہمانوں کو بہت متاثر کرتی ہیں۔ اور مہمان اس بات کا اعتراف کرتے ہیں کہ حقیقی اسلامی تعلیمات کا نمونہ ہمیں جلسہ میں نظر آیا۔ اور یہ نمونہ اور مثالیں آنے ولوں کو حیرت میں ڈالتے ہیں۔ وہ اظہار کرتے ہیں کہ اگر یہ اسلام کی تعلیم ہے تو اس تعلیم کو دنیا میں پھیلنے کی ضرورت ہے۔ بینن سے ایک سیاستدان نے کہا کہ مجھے اس جلسہ سے جماعت کو سمجھنے کا موقع ملا۔ جلسہ میں کوئی نقص نظر نہیں آیا اور ہر نظام اعلیٰ تھا۔ ہر طبقہ کے لوگ دوسروں کو آرام پہنچا رہے تھے۔ ان نظاروں کو میں کبھی بھلا نہ پاؤں گا۔ ہر طرف بھائی چارہ کا ماحول تھا جس سے روحانیت میں اضافہ ہوتا ہے۔ امام جماعت احمدیہ کا عورتوں سے خطاب بھی نہایت ایمان افروز تھا جس میں انھوں نے عورتوں کا مقام اور بڑی عظیم ذمہ داریاں کو بیان کیا۔ کوسٹا ریکا کے پروفیسر کہتے ہیں کہ میں نے جلسہ کے ذریعہ اسلام اور مسلمانوں کا ایک نیا چہرہ دیکھا۔ پھر کوسٹا ریکا کی ایک اور مہمان کہتی ہیں کہ میں نے امام جماعت احمدیہ کے خطاب سنے۔ خاص طور پر یہ نکتہ بہت پسند آیا کہ اپنے دشمنوں کیلئے دعا کرنے سے دل پاک ہو جاتا ہے۔ یہ حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی دی ہوئی تعلیم ہے۔ حضورِ انور ایدہ اللہ نے دیگر مہمانوں کے تاثر بیان کئے جس میں انھوں نے مختلف احساسات کا اظہار کیا۔ مثلا اگر کوئی سچا مذہب ہے تو وہ اسلام احمدیت ہے۔ پھر یہ کہ اگر دنیا میں امن قائم ہوسکتا ہے تو ضروری ہے کہ امام جماعت احمدیہ کی باتوں پر عمل کیا جائے۔ فلیپائن کے ایک سیاستدان نے کہا کہ میرے لئے سب سے بڑی بات یہ تھی کہ ممبرانِ جماعت بڑی محبت اور اخلاص سے ملتے ہیں۔ حضور نے فرمایا کہ یہ محبت اور اخلاص ہماری زندگیوں کا مسلسل حصہ بننا چاہئے نہ صرف یہ کہ جلسہ کے دنوں تک محدود رہے۔ ایک مہمان نے کہا کہ کسی بھی مذہبی جلسہ میں میں نے اتنے نوجوانوں کو نہیں دیکھا۔ ایسا منظر میں نے کبھی نہیں دیکھا۔ گنی کوناکری کے ایک مسلمان سیاستدان نے کہا کہ میں نے بہت سے پروگراموں میں شمولیت کی ہے اور حج بھی کیا ہے لیکن ایسے احسن انتظامات کہیں نہیں دیکھے۔ مجھے یقین ہے کہ آپ لوگوں کے پیچھے خدا تعالیٰ کا ہاتھ ہے۔ پھر ایک مہمان نے کہا کہ عالمی بیعت کی تقریب نے مجھ پر نہایت اثر کیا اور ایسا روحانیت سے پر نظارہ کبھی نہیں دیکھا۔ بہت سے مہمانوں اور جرنلسٹ نے عورتوں کیلئے کئے گئے نظام کی بہت تعریف کی کہ جماعت احمدیہ ہی وہ حقیقی اسلامی جماعت ہے جو عورتوں کا اصل مقام ان کو دیتی ہے۔ پریس کے اندازہ کے مطابق تقریبا ۱۲۸ میلین لوگوں تک جلسہ کے ذریعہ جماعت کا پیغام پہنچا جس پر ہمیں اللہ تعالیٰ کا شکر ادا کرنا چاہئے۔ اللہ تعالیٰ تمام رضا کاروں کو جزا دے جو اسلام کی اس خاموش تبلیغ میں حصہ دار بنتے ہیں۔ ان سب نے بڑی محنت سے کام کیا۔ حضورِ انور نے کینڈا سے آئے ہوئے 350 خدام کا بھی ذکر کیا کہ انھوں نے احسن رنگ میں کام کیا۔ اللہ تعالیٰ ہمیں اپنے فرائض ادا کرنے کی توفیق عطا فرمائے اور ہم ہمیشہ دین کو دنیا پر مقدم رکھنے والے ہوں۔ آمین حضورِ انور نے بعض نمازِ جنازہ غائب کا بھی اعلان فرمایا۔ زکیہ بیگم صاحبہ، طارق مسعود صاحب مربی سلسلہ، شکیل منیر صاحب سابق امیر آسٹریلیا۔

It is a blessing of Allah that Jalsa Salana of UK Jama’at was successfully held. We should be grateful to Allah. In order for us to be grateful, we should try to win the pleasure of God at every moment of our life. Both the participants and the volunteers should continue to be grateful so that a pure change occurs in their life. The Holy Prophet (sa) said that whoever isn’t grateful to people isn’t grateful to Allah either. One purpose of Jalsa is that these feelings of brotherhood and gratefulness should be established for fellow brothers. These things greatly impress our guests and they express that they witness true Islamic teachings at Jalsa. They express that if this is the teaching of Islam, then it needs to spread worldwide. A politician from Benin said that I understood Jama’at through Jalsa. I didn’t see any weakness in Jalsa. People of every class and category were busy trying to provide comfort to others. I will never forget these scenes. There were scenes of brotherhood everywhere which increased us in spirituality. The Khalifa’s address to the ladies was very faith inspiring wherein he explained their status and great responsibilities. A professor from Costa Rica said that I saw a new face of Islam and Muslims through Jalsa. Another guest from Costa Rica said that I listened to all addresses of the Khalifa of Jama’at. What greatly impressed me was this point that praying for your enemies makes your heart pure. This is the teaching given by the Promised Messiah (as). Huzoor mentioned various comments of guests from many countries. For example, a guest said that if there is a true religion, it’s Islam Ahmadiyyat. A guest said that if the world wishes to establish peace, it must follow the guidelines of the Imam of Ahmadiyya Muslim Jama’at. A politician from Philippines said that what most impacted me was mutual love of Ahmadis. Huzoor said that we should make sure that this mutual love between members of Jama’at should always stay, not only in the days of Jalsa. Another guest said that I have never seen these many young people in a religious gathering. A Muslim politician from Guinea Conakry said that I have participated in many Islamic conventions, including Hajj, but have never seen such wonderful system. I have firm faith that the hand of God is with you people. Then another guest said that the scenes of International Bai’at had a great impact on me. I have never seen a ceremony like this filled with spirituality and righteousness. Many guests and journalists praised the set up at Jalsa for women and said that Ahmadiyyat is the true Islamic Jama’at which gives due Islamic rights to women. Almost 128 million people were reached through media news about Jalsa Salana. May Allah bless all volunteers who participate in this silent Tabligh for Islam. They all worked very hard. Huzoor also praised wonderful work of approximately 350 Canadian Khuddam who had gone for waqf-e-Arzi. Huzoor (aba) also mentioned that he hopes that all of them have listened to Jalsa Salana. May Allah enable all of us to fulfill our responsibilities and we always give precedence to our faith over worldly matters. Ameen Huzoor-e-Anwar also announced following funeral prayers in absentia: Zakia Begum Sahiba, Tariq Masood sahib (Murabbi Silsila), Shakil Munir sahib (Former Ameer Australia).

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
28-Jul-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Arabic (mp3)Bulgarian (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Pushto (mp3)Sindhi (mp3)Tamil (mp3)

Title: Jalsa Salana UK 2017 - Our Responsibilities
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Full Text: Urdu | Indonesian
Slide Deck: Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

اللہ تعالیٰ کے فضل سے آج یو کے کا جلسہ سالانہ شروع ہو رہا ہے۔ ان دنوں میں دعاؤں پر بہت زور دینا چاہئے کہ اللہ تعالیٰ ہر لحاظ سے اس جلسہ کو بابرکت فرمائے اور دشمن کے شر سے بچائے۔ مہمانوں کے اسلام میں بہت حقوق ہیں لیکن ساتھ ہی مہمانوں کی ذمہ داریاں بھی ہیں جن کو سب مہمانوں کو ہمیشہ یاد رکھنا چاہئے۔ جب دونوں مہمان اور رضاکار اپنے حقوق پورے کریں گے تو جلسہ کامیاب ہو گا۔ یاد رکھنا چاہئے کہ جلسہ کا اصل مقصد تقویٰ اور اللہ تعالیٰ سے اپنا تعلق بڑھانا ہے اور اپنے بھائیوں کیلئے ایثار و قربانی کرنا ہے۔ پس یہ مقصد ہمیشہ سامنے ہونا چاہئے۔ جہاں تک غیر از جماعت مہمانوں کا تعلق ہے وہ کوئی بھی ہوں ان کی مہمان نوازی ہمیں پوری طرح اپنے وسائل کے مطابق کرنی چاہئے۔ لیکن احمدی جو جلسہ میں شامل ہونے کیلئے آتا ہے اس کو اپنے آپکو دونوں میزبان اور مہمان سمجھنا چاہئے۔ اسی طرح جلسہ کامیابی سے منعقد ہو گا۔ یاد رکھنا چاہئے کہ جو کام کرنے والے ہیں یہ ہمارے غلام نہیں ہیں بلکہ رضا کار ہیں اس لئے ہمیشہ پیار سے بات کریں اور اگر آپکا کام نہ ہو سکے تو اس کو خوشی سے قبول کریں۔ کارکنان کو ہر بات کا خیال رکھنا چاہئے۔ لیکن احمدیوں مہمانوں کو چھوٹی چھوٹی باتوں پر شکایت نہیں کرنی چاہئے بلکہ یہ ذہن میں رکھنا چاہئے کہ ہم حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی دعاؤں کا وارث بننے اور برکات کیلئے اس جلسہ میں شامل ہوئے ہیں۔ حضورِ انور ایدہ اللہ نے کھانے، پارکنگ ، ٹرانسپورٹ، سیکورٹی وغیرہ کے حوالہ سے دونوں شاملین ِ جلسہ اور کارکنان کو خاص ہدایات دیں۔ فرمایا کہ جلسہ کی کامیابی کیلئے دعاؤں میں لگے رہیں۔ جلسہ کی کاروائی کو سب غور سے سنیں اور تمام تقاریر سے بھرپور فائدہ اٹھائیں۔ جلسہ کی تقاریر کے علاوہ ریویو آف ریلیجنز کی جانب سے مختلف نمائشیں، علمی لیکچر وغیرہ سے بھی اپنے ذوق کے مطابق فائدہ اٹھائیں۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ میں اپنے لئے اور اپنی جماعت کیلئے یہ نہیں پسند کرتا کہ تقاریر کی ظاہری بناوٹ پر زیادہ زور دیا جائے ۔ بلکہ ہمیں چاہئے کہ ہم جو کچھ کہیں خدا کیلئے کہیں۔ اور جو سنیں عمل کرنے کیلئے سنیں۔ مسلمانوں کے تنزل کی ایک بڑی وجہ یہی ہے کہ واعظین کو اخلاص سے نہیں سنا جاتا بلکہ ظاہری بناوٹ پر بہت زور ہے۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ احمدی علماء بہت سے روحانی اور علمی مضامین ان تقاریر میں بیان کرتے ہیں جن سے ہم سب کو فائدہ اٹھانا چاہئے۔ اللہ تعالیٰ ہم سب کو جلسہ کے مقاصد کو پوراکرنے کی توفیق عطا فرمائے۔

By the grace of Allah, Jalsa UK is starting today. We should be engaged in prayers during these days that may Allah make this Jalsa successful and keep us safe from the enemies. Guests have many rights in Islam, but at the same time they have also been given responsibilities which should be remembered. When both guests and hosts fulfil their rights, Jalsa will become successful. Remember that the real purpose of Jalsa is to increase Taqwa and relationship with Allah and to sacrifice for fellow brothers. This purpose should be always kept in mind. As far as non-Ahmadi guests are concerned, whoever they may be, we should take care of all their needs according to our resources. To make Jalsa successful, Ahmadis who attend Jalsa should consider themselves both the hosts and guests. Ahmadi guests should remember that the workers are volunteers, not our servants. Therefore, speak kindly to them and if your request isn’t able to be granted, accept it wholeheartedly. Volunteers should take care of everything, but guests shouldn’t complain over small matters. They should keep in mind that we are here to seek blessings from Jalsa and benefit from the prayers of the Promised Messiah (as). Huzur-e-Anwar (aba) gave specific instructions to both guests and hosts regarding food serving, transport, security, parking etc. Continue to pray for the success of Jalsa. We should listen to the proceedings of Jalsa very carefully. Different exhibitions and educational lectures have also been organized by Review of Religions which we should benefit from according to our taste. The Promised Messiah (as) has said that I do not like for myself and my Jama’at that we focus largely on the apparent style of speeches. Rather whatever we say should be for the sake of Allah and we should listen to these speeches with the intention of acting upon them. One of the biggest reasons of Muslims’ downfall was overstressing the outward style of speeches. Huzur-e-Anwar (aba) said that Ahmadi scholars explain many spiritual and educational points in their speeches which we should benefit from. May Allah enable us to achieve the true purpose of Jalsa Salana. Ameen.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
21-Jul-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)

Title: Jalsa Salana UK 2017 - Our Responsibilities
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

جلسہ سالانہ یو کے انشاء اللہ اگلے ہفتہ شروع ہو گا ۔ مختلف ممالک اور شہروں سے لوگوں کی آمد شروع ہو گئ ہے۔ احمدیوں کے علاوہ دوسرے مہمان بھی غیر ممالک سےاب تشریف لاتے ہیں جن میں سیاستدان، پروفیسر، میڈیا وغیرہ شامل ہیں اور یہ سب آنے والے گہری نظر سے ہر چیز کو دیکھتے ہیں۔ خاص طور پر ہمارے نظام اور رضاکاروں کو دیکھتے ہیں ۔ پس اس طرح تمام ولنٹیر ایک خاموش تبلیغ کر رہے ہوتے ہیں۔ پریس کے ذریعہ ہماری پیغام دور دراز کے علاقوں میں پہنچتا ہے۔ پریس کے ذریعہ جماعت کا تعارف بڑھ رہا ہے اور جلسہ بھی اس حوالہ سے ایک اچھا موقع ہے۔ اس لئے تمام ولنٹیرز کو اپنی اہمیت سمجھنی چاہئے کہ نہ صرف وہ اللہ تعالیٰ کی رضا حاصل کرنے والے ہیں بلکہ ان کے اخلاق کا اثر غیروں پر بھی پڑتا ہے۔ یاد رکھنا چاہئے کہ مہمان نوازی بہت اہم شعبہ ہے اور مہمانوں کی ہر ضرورت کا خیال ہمیں رکھنا چاہئے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ میں ہمیشہ خیا ل رکھتا ہوں کہ مہمان کو ہرگز تکلیف نہ پہنچے اور ہر قسم کا آرام اس کو پہنچایا جائے۔ پس اس میں تمام شعبہ جات شامل ہیں جس میں ٹرانسپورٹ، رہائش، سکیورٹی وغیرہ شامل ہے کہ ہر شعبہ مہمانوں کیلئے پورا انتظام کرے۔ جلسہ میں شامل ہونے والا ہر شخص حضرت مسیح موعود علیہ السلام کا مہمان ہے اس لئے تمام مہمانوں کا ہم نے خیال رکھنا ہے۔ امیر غریب کی یکساں اور برابر خدمت ہونی چاہئے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا کہ جو نئے اور ناواقف لوگ ہیں ان کی ہر ضرورت کا خیال رکھا جائے اور کوئی شکایت کا موقع نہ دیا جائے۔ فرمایا کہ لوگ ہزاروں میل سے سفر کر کے صدق کے ساتھ شامل ہونے کیلئے جلسہ میں آتے ہیں۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک مرتبہ فرمایا کہ اللہ اور یومِ آخرت پر ایمان لانے والوں کیلئے تین باتیں ضروری ہیں۔ اچھی بات کرو یا خاموش رہو۔ اپنے پڑوسی کا احترام کرو۔ اپنے مہمان کا احترام کرو۔اللہ تعالیٰ سب کارکنان کو حضرت مسیح موعود علیہ السلام کے مہمانوں کی خدمت کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔ حضورِ انور ایدہ اللہ نے دو جنازہ غائب کا اعلان فرمایا ۔ مکرم سید محمد احمد صاحب بن ڈاکٹر محمد سید اسمٰعیل صاحب آف لاہور پاکستان اور مکرمہ محمودہ بیگم صاحبہ۔

Insha’Allah Jalsa UK will be starting next week and many guests from different countries and cities have started to arrive. Other than Ahmadis, many prominent non-Ahmadis including politicians, professors, media members etc come for Jalsa and keep a close eye on everything during Jalsa. They especially watch our Nizam (system of Jama’at) and our volunteers. Therefore, all volunteers are engaged in silent Tabligh while they serve the guests. Media is also playing an important role in introducing Jama’at worldwide and Jalsa presents an excellent opportunity in this regard. Therefore, all volunteers should understand their importance. Not only do they win the pleasure of Allah through their service, but also greatly influence the guests due to their high morals. We should take care of all needs of our guests. The Promised Messiah (as) has said that I try my best that guests should not face any difficulty and are afforded all kinds of facilities. Huzur said this includes all departments such as Transport, accommodation, security etc that they should make all possible arrangements for guests. Every person who comes to our Jalsa is a guest of the Promised Messiah (as), therefore we should take care of all guests. Whether rich or poor, all should be taken care of equally. The Promised Messiah (as) has also said that those people who are new and unaware of Jama’at, their every need should be especially taken care of and shouldn’t be given any chance to complain. These people travel many miles to come and attend Jalsa with honest hearts. The Holy Prophet (sa) once said that for those who believe in Allah and the day of Judgment, three things are absolutely vital; Speak good or stay silent – Respect your neighbors – Respect your guests. May Allah enable all volunteers to serve all of the guests of the Promised Messiah (as). Huzur-e-Anwar also announced two funeral prayers in absentia - Mukarram Syed Muhammad sahib son of Dr. Muhammad Ismail sahib and Mukarrama Mahmuda Begum sahiba.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
14-Jul-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Arabic (mp3)Bengali (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Pushto (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)

Title: Desire for children and their proper upbringing
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Indonesian
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

بہت سے لوگ اپنی اولاد کیلئے اور ان کی تربیت کیلئے دعا کی درخواست کرتے ہیں۔ اللہ تعالیٰ کے فضل سے جماعت کی اکثریت کو اپنے بچوں کی تربیت کی فکر ہے۔ یہ اللہ تعالیٰ کا فضل ہے کہ اس زمانہ میں ہماری سوچیں اس طرف مائل ہیں۔ قرآن کریم میں مختلف جگہ پر اللہ تعالیٰ نے تربیت کیلئے طریق اور دعائیں سکھائی ہیں۔ یہ درست بات ہے کہ بچوں کی تربیت آسان کام نہیں ہے ۔ اس کیلئے مسلسل محنت اور جہاد کی ضرورت ہے اور اللہ تعالیٰ کے احکام پر عمل کرنے کی ضرورت ہے جو اس ضمن میں اس نے بیان کئے ہیں۔ پس ضروری ہے کہ انسان محنت کرتا چلا جائے اور ہمت نہ ہارے۔ مثلا حضور نے فرمایا کہ ابھی حال ہی میں ایک شخص نے مجھے لکھا کہ بچوں کی تربیت کے لحاظ سے اتنے مسائل ہیں کہ میں نے فیصلہ کیا ہے کہ شادی تو کر لوں لیکن بے اولاد رہنا بہتر ہے۔ فرمایا کہ یہ انتہائی مایوس کن سوچ ہے۔ اور ساری طاقت کا منبع بجائے اللہ تعالیٰ کےشیطان کو سمجھ لیا ہے۔ اللہ تعالیٰ نے بچوں کی تربیت کیلئے قرآن کریم میں بہت سی دعائیں سکھائی ہیں۔ مثلا حضرت ذکریا کی یہ دعا: مثلا حضرت ذکریا کی یہ دعا :یعنی اے میرے رب اپنی جناب سے مجھے نیک اولاد عطا فرما۔ یقینا تو دعا کو سننے والا ہے۔ پس اولاد کے نیک ہونے کیلئے ضروری ہے کہ دونوں والدین نیکیوں پر عمل کرنے والے ہوں۔ اپنے اندر پاک تبدیلی پیدا کئے بغیرانسان کی نیک اولاد کی دعا قبول نہیں ہوتی۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ اولاد کاابتلا بھی بہت بڑا ابتلا ہے۔ اگر اولاد صالح ہو تو پھر کس بات کی پرواہ ہو سکتی ہے۔ اگر اولاد بد بخت ہے تو بیشک لاکھو ں روپیہ چھوڑ جاؤ وہ اس کو ضائع کر دیگا۔ اگر وہ شخص اللہ تعالیٰ کے احکام پر چلے تو اولاد کی نسبت مطمئن ہو جائیگا۔ پھر آپ علیہ السلام نے فرمایا کہ جس طرح تم اولاد کیلئے پیسہ کمانے کی کوشش کرتے ہو اسی طرح ضروری ہے کہ اچھی تربیت کیلئے دعا اور دینی تربیت کیلئے محنت کرو۔ پھر اللہ تعالیٰ نے قرآنِ کریم میں یہ دعا سکھائی ہے: اے ہمارے ربّ ! ہمیں اپنے جیون ساتھیوں اور اپنی اولاد سے آنکھوں کی ٹھنڈک عطا کر اور ہمیں متقیوں کا امام بنا دے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے یہاں ماں باپ کو امام یعنی اپنا عملی نمونہ بچوں کیلئے قائم کرنے کی تلقین کی گئی ہے۔ پھر فرمایا کہ انسان کو سوچنا چاہئے کہ انسان کو اولاد کی خواہش کیوں ہوتی ہے؟ اللہ تعالیٰ نے ہمیں اپنی عبادت کیلئے پیدا کیا ہے۔ اگر انسان خود مومن نہیں بنتا اور عبادت کا حق ادا نہیں کرتا تو ایسے شخص کی دعا کا یہی حال ہو گا کہ وہ اپنی برائیوں کیلئے ایک خلیفہ چھوڑنا چاہتا ہے۔ حضرت مسیح موعود نے فرمایا کہ انسان کو اولاد کی خواہش تو ہوتی ہے لیکن جب اولاد ہوتی ہے تو نہ انکو دین سکھایا جاتا ہے اور نہ اخلاقی معیار۔ اولاد کی پرورش کا اصل مقصد یہ ہونا چاہئے کہ اولاد دین کے خادم ہوں۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ خاص طور پر واقفین نو کے والدین کو اس طرف توجہ دینی چاہئے ۔ اللہ تعالیٰ ہمیں تو فیق دے کہ ہم اپنی اولادکیلئے اچھا نمونہ بننے والے ہوں اور اپنی اولاد کیلئے دعا کرنے والے ہوں۔ آمین۔

Many people write to me requesting prayers for their children and for their upbringing. By the grace of God, majority of Ahmadis are worried for their children. This is a blessing of God for us in this age that we are constantly worried about such matters. Allah has laid out many prayers and ways for upbringing of children. It’s true that this is a difficult task, especially in this age. It requires constant hard work and Jihad. For example, a person recently wrote to me that there are so many issues regarding children in this age that I have decided to get married, but not have any children. Huzur said that this is depressed and hopeless thinking. Such a person has given all powers to Satan, instead of Allah. Allah has taught us many prayers in the Holy Quran for the upbringing of children. For example, this prayer of Prophet Zachariah (as): My Lord, grant me from Thyself pure offspring; surely, You are the Hearer of prayer. Here Allah has taught us the prayer for our children to be pure and righteous. In order for children to be righteous, it is important that both parents themselves are established upon goodness. Your prayer for righteous children will not be accepted without bringing about a pure change in yourself. The Promised Messiah (as) has said that the trial of children is a huge trial. If the child is ill-fated, then even if you leave lots of wealth for him, he would waste it. On the contrary, if that person obeys the commandments of God, he would become satisfied from his children. Then the Promised Messiah (as) says that just like you work hard to earn money for your children, it is important for you to pray and work hard for the upbringing of your children. Similarly, God has taught us this prayer in the Holy Quran: Our Lord, grant us of our wives and children the delight of our eyes, and make us a model for the righteous. The Promised Messiah (as) has said that here God has called parents Imam for the children meaning they need to become a practical role model for their children. Then the Promised Messiah (as) says that man should think why he desires children? Allah has created us for his worship. If a man does not become a true believer and does not fulfil the right of worship of Allah, then his prayer is only as much as leaving a Khalifa or a successor behind to continue his evil ways. Then the Promised Messiah (as) says that man desires children, but once we have children, they are not properly taught religion or moral teachings. The real purpose of upbringing of children should be that they become servants of their faith. Huzur-e-Anwar (aba) said that the parents of waqifin-e-Nau should especially pay attention to this. May Allah enable all of us to be righteous role-models for our children and continue to pray for their upbringing. Ameen

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
07-Jul-2017    

Title: Proofs of Truth
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

انبیاء کی تاریخ میں ہم دیکھتے ہیں کہ ان کی جماعتوں کی ہمیشہ سے ہی مخالفت ہوئی ہے۔ لیکن چونکہ بنی من اللہ ہوتا ہےاس لئے کوئی مخالفت ترقی کی راہ میں روک نہیں بنتی۔ حضرت مسیح موعود کے دعویٰ کے بعد آپ کے ساتھ اور آج تک آپکی جماعت سے یہی رویہ جاری ہے۔ اللہ تعالیٰ نے مخالفتوں کی بھی آپ کو خبر دی اور پھر خود حوصلہ افزائی فرمائی۔ مثلا یہ الہامات ہیں:میں تیرے اور تیرے پیاروں کے ساتھ ہوں۔ ینصرک رجال نوحی الیھم من السماء۔ میں تیری تبلیغ کو زمین کے کناروں تک پہنچاؤنگا۔ بس اللہ تعالیٰ مخالفین کے حملوں کو بھی روک رہا ہے اور لوگوں کے دلوں میں احمدیت کی سچائی بھی ڈال رہا ہے۔اور آج بھی ایسے واقعات ہو رہے ہیں۔ حضورِ انور نے واقعات بیان کئے کہ کس طرح مخالفین کے حملوں کو اللہ تعالیٰ روکتا ہے اور آج بھی ان کو بد انجام تک پہنچاتا ہے۔ آج عمومی طور پر دنیا مذہب سے دور ہٹ رہی ہے لیکن ایسا طبقہ بھی ہے جو خدا تعالیٰ کی طرف مائل ہے۔ اور ایسا ہونا ہی تھا کیونکہ اس زمانہ میں اللہ تعالیٰ نے حضرت مسیح موعود علیہ السلام کو بھیجا ہے تو آپ کی طرف لوگوں کو مائل کرنے کا ذریعہ بھی ضرور وہ پیدا کر دیگا۔ مخالفین جماعت کو ختم کرنے کیلئے زور لگا رہے ہیں اور اللہ تعالیٰ آپکے ماننے والوں کا گروہ بڑھاتا جا رہا ہے۔ اس کے مختلف ذرائع ہیں۔ مثلا ایم ٹی اے، جماعتی لٹریچر اور کتب حضرت مسیح موعود علیہ السلام اور سچی خوابیں وغیرہ۔ حضورِ انور نے افریقہ، مصر، شام، ماریشس وغیرہ کے اس سلسلہ میں واقعات بیان فرمائے۔ اللہ تعالیٰ نے حضرت مسیح موعود علیہ السلام سے فرمایا تھا کہ خدا تیرے نام کو اس وقت تک کہ دنیا منقطع ہو جائے عزت کے ساتھ قائم رکھے گا۔اور جو لوگ تیری ذلت کی کوشش میں لگے ہوئے ہیں وہ خود ذلیل ہوں گے۔پس جب ہم دیکھتے ہیں کہ وعدے پورے ہو رہے ہیں تو تعددی کثرت کا وعدہ بھی ضرور پورا ہو گا۔ دلائل کے لحاظ سے ہم پہلے ہی غالب آچکے ہیں۔ ضرورت اس بات کی ہے کہ ہم اپنے اخلاص کو بڑھاتے چلے جائیں تا اللہ تعالیٰ کے فضلوں کو جذب کرنے والے ہوں۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام فرماتے ہیں: کیا وہ سمجھتے ہیں کہ اپنے منصوبوں سے اور اپنے بے بنیاد جھوٹوں سے اور اپنے افتراؤں سے اور اپنے ہنسی ٹھٹھے سے خدا کے ارادے کو روک دیں گے یا دنیا کو دھوکہ دے کر اس کام کو معرض التوا میں ڈال دیں گے جس کا خدا نے آسمان پر ارادہ کیا ہے ۔ اگر کبھی پہلے بھی حق کے مخالفوں کو ان طریقوں سے کامیابی ہوئی تو وہ بھی کامیاب ہو جائیں گے۔ لیکن اگر یہ ثابت شدہ امر ہے کہ خدا کے مخالف اور اس ارادہ کے مخالف جو آسمان پر کیا گیا ہو ہمیشہ ذلت اور شکست اٹھاتے ہیں تو پھر ان لوگوں کے لئے بھی ایک دن ناکامی اور نامرادی اور رسوائی درپیش ہے ۔ خدا کا فرمودہ کبھی خطا نہیں گیا اور نہ جائے گا ۔ وہ فرماتا ہے خدا نے ابتدا سے لکھ چھوڑا ہو اور اپنا قانون اور اپنی سنت قرار دے دیا ہے کہ وہ اور اس کے رسول ہمیشہ غالب رہیں گے۔ پس چونکہ میں اس کا رسول یعنی فرستادہ ہوں مگر بغیر کسی نئی شریعت اور دعوے اور نئے نام کے بلکہ اسی نبی کریم خاتم الانبیاءکا نام پا کراور اسی میں ہو کر اور اسی کا مظہر بن کر آیا ہوں۔ اس لئے میں کہتا ہوں کہ جیسا کہ قدیم سے یعنی آدم کے زمانہ سے لے کرآنحضرت ﷺ تک ہمیشہ مفہوم اس آیت کا سچا نکلتا ہےایسا ہی اب بھی میرے حق میں سچا نکلے کا ۔

We see in the history of Prophets of God that their communities are always opposed. But because they are sent from God, this animosity cannot stop their progress. After the claims of the Promised Messiah (as), similar behavior was carried out with him and with his Jama’at till this day. Allah gave the news of enmity to the Promised Messiah (as) and also promised his support. Some of the revelations are: 1. I am with you and with those whom you love. 2. Such people will help you whom we have revealed to from the heavens. 3. I shall cause thy message to reach the corners of the earth. Today, people are generally moving away from religion, but such people also exist who are inclined towards God. And this had to be the case because when Allah has sent the Promised Messiah (as), he would also bring people to his community. The opponents are trying to end this Jama’at, while Allah continues to increase the number of lovers of the Promised Messiah (as). This is being done through many ways; for example, MTA, books of Jama’at and of the Promised Messiah (as), true dreams etc. In this regard, Huzoor (aba) narrated some incidents from different countries of Africa, Syria, Mauritius etc. Allah had told the Promised Messiah (as) that until this world perishes, I will keep your name alive in honor. People who seek your humiliation will themselves be humiliated. Huzoor said that now that we see these promises coming true, the promise of victory in numbers will also come true. We have already become victorious in argumentation. What we need to do is continue to increase in our faith and devotion, so that we continue to attract the mercy of Allah. The Promised Messiah (as) said: Do they think that, with their evil plans, lies and mockery, they will be able to halt the decree of Allah or delay it? If it’s a proven fact that the enemies of God always fail and face humiliation in trying to halt the plan of God, then these people are also decreed to fail. God’s word has never gone wrong and he has said: that Me and my Messengers will always prevail. So therefore, because I’m His appointee, but without a new law or a new claim and being a representative of Khatam-an-Nabiyyin (sa), this law will also come true in my case.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
30-Jun-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Arabic (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)

Title: Persevere in Mindful Prayers
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

تشہد و سورة فاتحہ تلاوت کے بعد حضور انور ایدہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا : رمضان اپنی بے شمار برکتوں کے ساتھ آتا ہے اور جو لوگ توفیق پاتے ہیں اس سے فائدہ اٹھاتے ہیں بہت سے مجھے لکھ کر بھی بتاتے ہیں کہ فرائض عبادات کے ساتھ ساتھ انھیں نفلی عبادات کی بھی توفیق ملی اور اس خواہش کا بھی اظہار کرتے ہیں کہ دعا کریں یہ حالت ہم پر ہمیشہ قائم رہے اور جو کمیاں یا کمزوریاں رہ گئی تھیں اللہ تعالیٰ ان کو اپنے فضل سے دور فرمائے۔ ہر شخص کو خود بھی دعا کرنی چاہیے کہ ہم خود ان پر قدم جمانے کی کوشش کریں بلکہ آگے بڑھتے چلے جانے کی اپنی اپنی استعدادوں کے مطابق کوشش کریں۔ اللہ تعالیٰ ہمیں اس کی توفیق عطا فرماتا رہے۔ حضور نے فرمایا : اللہ تعالیٰ نے دعا کی قبولیت اور قرب کا ذکر رمضان کے مہینہ میں ہی نہیں کیا ہے بلکہ عام دنوں میں بھی جو اللہ کے قریب آتا ہے اس کی دعا کو اللہ سنتا ہے ۔اﷲتعالیٰ کے سوا اور کون ہے جو دعاؤں کو سن سکتا اور قبول کر سکتا ہے؟ اﷲ تعالیٰ ہی ہے جو دعا کرنے والے کی دعاؤں کو سنتا اور اس کی مشکلات کو دور فرماتا ہے۔ دعا کی طرف توجہ دلاتے ہوئے آنحضرت ﷺ نے فرمایاکہ ہمارا رب رات کے درمیانی حصہ میں بندہ کے سب سے زیادہ قریب ہوتا ہے اورفرمایا اگر تم سے ہو سکے تو اس گھڑی میں اللہ کا ذکر کرنے والوں میں سے بن جاؤ ۔رمضان کے دنوں میں بہت سے لوگوں کو جو نفل کی عادت پڑی ہے اگر اس میں وہ باقاعدگی اختیار کرنے کی کوشش کریں اور پختہ ارادہ ہو تو اللہ تعالیٰ کی اس قربت سے ہمیشہ فائدہ اٹھا سکتے ہیں ۔اللہ تعالیٰ نے یہ قربت اور قبولیت دعا کے سامان ہر وقت کے لئے مہیا فرمائے ہیں ۔ اگر ہم نے حقیقی زندگی حاصل کرنی ہے تو پھرباقی 11 مہینوں میں خدا کو یاد رکھنا ضروری ہے۔پس دعاؤں اور نیکیوں کے بجا لانے کی خاص کوشش کریں ۔ دعا خداتعالیٰ کا قرب پانے کا واحد ذریعہ ہے۔ حضرت مسیح موعود ؑ نے دعا کے متعلق فرمایاکہ ہمارا خدا بڑا بے نیاز ہے اور جب تک بار بار کثرت سے اضطراب سے دعا نہ کی جائے تو وہ پرواہ نہیں کرتا ۔ انسان اپنے لئے دعا کرتا ہے اور بڑے درد سے دعا کرتا ہے ۔ پس ہمیں اپنے ذاتی دائرہ سے باہر نکل کر جماعت کے لئے دعا کرنی چاہیئے، مسلم امّہ کے لئے اپنے اپنے ملکوں کے لئے دعا کریں اور دنیا پر جو بھیانک خطرات منڈلا رہے ہیں ان کی دوری کے لئے بھی درد سے دعا کریں ۔ حضرت مسیح موعود ؑ نے فرمایاکہ میرا تو یہ مذہب ہے کہ دعا میں دشمنوں کو بھی باہر نہ رکھے جس قدر دعا وسیع ہوگی اُسی قدر دعا کرنے والے کو فائدہ ہوگا اور دعا میں جس قدر بخل کرے گا اسی قدر اللہ تعالیٰ کے قرب سے دور ہوتا جاوے گا ۔پس اللہ تعالیٰ کا قرب حاصل کرنے کا یہ بھی ذریعہ ہے کہ دعاؤں کو وسیع کرے ۔ حضور نے فرمایا : پاکستان کے حالات سب کے علم میں ہیں آئے دن کوئی نہ کوئی مقدمہ یا تنگ کرنے کی کاروائی حکومت کی طرف سے یا مولویوں کی طرف سے ہوتی رہتی ہیں ۔اللہ تعالیٰ ان کے شر سے ہر پاکستانی احمدی کو بچا کر رکھے ۔ اسی طرح الجزائر میں بھی احمدیوں کے خلاف باقاعدہ کاروائی ہو رہی ہے ۔ جہاں تک دعا کے علاوہ کسی کوشش کا سوال ہے ہم نے نہ پہلے قانون ہاتھ میں لیا ، نہ بدلے لئے اور نہ آئندہ لیں گے لیکن دعا کا ہتھیار ہے جو ہم ہمیشہ استعمال کرتے ہیں اور اللہ تعالیٰ ہمیشہ دشمنوں کی منصوبہ بندیوں سے ہمیشہ بچاتا رہتا ہے ۔اللہ تعالیٰ آئندہ بھی انشاء اللہ بچائے گا بلکہ جماعت ترقی کی طرف پہلے سے زیادہ تیزی سے قدم بڑھائے گی ۔ حضور نے فرمایا : دنیا تباہی کی طرف بڑھ رہی ہے امریکہ اور اسکی ساتھی حکومتیں مل کر مسلمانوں کو آپس میں لڑا رہی ہیں مسلمان ان کے ہاتھوں میں بیوقوف بن کر اپنی طاقت کمزور کر رہے ہیں اور اپنے ملکوں کی ترقی کو کئی دیہایاں پیچھے لے جا چکے ہیں ۔شام میں، قطر میں اور کوریا میں ایک منصوبہ کے تحت جنگ کے حالات پیدا کئے جارہے ہیں اور یہ شعلہ کبھی بھی عالمی جنگ کا باعث بن سکتا ہے۔ مسلمانوں کی بد قسمتی ہے کہ جو جگہ مرکز اسلام ہے وہاں کے بادشاہ بھی ایماندار نہیں ۔اور مفادات کی وجہ سے غیر مسلموں کی گود میں گر کر اسلام کو کمزور کر رہے ہیں ۔مسلمان سربراہان اپنے عوام پر ظلم کر کے عوام کو اپنے خلاف کر چکے ہیں اور حکومت کو مضبوط کرنے کے لئے مزید ظلم کرتے ہیں ۔ یہ لوگ نہیں سمجھتے کہ ان کا حل مسیح موعود ؑ کو ماننے میں ہی ہے اور دنیا اگر جنگوں کی تباہی سے بچ سکتی ہے تو صرف ایک ہی ذریعہ ہےاور وہ یہ ہے کہ تمام احمدی درد کے ساتھ ان تباہیوں سے انسانیت کو بچانے کے لئے دعا کریں۔ آپ ﷺ نے فرمایا ہے کہ دعا ایسی مصیبت سے بچانے کے لئے بھی فائدہ دیتی ہے جو نازل ہو چکی اور ایسی بھی جو ابھی نازل نہ ہوئی ہو۔ پس اے اللہ کے بندو! دعا کو اپنے اوپر لازم کر لو ۔پس اس ارشاد کے مطابق ہمیں دعاؤں پر بہت زور دینا چاہیے اور آج دنیا کے انسانوں کا درد محسوس کرتے ہوئے آنے والی تکالیف کا درد سامنے رکھتے ہوئے ان کے لئے دعا کریں ۔ اللہ تعالیٰ کرے کہ ہماری دعاؤں سے ان کو عقل آجائے اور ان کو تباہی کے گڑھے میں گرنے سے بچا لے ۔ آمین

The month of Ramzan was filled with blessings. Many people have written to me stating how much they have benefited from this special month. These people were able to focus on prayers, and remembrance of Allah. They have also prayed that this striving and effort remain throughout the year. May Allah give us the opportunity to focus on prayers not only in the month of Ramzan but able to maintain it each and every month. Huzur (aba) said, Allah does not only accept prayers in the month of Ramzan of those who are close to him, but accepts the prayers of everyone all year long those who strive to be close Him. Who else can listen to prayers and accept then other than Allah? It is only Allah who listens to the prayers of a caller and removes difficulties. Focusing on du’a, the Holy Prophet (sa) has said: During the middle part of the night our Lord is the closest to his creation, so if you can you should become those who remember Allah at this time. Those who were able to offer nawafil in the month of Ramzan and continue to offer them, then they will be able to achieve God’s nearness permanently. God has created the means to accept prayers and offer his nearness all the time. You will be considered dead if you are only limiting yourself to a month in this accomplishment and not continuing after Ramzan has passed. If we want to truly attain life, we must remember God in the 11 months as well. Hence, strive and focus on remembrance of Allah and carrying out good deeds. Prayers is your only means to achieve nearness to Allah. Huzur (aba) says, our God, is independent and will not care for us, until we consistently and repeatedly pray to him. Look, when someone’s wife is sick or a child is sick or someone has a court hearing, how much restlessness and pain a person goes through. Hence, until and unless that pain, desire and anguish is not created prayers will not be accepted. People usually pray for themselves, we should step out of this circle and pray for the entire Muslim Ummah, pray for your respective countries, pray for peace and better condition of the world. We should pray with pain in our hearts and melting souls. The Promised Messiah (as) has said, we should not leave out our enemies in our prayers, the more vast our prayers the more benefit we will receive from God, if we are stingy in this regard, God will stay away from us. Hence, one way to attain God’s nearness is to expand our circle of prayers and not limit them. Everyone is aware of the conditions of Pakistan. Each day either from the government or from the local maulvis there is some transgression. May God keep all Ahmadiis safe from the mischief makers. Likewise, in Algeria there is much tension and trouble against Ahmadis. We have never taken the law in our hands and we will never do this. The only weapon we have is to focus on prayers. The world is marching towards destruction, America and its allies are working as a team to ruin and cause chaos in Muslim countries. Syria, Qatar, and Korea are all countries ready to engage in war and the damage and result could be horrific and a huge war could breakout. Huzur (aba) said, it is unfortunate that the leaders of the Muslim world are also faithless and are making every effort to defame and damage Islam. Due to worldly and political gain they are aiding non-Muslim countries. These people do not understand that the only solution to the world’s problems is to accept the Messiah and Imam Mahdi of the time. If the world can be saved from a huge destructions it is only through prayers of Ahmadis. These prayers must be performed with utmost pain and anguish. The Holy Prophet (sa) has said, prayers can make misfortunes and trials and tribulations bearable, and future misfortunes and trials and tribulations can be averted O people! Make prayer a must for yourself!! Hence, according to this saying, we should persevere in mindful prayers. May Allah give sense and wisdom to the world. Ameen

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
23-Jun-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)

Title: Salat, Jumu'ah and Ramzan
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu | Telugu
Slide Deck: Powerpoint | Powerpoint | PDF
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

رمضان کا مہینہ آ کر تیزی سے نکل گیا اور ہمیں اپنا جائزہ لینا چاہئے کہ ہم نے اس ماہ میں کیا حاصل کیا ہے۔ اللہ تعالیٰ جو اس ماہ میں اپنے بندوں کے قریب ہو کر ان کی دعائیں سنتا ہے، ہم نے اس کی رحمتوں سے کہاں تک فائدہ اٹھا یا ہے یا کیا عہد کئے ہیں۔ اگر ہم نے نمازوں یا جمعوں یا تلاوتِ قرآن کریم میں باقاعدگی صرف رمضان کے مہینہ میں رکھنی ہے تو یہ اللہ تعالیٰ کے حکم کے مطابق نہیں ہے۔ رمضان تو آتا ہے ایک ٹریننگ کیمپ کے طور پر اور اس میں سے گزرنے کے بعد ہماری زندگیوں میں مزید بہتری آنی چاہئے۔ اللہ تعالیٰ نے تو اقیموا الصلوۃ اور حافظوا علی الصلوات کا حکم دیا ہے۔ خاص طور پر صلوۃ الوسطیٰ کی نصیحت کی ہے کیونکہ یہ وہ نماز ہے جو خاص طور پر ہمارے لئے ادا کرنا مشکل ہوتا ہے۔ جس کیلئے فجر پڑھنا زیادہ مشکل ہے وہی اس کیلئے صلوۃ الوسطیٰ ہے اوراسکو ادا کرنے سے اللہ تعالیٰ زیادہ اجر دیتا ہے۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا ہے کہ ایک جمعہ سے اگلے جمعہ تک ادا کی گئیں پانچ نمازیں گناہوں کیلئے کفارہ بن جاتی ہیں بشرطیکہ کہ بڑے گناہوں سے بچا رہے۔ اسی طرح نمازِ جمعہ کی اہمیت ہے۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ جس شخص نے تین جمعہ متواتر چھوڑ دئے اللہ تعالیٰ اس کے دل پر مہر کر دیتا ہے یا دل سیاہ کر دیتا ہے۔ جو لوگ جمعہ کی نماز کی ادائیگی میں لا پرواہ کرتے ہیں انھیں خاص طور پر اس طرف توجہ دینی چاہئے۔ اللہ تعالیٰ نے یہ نہیں فرمایا کہ رمضان کا جمعہ پڑھ لو بلکہ ہر نمازِ جمعہ کی اہمیت قرآنِ کریم میں بیان کی ہے۔ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے:[62:10] اے وہ لوگو جو ایمان لائے ہو! جب جمعہ کے دن کے ایک حصّہ میں نماز کے لئے بلایا جائے تو اللہ کے ذکر کی طرف جلدی کرتے ہوئے بڑھا کرو اور تجارت چھوڑ دیا کرو۔ یہ تمہارے لئے بہتر ہے اگر تم علم رکھتے ہو۔ جمعہ کیلئے یاد رکھنا چاہئے کہ یہ مردوں پر فرض ہے۔ عورتیں اگر آئیں تو ان کیلئے زائد اجر ہے اور بعض اوقات عورتوں کے جمعہ کی وجہ سے انکی اولاد کو اس طرف توجہ پیدا ہو جاتی ہے۔ ہاں عید کی نماز پر سب کو آنا ضروری ہے۔ احمدیوں کو یاد رکھنا چاہئے کہ اپنی نوکری یا کام سے چھٹی لیکر نمازِ جمعہ کی ادائیگی کیلئے ضرور آنا چاہئے۔ اگر ایسا ممکن نہ ہو سکے تو پھر کام کے قریب اور ۳، ۴ احمدیوں کے ساتھ مل کر ادا کرلے۔ پس کسی بھی احمدی کو دنیوی وجہ سے جمعہ ہرگز نہیں چھوڑنا چاہئے۔ اسی طرح قرآنِ کریم کی تلاوت کو بھی رمضان کے علاوہ عام دنوں میں بھی جاری رکھنا چاہئے۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے: [17:79] یقیناً فجر کو قرآن پڑھنا ایسا ہے کہ اُس کی گواہی دی جاتی ہے۔ پور را سال توجہ کے ساتھ سمجھ کر قرآن کریم کی تلاوت میں سستی نہیں ہونی چاہئے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ جو لوگ قرآن کو عزت دیں گے وہ آسمان پر عزت پائیں گے۔ حضرت مسیح موعود نے ہمیشہ اپنی جماعت کو تلقین کی ہے کہ باقاعدگی سے اپنے اندر پاک تبدیلی پیدا کرتے چلے جائیں۔ ہر قسم کی برائی اور گندگی سے دور ہوتے چلے جائیں اور نیکیوں میں مزید بڑھتے چلے جائیں۔ پس ہر ایک کو یہ عہد کرنا چاہئے کہ اس رمضان کے بعد ہم اللہ تعالیٰ کے تمام احکامات پر عمل کریں گے۔ اللہ تعالیٰ ہمیں اسکی توفیق عطا فرمائے۔ حضورِ انور ایدہ اللہ نے دو نمازِ جنازہ غائب کا اعلان فرمایا۔ مکرمہ مشتاق زہرہ صاحبہ، مکرم ابو بکر صاحب۔ انا للہ و انا الیہ راجعون۔

The month of Ramzan came and quickly passed. We should evaluate ourselves and see what we have gained in this month. Allah comes closer to his servants in this month and listens to their prayers, so we should ponder over how much we have benefitted? If our salat and recitation of Quran and worship was only for the month of Ramzan, then this isn’t according to the Will of Allah. The month of Ramzan is like a training camp, after which our spiritual life should continue to improve. Allah has commanded that we establish salat and guard over our salat. This is not only for the month of Ramzan but throughout the year. We are specially commanded to guard over the middle salat which means the salat which is difficult to offer. If Fajr prayer is difficult for someone to offer, than that becomes the middle prayer for him. The Holy Prophet (sa) has said: The five daily prayers, from one Jumu’ah to the next, are an expiation for whatever sins come in between, so long as one does not commit any major sin. Similarly the Friday prayer is important. The Holy Prophet (sa) has said that whoever does not attend three consecutive Friday prayers without a valid reason, his heart is sealed by Allah or Allah darkens his heart. People who aren’t regular in offering of Friday prayer should pay attention to this. Allah has not asked us to attend the last Friday prayer of Ramzan. We are to attend all Friday prayers. That is why the injunction (62:10) O ye who believe! When the call is made for Prayer on Friday, hasten to the remembrance of Allah, and leave off all business. That is better for you, if you only knew. Friday Prayer is compulsory for men. If women come, it is a source of extra reward for them and also results in their children becoming regular. Eid prayer, however, is wajib for everyone. All Ahmadis should remember that they should take a break from their jobs and businesses to come for the Friday prayers. If it is not possible, then they should look to get together with 3, 4 other Ahmadis close to their workplace. No Ahmadi should leave the Friday prayer any week due to worldly reasons. Similarly, the recitation of Quran should continue even after the days of Ramzan. Allah says in the Holy Quran :(17:79) Verily, the recitation of the Qur’an at dawn is especially acceptable to God Therefore, it is important to read Quran throughout the year and understand its translation. The Promised Messiah (as) has said that whosoever honors the Quran will be honored in the heavens. He emphasized that we strive to continuously bring about a pure change within us and to stay away from all sins and immoral acts and advance in the doing of righteous deeds. Therefore, each one of us should promise to fulfill all commandments of Allah after passing through this Ramzan. May Allah enable us to do so. Huzur (aba) announced that he would lead two funeral prayers in absentia of Mukarrama Mushtaq Zohra Sahiba and Mukarram Abu Bakr Sahib both passed away recently. Inna lillah hey wa inna elay hey rajeoon

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
16-Jun-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Arabic (mp3)Bulgarian (mp3)German (mp3)Russian (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Truth, Lies and Arrogance
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

تقویٰ کے متعلق حضرت مسیح موعود فرماتے ہیں متقی انسان اس وقت بنتا ہے جب اس میں تمام خلق موجود ہیں۔ پس مومن کو کوشش کرنی چاہئے کہ تمام خلق اپنائے اور اللہ تعالیٰ کے احکام کے مطابق عمل کرے۔ایمان کو قائم رکھنے کیلئے اللہ تعالیٰ نے بعض اخلاق کا ذکر کیا ہے جن پر عمل کے بغیر انسان کا ایمان خطرہ میں پڑ جاتا ہے۔ ان میں سے ایک سچائی پر قائم ہونا ہے اور جھوٹ سے بچنا ہے۔ اللہ تعالیٰ نے قرآنِ کریم میں فرمایا ہے:’پس بتوں کی پلیدی سے بچو اور جھوٹ کہنے سے بچو‘۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ قرآن کریم نے دروغ گوئی کو بتوں کی پوجا سے تشبیہ دی ہے۔ اور پھر فرمایا کہ جھوٹ بھی ایک بت ہے جس پر بھروسہ کرنے والا خدا پر بھروسہ چھوڑ دیتا ہے۔ جھوٹ بولنے کی عادت آسانی سے دور نہیں ہوتی بلکہ اس کیلئے اس شخص کو بڑی محنت کرنی پڑتی ہے۔ فرمایا کہ احمق انسان اللہ کو چھوڑ کرجیسے پتھر کے سامنے جھکتا ہے اسی طرح انسان اپنے مقاصد کو حاصل کرنے کے ذریعہ جھوٹ کا سہارا لیتا ہے۔ حضور نے فرمایا کہ آجکل تو لوگ ہر بات میں جھوٹ بولتے ہیں۔ ابھی حال ہی میں رسالہ نیشنل جیوگرافی میں ایک آرٹیکل آیا تھا کہ انسان جھوٹ کیوں بولتے ہیں؟ اور یہ ثابت کرنے کی کوشش کی ہے کہ جھوٹ بولنا انسان کی فطرت میں شامل ہے حالانکہ یہ غلط ہے۔ یہ ماحول کی وجہ سے انسان میں عادت پیدا ہوتی ہے نہ کہ فطرت کی وجہ سے۔ اس مضمون کو پڑھ کراندازہ ہوتا ہے کہ کس طرح ان لوگوں کی زندگیاں جھوٹ سے بھری ہوئی ہیں۔ اور جب ان لوگوں کے جھوٹ کھلتے ہیں تو بہت سے جھگڑے پیدا ہوتے ہیں اور ان کے گھر برباد ہوتے ہیں۔ اسی وجہ سے نکاح کے وقت اسلام میں یہ آیت پڑھی جاتی ہے:[33:71] اے وہ لوگو جو ایمان لائے ہو! اللہ کا تقویٰ اختیار کرو اور صاف سیدھی بات کیا کرو۔ فرمایا کہ اگر میاں بیوی ایک دوسرے سے سچائی سے پیش آئیں تو نہ صرف تمہارا آپس میں رشتہ اچھے طور پر قائم رہے گا بلکہ تمہارے بچے بہت سی برائیوں سے دور رہیں گے۔ جو لوگ دین سے دور ہیں اور خدا سے دور ہیں ان کو تو ان معاملات میں کوئی ہدایت حاصل نہیں ہے لیکن ہمارے لئے تو واضح احکام موجود ہیں۔ہم میں سے بعض لوگ ان معاملات میں مغربی دنیا کو اپنے لئے ایک مثال سمجھتے ہیں حالانکہ ہماری تعلیم ان سے بہت بہتر ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے بھی ہمیں ہدایت فرمائی ہے کہ ہر معاملہ میں سچائی پر قائم ہو جانا چاہئے بیشک یہ سچائی ایک بچہ سے ہی کیوں نہ حاصل ہو۔ اور ہمیشہ سچی گواہی پر قائم ہو جاؤ بیشک وہ تمہارے قریبی رشتہ داروں کے خلاف ہی کیوں نہ ہو۔ اسی طرح بعض لوگ جائیداد کے معاملات میں جھوٹ سے کام لیتے ہیں حالانکہ اللہ تعالیٰ نے تو فرمایا ہے کہ اپنے دشمن سے بھی جھوٹ سے کام نہ لو۔ اس لئے ہم سب کوخاص طور پر اپنے جائزے لینے چاہئے کہ کہیں ہماری زندگی کے کسی پہلو میں بھی جھوٹ تو شامل نہیں ہے ۔ پھر ایک اہم نیکی عاجزی اور تکبر سے دوری ہے جو ہر متقی میں ہونی چاہئے۔اللہ تعالیٰ قرآنِ کریم میں فرماتا ہے:[31:19] اور (نخوت سے) انسانوں کے لئے اپنے گال نہ پُھلا اور زمین میں یونہی اکڑتے ہوئے نہ پھر۔ اللہ کسی تکبر کرنے والے (اور) فخرومباہات کرنے والے کو پسند نہیں کرتا۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے یہ تعلیم دی ہے کہ بعض ایسے لوگ ہیں کہ دو دن کی نمازوں یا روزہ، زکوۃ کی وجہ سے فخروتکبر میں پڑجاتا ہے۔ حضور نے فرمایا کہ آجکل رمضان میں خاص طور پراس بات کا خیال رکھنا چاہئے۔ شیطان نے تکبر کیا تھا اور اپنے آپکو آدم سےبہتر سمجھا۔ اس کے نتیجہ میں وہ اللہ تعالیٰ سے دور ہو گیا اور یہی حال ہر متکبر کا ہوتا ہے۔ اور آدم علیہ السلام کا یہ حال تھا کہ وہ اللہ تعالیٰ کی طرف جھک گئے اور عاجزی اختیار کی اور اس طرح دعا کی کہ:[7:24] اُن دونوں نے کہا کہ اے ہمارے ربّ! ہم نے اپنی جانوں پر ظلم کیا اور اگر تو نے ہمیں معاف نہ کیا اور ہم پر رحم نہ کیا تو یقیناً ہم گھاٹا کھانے والوں میں سے ہوجائیں گے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ میرے نزدیک پاک ہونے کا یہ طریق ہے کہ کسی قسم کا تکبر نہ ہو۔ اور اگر اللہ تعالیٰ سے تعلق پیدا ہو جائے اور قبولیتِ دعا کا موقع ملے تو تکبر پیدا نہ ہو بلکہ مزید انکساری میں بڑھتے جاؤ۔ پھر فرمایا کہ اللہ تعالیٰ بہت رحیم و کریم ہے مگر تکبر بہت خطرناک بیماری ہے۔ جس میں یہ پیدا ہو جائے اس کیلئے روحانی موت ہے۔ اللہ تعالیٰ چاہتا ہے کہ اس جماعت کے ذریعہ سے تمام حقیقی نیکیاں اور اخلاق کو دنیا میں قائم کرے۔ اللہ تعالیٰ ہمیں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے اسوہ پر چلتے ہوئے تمام برائیوں سے بچنے اور تمام اعلیٰ اخلاق اپنانے کی توفیق عطا فرمائے۔اور ہم حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی توقعات پر عمل کرنے والے ہوں۔ ا ٓمین۔

The Promised Messiah (as) has said that in order to have true Taqwa, one must instill all good morals in one’s self. Therefore, a believer should try to adopt all excellent morals and obey all commandments of God. Allah has mentioned many morals in the Holy Quran, without which one cannot safeguard his faith. One of these morals is to establish truthfulness and staying away from falsehood. Allah says in the Holy Quran: (22:31) “Shun therefore the abomination of idols, and shun all words of untruth”. The Promised Messiah (as) says that the Holy Quran has likened telling a lie or falsehood to worshipping an idol. A lie is like an idol that if one relies on it, he loses the trust of God. He says that a person who become a habitual liar, it becomes difficulty for him to leave this habit and requires extremely hard work. Then he says that just like a foolish person turns to an idol instead of Allah, similarly human beings rely upon falsehood to accomplish their tasks. Huzur said that people lie in every matter these days. Recently, a study was published in the National Geography magazine on why humans lie? An attempt was made to prove that this is somehow part of human nature. This is false as it is the environment and upbringing which brings about this habit. Reading this study shows how people’s lives have become full of lies and deception. And when these lies are revealed, it creates many problems and breaks their households. This is why the following verse of Quran is read out at the time of Nikah:(33:71( O ye who believe! fear Allah, and say the right word. Huzur said that if the husband and wife treat each other with absolute truthfulness, not only will their own relationship stay in good terms, but their children will also stay away from many immoralities. People who are far from God have no guidance in these matters, but we have clear commandments of Allah. Some of us consider the Western world an example for ourselves in these matters, even though our teaching is much better than their morals. The Promised Messiah (as) has guided us that we should stay upon truthfulness in every matter, even if this truth comes from a child. We should stay upon truthfulness, even if it goes against our close relatives. Some people lie in matters of inheritance of properties, even though Allah has said that we shouldn’t even lie to our enemies. We should all self-evaluate that are we completely free of falsehood in all aspects of our lives. Another important moral we should pay attention towards is humility and staying away from arrogance. Allah says in the Holy Quran :( 31:19) ‘And turn not thy cheek away from men in pride nor walk in the earth haughtily; Surely, Allah loves not any arrogant boaster. The Promised Messiah (as) has said that some people become arrogant after a few days of prayers, fasting or Zakat. Huzur said that we should especially pay attention to this in the month of Ramadan. It was Satan who showed arrogance against Adam and as a result was rejected by God. In reality, this is the fate of every arrogant person. Therefore, we should look towards the example of humility of Prophet Adam (as) who prayed in the following words (7:24) Our Lord, we have wronged ourselves; and if Thou forgive us not and have not mercy on us, we shall surely be of the lost. The Promised Messiah (as) has said that I believe that one must be absolutely free of arrogance in order to be spiritually clean. And if you are able to experience a relationship with Allah and acceptance of prayers, you shouldn’t become arrogant; rather try to increase in humility. He said that God is very merciful, but arrogance is a dangerous disease. One who is afflicted with this disease faces spiritual death. Allah wills that he establishes all true virtues and morals through this Jama’at. May Allah enable us to stay away from all immoral acts and instill excellent morals within us by following the Sunnah of the Holy Prophet (sa). May Allah enable us to act according to the desires of the Promised Messiah (as). Ameen

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
09-Jun-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Attaining Taqwa
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

روزوں اور رمضان کا مقصد دلوں میں تقویٰ پیدا کرنا ہے اور اس مضمون کو حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے مختلف جگہ پر بیان کیا ہے۔ اگر تقویٰ نہ ہو تو کسی بھی قسم کی نیکی نہیں ہو سکتی۔ ان نیکیوں میں باقاعدگی صرف تقویٰ ہی سے آتی ہے۔ اورتقویٰ کے متعلق یہ بھی یاد رکھنا چاہئے کہ اس کیلئے اچھے اخلاق کا ہونا بہت ضروری ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام فرماتے ہیں کہ اخلاق انسان کے صالح ہونے کی نشانی ہے۔ تقویٰ کے بہت سے حصے ہیں۔ جو شخص اچھے اخلاق کا اظہار کرتا ہے اسکے دشمن بھی دوست ہو جاتے ہیں۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے کہ اِدْفَعْ بِالَّتِیْ ھِیَ اَحْسَن یعنی ہمیشہ نیکی یا اچھی بات سے ہی بدی کا دفاع کر۔ اللہ تعالیٰ کا منشا ہے کہ اگر گالی بھی دی جائے تو اس پر صبر کیا جائے۔ خوش اخلاقی ایک ایسا جوہر ہے کہ موذی انسان پر بھی اسکا اثر پیدا پڑتا ہے۔ پھر آپ علیہ السلام نے فرمایا کہ انسانوں اور جانوروں میں اصل فرق اخلاق ہی ہیں اور حقیقی اخلاق یہی ہے کہ اپنی زندگی کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت پر چلایا جائے۔ اللہ تعالیٰ نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے متعلق فرمایا کہ اِنَّکَ لَعَلٰی خُلُقٍ عَظِیْم یعنی کہ یقیناً تو بہت بڑے خُلق پر فائز ہے۔ پس آپکے اسوہ پر چلنا ہر مومن کا فرض ہے۔ ہر پہلو میں آپ کا نمونہ بے نظیر اور کامل ہے۔ آپ علیہ السلام فرماتے ہیں کہ جب تک انسان مجاہدہ نہ کریگا اور دعا نہ کریگا تو دل پر سے جو اندھیرا ہے وہ دور نہیں ہو سکتا۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے کہ یقیناً اللہ کسی قوم کی حالت نہیں بدلتا جب تک وہ خود اُسے تبدیل نہ کریں جو اُن کےدلوں میں ہے ۔ یہ اللہ تعالیٰ کی سنتِ ازل ہے کہ تبدیلِ اخلاق صرف مجاہدہ اور دعا سے ہی ہو سکتا ہے۔ پس آجکل رمضان میں اللہ تعالیٰ نے ہمیں یہ موقع عطا فرمایا ہے کہ ہم اپنے اخلاق میں ایک مثبت تبدیلی پیدا کریں۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ تبدیلِ اخلاق کیلئے توبہ بھی نہایت ضروری ہے۔اور سچی توبہ کی حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے تین شرائط بیان فرمائی ہیں۔ پہلی شرط جسے عربی زبان میں اقلاع کہتے ہیں ۔ یعنی ان خیالات فاسدہ کو دور کردیا جاوے جو ان خصائل ردیہ کے محرک ہیں ۔ اصل بات یہ ہے کہ تصورات کا بڑا بھاری اثر پڑتا ہے کیونکہ حیطہ عمل میں آنے سے پیشتر ہر ایک فعل ایک تصوری صورت رکھتا ہے ۔ پس توبہ کیلئے پہلی شرط یہ ہے کہ ان خیالات فاسد اور تصورات بد کو چھوڑ دے۔ دوسری شرط ندم ہے یعنی پیشمانی اور ندامت ظاہر کرنا ۔ پس گناہ اور بدی کے ارتکاب پر پیشمانی ظاہر کرے اور یہ خیال کرے کہ یہ لذات عارضی اور چند روزہ ہیں۔ تیسری شرط عزم ہے یعنی آئندہ کیلئے مصمم ارادہ کرلےکہ پھر ان برائیوں کی طرف رجوع نہ کرے گا اور جب وہ مداومت کریگا تو خداتعالیٰ اسے سچی توبہ کی توفیق دے گا۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ آج بھی اکثر لوگ جو جماعت میں داخل ہوتے ہیں وہ کسی نہ کسی احمدی کے اخلاق کی وجہ سے یا بطور جماعت ہمارے اخلاق کو دیکھ کر ہی اس طرف آتا ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ میری نصیحت یہی ہے کہ اچھے اخلاق کا اظہار کرنا ہی حقیقی کرامت ہے اور اس سے اسلام کی سچائی ظاہر ہوتی ہے۔ حقیقت میں بہت سی غیر قوموں کو یہی چیز یعنی اسلا م کی اعلیٰ اخلاقی تعلیم اسلام کی طرف کھینچ لائی۔ حضرت مسیح موعودؑ نے فرمایا کہ حقیقی اخلاق یہی ہیں کہ خدا تعالیٰ نے انسان کو جتنے بھی قویٰ دئے ہیں مثلا بینائی، شنوائی، عقل، سوچ وغیرہ ۔ان سب کو بر محل استعمال کیا جائے۔ اللہ تعالیٰ ہمیں تقویٰ پر چلتے ہوئے اور آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے نمونہ پر چلتے ہوئے اپنے اندر پاک تبدیلی پیدا کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔ آخر پر حضرت خلیفۃ المسیح نے دو نمازِ جنازہ غائب کا اعلان فرمایا۔ لطف الرحمٰن صاحب آف امریکہ اور مرزا عمر احمد صاحب آف ربوہ پاکستان۔

The true purpose of Ramzan is to instill Taqwa in hearts. The Promised Messiah (as) has explained this subject at various places. The reality is that no righteous deed can be established without Taqwa. Only taqwa enables us to be regular in righteousness. We should always remember that good morals are absolutely necessary in order to have Taqwa. The Promised Messiah (as) has said that good morals are a sign of a righteous person. Taqwa has many parts. A person who displays good morals turns his enemies into friends. Allah says in the Holy Quran Repel evil with that which is best. Allah wants that even if someone swears at us, we display patience. Good morals are such a skill that it affects even a rough-natured person. The Promised Messiah (as) says that you should remember that morality is the real difference between a man and an animal. True morality lies in following the Sunnah of the Holy Prophet (sa). This is why Allah has said in the Holy Quran about The Prophet (sa) that you possess high moral excellences. Therefore, it is the duty of every believer to follow his role-model which is unmatched and perfect in every way. The Promised Messiah (as) says that unless a person engages in hard work and prayer in front of God, he cannot remove the darkness of his heart. Allah has said in the Holy Quran that surely, Allah changes not the condition of a people until they change that which is in their hearts. This is the eternal practice of God that morals can only be changed through effort and prayers. It should always be remembered that Allah has given each one of us the ability to foster good morals in us, no matter how low our morals may be. Allah has provided us an opportunity in the days of Ramzan to transform our morals. The Promised Messiah (as) has said that this also requires true Taubah or repentance. And for true repentance, the Promised Messiah (as) has listed three conditions: The first condition is to get rid of wicked fancies which arouse evil propensities. Ideas have great influence. Every action is preceded by an idea. Thus, the prime condition for repentance is that evil thoughts and fancies should be discarded. The second condition is remorse. A sinner should express remorse over his sin and evil action and should reflect that the pleasure to be derived from them is temporary. The third condition is a firm resolve that he will not revert to those vices. If he adheres to this resolve, God will bestow upon him the strength for true repentance and he will be rid altogether of his vices. Huzur (aba) said that the majority of people who enter Jama’at today because they see the morality of either an individual Ahmadi or collective morals of Jama’at. The Promised Messiah (as) says that my advice is that displaying good morals is the true miracle which shows the truthfulness of Islam. In reality, it is the beauty of morality of Islamic teachings which attracted many great nations towards becoming Muslim. The Promised Messiah (as) says that true morality is that whatever faculties have been granted to us by God, sight, hearing, intellect, thought etc, should be used at their proper time and place. May Allah enable us to bring a pure change in us by instilling Taqwa within us and by following the model of the Holy Prophet (sa). Huzur (aba) announced two Janaza prayers in absentia; Lutf-ur-Rahman sahib of USA and Mirza Umar Ahmad sahib of Rabwah, Pakistan

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
02-Jun-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bosnian (mp3)German (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Ramzan, Taqwa and Steadfastness
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | Powerpoint | PDF
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا كُتِبَ عَلَيْكُمُ الصِّيَامُ كَمَا كُتِبَ عَلَى الَّذِينَ مِن قَبْلِكُمْ لَعَلَّكُمْ تَتَّقُونَ۔ [2:184] اے وہ لوگو جو ایمان لائے ہو! تم پر روزے اسی طرح فرض کر دیئے گئے ہیں جس طرح تم سے پہلے لوگوں پر فرض کئے گئے تھے تاکہ تم تقویٰ اختیار کرو۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک موقع پر فرمایا کہ اگر لوگوں کو رمضان کی اہمیت کا علم ہوتا تو لوگ چاہتے کہ پورا سال ہی رمضان رہے۔ کسی شخص نے آپ سے پوچھا کہ رمضان کی فضیلت کیا ہے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ یقینا جنت کو رمضان کیلئے مزیّن کیا جاتا ہے۔ ایک اور روایت ہے کہ آپ نے فرمایا کہ جس شخص نے ایمان کے روزے ایمان کے ساتھ اور محاسبۂ نفس کرتے ہوئے رکھے تو اس کے تمام گناہ معاف کر دئے جاتے ہیں۔ پس گناہوں کی معافی اور روحانی ترقی کیلئے محاسبۂ نفس ضروری ہے کہ کیا انسان حقوق اللہ اور حقوق العباد کو پوری طرح ادا کر رہا ہے۔ تقویٰ ہی رمضان کا حقیقی مقصد ہے اور تقویٰ یہی ہے کہ ہر کام خدا تعالیٰ کی رضا کیلئے ہو۔ تقویٰ کے معیار کے حصول کی خاطر ہی اللہ تعالیٰ نے اس زمانہ میں مسیح موعود علیہ السلام کو مبعوث فرمایا۔ چنانچہ آپکی کتب اور ارشادات مختلف زاویوں سے اس طرف راہنمائی کرتے ہیں۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے ہمیں بتایا کہ ایمان کی حالت اس وقت تک نہیں ہو سکتی جب تک خدا کی پہچان نہ ہو۔ اور خدا شناسی کیلئے خدا تعالیٰ سے تعلق اور اور عبادتِ الہی ضروری ہے۔ پس یہ نہایت ہی بڑا کام ہے جس کیلئے ضروری ہے کہ رمضان کا اثر انسان کی پوری زندگی پر نظر آئے یعنی رمضان کے نتیجہ میں باقی 11 مہینوں میں بھی انسان میں نیک تبدیلی پیدا ہو۔ پھر آپ علیہ السلام نے ہمیں سکھایا کہ حقیقی ایمان وہی ہے جس کا ثبوت انسان کے اعمال سے ملے۔ یعنی کہ اگر انسان خدا تعالیٰ کے تمام احکام بجا لائے تب ہی حقیقی ایمان انسان کو حاصل ہو سکتا ہے ورنہ محض زبانی دعوے ہیں۔ پھر آپ علیہ السلام نے فرمایا کہ قرآن اور اسلام کی تعلیم کا مقصد تقویٰ پیدا کرنا تھا۔ لیکن مسلمانوں کی حالت یہ ہے کہ روزے رکھتے ہیں نمازیں پڑھتے ہیں لیکن تقویٰ سے عاری ہونے کی وجہ سے یہی چیزیں انھیں گناہ گار بنا رہی ہیں. حضورِ انور نے فرمایا کہ مسلمانوں میں آج جتنے مسائل ہیں وہ خدا تعالیٰ کے احکامات سے دوری کا نتیجہ ہے۔ مثلا ابھی حال ہی میں افغانستان میں تقریبا 100لوگوں کو ہلاک کر دیا گیا۔ فرمایا کہ پس جب ہم یہ ظلم و بربریت کے واقعات دیکھتے ہیں تو احمدیوں کو خاص طور پر اپنے اعمال کی طرف توجہ دینی چاہئے اور خدا تعالیٰ کا شکر ادا کرنا چاہئے کہ مسیح موعود علیہ السلام کی بیعت کے باعث اللہ تعالیٰ نے ہمیں ان لوگوں سے بالکل علیحدہ کر دیا ہے۔ قرآن کریم میں اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے: إِنَّ الَّذِينَ قَالُوا رَبُّنَا اﷲُ ثُمَّ اسْتَقَامُوا تَتَنَزَّلُ عَلَيْهِمُ الْمَلَائِكَةُ یعنی جن لوگوں نے کہا کہ خدا تعالیٰ ہمارا رب ہے اور پھر اس پر استقامت حاصل کی تو ایسے لوگو ں پر اسی دنیا میں فرشتے نازل ہوتے ہیں۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ اس سے بھی مراد متقی لوگ ہیں یعنی جن لوگوں نے کہا کہ اللہ ہمارا رب ہے اور پھر اس پر مستقل مزاجی سے قائم ہو گئے۔ ثم استقاموا یعنی ان پر بہت ابتلا آئے لیکن وہ اللہ تعالیٰ کے احکامات سے نہیں ہٹتے۔حضورِ انور نے فرمایا کہ ایسا نہیں کہ سال بھر میں صرف رمضان میں اس طرف توجہ پیدا ہو۔ پس اللہ تعالیٰ گناہ معاف کرتا ہے ان لوگوں کا جو مستقل مزاجی سے خدا تعالیٰ کے احکامات پر چلنے والے اور اس کے مطابق اپنی زندگی گزارنے والے ہیں۔ متقی کیسے بنا جا سکتا ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے ہمیں سکھایا ہے کہ متقی بننے کیلئے ضروری ہے کہ موٹے موٹے گناہ مثلا چوری ، زنا وغیرہ کو چھوڑنے کے بعد انسان اخلاقِ فاضلہ میں ترقی کرے۔ لوگوں سے حسنِ سلوک کرے۔ خدا تعالیٰ سے وفا کا تعلق ہو۔ ان باتوں سے انسان متقی کہلاتا ہے۔ فرمایا کہ اس سلسلہ کو خدا تعالیٰ نے تقویٰ کیلئے ہی قائم کیا ہے کیونکہ تقویٰ کا میدان بالکل خالی ہے۔ پس یہ بات ہم پر رمضان میں بہت بڑی ذمہ داری ڈالتا ہے کہ ہم ہر وقت اپنی حالتوں کے جائزے لیں اور تقویٰ میں بڑھنے والے ہوں اور پھر اس کو اپنی زندگیوں کا حصہ بنا لیں۔ اللہ تعالیٰ ہمیں اس کی توفیق عطا فرمائے۔ آخر پر حضورِ انور نے مکرم خواجہ احمد صاحب درویش قادیان کے نمازِ جنازہ کا اعلان فرمایا۔

O ye who believe! Fasting is prescribed for you, as it was prescribed for those before you, so that you may become righteous. (2:184) The Holy Prophet (sa) once said that if people truly knew about the excellences of Ramzan, they would have wished for it to stay the entire year. A person asked him that what are the excellences of this month? He (sa) replied that the paradise is decorated for the month of Ramzan. In another narration, he (sa) said that whoever establishes the month of Ramzan with full faith and self-evaluation, all of his previous sins are forgiven. Huzur (aba) said that self-evaluation is vital for forgiveness of sins and spiritual progress. Are we fully observing the rights of Allah and the rights of His creation? Taqwa is the true purpose of the month of Ramzan and Taqwa means that every action should be undertaken for the pleasure of God. It is for the purpose of achieving Taqwa that Allah appointed the Promised Messiah (as) in this age. His many books, narrations and recorded speeches guide us in this matter. The Promised Messiah (as) has taught us that true faith cannot be achieved unless one truly recognizes God. And this recognition of God requires a relationship with God and his pure worship. This is a heavy task which demands that Ramzan brings about a pure change in our entire life, even in other 11 months of the year. The Promised Messiah (as) taught us that true faith is that which is supported by our actions. True faith can only be achieved if man follows all of the commands of Allah, otherwise they are mere verbal claims. The Promised Messiah (as) said: True purpose of Quran and Islamic teaching was to establish Taqwa. The conditions of Muslims is such that they fast, they pray, but due to being empty of Taqwa, these actions further make them sinners in the eyes of God. Huzur (aba) said that all problems we see among Muslims today are due to lack of obedience in fulfilling the commandments of Allah. Recently, over a hundred people were brutally murdered in Afghanistan. When Ahmadis see these events, we should especially look towards our actions and be even more grateful that Allah has completely separated us from these people due to the Bai’at of the Promised Messiah (as). In the Holy Quran, Allah says that those people who say that our Lord is Allah and then become steadfast, the angels of God descend upon them. The Promised Messiah (as) has said that this also refers to Muttaqi people. People who say that our Lord is Allah and then stay persistent and dedicated. They are faced with many trials, but they do not abandon the commandments of God. Huzur (aba) said that it should not be that we only pay attention to this in the month of Ramzan. Allah forgives the sins and mistakes of those who follow the commandments of God consistently and live their lives according to these guidelines with steadfastness. How can one become a Muttaqi person? The Promised Messiah (as) has taught us that to be a Muttaqi, it is important that after having left major sins such as theft, adultery etc, one should progress in good conduct and morals. He should treat people kindly and have a loyal relationship with Allah. This is how one can become a Muttaqi. The Promised Messiah (as) says that God has established this community for the sake of achieving Taqwa as the world is completely unaware of this field. Huzur said that these things put a heavy burden and responsibility upon us that we should always self-evaluate in the month of Ramzan, increase in Taqwa and make these changes a permanent part of our lives. May Allah enable us to do so. Ameen At the end, Huzur (aba) said that after Jumu’ah prayers he would lead the funeral prayers in absentia of Mukarram Khawaja Ahmad sahib who was among the Derwaishan-e-Qadian.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
26-May-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Khilafat
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | Powerpoint | PDF
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

حضورِ انور ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے تشہد ، تعوز اور سورۃ فاتحہ کے بعد آیتِ استخلاف کی تلاوت فرمائی جس کا ترجمہ ہے: ’’[24:56] تم میں سے جو لوگ ایمان لائے اور نیک اعمال بجا لائے اُن سے اللہ نے پختہ وعدہ کیا ہے کہ انہیں ضرور زمین میں خلیفہ بنائے گا جیسا کہ اُس نے اُن سے پہلے لوگوں کو خلیفہ بنایا اور اُن کے لئے اُن کے دین کو، جو اُس نے اُن کے لئے پسند کیا، ضرور تمکنت عطا کرے گا اور اُن کی خوف کی حالت کے بعد ضرور اُنہیں امن کی حالت میں بدل دے گا۔ وہ میری عبادت کریں گے۔ میرے ساتھ کسی کو شریک نہیں ٹھہرائیں گے۔ اور جو اُس کے بعد بھی ناشکری کرے تو یہی وہ لوگ ہیں جو نافرمان ہیں۔‘‘ فرمایا: قرآن کریم کی اس آیت میں اللہ تعالیٰ نے خلافت کا وعدہ فرمایا ہے اور اس کی شرائط ایمان اور نیک اعمال رکھی ہیں۔ اس زمانہ کیلئے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی پیشگوئی تھی کہ اللہ تعالیٰ مسلم اُمّہ میں دوبارہ خلافت علی منھاج النبوۃ قائم کریگا۔ آجکل مسلمان علماء میں خلافت کے متعلق بہت غلط تصورات پائے جاتے ہیں۔ بعض لوگ تو یہ بھی کہتے ہیں کہ کسی کے دین کوچھیڑو نہ اور نہ اپنا دین چھوڑو۔ آیتِ استخلاف کی تفسیر میں حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے اُن لوگوں کی اس تفسیر کو رد فرمایا ہے جوکہتے ہیں کہ منکم سے مراد صحابہ ہی ہیں اور اور خلافت راشدہ انہی کے زمانہ میں ختم ہو گئی ۔آپؑ نے فرمایا کہ کسی نیک دل انسان کی کیسے یہ رائے ہوسکتی ہے کہ حضرت موسیٰ ؑکے تابعین میں تو 1400 سال تک خلافت رہی اور وہ جو کامل نبی تھا اُس کی برکات صرف اُسی زمانہ کیلئے مخصوص تھیں۔ چنانچہ یہ نہایت ہی غلط عقیدہ ہے کہ خلافت صرف 30 سال کیلئے محدود تھی۔ پھر بعض لوگ ایسے بھی ہیں جو دنیاوی طاقت اور زور پر خلافت قائم کرنا چاہتے ہیں ۔یہ لوگ اللہ تعالیٰ کی اس بات کو نہیں سمجھتے کہ یہ وعدہ ایمان اور نیک اعمال کے ساتھ مشروط ہے۔ ان تنظیموں کے پیچھے دنیوی طاقتیں ہیں ۔ یہ خلافت نہیں ہے بلکہ یہ شدت پسند گروہ ہیں۔ جب اِن کے دنیوی آقا اپنے دنیاوی مقاصد ملنے کے بعد اپنا ہاتھ کھینچ لیں گے تو یہ تباہ و برباد ہو جائیں گے۔ انھوں نے دنیا بھر میں صرف تباہی ہی پھیلائی ہے۔ پچھلے دنوں میں ان لوگوں نے مانچسٹر میں 20 سے زائد لوگوں کو قتل کر دیا ۔ ایسی بربریت کا اسلام یا خلافت سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ اسی طرح جو مسلمان ممالک میں قتل و غارت ہے اور جنہیں بلا امتیاز بامبز کے ذریعہ قتل کیا جا رہا ہے ۔ ہم احمدی مسلمانوں کو قرآنی تعلیم کو سمجھتے ہوئے اور مسیح موعود علیہ السلام کو ماننے کی وجہ سے ان سے ہمدردی ہے۔ خلافت کا نظام تو خوف کو امن میں بدلنے والا نظام ہے اور تمکنتِ دین کا نظام ہے۔ یہ وہ نظام ہے جسکا ذکر اللہ تعالیٰ نے سورۃ جمعہ میں فرمایا اور آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کی وضاحت فرمائی کہ آخری زمانہ میں تجدیدِ دین کیلئے اللہ تعالیٰ ایک مصلح کو بھیجے گا۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ میری امت ایک مبارک امت ہے۔ میری امت کا مجھے نہیں معلوم اوّل زمانہ بہتر ہے یا آخری زمانہ بہتر ہے ۔یہ آخری زمانہ ان دنیا داروں کے پیچھے چلنے سےواقع نہ ہو گا۔ یہ صرف حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی پیروی سے ہی ممکن ہے جنکو اللہ تعالیٰ نے اسی مقصد کیلئے دنیا میں بھیجا۔آج بھی نشانات دیکھ کر لوگ اسلام احمدیت میں داخل ہو رہے ہیں۔ اور یہ انقلاب دنیا بھرمیں پھیلتا جا رہا ہے۔ احمدیوں کو یاد رکھنا چاہئے کہ خلافت کے وعدہ کے ساتھ اللہ تعالیٰ نے مومنین کو عبادت کی طرف توجہ دلائی ہے۔ اگر عبادت کے معیار قائم ہیں تو آپکے تمام خوف امن میں بدلتے جائیں گے۔ ہم نے خلافتِ احمدیہ کی تاریخ میں یہی دیکھا ہے کہ اللہ تعالیٰ کی نصرت ہمیشہ جماعت کے ساتھ رہی اور آج بھی یہ نصرت اور ترقی کے مناظر ہمارے سامنے ہیں۔ یہ سب کچھ اس وجہ سے ہو رہا ہے کہ حضرت مسیح موعود ؑسے خدا تعالیٰ نے وعدہ فرمایا تھا جسکی تفصیل آپ نے رسالہ الوصیت میں بیان فرمائی۔ اللہ تعالیٰ کا ہم پر احسان ہے کہ آپ ؑ کے وصال کے بعد خدا تعالیٰ نے پہلے خلیفہ کے ذریعہ جماعت کو سنبھال لیا ۔پھر خلیفہ ثانی ؓ کے ساتھ جب جماعت کے چند سرکردہ علیحدہ ہوگئے تو آپ نے جماعت کو سنبھال لیا ۔تیسری اور چوتھی خلافت میں بھی جماعت پر ابتلاء آئےاور پھر اب پانچویں خلافت میں مزید ترقیات مل رہی ہیں اور جماعت کا پیغام لاکھوں سے نکل کر کروڑوں میں جانے لگ گیا ہے اوراب مخالفت کئی ملکوں میں شروع ہو گئی ہے یہی سچائی کی دلیل ہے اور ترقی کی دلیل ہے ۔اللہ تعالیٰ اپنے وعدہ کے مطابق ترقیات دے رہا ہے۔ یہ سب باتیں ظاہر کر رہی ہیں کہ اسلام کا غلبہ آپ ؑ کے بعد جاری نظام خلافت سے ہی ہونا ہے ۔مخالفین جتنا چاہے زور لگا لے ان کے حصہ میں ناکامی و نامرادی ہے ۔ اللہ تعالیٰ ہم سب کو توفیق دے کہ ہمارے ایمان بھی مضبوط ہوں اور اعمال صالحہ بھی کرنے والے ہوں اورہم سب اعمال صالحہ میں ترقی کرتے چلے جائیں ۔آمین حضرت خلیفۃ المسیح نے فرمایا کہ وہ جمعہ کی نماز کے بعد مکرم چوہدری حمید احمد صاحب کی نماز جنازہ بھی پڑھائیں گے ۔ آپ کی وفات 20 مئی 2017 کو ہوئی۔

(24:56) Allah has promised to those among you who believe and do good works that He will surely make them Successors in the earth, as He made Successors from among those who were before them; and that He will surely establish for them their religion which He has chosen for them; and that He will surely give them in exchange security and peace after their fear: They will worship Me, and they will not associate anything with Me. Then whoso is ungrateful after that, they will be the rebellious. In this verse of the Holy Quran, Allah has promised Khilafat to Muslims with the conditions of faith and good actions. The Holy Prophet (sa) had foretold that Allah would re-establish the institution of Khilafat in the latter days. We see many wrong notions about Khilafat being preached today by some Muslims scholars. Some even say that there is no need for Khilafat now and that all Muslims should try to act upon Islamic teachings according to his or her understanding. In the commentary of the verse of Khilafat, the Promised Messiah (as) has rejected this interpretation that the Khilafat of the Holy Prophet (sa) was only limited to 30 years. He said that how can any righteous Muslim believe that the Khilafat of Hazrat Musa continued for over 1400 years, but for the Master of all Prophets of God (sa), Allah limited it to only 30 years. This interpretation is entirely wrong. Then we see some Muslims today who want to establish Khilafat through power and worldly government. These people do not understand that Allah has conditioned Khilafat in the Holy Quran with faith and good deeds. These extremist groups are supported by worldly powers which will disappear once they stop receiving their funding. They have done nothing but create chaos. For example, the recent killing of over 20 people in Manchester was absolutely brutal and has nothing to do with Islamic teachings or the institution of Khilafat. Similarly, it pains us to see thousands being killed in Muslim countries and those being killed by indiscriminate bombings of powerful nations. Following the Quran and accepting the Messiah of this age, we have sympathy for all such people. The system of Khilafat is one that changes fear into peace and is a source of strengthening the faith. This is the system mentioned in Surah Jumu’ah (ch. 62) by the Holy Quran and further expounded upon by the Holy Prophet (sa) that Allah will send a reformer in latter days. He said that my Ummah is a blessed Ummah; it won’t be apparent whether its first days are more blessed or its latter days. Huzur (aba) said that that these blessed latter days will not come by following clerics and worldly leaders. This is only possible by following the Promised Messiah (as) who was sent by Allah for this purpose. Ahmadis should always remember that along with the promise of Khilafat, Allah has drawn our attention towards his worship. If you will uphold your worship of God, all of your fears will be replaced with peace and harmony. We have seen the history of Khilafat-e-Ahmadiyya that God’s help has always been with the Jama’at and this help and progress continues to increase today with the message now reaching millions of people worldwide. This is all due to the promises of Allah with the Promised Messiah (as) which he has outlined in the booklet ‘the Will’. The enmity of Islam and Ahmadiyyat continues to grow today, but remember that the eventual victory of Islam is decreed at the hands of the Promised Messiah (as) and Khilafat-e-Ahmadiyya. It doesn’t matter how much effort the enemies put in as they are decreed to fail. May Allah enable us to increase in our worship of God so that we become part of this victory. Ameen. Huzur also said that he would lead the funeral prayers of Chaudhry Hameed Ahmad sahib who passed away on May 20th 2017 after Jumu’ah prayers

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
19-May-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)German (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Swahili (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: The best of you are the best to their women; Lead by example
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu | Indonesian
Slide Deck: Powerpoint | Powerpoint | PDF
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

اسلام کی تعلیم ہر معاملہ میں ہماری راہنمائی کرتی ہے۔ قرآنی تعلیم کا خلاصہ اللہ تعالیٰ نے ایک جملہ میں یوں بیان کر دیا کہ ’لقد کان لکم فی رسول اللہ اسوۃ حسنة‘ پس ہر معاملہ میں آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی مثال اور اسوہ سامنے رکھنا ضروری ہے۔ مردوں کی مختلف لحاظ سے جو ذمہ داریاں ہیں ان کو اسلام میں بیان کیا گیا ہے۔ اگر ان تعلیمات کو تمام مرد اپنا لیں تو ایک پر امن معاشرہ قائم ہو سکتا ہے۔بعض اوقات مرد اپنے آپکو افضل سمجھتے ہیں جبکہ نہ اپنی بیویوں کے حقوق ادا کرتے ہیں اور نہ بچوں کے۔ اور بعض لوگ تو بیوی بچوں پر جسمانی تشدد بھی کرتے ہیں۔ اگر حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی بیعت کرنے کے بعد بھی جاہلوں والا سلوک کرنا ہے تو ایسی بیعت کا کچھ فائدہ نہیں۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے گھر والوں کی تربیت تو پیار اور رحم کے ساتھ کی۔ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم رات کو نفل کیلئے اٹھتے تھے اور پھر فجر سے پہلے ہمیں پانی کے چھینٹے سے اٹھاتے تھے۔ نہایت نرمی کاسلوک تھا۔ گھر میں بیویوں کے کام میں ان کی مدد فرماتے تھے۔ ان نمونوں کو سامنے رکھتے ہوئے بہت سے مردوں کو اپنا جائزہ لیناچاہئے۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ مومنوں میں کامل الایمان وہ ہیں جس کے اخلاق اچھے ہیں۔ اور تم میں سے اخلاق کے لحاظ سے وہ بہتر ہے جسکا اپنی بیویوں سے سلوک اچھا ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام فرماتے ہیں کہ فحشاء کے سوا عورتوں کی باقی تمام کمزوریاں برداشت کرنی چاہئیں ۔ پھر فرمایا کہ ہمیں کمال بے شرمی معلوم ہوتی ہے کہ مرد ہو کر عورتوں سے لڑائی کریں۔ مرد ہونا خداتعالیٰ کی ہم پر نعمت ہے اور اس کا شکریہ ہے کہ عورتوں کے ساتھ نرمی اورلطف سےسلوک کریں۔ اسی طرح حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ عورتوں میں متاثر ہونے کا مادہ بہت ہوتا ہے۔ مرد کی تمام باتوں اور اوصاف کو عورت دیکھتی ہے۔ اگر اصلاح کرنی ہے تو خاوند اپنی اصلاح کر لیں یوں عورتوں پر بھی اثر ہو جائیگا۔ حضور انور نے فرمایا کہ گھروں میں برائیاں اور بچوں کی تربیت میں کمی کا باعث اکثر اوقات مردوں کے اخلاق ہیں۔ اگر آپ چاہتے ہیں کہ گھر میں دینی معاشرہ ہواور بچوں کی تربیت اچھی ہو تو لازمی ہے کہ مرد اپنے آپکو بہتر بنائیں۔ اسی طرح مردوں کی باپ ہونے کے لحاظ سے بھی ذمہ داری ہے۔ یہ نہ سمجھیں کہ یہ صرف عورتوں کی ذمہ داری ہے۔ خاص طور پر لڑکوں کی تربیت میں باپوں کو اپنا نمونہ قائم کرنے کی ضرورت ہے۔ تربیت کرنے کے ساتھ ساتھ بچوں پر نظر رکھنا بھی نہایت ضروری ہے ۔ اسی طرح بچوں کیلئے دعا کرنا بھی نہایت ضروری ہے۔ ان کے رشتہ دار اور عزیزوں سے اچھا برتاؤ کرو۔ سا س اور شوہر سے نیک اور نرمی کا سلوک کرو۔ بعض اوقات دین میں تبدیلی کی وجہ سے ماں باپ کے تعلقات میں کمی آجاتی ہے۔ اکثر نومبائعین یہ سوال کرتے ہیں ۔ ان کو یاد رکھناچاہئے کہ دین میں تبدیلی کے باوجود بہرحال ماں باپ سے نیک سلوک قائم رکھنا ہے۔ ایک مرد خاوند بھی ہے باپ بھی ہے بیٹا بھی ہے۔ ہر لحاظ سے مردوں کو اپنی ذمہ داریاں سمجھنی چاہئیں۔ اللہ تعالیٰ ہر لحاظ سے ہمیں ذمہ داریوں کو سمجھنے کی توفیق عطا فرمائے۔

The teachings of Islam guide us in every matter. Allah has summarized these teachings in this verse of the Holy Quran: You have in The Prophet an excellent example. Therefore, we always need to keep the model and example of the Holy Prophet (sa) in mind. Islam has explained the responsibilities of men in their different roles, as father, husband, son etc. If these teachings are adopted, a peaceful society can be established. Sometimes, men consider themselves superior to women while not fulfilling the rights of their wives or children. Some people even physically harm women and children. If one doesn’t let go of such ignorant behavior, then the Bai’at of the Promised Messiah (as) hasn’t benefited them in any way. The Holy Prophet (sa) treated his wives and children with love and affection. Hazrat Aisha (ra) says that the Holy Prophet (sa) used to wake up at night for Nafl prayers. Then he used to wake us up with a little sprinkle of water before Fajr time to offer voluntary prayers. He also used to help his wives in their tasks at home such as cleaning, cooking etc. Keeping his example in mind, Muslim men should analyze their behavior. The Holy Prophet (sa) said that the best amongst the believers are those who are best in morals, and the best in morals are those who are best in treatment of their wives. The Promised Messiah (as) has said that other than clear indecency, all other weaknesses of women should be tolerated. Then he once said that we find it extremely shameful that being men, we fight with women. Being a man is a blessing of Allah upon us and its deserved thankfulness is to treat women with kindness and affection. Similarly, the Promised Messiah (as) once said that women have a great tendency to be influenced (by behavior). Woman see the behavior and acts of man. If you want to reform them, then men should first reform themselves. It is seen that the reason for evils in our homes and bad upbringing of our children is mostly due to the morals and behavior of men. If you would like to have a religious environment in your homes and better upbringing of your children, then it is incumbent for men to make themselves better. Similarly, men have responsibilities as fathers as well. Do not think that upbringing of children is only for women. Men need to establish their own role model for children, especially for boys. Similarly, it is important to keep a very close eye on your children and their behavior. Earnest prayers for your children are also vital. Similarly, being a son, Islam has enjoined men to act in a kind fashion towards his parents. After their passing away, it is important to keep a good relationship with their relatives and their friends. You should always be kind towards your father and mother in-laws. Some new Ahmadis inquire about treatment of their parents. They should remember that despite changing your faith, it is important to always be kind and compassionate towards your parents. A man is a husband, father and a son among his many other roles. We should try to understand our responsibilities from all aspects. May Allah enable us to do so.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
12-May-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Seek Allah's Help with Patience and Prayers
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Kannada
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu | Indonesian
Slide Deck: Powerpoint | Powerpoint | PDF
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

اے وہ لوگو جو ایمان لائے ہو صبر و صلوٰۃ کے ساتھ مدد مانگو۔ یقینا اللہ صبر کرنے والوں کے ساتھ ہے۔(2:154) انسان کی زندگی میں بہت سے مسائل اور دنیوی مشکلات آتے ہیں جہاں سوائے صبر کے اور کوئی راستہ نہیں ہوتا۔ دنیا دار تو رو پیٹ کر یہ نقصان برداشت کر لیتے ہیں اور کئی کفریہ اور خدا پر شکوہ کے کلمات بھی منہ سے نکل جاتے ہیں اور بعض دعماغی تواذن بھی کھودیتے ہیں۔ لیکن ایسے مومنین بھی ہیں جو ان مشکلات سے اس وجہ سے گزرتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ کے نبی کو ماننے والے ہیں۔ وہ ان سب نقصانات سے بغیر کسی شکوہ کے گزر جاتے ہیں۔ ہاں اللہ تعالیٰ سے دعا ضرور کرتے ہیں۔ دوسری دنیا تو انبیاء کی تاریخ صرف پڑھتی ہے۔ لیکن احمدی مسلمان وہ ہیں جو مسیح محمدی کو ماننے کی وجہ سے عملاً اس حالت سے گزررہے ہیں جو دوسروں کیلئے صرف پرانی داستانیں ہیں۔ ہم وہ لوگ ہیں جو نہ صبر کا دامن ہاتھ سے چھوڑنے والے ہیں اور نہ ایمان کوچھوڑنے والے ہیں۔ ہم اس بات کا ادراک رکھتے ہیں کہ ہم نے صرف خدا تعالیٰ کے آگے جھکنا ہے۔ وہی ہے جو ہمیں ان مشکلات سے نجات دلانے والا ہے۔ وہ کبھی بھی اپنے آگے جھکنے والوں کو خالی ہاتھ نہیں چھوڑتا۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے کہ مومن کا معاملہ بھی عجیب ہے۔ اس کا تمام معاملہ خیر پر مشتمل ہے ۔ اگر اسکو کوئی خوشی پہنچتی ہے تو خدا کا شکر ادا کرتا ہے اور اگر کوئی تکلیف پہنچتی ہے تو اس پر صبر کرتا ہے۔ پس آج جب مختلف ممالک میں احمدیوں کے ساتھ ظلم کا سلوک کیا جارہا ہے تو لازم ہے کہ ہم بھی صبر کا مظاہرہ کریں۔ اللہ ہی ہے جوآئمۃ الکفر کو پکڑنے والا ہے اور ہمیں ان سے بچانے والا ہے۔ جماعت کی تاریخ میں ہم یہی دیکھتے آئے ہیں کہ ہمیشہ یہ لوگ ناکام ہوئے اور جماعت کا قدم آگے ہی بڑھتا گیا۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے متعدد جگہ پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے متعلق فرمایا ہے کہ کس طرح جب تک اللہ تعالیٰ کی طرف سے صبر کا حکم تھا آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اعلیٰ درجہ کے صبر کا نمونہ دکھایا اوراپنی جماعت کو بھی یہی نصیحت فرمائی۔ پس اس شخص کو ماننے کی وجہ سے جو اسلام کی نشأۃ ثانیہ کیلئے آیا ہے ہمیں بھی مخالفتوں کا سامنا کرنا پڑیگا۔ ابھی تو زیادہ مخالفت مسلمانوں کی طرف سے ہے۔ لیکن جب غیر مسلم ممالک میں اسلام پھیلے گا تو یہ لوگ بھی مخالفت پر اتر آئیں گے۔ ان کو پتہ لگ رہاہے کہ یہ اسلام درحقیقت حقیقی اسلام ہے اور یہ غلبہ حاصل کر لیگا۔ لیکن اس وقت ملا ں لوگ مخالفت میں پڑھ رہے ہیں اورسیاستدان بھی ووٹ حاصل کرنے کیلئے اور سستی شہرت کیلئے انکے پیچھے چلتے ہیں۔ ورنہ ان لوگوں کو تو مذہب کی الف ب کا نہیں پتہ۔ ان حالات میں اپنی نمازوں اور عبادتوں کی حفاظت کرنا ہر احمدی کا فرض ہے اور یہی چیز اللہ تعالیٰ کا فضل کھینچے گی۔ درجنوں لوگوں کوالجزائر میں احمدی ہونے کی وجہ سے جیل میں ڈالا جا رہا ہے۔ اسی طرح پاکستان، انڈونیشیا اور بنگلہ دیش ہے۔ گزشتہ دنوں میں بنگلہ دیش میں ہماری ایک مسجد پر حملہ کر کے ہمارے مربی مستفیض الرحمٰن صاحب کو شدید زخمی کر دیا۔ اب انکی حالت بہتر ہے لیکن خطرے سے باہر نہیں۔ اللہ تعالیٰ ان کو صحت و سلامتی والی لمبی زندگی عطا فرمائے۔ آمین ان مخالفتوں کے بارہ میں ہمیں حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے پہلے ہی بتایا تھا۔ چنانچہ ایک مرتبہ فرمایا : ہماری جماعت کے لئےبھی مشکلات ہیں جیسے نبی کریم صلى الله عليه وسلم کو پیش آئی ۔نئی اور سب سے پہلی مصیبت یہی ہے کہ جب کوئی شخص اس میں آتا تو رشتہ دارالگ ہو جاتے ہیں یہانتک کہ بعض اوقات ماں باپ بہن بھائی بھی دشمن ہو جاتے ہیں ۔مشکلات کا آنا ضرووری ہے تم انبیاء سے زیادہ نہیں ہو ان پر بھی مشکلات آئی یہ اس لئے آتی ہیں کہ خدا تعالیٰ پر ایمان قوی ہو دعاؤ ںمیں لگے رہو پس یہ ضروری ہے کہ تم انبیاء کی پیروی کرو اور صبر کو اپناؤ جو دوست قبول حق کی وجہ سے چھوڑتا ہے وہ سچا دوست نہیں ۔جو لوگ تمہیں اس وجہ سے چھوڑتے ہیں کہ خدا کے قائم کردہ سے تعلق جوڑا ہے ان کے لئے غائبا نہ دعا کرو۔ دوسرے دشمنی کر رہے ہیں ہم نے ان کے لئے دعا کرنی ہے ۔کہ اے اللہ تعالیٰ ان کو بھی بصیرت اور معرفت عطا کرے جو اس نے تم کو دی ہے ۔ فرمایا کہ بعض دفعہ رپورٹ ملتی ہے کہ بعض احمدی مولویوں سے گفتگو میں بہت سختی دکھاتے ہیں۔ اگر یہ سچ ہے تو ایسے احمدیوں کوتبلیغ نہیں کرنی چاہئے۔ اللہ تعالیٰ کو تو صبر پسند ہے۔ غصہ کا کوئی جواز نہیں اگر ہمارے پاس دلیل ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ میں نے بارہا نصیحت کی ہے کہ ہر قسم کے فساد اور ہنگامہ سے الگ رہو اور گالیاں سن کر صبر کرو۔صبر کا ہتھیار ایساہے جو دلوں کو فتح کر لیتا ہے۔ یہ تو اللہ کی تقدیر ہے کہ اس نے حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی جماعت کو غلبہ دینا ہے۔ پس اگر غلبہ دینا ہے تو ہمیں بھی اللہ تعالیٰ کی رضا دعا اور صبر کے ذریعہ حاصل کرنے کی کوشش کرنی چاہئے۔ پس ہمارا کام یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ سے تعلق پیدا کریں اور اس کی راہ میں قربانیوں کو صبر سے برداشت کرنے والے ہوں ۔اللہ تعالیٰ ہمیں صبر اور دعا کے ساتھ اس کی راہوں پر چلنے کی توفیق دے اور ہم ہمیشہ اس کی راہوں پر چلنے والے ہوں ۔ آمین آخر پر حضور انور نے ناظم الدین صاحب آف کیرالہ انڈیاکا نمازِ جنازہ پڑھایا۔ انا للہ و انا الیہ راجعون۔

O you who believe, seek help with patience and prayer. Surely, Allah is with those who show patience. (2:154) People often face worldly problems where patience is their only option. Some cry and complain about their losses .Some even lose their mental capacities. But there are also such believers who go through these difficulties only due to accepting Prophets of God. They pass through these tribulations without complaining. They do, however, pray and seek help from God. Other people today only read the history of Prophets of God. Ahmadis however, having accepted the Messiah of Prophet Muhammad (sa), are living through similar conditions faced by communities of earlier Prophets. We are such people who will neither abandon patience, nor our faith. We are well aware that we only bow down in front of our God. Only He will remove our difficulties and worries and He never abandons those who seek His help. The Holy Prophet (sa) has said: “Amazing is the affair of the believer, verily all of his affairs are for good. If something of good/happiness befalls him he is grateful and that is good for him. If something of harm befalls him he is patient and that is good for him” Today, while Ahmadis worldwide face persecution, it is incumbent that we show patience. It is Allah who will seize the leaders of disbelievers and will safeguard us. The history of Jama’at is a witness that these people have always failed and Jama’at has always progressed. The Promised Messiah (as) has written that the Holy Prophet (saw) exhibited the highest form of patience and advised his followers to do so as well. Therefore, due to accepting the person sent for the revival of Islam, we will also face such persecution. These days, it is mainly coming from Muslims. However, when Islam spreads in Western countries, these people will also oppose us. They are now finding out that in reality this is the true Islam which will ultimately become victorious. But at this time, it is the Muslim clerics who are persecuting Ahmadis. Politicians do not know much about religion, but support and follow clerics to receive votes. In such conditions, every Ahmadi must safeguard his prayers and worship. This is what will attract Allah’s grace. Many Ahmadis have been jailed in Algeria, with similar persecution in Indonesia, Pakistan and Bangladesh. Recently, a missionary Mustafizur-Rahman sahib was severaly attacked with knives in Bangladesh. Though not out of danger, he is getting better now. May Allah grant him a long and healthy life. Ameen The Promised Messiah (as) had informed us of these enmities and persecution. He said (not exact words) that my community will face similar persecution faced by the followers of the Holy Prophet (saw). When someone enters this community, his parents, friends and close relatives abandon him. Some people become worried, but remember that these afflictions must happen. These happen so that your faith is strengthened. You should always be steadfast in prayers. You should not fight with those people who leave you due to your faith; rather pray for them that may Allah grant them similar wisdom and insight as he has bestowed upon you. Huzur said that sometimes I receive reports that some Ahmadis are extremely harsh while debating non-Ahmadi and Maulvis. If this is true, then its better that such Ahmadis shouldn’t do Tabligh. God prefers patience and there is no justification for harshness and severity if we have true arguments on our side. Promised Messiah (as) has said (not exact words) that I’ve advised numerous times that you should stay away from any disorder or harsh language. It is the weapon of prayer that wins hearts. Therefore, such people should change their attitudes. It is the decree of Allah that the community of the Promised Messiah (as) will become victorious. Therefore, we should always try to win the pleasure of God through prayers and patience. May Allah enable us to do so. At the end, Huzur said he would lead the funeral prayer in absentia of Nazimud-Din Sahib of Kerala, India. To Allah we belong , to Him we all return

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
05-May-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)German (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Seeking The Pleasure of Allah
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Kannada
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu | Indonesian
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

قرآنِ کریم میں اللہ تعالیٰ فرماتا ہے:[57:21]جان لوکہ دنیا کی زندگی محض کھیل کود اور نفس کی خوہشات کو پور اکرنے کا ایسا ذریعہ ہے جو اعلیٰ مقصد سے غافل کردے اور سج دھج اورباہم ایک دوسرے پر فخر کرنا ہے اور اموال اور اولاد میں ایک دوسرے سے آگے بڑھنا ہے، یہ زندگی اس بارش کی مثال کی طرح ہے جس کی روئیدگی کفار کے دلوں کو لبھاتی ہے۔ پس وہ تیزی سے بڑھتی ہے ۔ پھر تواسے ذرد ہوتا ہوا دیکھتا ہے پھر وہ ر یزہ ریزہ ہوجاتی ہے۔ اور آخرت میں سخت عذاب (مقدر) ہے نیزاللہ کی طر ف سے مغفرت اور رضوان بھی۔ جبکہ دنیا کی زندگی تو محض ایک دھوکے کا عا رضی سامان ہے۔ اللہ تعالیٰ نے قرآنِ کریم میں کئی دفعہ اس طرف توجہ دلائی ہے کہ دنیا کا مال و متاع سب عا رضی چیزیں ہیں اور ایک محدود وقت کیلئے ایک کھیل اور بہلاوے کے طو پر ہے۔ مومن لوگ جن کے اعلیٰ مقاصد ہونے چاہئیں اس کو ان چیزوں سے بلند ہو کر سوچنا چاہئے اور اللہ تعالیٰ کے پیارکو تلاش کرنا چاہئے۔ ہم حقیقی احمدی اسی وقت بن سکتے ہیں جب دنیوی لذت ہمارا مقصد نہ ہوں۔ جیسا کہ اللہ تعالیٰ نے مثال دی ہےکہ دنیا دا روں کےنہ اموال ان کے کام آتے ہیں اور نہ ان کی اولادیں۔ اللہ تعالیٰ نےفرمایا ہے کہ اس زندگی کو سب کچھ نہ سمجھو۔ اصل زندگی آخرت کی زندگی ہے۔ اس لئےاللہ تعالیٰ کےحکموں پر چلنا ضروری ہے۔ حضرت مسیح موعوعلیہ السلام فرماتے ہیں:جو لوگ خدا کی طرف سے آتے ہیں وہ دنیا کوترک کرتے ہیں۔ اس سے مراد یہ ہے کہ دنیا کواپنا مقصود غایت نہیں ٹھہراتے۔ جو لوگ دنیا کو اپنا مقصود ٹھہراتے ہیں خواہ وہ کچھ حاصل بھی کرلیں آخرکارذلیل ہوتے ہیں۔ اکثر اوقات د یکھنے میں آیا ہے کہ بڑ ے بڑے دنیوی کاروبار اور مضبوط حکومتیں بھی تباہ ہوجاتی ہیں مثلا 2008 کا معاشی انحطاط جس کا اثر اب تک ظاہر ہو ہا ہے۔ مسلمان ممالک کو جو اللہ تعالیٰ نے تیل کی دولت دی ہے وہ اس کوعیش اورظلم کیلئے اڑا رہے ہیں اور غرباء اور اپنے ملک کےعوام پر خرچ نہیں کرتے، جس کے نتیجہ میں وہ دنیا میں بھی ذلیل ہو ہے ہیں اور آخرت پر بھی ان کی کوئی نظر نہیں۔ اللہ تعالیٰ نےدنیوی آسائشوں اور نعمتوں سے منع نہیں کیا۔ بس اتنا حکم دیا ہے کہ یہ نعمتیں عبادت الہی میں روک نہ بن جائیں۔ ایک موقع پر آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : مجھے اپنی امت کے بارہ میں جس چیز کی سب سے زیادہ فکر ہے وہ یہ ہے کہ وہ اپنی خواہشات کی پیروی کرنے لگ جائیگی اوراس کے نتیجہ میں وہ حق سے دور چلی جائیگی اور دنیا کمانے کی وجہ سے آخرت کی فکر جاتی رہے گی ۔ صحابہ رضوان اللہ علیہم اجمعین کو ہمیشہ آخرت کی فکر رہتی تھی۔ مثلاً ایک صحابی نے پوچھا یا رسول اللہ مجھے ایسی بات بتائیے کہ اللہ تعالیٰ بھی مجھ سے محبت کرےاور اس دنیا کے لو گ بھی۔ آپﷺ نے فرمایا کہ دنیا سے بےرغبت ہو جاؤ اللہ تعالیٰ تم سے محبت کریگا۔ جولو گوں کے پاس ہے اس کی خواہش چھوڑدو لوگ تجھ سے محبت کرنے لگ جائیں گے۔ پھر حضورانور نے فرمایا کہ دنیا سے بے رغبتی یہ نہیں ہے کہ د نیا سے بالکل کٹ جاؤاور کوئی محنت یا کارووبار نہ کرو۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کا اسوہ ہمارے سامنے ہے کہ شادیاں بھی ہوئیں، اور اولاد بھی ہوئی، مال بھی آیا لیکن آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیشہ اللہ اور اس کے بندوں کے حقوق ادا کئے۔ اصل چیز اللہ تعالیٰ کی رضا کا حاصل کرناہے۔ حضور انور نے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ کا فضل ہے کہ احمدی اس بات کو سمجھنے والے ہیں کہ دنیا کے نقصان کوئی حیثیت نہیں کھتے اور ہمیشہ اللہ تعالیٰ کے سامنے جھکنا ہے۔ پاکستان کے بہت سے احمدیوں کے کاروبار ختم ہوئے لیکن نعم البدل کے طو پر بڑھ کر اللہ تعالیٰ نے انکو عطا کیا۔ اس لئے آج بھی احمدیوں کو یاد رکھنا چاہئے کہ کاروبار میں جو برکتیں ہیں وہ محض اللہ تعالیٰ کے فضل اور مسیح موعود علیہ السلام کو ماننے کی وجہ سے ہے۔ اس لئے کسی قسم کا تفاخر نہیں ہونا چاہئےاور دنیا کے مال ودولت پر دنیا کی طرح نہیں گرنا نہیں چاہئے۔ رشک صرف دینی ترقی پر ہونا چاہئے۔ حضر ت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا: خداتعالیٰ نے د نیا کے شغلوں کوجائز رکھاہے۔ مگر ہر چیز کی ایک حد ہوتی ہے۔ دنیوی شغلوں کو اس حد تک اختیار کرو کہ دینی مقاصد میں مددگار ثابت ہوں ، مومن کا نصب العین دین ہوتا ہے، پس دنیا مقصود بالذات نہ ہو بلکہ اصل مقصد دین ہو ، حضور نے فرمایا کہ پس ہمارے مال اور ہمارے بہتر مالی حالات ہمیں کبھی بھی اﷲ تعالیٰ کے حقوق اور انسانیت کے حقوق ادا کرنے سے دور نہ لے جائیں اور اسی طرح اسلام کی ترقی و تبلیغ کیلئے خرچ کرنے سے روکنے والا نہ ہو، اﷲ تعالیٰ کرے کہ ہم ہمیشہ اﷲ تعالیٰ کی رضا کی تلاش میں رہیں اور یہ دھوکہ بھری دنیا ہم پر حاوی نہ ہو ، ہم اس دنیا کی جہنم سے بچنے والے ہوں اور آخرت کی جہنم سے بھی ، اور اﷲ تعالیٰ کی رضا ہم کو اس دنیا میں بھی جنت بنا دے اور آخرت کی جنت بھی دے۔ آخر میں حضور انور نے پاکستان میں شہید کئے گئے مندجہ ذیل دو احمدیوں کے نمازِ جنازہ کا اعلان فرمایا۔ بشارت احمد صاحب جن کو خانپور میں 3مئی کو شہید کر دیا گیا ۔ اور دوسری پروفیسر طاہرہ ملک صاحبہ جن کو پنجاب یونیوسٹی لاہور میں شہید کیا گیا۔ انا اللہ و انا الیہ اجعون

(57:21) Know that the life of this world is only a sport and a pastime, and an adornment, a source of boasting among yourselves, and of rivalry in multiplying riches and children. This life is like the rain the vegetation produced whereby rejoices the tillers. Then it dries up and thou seest it turn yellow; then it becomes broken pieces of straw. And in the Hereafter there is severe punishment, and also forgiveness from Allah, and His pleasure. And the life of this world is nothing but temporary enjoyment of deceitful things. Allah has repeatedly said in the Holy Quran that the provisions of this world are only temporary and means of enjoyment for some time. Believers should have higher goals and should seek to win the pleasure of God. We can become true Ahmadis only when worldly goals aren’t our true objective. Allah has explained for us in this verse that the wealth and children of disbelievers do not eventually come to their rescue. Do not consider this life to be everything. True life is the life of the hereafter. Therefore, it is important to always keep the commandments of God in mind. The Promised Messiah (as) has said: People who come from God leave this world entirely. This means that their eventual purpose is not this world. People, whose objective is this world even if they achieve something, eventually end up disgraced. It is often seen that big banks, businesses and even strong governments get destroyed. The effects of financial crisis of 2008 can even be seen today. The wealth of oil afforded to Muslim countries by Allah is being wasted in worldly luxuries and to oppress people, instead of spending on their own people. This is why they are being disgraced in this life, and are also not paying any attention to the hereafter. Allah has not forbidden us from worldly blessings. His only commandment is that these blessings shouldn’t hinder you from worship of God. The Holy Prophet (sa) once said: My biggest worry about my people is that they will start to follow personal desires and therefore will move far away from the truth and will stop worrying about the hereafter. The companions of the Holy Prophet (sa) were always worried about the hereafter. Once a companion asked the Holy Prophet (sa) to tell him something through which both Allah and people of this world would love him. The Holy Prophet (sa) responded: Abandon the desires of this world and Allah will love you – Abandon the desire of people’s belongings and people will start to love you. Leaving worldly desires doesn’t mean to cut yourself entirely from the world and not do any work or business. The model of the Holy Prophet (sa) is in front of us. He had wives, children, wealth etc, but always paid the rights of Allah and the rights of His creation. By the grace of God, Ahmadis understand that the losses of this world hold no value. What is important is to always bow in front of Allah. Many Ahmadis lost their businesses in Pakistan, but Allah provided them with even bigger and better blessings. Today, all Ahmadis should remember that our worldly progress is merely due to the grace of God and accepting the Promised Messiah (as). Therefore, there shouldn’t be any mutual pride or arrogance and we should never lose ourselves entirely in worldly wealth. Envy in our hearts should only be based upon spiritual progress. The Promised Messiah has said: Allah has allowed us to get involved in the works of this world. However, everything has a limit. You should only involve yourself in worldly businesses to the extent that they are helpful to achieve religious goals. The true purpose of a believer is always his faith. Therefore, eventual objective should never be this world, rather true purpose should be your faith. Our wealth and our better economic conditions should never take us away from the worship of God and from paying the rights of our fellow human beings. Similarly, we should never cease spending for the propagation and establishment of our faith. May Allah enable us to always work towards earning His pleasure. At the end, Huzur (aba) said he would lead the the funeral prayer in absentia for the following two Ahmadis recently martyred in Pakistan: Basharat Ahmad Sahib in Khanpur and Tahira Parveen Sahiba in Punjab University. To Allah we belong, and to Him shall we return

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
28-Apr-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: The Germany Tour: Conveying the True Message of Islam
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Kannada
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu | Indonesian
Slide Deck: Powerpoint | Powerpoint | PDF
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

تشہد و تعوذ اورسورة فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور ایدہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا : اکثر جگہ پریس والے مجھ سے یہ سوال کرتے ہیں کہ اسلام کے بارہ میں جو دنیا میں خوف ہے وہ کس طرح سےدور ہوگا؟ پھرجرمنی میں بھی مسلمانو ں کے بارہ میں خوف بڑھ رہاہے۔اس پرآپ کا کیا رد عمل ہے ؟ فرمایا: یہ سوال اسلام کے نام پر غلط حرکات کرنے اور شدت پسند حملوں کی وجہ سے ہواہے۔ان لوگوں کے تحفظات بھی اپنی جگہ ٹھیک ہیں ۔ لیکن یہی سوال ہماری تبلیغ کے راستے بھی کھولتا ہے ۔ فرمایا :میں ان کو یہی بتاتا ہوں کہ یہ اسلام کی تعلیم نہ سمجھنے کی وجہ سے ہو رہا ہے اور یہ عین پیشگوئی کے مطابق ہے کہ ایسے ہی حالات میں مسیح موعود ؑکی آمد ہونی تھی،جنہو ں نے اسلام کی صحیح تعلیم پھیلانی تھی ۔ ہمارے ایمان کے مطابق جماعت احمدیہ وہی موعودجماعت ہے جس کی پیشگوئی کی گئی تھی پس ہمارا رد عمل تو اسلامی تعلیم کے مطابق ہے ۔ جو دہشت گرد حملوں کی وجہ سے تحفظات پیدا ہو چکے ہیں ان کو دور کرنے کے لئے ہمیں زیادہ محنت کرنی پڑے گی ۔حضرت مسیح موعودؑ نے بتایا ہے کہ ہر قسم کی شدت پسند ی مذہب کے خلاف ہے ۔ اللہ تعالیٰ ایک مسلمان سے یہی چاہتا ہے کہ خدا کی صفات کو اپنایاجائے ۔آپؑ نے فرمایا خداتعالیٰ نےقرآن شریف کو پہلے اسی آیت سے شروع کیا ہےکہ الحمد للہ رب العالمین وہ تمام دنیا کا رب ہے تمام ملکوں کا وہی رب ہے ہر فیض کاچشمہ وہی ہے ہر ایک روحانی و جسمانی طاقت ا سی سے ہے ہر اک وجود کا وہی سہارا ہے۔ پس یہ وہ علم و معرفت ہےجو قرآن کریم کی تعلیم سے ہمیں آپ نے عطا فرمائی اور یہی وہ نسخہ ہے جو دنیا میں امن و سلامتی پھیلانےکے لئے ضروری ہے ۔یہی وہ بات ہے جو دنیا میں صلح کی بنیاد ڈال سکتی ہے اور یہی پیغام جس کو جماعت احمدیہ کے افراد دنیا کے ہرکونے میں پہنچانے کی کوشش کرتے ہیں اور کرنی چاہئے۔ پس جو خوف پیدا ہو رہا ہے وہ اس تعلیم سے دوری کی وجہ سے ہے اور اس زمانہ میں اللہ کے بھیجے ہوے فرستادہ اور رسول کریم صلى الله عليه وسلم کے غلام صادق کو نہ ماننے کی وجہ سے ہے ۔پس جب ہم اس تعلیم کی روشنی میں صلح کا راستہ دکھاتے ہیں تو شریف الطبع لوگو ں کے منہ سے یہی الفاظ نکلتے ہیں کہ یہ اسلام کی تعلیم بہت خوبصورت ہے ۔حضورِ انور ایدہ اللہ تعالیٰ نے جرمنی کے دورہ کے دوران مسجد کے افتتاح اور دوسرے پروگرامو ں میں آئے بہت سے مہمانو ں کےتاثرات اور جذبات بیان فرمائے ۔ پھرفرمایا: جرمنی کے دورہ کے دوران پریس کوریج بھی کافی ہوئی ہے اور کافی نیوز بھی آئی ہیں ۔ 9 ملین سے زائد لوگوں تک یہ پیغام باہر کے ملکو ں میں پہنچا۔سوشل میڈیا کے ذریعہ بھی 1 ملین کی کوریج ہوئی ۔ 10 یا 11 کے قریب باہر کے نمائندے تھے ۔ فرمایا:جماعت کے پیغام کے ساتھ مخالفت بھی بڑھ رہی ہے ۔الجزائر میں چند ماہ سے بہت زیادہ مخالفت ہے اور دعا کے لئے بھی کہہ چکاہوں ۔وہاں مخالفت بڑھتی چلی جارہی ہے ۔لیکن اس مخالفت کی وجہ سے اور وہا ں کی پریس کی وجہ سے جماعت کا تعارف وسیع پیمانہ پرہوا ہے۔لوگ جاننا چاہتے ہیں کہ یہ لوگ کون ہیں ۔بہرحال ایک طرف دنیا اسلام کے پیغام سے متاثر ہو رہی ہے جو جماعت احمدیہ پھیلا رہی ہے اور دوسری طرف مسلمان ممالک کی طرف سے مخالف ہو رہی ہے ۔پس جیسا کہ پہلے بھی کہا گیا آج کل شدت الجزائر میں بہت زیادہ ہے وہاں کے احمدیو ں کے لئے دعا کریں اور پاکستان کے احمدیو ں کے لئے دعاکریں کہ جہا ں مخالفت کا جوش بڑھ رہا ہے،وہا ں سب کو اللہ تعالیٰ حفاظت میں رکھے ۔خاص طور پر الجزائر کے احمدیو ں کو کیونکہ وہ پرانے احمدی نہیں ہیں ان کو ثبات قدم بھی دےاور ان کی مشکلات کو جلد دور بھی فرماے ۔ آمین

Whenever Huzur talks to press or politicians, they usually ask, “what is the reason for fear of Islam and how can you remove it”. Some openly say it some beat around the bush. Some say, it is due to Islamic teachings. One journalist ask in Germany that fear of Islam is increasing, what your response on how to remove it. This question has been asked many times before. Huzur (aba) said that, this question is the access to tabligh. Our response should never be negative. Ulema are not understanding the true teachings of Islam and are spreading a wrong message. This is intact with the prophecy of Holy Prophet (sa), that a latter day Messiah and founder of the Ahmadiyya Muslim Community will come and reform them. Hence, our response is according to the teachings of the Promised Messiah (as), to spread the Islamic teachings peacefully and this is how we are working around the world. We need to work hard and keep working hard to spread the peacefully teachings of Islam. The Promised Messiah (as) has said that all forms of terrorism and violence is against Islam. Hence, God is the fountain head of peace and wants his creators to adopt this attribute. The Promised Messiah (as) said that we should adopt the true attributes of God. And this is the only way to reconciles with the world and bring peace in the world. The condition of the world cannot be blamed on Islamic teachings, but it is due to not accepting the Promised Messiah (as) and not understanding the deep wisdom of Islam. A doctor in Germany said, it was my wish and desire to find peaceful Muslim all my life. I am very grateful that you have contacted me and invited me to this program. A Germany school teacher said, I could not answer the questions of my students regarding Islam. After attending today’s program I can finally answer my students. One guest said, I have been impressed today. All around the world so called Muslims are spreading hate and violence. And today I have seen the exact opposite. A lady doctor said, I have been impressed by the speech, it has touched my heart, if we all look after our neighbors as mentioned in Islamic teachings the world will become safer and peaceful. A guest said, by coming here I feel really close to the people. I have been to many Christians programs. But did not feel the same. The Christians could learn many things from you. A guest said, (after listening to the speech) all my concerns and questions have been removed. Your Khalifa is an ambassador of peace and I will try my best in my circle to spread these beautiful teachings. Another guest said, this is my first time attending an Ahmadi function. Mosque are usually associated with violence and hatred. But this will not be the case in this mosque. I am very happy that a mosque is been built here, and it will be a source of peace. A guest said, Muslims have it extremely hard to spread their peaceful teachings. When anything happens Muslims have to give examples in order to defend the peaceful teachings. But when someone in Norway kills innocent people in the name of Christianity, no one blames the religion. A guest said, all of the points which I had desired to listen and was hoping will be mentioned were exactly mentioned by your leader. I am very happy that I came. A guest from Finland also brought his 9 year old son. I wish my son could also learn from your teachings and become a pious member of the community. It is my wish, that someone from your community will teach my son the Holy Qur’an and its teachings. A lady guest said, regarding women’s right your leader has beautifully expounded on its teachings and rights. Huzur (aba), mentioned many feedbacks and comments of the guests from different programs throughout his tour in Germany. All the comments portrayed that many of the guests were given the true teachings of Islam. Huzur (aba), then mentioned facts and figures of the media coverage from his different programs in his tour. Some people think that UK Jama’at isn’t doing any work regarding tabligh or any other programs. But UK Jama’at is working very hard and in massive scale is spreading the teachings of Islam. The book, Life of Muhammad (sa) has been spread in UK in great number. A church warden, came to the peace symposium and said, I liked how your leader while quoting a verse from the Holy Qur’an said that we should respect and tolerate other religions. Today I want to say, the condition of the world is worsening very fast. We need to focus on prayers and keep praying. Many people are saying we cannot prevent a massive war. Korea and America are threating each other with nuclear war. May God keep everyone safe, and give sense and wisdom to the world leaders. As the message spreads, opposition is also rising. Algeria is going through a lot of persecution. I have said before to pray for Algeria. Due to the negative press in Algeria people are starting to know about Ahmadiyya Muslim Jama’at. Pray for Algeria, Pakistan and other countries who are going through extreme persecution. May Allah keep everyone safe.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
21-Apr-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Conveying The True Teachings of Islam
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Kannada
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu | Indonesian
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

تشہد و سورة فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور ایدہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا : حضرت مسیح موعود علیہ السلام کو ماننا ہم پر اللہ تعالیٰ کا ایک فضل ہے۔ آپکو ماننے کے بعد ہمیں اپنے ایمان اور یقین میں بڑھنا چاہئے اور کھل کر اسلام کا پیغام پہنچانا چاہئے۔ بعض لوگوں میں یہ خیال پیدا ہو جاتا ہے کہ مسلمانوں کے جو آجکل حالات ہیں اس وجہ سے زیادہ اسلام کے متعلق بات نہ کی جائے گو اکثر سستی نہیں دکھاتے۔ ایسے وقت میں تو ہم میں اور زیادہ جرأ ت پیدا ہونی چاہئے۔ مسلمانوں کا بگاڑ تو اسلام کی صداقت کا ثبوت ہے کیونکہ یہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی پیشگوئی کے مطابق ہےکہ اس وقت اسلام کے حقیقی پیغام کیلئے مسیح موعود کو اللہ تعالیٰ بھیجے گا ۔ ہم اس مسیح موعود ؑکو ماننے والے ہیں ۔اور اسی اسلام پر ہم عمل کرنے والے ہیں ۔پس کسی احساس کمتری کی ضرورت نہیں ۔ .اسی طرح بعض لوگ مغربی ممالک میں دنیا داری میں زیادہ ڈوب گئے ہیں۔ زبانی عہد تو کرتے ہیں لیکن حقیقت میں عمل اس سےمختلف ہیں ۔ یہاں سوسائٹی میں اخلاق تو اچھے ہیں لیکن عبادت کے معیاروں میں کمی ہے۔ آپسی عزت و احترام میں بھی کمی ہے۔حضرت مسیح موعود علیہ السلام کا مقصد صرف اعتقادی اصلاح نہ تھا بلکہ عملی اصلاح تھا ۔ جوں جوں ہماری مساجد بڑھ ر ہیں اورہماراپیغام پھیل رہا ہے اس سے دنیا کی تنقیدی نظر بھی ہم پر بڑھے گی۔ پس ضرورت ہے کہ عملی حالتوں میں بہتری پیدا کی جائے اوربیعت کے حقیقی مقاصد پر عمل کیا جائے۔ یاد رکھیں کہ مغربی ممالک میں 99 فیصد احمدی جماعت کی وجہ سے آئے ہیں اور یوں آپ سب جماعت کے خاموش مبلغ بھی ہیں۔حضور نے فرمایا کہ میں نے جرمنی میں دیکھا ہے کہ احمدیوں کے معاشرہ کے افراد کے ساتھ تعلق تو اچھا ہے لیکن ان کو اسلام کا پیغام پوری طرح نہیں دیا گیا۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ مغربی ممالک کے لوگوں میں اسلام سے ایک خطرہ پایا جاتا ہے اور لوگ عمومی طور پرہمارے فنکشنز میں آنے سے بھی خوفزدہ ہوتے ہیں۔ اس لئے ہماری ذمہ داری اور بڑر جاتی ہے۔ فرمایا کہ جب لوگ ہمارے فنکشنزپر آتے ہیں تو ان کا اسلام کے متعلق تصور بدل جاتا ہے۔اور اکثر کہتے ہیں کہ ہماری سوچیں بالکل غلط تھیں ۔ہم کو اب پتا چلا کہ اسلام ایک پر امن مذہب ہے محبت پھیلاننے والا مذہب ہے ۔ حضورِ انور نے جرمنی میں بعض حالیہ فنکشنز میں اس کی بعض مثالیں بھی پیش کیں۔ فرمایا: ہمارے بعض نوجوانوں کا خیال ہے کہ شائد پرانے اماموں اور اولیاء کے ذکر پڑھ کے ان کا علم بڑھ گیا ہے ۔ان کو پڑھ کے یہ نہ سمجھیں کہ آپ عالم بن گئے ۔ حضرت مسیح موعود کی کتب پڑھ کے اپنا علم بڑھائیں ۔آپ ؑاس زمانہ کے حکم و عدل بن کر آئے تھے۔ہمیں یہ بات ہر وقت اپنے سامنے رکھنی چاہیے ۔اس لئے یہ نہ سمجھیں کہ دوسروں کی کتابیں پڑھ کر آپ عالم بن گئے۔عالم بننا ہے تو حضرت مسیح موعودؑ کی کتابیں پڑھیں۔ فرمایا کہ خاص طور پر اسلامی اصول کی فلاسفی ایسی کتاب ہے جسے پڑھ کو بہت سے لوگوں کی حالت بدل جاتی ہے ۔ اس زمانہ میں حقیقی علم اور فلاسفی حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی تعلیمات سے مل سکتی ہے۔ جب ایک دفعہ حضرت مسیح موعود علیہ السلام کو مان لیا ہے تو پوری اطاعت ہونی چاہئے۔ بلا وجہ کے سوالات نہیں ہونے چاہئیں اس سے کامل اطاعت ظاہر نہیں ہوتی مگر جب دوسرے لوگ سوال کرتے ہیں تو پھر جواب پر ایمان لانے والوں کی تسلی ہو جاتی ہے ۔ اور اس زمانہ میں حضرت مسیح موعود علیہ السلام کے فیصلوں کو ہی ماننا ضروری ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام کا جو لٹریچر ہے وہ ہر احمدی کوخود بھی پڑھنا چاہئے اور لوگوں میں بھی پھیلانا بھی چاہئے۔ ہر سوال کا جواب موجود ہے اور اس کیلئے حضرت مسیح موعود علیہ السلام اورآپکے خلفاء کی کتب کا مطالعہ کرنا چاہئے۔ فرمایا کہ گہرائی سے اپنے جائزہ لینے کی ضرورت ہے ۔ یاد رکھیں کوئی مجلس ہو انٹر نیٹ ہے اور جو نمازوں اور عبادت سے غافل کر رہی وہ مشرکانہ مجلس ہے ۔پانچ وقت کی نمازوں کو قائم کرو ۔میں نے جائزہ لیا اس میں بہت کمزوری نظر آر ہی ہے ۔دعا کے لئےکہتے ہیں تو پوچھو خود باقاعدہ نماز پڑھ رہے ہو تو جواب نفی میں ہوتا ہے ۔پس اگر دعا کے لئے کہنے والے اپنے اندر اور اپنی تکلیف کو دور کرنے کے لئے کوشش نہیں کرتے تو دوسرے کو یہ درد کس طرح پیدا ہو سکتا ہے ۔خود بھی دعا کریں تو دوسروں کی دعا بھی مدد کرتی ہے ۔ ۔اپنی اصلاح کر لیں گے تو باقی برائیاں دور ہو جائیں گی ۔ پس ہمیشہ اپنی کو تا ہیوں اور غلطیوں کے لئے استغفار کرتے رہنا چاہیے ۔اللہ تعالی ہم سب کو اس کی توفیق دے اور ہم حقیقت میں حضرت مسیح موعود کی بیعت کا حق ادا کرنےوالے ہوں ۔آمین

Accepting the Messiah of this age is a blessing of Allah upon us. After accepting him, we should try to increase in our faith and openly give the message of Islam. Though most are active, some people think that we shouldn’t mention Islam too much because of the conditions of Muslims today. Huzoor said that we should become even bolder at this time because this condition of Muslims is according to the prophecy of the Holy Prophet (saw). At this time, the Messiah and Mahdi was to be sent to revive true Islam. Therefore, there shouldn’t be any inferiority complex. Some people have become too involved in worldliness in Western countries. We show good morals in society, but we are lacking in worship. We are lacking in mutual respect. The purpose of the Promised Messiah (as) wasn’t just to reform beliefs; it was also practical reform. As our message spreads, the world will keep a close eye on us. Therefore, we need practical reformation in us and remember the true purpose of Bai’at. We should remember that 99% of Ahmadis have come to Western countries due to Jama’at and therefore all of you are silent preachers of Jama’at. He said that I’ve seen in Germany that Ahmadis have good relationships in society, but haven’t effectively given the message of Islam to local people. People in the West generally are threatened by Islam and are even afraid to come to our functions. Therefore, our responsibility grows at this time. When people come to our functions, their perception totally changes about Islam. Huzoor gave many examples from recent functions in Germany how the sentiments of non-Muslims completely change about Islam and our Jama’at after attending our functions. This is because we have accepted the Promised Messiah (as). Therefore, it is our responsibility to spread his message and his books to all people. Some youths think that they have become knowledgeable by reading old Islamic scholars and philosophers, but this shouldn’t be the case. You should increase your knowledge by reading the books of the Promised Messiah (as) who was the Hakm and Adl (judge and arbitrator) of this age. Huzoor especially gave the example of the book philosophy of the teachings of Islam that this book has completely changed many people and should be given to academics. True knowledge and philosophy can only be obtained from the books of the Promised Messiah (as) in this age. Once we have accepted him, there should be complete obedience and no unnecessary questions should be raised. This demonstrates lack of complete obedience. Accepting the decisions of the Messiah of this age is absolutely compulsory. All Ahmadis should read the literature of the Promised Messiah (as) and spread it among other people. The answer to each question is present, but it’s important to read the books of the Promised Messiah (as) and his Khulufa. We should all watch ourselves. Every gathering (internet etc.) that takes you away from God is shirk. Be regular in five daily prayers. I’ve seen some weakness here in this regard. When people request me for prayers, I ask them whether or not they pray regularly themselves. Unless one shows pain and anguish to remove his own difficulties, how can someone else demonstrate this pain? Pray yourself before asking others to pray for you. All weaknesses will vanish if you reform yourself. We should always seek forgiveness for our mistakes and sins. May Allah enable us to do so and may we be among those who truly understand the responsibilities of doing bai’at of the Promised Messiah (as).

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
14-Apr-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Attributes of True Believers
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Kannada
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu | Indonesian
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

شروع میں حضور انور ایدہ اﷲ نے بعض انتظامی مسائل سے متعلق نصائح فرمائیں کہ وقت پرپلاننگ نہ کرنے کے باعث بعض کام پو ری طرح کامیاب نہیں ہوتے۔ہرکام کیلئےشروع سے ہی سنجیدگی سے کام کیا جائےور نِہ مشکلات کاسامناکرناپڑتاہے مثلا بیت السبو ح مسجد کے ساتھ والی بلڈنگ میں اب تک نماز کی اجازت نہیں ملی جسکی وجہ سے آج ایسی جگہ نماز پڑھی جارہی ہے جہاں جہازوں کا کافی شور ہے ۔ بعض کام سستی کی وجہ سے پورے نہیں کئے گئے ۔ اﷲتعالیٰ تمام عہدیداران اور انتظامیہ کو بہتر رنگ میں کام کی توفیق عطا فرمائے ۔ اس کے بعد حضور نے تین مرحومین کا ذکر خیر فرمایا۔ ایک شہید، ایک مربی اور ایک حضرت مسیح موعودؑ کی پوتی ہیں۔ حضور نے فرمایا کہ ان تینوں مرحومین کے اوصاف ایسے ہیں کہ جماعت کے ہرفرد کیلئے ان میں سبق ہے، یہ لوگ قرآنی آیت من قضی نحبه یعنی منت کو پورے کرنے والے کے مصداق ہیں۔ ان میں سے پہلے ڈاکٹر اشفاق احمد صاحب ہیں جن کو گزشتہ جمعہ کو پاکستان میں شہید کر دیا گیا ، انکی عمر 68 سال تھی اور نماز جمعہ پر جاتے ہوئے ان کو گولی مار کر شہید کر دیا گیا ، مرحوم موصی تھے اور خلافت سے گہری محبت رکھنے والے تھے ، موثر رنگ میں تبلیغ بھی کیا کرتے تھے جسکی وجہ سے آپکو دھمکیاں بھی ملتی تھیں لیکن آپ ان کی زیادہ پرواہ نہ کیا کرتے تھے ، جماعتی کاموں میں بڑھ چڑھ کر حصہ لینے والے تھے۔ دوسرے مرحوم جن کاحضور انور نے ذکر فرمایا وہ ناصر الدین صاحب مبلغ انڈیا تھے جو 42 سال کی عمر میں وفات پاگئے ، حادثہ کے روز آپ تیراکی کیلئے دریا پر گئے لیکن اس دوران آپ لاپتہ ہوگئے اور ایک گھنٹہ بعد ان کی نعش کنارہ پر ملی ، سال 2000 میں آپ جامعہ احمدیہ قادیان سے پاس ہوئے تھے اور عمدہ رنگ میں تعلیم و تربیت کا کام بجا لارہے تھے ، بعض دفعہ تبلیغ کے باعث آپ کو شدید مخالفت کا سامنا کرنا پڑا لیکن آپ مخالفت سے ہر گز ڈرے نہیں ، نہایت سادہ لوح تھے، تمام لوگوں سے حسن سلوک سے پیش آتے تھے ، بڑے اہتمام سے حضرت مسیح موعودؑ کی کتب کا مطالعہ کیا کرتے تھے ، ایسا کرنا ہر مبلغ کیلئے نہایت ضروری ہے۔ پھر حضور نے صاحبزادی مکرمہ امتہ الوحید صاحبہ کا ذکر کیا جو کہ میاں خورشید احمد صاحب کی اہلیہ تھیں، آپ کی عمر 86 سال تھی، آپ مرزا شریف احمد صاحب کی سب سے چھوٹی بیٹی تھیں اور حضور انور کی پھوپھی تھیں ، آپ نے طویل بیماری کو نہایت صبر کے ساتھ برداشت کیا اور ہمت کے ساتھ مقابلہ کیا ۔ خدا تعالیٰ کی رضا پر راضی تھیں، خلافت کے ساتھ نہایت گہرا تعلق تھا ، حضور انور نے فرمایا کہ باوجود بڑا ہونے کے بڑی عزت سے ملتی تھیں ، رشتوں کو مثالی رنگ میں نبھاتی تھیں ، اپنی چھ بہوؤں کے ساتھ بہت اچھا تعلق تھا، بچو ں کی نہایت اچھی تربیت کی جس کی وجہ سے آپ کے چھ بیٹوں میں سے چار واقف زندگی کے طور پر کام کر رہے ہیں ، لمبا عرصہ لجنہ اماءاﷲ میں خدمت بجا لائیں ، جلسہ سالانہ پر بہت سے مہمانوں کا خیال رکھا کرتی تھیں ، اسی طرح غرباء کا خیال رکھتی تھیں ، اﷲتعالیٰ ان کے درجات بلند فرمائے اور بچوں میں بھی ان کی نیکیاں جاری رکھے ۔ آمین

In his Friday Sermon today, Huzur (aba) gave some advice concerning administrative matters. He said that some tasks are not completed successfully due to lack of training in doing work in a timely manner and not following my prior instructions. It is important to actively start planning on time for all matters to be successful. For example, we still have not received permission to pray in the building beside Baitus-Subuh Mosque in Frankfurt, due to which we are offering Jumu’ah at a place with lots of noise from airplanes. May Allah enable the administration and office bearers to carry out their tasks in a better manner. Ameen Then, Huzur (aba) said that today I will mention three people who have recently passed away. One was a martyr, one was a Missionary and one was a granddaughter of the Promised Messiah (as). Huzur said that all three individuals had such attributes that are a lesson for all Ahmadis to follow. These people are an embodiment of the Quranic verse which states these are those who have fulfilled their pledge. The first one is Professor Dr. Ashfaq Ahmad Sb who was martyred in Pakistan last Friday. His age was 68 and was martyred while going to the Friday prayer. He was a Moosi and had deep love for Khilafat. He was very active in Tabligh, due to which he also received many threats. He was never afraid. He used to actively participate in all Jama’at activities. The second person mentioned by Huzur (aba) was Mukarram Nasir-ud-Din Sahib who was a missionary in India. He passed away at the age of 42 years. He had gone for swimming with Jama’at members, but went missing. His body was discovered after an hour. He graduated from Jamia Qadian in 2000 and was carrying out his tasks in a wonderful manner. He had to face severe opposition due to Tabligh, but he was never afraid. He lived a very simple life. He was well mannered with everyone. He used to passionately study the books of the Promised Messiah (as). Huzur (aba) advised that this is important for all missionaries of Jama’at. Then Huzur (aba) mentioned Sahibzadi Amatul Waheed Sahiba who was the wife of Mian Khursheesd sahib. She was 82 years. She was the youngest daughter of Hazrat Mirza Sharif Ahmad sahib (ra) and paternal aunt of Hazrat Khalifatul-Masih (aba). She suffered a long illness with immense patience and fought with courage. She was always content at God’s decree. She had a strong relationship with Khilafat. Huzur (aba) said that she behaved very respectfully, despite being older. She was exemplary in treatment of relatives and had a good relationship with all six of her daughter-in-laws. Her upbringing of children was so wonderful that four of her six sons are working as Waqf-e-Zindagi in Jama’at. She served Lajna Imaillah for a long time. Her hospitality was exemplary at Jalsa Salana. Similarly, she personally took care of many poor people. May Allah elevate her station in paradise and enable her children to continue her good deeds. Ameen

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
07-Apr-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)German (mp3)Russian (mp3)Spanish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Ahmadiyya Persecution - A Sign of Truth
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Kannada
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu | Indonesian
Slide Deck: Powerpoint | Powerpoint | PDF
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

تشہد و سورة فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور ایدہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا : حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی مخالفت مسلمانوں اور غیرمسلموں کی طرف سے شروع سے ہی ہو رہی ہے اور آج بھی جاری ہے۔ لیکن خدا تعالیٰ آپکی جماعت کو بڑھاتا جا رہا ہے اور آج اللہ تعالیٰ کے فضل سے جماعت 209 ممالک میں قائم ہو چکی ہے۔ جہاں بھی جماعت کی ترقی ہوتی ہے وہاں کے مولوی اور سیاستدان خاص طور پر مخالفت کرتے ہیں۔ آجکل الجزائر میں خاص طور پر مخالفت کی جا رہی ہے اور جج صاحبان اور حکومتی نمائندے یہی کہتے ہیں کہ اگر تم مسیح موعود علیہ السلام کا انکار کر دو تو تمہیں جیل سے بری کر دیا جائیگا۔ اور پھر جو لوگ ایمانوں پر قائم ہیں ان کو جیلوں میں ڈالا جا رہا ہے اور بڑے بڑے جرمانے کئے جا رہے ہیں۔ ان معصوموں اور مظلوموں کو ہمیں اپنی دعاؤں میں رکھنا چاہئے۔ اسی طرح پاکستان کے احمدیوں کیلئے بھی دعا کریں۔ مسلم ممالک جو آجکل فساد کی حالت میں ہیں ان کیلئے یہی کافی دلیل ہے کہ ان حالات میں انھیں اس زمانہ کے امام کو تلاش کرنا چاہئے۔ مسیح موعود اور امام مہدی کی تمام نشانیاں بھی پوری ہو چکی ہیں۔ یہی ایک راستہ ہے جو مسلمانوں کی عظمت کو دبارہ قائم کرسکتا۔ یہ لوگ اگر ایک جگہ مخالفت کرتے ہیں تو سو اور جگہ پر اللہ تعالیٰ تبلیغ کے میدان ہمارے لئے کھول رہا ہے۔ الجزائر میں بھی مخالفت کے باعث جماعت کا پیغام لوگوں تک پہنچ رہا ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے بھی فرمایا ہے کہ ہماری مخالفت سے لوگوں میں ہماری کتب پڑھنے کی طرف توجہ پیدا ہوتی ہے۔ حضور نے فرمایا کہ: آج مسلمانوں کی حالت ایسی ہے اور یہ لوگ گواہی بھی دیتے ہیں کہ آج مسلم اّمہ کو ایک مصلح کی ضروورت ہے۔ لیکن جس نے خدا تعالیٰ کی طرف سے ہونے کا دعویٰ کیا ہے ا سے یہ لوگ ماننے کیلئے تیار نہیں۔اس کے باوجود خدا تعالیٰ کی اپنی تقدیرکام کر رہی ہے اور لاکھوں لوگوں کا جماعت میں ہر سال شامل ہونا اس بات کا ثبوت ہے کہ اللہ تعالیٰ کی تائید جماعت کے ساتھ ہے۔فرمایا کہ: ایسے بیشمار لوگ اپنے واقعات لکھتے ہیں اور حیرت ہوتی ہے کہ کس طرح نیک فطرت لوگوں کی ہدایت کا کام خدا تعالیٰ خودبجا لارہا ہے۔ اس کے بعد حضورِ انور ایدہ اللہ تعالیٰ نے مختلف ممالک سے ایسے متعدد واقعات بیان کئے کہ کس طرح خوابوں کے ذریعہ، ایم ٹی کے ذریعہ، مخالفت کے ذریعہ اور اوردوسرے ذرائع سے اللہ تعالیٰ لوگوں کی ہدایت کا سامان کر رہا ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام فرماتے ہیں یاد رکھو اللہ تعالیٰ سب کچھ آپ ہی کیا کرتا ہے۔ ٹھنڈی ہوا چل پڑی ہے۔ اللہ تعالیٰ کے کام آہستگی سے ہوتے ہیں ۔ اگر ہمارے پاس کوئی بھی دلیل نہ ہوتی تو پھر بھی زمانے کے حالات معلوم کر کے مسلمانوں پر واجب تھا کہ دیوانہ وار پھرتے کہ کسرِ صلیب کیلئے کیوں مسیح نہیں آیا۔ اگر ملاؤ ں کو عوام عامہ کی بہبودی مد نظر ہوتی تو وہ ہماری دشمنی ہرگز نہ کرتے۔ یہ لوگ بھی ہمارے نوکر چاکر ہیں کہ کسی نہ کسی رنگ میں یہ ہماری بات کو مشرق سے مغرب تک پہنچا دیتے ہیں ۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ: پس ہمیں مخالفت سے کوئی فکر نہیں خواہ پاکستان ہو یا الجزائر۔ اس مخالفت سے ہماری مزید تبلیغ ہو رہی ہے اورتعارف بڑھ رہا ہے۔ ان لوگوں کو حضرت مسیح موعود علیہ السلام کے یہ الفاظ یاد رکھنے چاہیئں کہ اگر مجھے قبول نہ کرو گے تو پھر کبھی بھی آنے والے موعود کو نہ پاؤ گے۔میری نصیحت ہے کہ تقویٰ کو ہاتھ سے نہ جانے دو اور خداترسی سے ان باتوں پر غور کرو اور تنہائی میں نیک نیتی سے سوچو اور اللہ تعالیٰ سے راہنمائی حاصل کرو۔ اللہ تعالیٰ ان لوگوں کے سینے احمدیت کیلئے کھولے۔ آمین۔ حضورِ انور نے ایک ڈینش احمدی مکرم حاجی جانسن صاحب کا نمازِ جنازہ ادا کیا جنکی دو دن پہلے وفات ہوئی۔ انا للہ و انا الیہ راجعون۔

Huzur-e-Anwar (aba) said that the Promised Messiah (as) and his Jama’at has been opposed by both Muslims and non-Muslims from the very beginning and it continues to this day. But Allah has continued to support Jama’at and today we are established in 209 countries. Wherever we see the rise of Jama’at, local clerics and politicians oppose us severely. These days it is being done in Algeria where Ahmadis are being jailed and heavily fined due to believing in the Promised Messiah (as). They are offered their independence in exchange for disbelieving in the Promised Messiah (as). We should remember the oppressed Ahmadis of Algeria and Pakistan in our prayers. Huzur said that the condition of Muslim countries today is in itself a proof that Muslims should seek to find the Imam of this age. All signs of the coming Messiah and Mahdi have been fulfilled. This is the only way through which the lost glory of Muslims can be restored. If they oppose us at one place, Allah opens hundreds of other avenues of Tabligh for us. In Algeria, the message of Jama’at is spreading in general public due to opposition. The Promised Messiah (as) also stated that people are always drawn towards reading our books when we are opposed. Huzur (aba) said that the conditions of Muslims today even forces non-Ahmadis to say that a reformer is needed for Muslims. Yet they continue to reject the one who claimed that Allah has made him the Imam and Mahdi of this age. But the decree of God is also at work. Millions of people joining Jama’at every year is a living proof that Allah’s hand and support is with the Jama’at. Huzur (aba) said that many such people write to me daily. It is astonishing to see how Allah is attracting the good-natured people towards Jama’at. Through dreams, through MTA, through opposition and through various other means, Allah is guiding people towards accepting Ahmadiyyat and the Promised Messiah (as). Huzur (aba) went on to narrate many such incidents of new Ahmadis from many countries. The Promised Messiah (as) said that remember that Allah does everything himself. The cool winds have started to blow. God’s works happen gradually. Even if we didn’t have any argument, seeing the conditions of this age, it was incumbent for Muslims to look for the Messiah that why hasn’t he come to break the cross? If clerics truly cared for the welfare of public, they would not have opposed us. These people end up acting us our servants as they take our message to East and West. Huzur (aba) said that therefore this opposition does not worry us, be it in Algeria or Pakistan. This opposition is only spreading our message. These people should remember these words of the Promised Messiah (as) that if you do not accept me, then you will never find the Promised reformer. Do not let go of Taqwa or righteousness, ponder with virtuous intentions and seek guidance from Allah. May Allah open their hearts towards Ahmadiyyat. Ameen At the end, Huzur-e-Anwar announced the funeral prayer of a Danish Ahmadi, Haji Hansen Sahib, who passed away two days ago. انا للہ و انا الیه راجعون

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
31-Mar-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)German (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Essence of Istighfar and Sattari
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Kannada
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu | Indonesian
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

حضورِ انور نے فرمایا کہ دنیا میں کوئی ایسا انسان نہیں ہے جو ہر عیب سے پاک ہو۔ یہ اللہ کی صفتِ ستار ہے جو ہماری پردہ پوشی کرتی ہے۔ اگر یہ پردہ پوشی نہ ہو تو انسان دوسروں کو منہ دکھانے کا لائق نہ رہے۔ اسی لئے اللہ تعالیٰ نے استغفارر کی ہدایت دی ہے کہ اس کےذ ریعہ میں تمہارری پردہ پوشی کرونگا۔ غفر اور ستر کا مطلب چھپانا اور ڈھانکنا ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ اسلام نے جو خدا پیش کیا ہے وہ حلیم، رحیم اور غفار ہے۔ جو شخص سچی توبہ کرتا ہے اللہ تعالیٰ ا س کے گناہ بخش دیتا ہے۔ لیکن دنیا میں اگر کوئی شخص کسی کا قصور دیکھ لیوے تو چاہے قصور کرنے والا باز بھی آ جائے پھر بھی اسے عیبی ہی سمجھتا ہے۔ لیکن اللہ کیسا کریم ہے کہ انسان کو ہزاروں عیب کے بعد بھی بخش دیتا ہے۔ حضور نے فرمایا کہ پس اسکو مدِ نظر رکھتے ہوئے ہمیں بھی دوسروں کے عیب تلاش نہیں کرنے چاہئیں اور خدا تعالیٰ کی صفت کی طرح دوسرے لوگوں کی پردہ پوشی کرنی چاہئے۔ انسان کو بہت برا لگتا ہے اسکی کوئی برائی دوسرے لوگ بیان کریں لیکن دوسروں کے عیب کو بیان کرنا بڑی بات نہیں سمجھتا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے نے فرمایا کہ وہی چیز اپنے بھائی کیلئے پسند کرو جو اپنے لئے پسند کرتےہو۔ ا س لئے دوسروں کے عیبوں کو دیکھ کر خود استغفارر کرنا چاہئے کہ کہیں ہمارے عیب بھی ظاہر نہ ہو جائیں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ جس شخص نے اپنے مسلمان بھائی کی پردہ پوشی کی اللہ تعالیٰ قیامت کے دن اسکی پردہ پوشی فرمائےگا۔ فرمایا کہ بعض لوگ کہہ دیتے ہیں کہ اگر برائی ظاہر نہ کریں تو اصلاح کیسے ہو گی ۔ یاد رکھنا چاہئے کہ اگر نظام جماعت کو نقصان پہنچ رہا ہے توذمہ دار لوگوں کو بات پہنچا دیں تا اصلاح ہو۔ لیکن تضحیک اور مذاق کیلئے ہرگز ان باتوں کو پھیلانا نہیں چاہئے۔ جن لوگوں کے پاس تربیت یااصلا ح کا کام ہے انھیں خاص طور پر اس کا خیال کرنا چاہئے۔ حضورِ انور ایدہ اللہ تعالیٰ نے متعدد احادیث ے حوالے سے فرمایا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مسلمانوں کو اپنے بھائیوں کی پردہ پوشی کا حکم دیا ہے اور اس کیلئے اللہ تعالیٰ نے بڑے اجر کا قیامت کے دن وعدہ کیا ہے۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ اگر اللہ تعالیٰ کی صفتِ ستاری سے فیض حاصل کرنا چاہتے ہیں تو دوسروں کی ستاری کرنا ضروری ہے یعنی دوسروں کے عیب چھپانے چاہئیں ۔ ہمیشہ اپنے گریبان میں دیکھنا چاہئے اور اپنا جائزہ لینا چاہئے۔ ہاں کمزوری دیکھ کر ا س شخص کی اصلا ح کرنی چاہئے اور یہی اصل نیکی ہے۔ اس کا طریق حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے یہ بتایا ہے کہ چاہئے کہ جسے کمزور پاوے اسے خفیہ نصیحت کرے ۔ اگر نہ مانے تو ا س کیلئے دعا کرے۔ اور اگر دونوں باتوں سے فائدہ نہ ہو تو اسے قضا و قدر کا معاملہ سمجھو یعنی خدا کی یہی مرضی ہے۔ اگر اللہ تعالیٰ نے اسے قبول کیا ہواہے تو تم بھی زیادہ جوش نہ دکھاؤ۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ کسی کا احمدی ہونا اور بیعت میں آنے سے پتہ لگتا ہے کہ اللہ تعالیٰ نے اسے قبول کیا ہے پھر ہمیں بھی زیادہ تجسس نہیں کرنا چاہئے۔ فرمایا کہ ہمیں ایسی جماعت ہونا چاہئے جو آپس میں رحم کرنے والے ہوں اور ایک دوسرے کی ستاری کرنے والے ہوں۔ ایک دوسرے کی ا س طرح مدد کریں گے تب ہی وہ حقیقی جماعت بن سکتے ہیں جو حضرت مسیح موعود علیہ الام بنا نا چاہتے ہیں۔ اللہ کرےکہ ہم اسکی رضا حا صل کرنے والے ہوں۔ آخر میں حضورِ انور نے ملک سلیم لطیف ایڈوکیٹ صاحب کا نمازِ جنازہ پڑھایا جو صدر جماعت ننکانہ ، پاکستان تھے۔ آپکو ایک دن قبل معاندینِ احمدیت نے گولی مار کر شہید کر دیا۔ انا للہ و انا الیہ راجعون۔

Huzur (aba) said that no one is absolutely free of all weaknesses. This is the attribute of al-Sattar of God that He keeps our weaknesses hidden. Man would be utterly embarrassed if this wasn’t the case. This is why Allah has advised us to do Istighfaar. The word Ghafr and Sattr also means to cover or hide something. The Promised Messiah (as) has said that the God presented by Islam is forbearing, merciful and Who accepts repentance. Whoever does true repentance, He forgives his sins. But people of this world are such that if they see someone committing an evil, then they always blame even if they turn away from that action. But Allah is so merciful that He forgives us despite thousands of weaknesses. Huzur (aba) said that keeping this in mind, we shouldn’t seek out others’ weaknesses, rather should cover their weaknesses like the attribute of Allah. We extremely dislike if someone reveals our weakness, but do not think much of doing it to others. This is why the Holy Prophet (sa) has advised us to like for your brother what you like for yourself. Therefore, when you see others’ weaknesses, you should do istighfaar or seek forgiveness that your own weaknesses aren’t revealed. The Holy Prophet (sa) has said that whoever covers up the weaknesses of his Muslim brother in this world, Allah will do so to him in the hereafter. Huzur (aba) said that some people ask that how can we reform people without revealing their weaknesses? He said that if Jama’at is being harmed in any way, then the responsible people in Jama’at should be made aware. But it shouldn’t be done for mocking and to make him look bad. People who are responsible for Tarbiyyat or Spiritual training should especially take care of this teaching of Islam. Huzur-e-Anwar (aba) presented various sayings of the Holy Prophet (sa) that how he commanded Muslims to cover the weaknesses of his brothers and Allah has promised a great reward for this in the hereafter. Huzur (aba) said that if we want to benefit from the attribute of al-Sattar of Allah, then we should also practice this attribute meaning cover others’ weaknesses. We should always look towards ourselves before looking at others. Yes it is true that when we see some weakness in someone, we should try to reform him. The Promised Messiah (as) has advised us how to do this reformation. He said that when you see a weakness is someone, then advise him in private. If he doesn’t listen to you, then pray for him. If he still doesn’t mend his ways, then consider it a decree of Allah. If Allah has accepted him by keeping him in this Jama’at, then you also shouldn’t be over zealous. Huzur (aba) said that if someone is an Ahmadi and has done bai’at, then it shows that Allah has accepted him. We shouldn’t overly intervene in these matters. He advised that we should become such a community who are merciful to each other and hide each other’s weaknesses. Only by doing so can we become a true Jama’at as was the wish of the Promised Messiah (as). May Allah enable us to gain his pleasure. At the end, Huzur-e-Anwar (aba) led the funeral prayer of Advocate Malik Saleem Latif sahib who was recently martyred in Pakistan. He was serving as the president of Nankana Jama’at. انا ﷲ و انا الیہ راجعون

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
24-Mar-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: The Promised Messiah and Mahdi (a.s.)
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Kannada | Indonesian
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu | Indonesian
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

تشہد و سورة فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور ایدہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا : 23 مارچ جماعت احمدیہ کی تاریخ میں بڑا اہم دن ہے کیونکہ اس دن حضرت مرزا غلام احمد قادیانی علیہ السلام نے باقاعدہ طور پر جماعت کی بنیاد رکھی۔ آپ نے فرمایا کہ آنے والا مسیح موعود اورمہدی موعود جس کی آنے کی آنحضرت صلى الله عليه وسلم نے خبر دی تھی وہ میں ہوں۔اور فرمایا کہ خدا چاہتا ہے کہ تمام سعید روحوں کو جو دنیامیں بستی ہیں ان کو حقیقی توحید کی طرف کھینچے اور اسی کیلئے میں بھیجا گیا ہوں۔پھر آپ نے فرمایا کہ یہ مقام و مرتبہ مجھے آنحضرت صلى الله عليه وسلم سے عشق کی وجہ سے ملا ہے ۔ آپ نے فرمایا کہ تمام آدم زادوں کیلئے اب کوئی رسول و شفیع نہیں مگر محمد مصطفیٰ صلى الله عليه وسلم , یہ وہ مقام ہے جو احمدی آنحضرت صلى الله عليه وسلم کو دیتے ہیں۔ آج مسلمانوں کا یہ حال ہے کہ احمدیوں پر ہر قسم کے مظالم ڈھا رہے ہیں۔ یہاں تک کہ اب عورتوں اور بچوں کو بھی نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ اللہ تعالیٰ ان احمدیوں کی حفاظت فرمائے اور مسلمانوں کو مسیح موعود کو ماننے کی توفیق عطا فرمائے۔ جو کہ اسلام کو دوبارہ زندہ کرنے کیلئے مبعوث کئے گئے ۔ حضرت مسیح موعود کو بڑا درد تھا کہ لوگوں کو ایک خدا کی طرف بلایا جائے۔ مثلا فرمایا کہ کیا بدبخت وہ انسان ہے جس کو اب تک یہ پتہ نہیں کہ اُس کا ایک خدا ہے جو ہر ایک چیز پر قادر ہے۔ ہمارا بہشت ہمارا خدا ہے۔ہماری اعلیٰ لذات ہمارے خدا میں ہیں کیو نکہ ہم نے اس کو دیکھا اور ہر ایک خوبصورتی اس میں پائی۔یہ دولت لینے کے لائق ہے اگرچہ جان دینے سے ملے اور یہ لعل خریدنے کے لائق ہے اگرچہ تمام وجود کھونے سے حاصل ہو۔اے محرومو !اس چشمہ کی طرف دوڑو کہ وہ تمہیں سیراب کرےگا۔یہ زند گی کا چشمہ ہے جو تمہیں بچائے گا۔میں کیا کروں اور کس طرح اس خوشخبری کو دلوں میں بٹھادوں۔کس دف سے بازاروں میں منادی کروں کہ تمہارا یہ خدا ہے تا لوگ سن لیں اور کس دوا سے میں علاج کروں تا سننے کے لیے لوگوں کے کان کھلیں ۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ حضرت مسیح موعود کو یہ مقام آنحضرت صلى الله عليه وسلم کی پیروی کے باعث ملا ۔ فرمایا کہ جو لوگ حضرت مسیح موعو د کی مخالفت کرتے ہیں وہ عشقِ رسول میں آپکے مقابل پر کوئی حیثیت نہیں رکھتے۔ مثلا فرمایا : اگر میں آنحضرت صلى الله عليه وسلم کی امُّت نہ ہوتا اور آپ کی پیروی نہ کرتا تو اگر دنیا کے تمام پہاڑوں کے برابر میرے اعمال ہوتے تو پھر بھی مَیں کبھی یہ شرف مکالمہ مخاطبہ ہرگزنہ پاتا۔ حضور نے عشقِ رسول کے اور واقعات بھی بیان فرمانے کے بعد فرمایا کہ یہ باتیں سن کر بھی جو حضرت مسیح موعو دؑ پراعتراض کرتا ہے وہ جاہل اور مفسد ہے اور اس کا معاملہ اب اللہ تعالیٰ پر ہے۔ حضور نے فرمایا: حقوق اللہ کی ادائیگی اور خلق اللہ سے محبت کا ادراک دلوانا بھی حضرت مسیح موعود کا ایک اہم مقصد تھا۔ اور اس بات کو آپ نے شرائطِ بیعت میں بھی شامل فرمایا۔ مثلا فرمایا کہ دین کے دو ہی حصے ہیں یا دو بڑے مقاصد ہیں۔ اول یہ کہ خدا کو جاننا اور اس سے محبت کرنا۔دوسرا مقصد یہ ہے کہ اس کے بندوں کی محبت اور خدمت میں اپنے تمام قویٰ کو خرچ کرنا۔ اس کے بعد حضورِانور نے آپ کی سیرت سے حقوق العباد کے بعض واقعات بیان فرمائے۔ حضور نے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ مسلمانوں کو حضرت مسیح موعو د کو ماننے کی توفیق عطا فرمائے۔ اب اسلام کی حکومت جو دنیا میں قائم ہونی ہےاور اسلام کی جو فتح مقدر ہے وہ اب حضرت مسیح موعود ؑ کی جماعت سے ہی ہونی ہے۔ آجکل جو اسلام کے نام پردنیا میں جو واقعات ہورہے ہیں مثلا دو دن پہلے یہاں لندن میں جو واقعات ہوئے ہیں ۔یہ اسی وجہ سے ہے کہ ان نام نہاد علماء نے لوگوں کی غلط راہنمائی کر کے ان کے دلوں میں اسلام کی خوبصورت تعلیم کے بجائےظلم کے خیالات پیدا کر دیئے ۔اسلام کا دفاع اب ہم احمدیوں کا ہی کام ہے۔ان لوگوں کی مخالفت جماعت کا کچھ نہیں بگاڑ سکتی۔ حضرت مسیح موعود نے فرمایا کہ ابھی تیسری صدی آج کے دن سے پوری نہیں ہوگی کہ عیسیٰ کے انتظار کرنے والے کیا مسلمان اور کیا عیسائی سخت نوامید اور بدظن ہو کر اس جھوٹے عقیدہ کو چھوڑیں گے اور دنیا میں ایک ہی مذہب ہوگا اور ایک ہی پیشوا۔میں تو ایک تخم ریزی کرنے آیا ہوں سو میرے ہاتھ سے وہ تخم بویا گیا اور اب وہ بڑھے گا اور پھولے گا اور کوئی نہیں جو اُس کو روک سکے۔ اللہ تعالیٰ کے مسیح کے ہاتھ کا لگایا بیج پھل لا رہا ہے اگر ہم نے پھلدار بننا ہے تو پھر اپنے اعمال اور نوع انسان سے ہمدردی اور محبت کو اس طرح بنائیں کہ ہمارے ہر عمل سے ایسا ظاہر ہو۔اللہ تعالیٰ ہم کو اس کی توفیق عطا فرمائے ۔ آمین

March 23 is a historical day for us as Hazrat Mirza Ghulam Ahmad Qadiani (as) laid the foundation of the Ahmadiyya Muslim Jama’at on this day. He said that I am the same Messiah and Mahdi foretold by the Holy Prophet (sa). He said that God wants to bring all righteous souls in this world towards true Tauheed or Unity of God and I have been sent for this reason. Then he said that I have been granted this status due to my love of the Holy Prophet (sa). He said that there is no Messenger and intercessor for humanity now except the Holy Prophet (sa). This is our belief. Despite this, Muslims are carrying out many atrocities against Ahmadis, even against women and children. May Allah safeguard all Ahmadis and may Allah enable Muslims to accept the Messiah and Imam Mahdi who was sent for the revival of Islam. The Promised Messiah (as) had great pain and anguish to call people to one true God. He once said: How unfortunate, indeed, is the man who does not even know that he has a God with power over all things! Our Paradise, indeed, is our God: our highest enjoyment is in God, for we have seen Him and found all beauty in Him. This treasure is worth having, even if at the cost of one's life; and this is a jewel worth procuring even if obtainable only by sacrificing one's entire being. O ye that are devoid, run to this spring, for it will quench your thirst. It is the spring of life that shall save you. What am I to do, and how should I impress this glad tiding upon your mind, with what drum should I go crying through the streets that this is your God, so that all should hear! Huzoor (aba) said that the Promised Messiah (as) has repeatedly said that he attained this status due to his love for the Holy Prophet (sa). For example, the Promised Messiah (as) said: If I wasn’t from the Ummah or people of the Holy Prophet (sa) and did not follow him, then even if my good deeds had been equal to the mountains of this world, I would not have received this status of communion with Allah. Huzoor (aba) also explained other instances of love of the Holy Prophet (sa) from the life of the Promised Messiah (as). Huzoor (aba) says that those who still raise this allegation against the Promised Messiah (as) are ignorant. Their matter is now with Allah. Another important purpose of the Promised Messiah (as) was to instill in hearts the love and sympathy for all mankind. He also included this in the conditions of Bai’at. For example, he said: There are two parts of religion or two main goals .First is to recognize God and to love him; second purpose is to spend all your abilities to love and serve the creation of God. Huzoor (aba) said that may Allah enable all Muslims to accept the Promised Messiah (as). The renaissance of Islam and the victory of Islam are decreed with the Jama’at of the Promised Messiah (as). The incidents which we are seeing these days (example: London attack) clearly show how the scholars of Islam have damaged the face of Islam. Now, it is our responsibility to defend Islam. Our Jama’at cannot be harmed from their opposition, no matter how severe it is. The Promised Messiah (as) says: The third century from today will not have completed when all those who had been waiting for Jesus, both Muslims and Christians will despair of his coming and entertaining misgivings shall give up their belief and there will be only one Faith in the world and one preceptor. I came only to sow the seed. That seed has been sown by my hands. It will now grow and blossom forth and none dare retard its growth May Allah enable us to become fruitful branches of this tree sown by the Promised Messiah (as). Ameen.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
17-Mar-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Extremism and Persecution of Ahmadis
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Kannada | Indonesian
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

تشہد و سورة فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور ایدہ اﷲ تعالیٰ نے فرمایا :آجکل ہم دیکھتے ہیں کہ مغربی دنیا میں نسل پرست سیاسی جماعتوں کی پذیرائی بڑھتی جا رہی ہے۔ تجزیہ نگار اسکا الزام بائیں بازو کی حکومتوں کی امیگریشن پالیسی اور مسلمانوں پر ڈالتے ہیں کہ مسلمان ان ممالک میں آ کر ہمارے اندر جذب نہیں ہوتے اور اپنے مذہب پر جو ان کے خیال میں شدت پسند مذہب ہے اس پر عمل کرتے ہیں۔ عجیب مضحکہ خیز باتیں کرتے ہیں کہ مثلا مًساجد کے مینار، عورتوں کا حجاب، مردوں کا عورتوں سے اور عورتوں کا مردوں سے مصافحہ نہ کرنا ہمارے لئے خطر ہیں۔ ہاں یہ بات انکی صحیح ہے کہ مسلم ممالک میں شدت پسند پائی جای ہے اور اسکا الزام مسلمانوں پر پڑتا ہے۔ لیکن یاد رکھنا چاہئے کہ مسلم ممالک میں ان گروہوں کو ہتھیار مغربی ممالک سے ہی ملتے ہیں۔ مسلمانوں کو نقصان ہمیشہ اپنی ہی کمزوریوں اور اسلامی تعلیمات کو بھولنے کی وجہ سے پہنچا ہے۔ انھوں نے اس شخص کو نہیں مانا جس کے ہاتھ پر اسلام کی نشاۃ ثانیہ مقدر ہے۔ نہ صرف اُس پر ایمان نہیں لائے بلکہ ہر مسلم ملک میں اس کی اور اس کے ماننے والوں کی مخالفت کر رہے ہیں۔ پاکستان میں تو ایک عرصہ سے ایسا ہو ہی رہا ہے لیکن اب الجیریا میں بھی اس زمانہ کے امام کو ماننے کی وجہ سےاحمدیوں کو شدید مشکلات کا سامنا ہے اُن کو جیلوں میں ڈالا جا رہا ہے۔ جیل میں جانے والوں کی تعداد اب 200 سے زائد ہے۔ ان مخالف لوگوں کو اپنی حالتوں پر توجہ کرنی چاہئے کہ کیا واقعی یہ لوگ اسلامی تعلیمات پر عمل کر رہے ہیں۔ اگر حقیقی طور پر انکے علماءخادم دین ہوتے تو کیا آج اسلام پور ی دنیا میں یوں بدنام ہوتا۔ کیا اﷲ تعالیٰ نے قتل و غارت سے دین پھیلانے کا حکم دیا تھا۔ ہرِگزنہیں۔مسلمانوں کی حالت ان دنوں میں عجیب ہے۔ ایک طرف شدت پسندلوگوں کا طبقہ ہے اور دوسر ی طرف وہ لوگ جو مذہب سے لاتعلق ہیں اور پھرسیاستدان ہیں جو دنیاو ی جوہات اور بزدلی کی وجہ سے خاموش رہتے ہیں اور ان شدت پسندوں کی ہاں میں ہاں ملادیتے ہیں۔ گویا ہر طبقہ اﷲتعالیٰ کے احکامات سے دور جا پڑا ہے۔ یہ سب لوگ صرف نام کے مسلمان ہیں۔ اب احمدیوں کو ہی سوچنا چاہئے کیونکہ ان پر بہت بڑ ی ذمہ دار ی ہے۔ ہمار ی مخالفت مسلمانوں کی طرف سے بھی ہو ئی اور مذہب سے دور طبقہ کی طرف سے بھی۔ ایسے حالات میں ہمار ی ذمہ داری ہے کہ اسلامی تعلیمات پر عمل کریں، ایمان کی حفاظت کریں اور اسلامی تعلیم کو دنیا کےسامنے پیش بھی کرنا ہے۔اس کے لئے اﷲ تعالیٰ نے ہمار ی راہنمائی قرآن کریم میں اس طر ح فرمائی ہے کہ یعنی ’اپنے رب کی طرف حکمت اور ایسی نصیحت کے ساتھ بلا جو بہترین ہو‘۔ پس حکمت سے لوگوں کو اسلام کی طرف بلانے کی ضرورت ہے۔ ہاں حکمت کا مطلب یہ نہیں ہے کہ مداہنت سے کام لیا جائے یعنی غلط بات میں بھی ہاں سے ہاں ملا لی جائے۔ جن باتوں کو اسلام غلط ہی کہتا ہے انکو ہم نے بہر حال غلط ہی کہنا ہے۔ہمیں یاد رکھنا چاہئے کہ دنیا بھر کے مسلمانوں میں آج صرف ہمار ی جماعت ہی ہےجو مؤثر طور پر اور متحد ہو کر اسلام کا دفاع کر سکتی ہے۔ جہاں بھی مخالفت ہوئی ہے وہاں ہی تبلیغ کے مواقع زیاد ہ پیدا ہوتے ہیں۔ پس خوفزد ہونے کی بجائے ہمیں کام کو اور تیز کرنا چاہئے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا کہ اسلام کی حفاظت اور سچائی کے ظاہر کرنے کیلئے سب سے اول ضرور ی ہے کہ تم سچے مسلمان بن کر دکھاؤ اور اسکی تعلیمات کو دنیا میں پھیلاؤ۔ اﷲ تعالیٰ ہم کو توفیق دے کہ ہم سچے مسلمان بننے والے ہوں اور حقیقی اسلام کی حفاظت اور سچائی ظاہر کرنے والوں میں سے ہم میں سے ہر اک بن جائے۔ آمین حضورِ انور ایدہ اﷲتعالیٰ نے آخر پر مندرجہ زیل نمازِ جناز غائب کا اعلان فرمایا: مکرم مولانا حکیم محمد دین صاحب، مکرم فضل الہی صاحب اور مراکش کے ابراہیم بن عبداﷲ صاحب۔ انا ﷲ و انا الیہ راجعون۔

These days we see that the right wing parties are rising in the Western World. The analysts blame the immigration policies of the left wing parties for this rise. Muslims are also blamed for their lack of integration in western societies and for following their faith. Ridiculous statements are made that minarets of mosques or hijab of Muslim women present a danger to us. However, they are true in saying that extremism does exist in many Muslim countries and Muslims can be blamed for this. However, it should be remembered that these extremist groups often receive weapons and support from Western countries. Muslims have always been harmed due to their own weaknesses and forgetting the teachings of Islam. They haven’t accepted the Imam of this age. Not only did they not believe in him, they are actively opposing him and his community in every country. This had been happening for a long time in Pakistan Now even in Algeria, Ahmadis are being heavily persecuted. Over 200 people have been jailed. These people should ponder over their conditions and see if they are following teachings of Islam. If their scholars really were servants of Islam, would Islam be so defamed today? Has Allah asked us to spread faith by force? Of course not. We see one sector of Muslims that have been radicalized by extremism and the other sector of general public and politicians, who due to worldly reasons, do not oppose these views and tend to agree with them. All of them are far from Islam and are only Muslims by name. Ahmadis bear a huge responsibility at this time.We are opposed by both the extremists in Islam and by those who are far from religion in Western nations. We follow the Islamic teachings, safeguard our faith and spread Islam’s message with wisdom. Allah guides us in the Holy Quran: “Call towards the way of your Lord with wisdom and goodly exhortation.” We need to give Islam’s message with wisdom; however this doesn’t mean that we even agree with principles against Islam. We must denounce everything denounced by Islamic teachings. We should remember that today it is only our community that can defend Islam in a unified manner. Wherever there is opposition, there is also great potential for Tabligh. Therefore we shouldn’t be afraid; rather we should multiply our efforts at this time. The Promised Messiah (as) says that to safeguard Islam and propagate its message, it is important that first you show yourself to be a true Muslim and then spread its teachings. May Allah enable all of us to become true Muslims and among those who safeguard Islam. At the end, Huzur said he would lead the funeral prayers of Maulana Hakeem Muhammad Din Sahib, Mukarram Fazal Ilahi Sahib, and Mukarram Ibrahim bin Abdullah Sahib.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
10-Mar-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: The Workings of Missionaries and Office Holders
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Kannada | Indonesian
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

تشہد و تعوذ اور سورۃ الفاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے فرمایا : اللہ تعالیٰ کے فضل سے مختلف ممالک میں اب جامعہ احمدیہ قائم ہو چکے ہیں جہاں سے مربیان تیار ہو رہے ہیں۔ یہ وہ لوگ ہیں جنھوں نے یہاں مغربی معاشرے میں پڑھ کر پھراپنے آپکو جامعہ کیلئے پیش کیا۔ اپنے آپ کو وقف کرکے اللہ تعالیٰ کے دین کے سپاہیوں میں شامل ہوکر دین کو دنیا پر مقدم رکھنے کا وعدہ پورا کیا ہے۔ جماعت کو مربیان کی بہت زیادہ ضرورت ہے اور یہ ضرورت بڑھتی جا رہی ہے۔ اس لئے زیادہ سے زیادہ والدین کو اور خاص طور پواقفین نو کے والدین کواس کیلئے اپنے بچوں کو تیار کرنا چاہئے۔ ہمارے انٹرنیشنل جامعات اب پاکستان، انڈیا، کینیڈا، جرمنی،، گھانا،یوکے اور انڈو نیشیا میں ہے۔ خاص طور پر واقفین نو لڑکوں کو جامعہ احمدیہ میں جانا چاہئے۔ بعض دفعہ دیکھا گیا ہے کہ مربیان اور عہدیداران آپس میں پورا تعاون نہیں کرتے اور پورے طور پر ایک دوسرے کی عزت نہیں کرتے۔ مربیان کو یاد رکھنا چاہئے کہ انتظامی لحاظ سے جو بھی ان کے اوپر ہے اسکی بہرحال اطاعت کرنی ہے اور نمونہ دکھانا ہے اور صدران اور امراء کا بھی یہ کام ہے کہ مربیان کی عزت و احترام قائم کریں اور ان کو بھی تعاون اور مشورہ کے تھ چلنا چاہئے۔ پس آپس میں مل کر کام کرنا چاہئے۔ تعاونوا علی البر والتقو ی کو مد نظر رکھنا چاہئے۔ہم سب کا مقصد تو ایک ہی ہے اور وہ یہ ہے کہ ممبرانِ خلافت سے تعلق پیدا کرنا اور تبلیغ کے ذریعہ توحید پھیلانا۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ کوئی جماعت اس وقت تک جماعت نہیں ہو سکتی جب تک طاقتور لوگ کمزوروں کی مدد نہ کریں۔ پس اس روح کو ذہن میں رکھ کر مربیان اور عہدیداران کو کام کرنا چاہئے۔ اگر آپس کا تعاون نہ ہو تو شیطان مختلف ر نگ میں اس جماعت میں بے چینیاں پیدا کرتاہے۔ عمومی طور پر کوئی اختلافات نہیں پائے جاتے ۔ ایسا بہت ہی کم ہوتا ہے۔ ان باتوں کے بتانے کامقصد صرف یہ ہے کہ مربیان اور عہدیداران کو واضح طور پر اپنی ذمہ داریوں کا احساس ہو اور تا کوئی مسئلہ پیدا نہ ہو۔ پس احباب جماعت کی علمی اور عملی تربیت دونوں نے مل کر عاجزی اختیار کرتے ہوئے کرنی ہے۔ واقفین زندگی کا ادب کرنے سے آئندہ مربیان کا حصول بھی آسان ہو گا۔ گو خدا تعالیٰ لوگوں کے دلوں میں تحریک پیدا کرتا ہے لیکن یہ تو انسانی فطرت ہے۔ اگر نوجوان جماعتوں میں واقفین زندگی کی عزت ہوتے ہوئے دیکھیں گے تو ان کی بھی اس طرف توجہ پیدا ہو گی۔ ہرجماعتی ممبر سے محبت سے بات کریں۔ جماعتی خدمت کو اپنے لئے ایک عزت سمجھیں اور خلیفۂ وقت کی توقعات کو پورا کرنے کی کوشش کریں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے متعلق آتا ہے کہ ہمیشہ مسکرا کر ملتے تھے۔ اسی طرح معاملات کو جلدی نپٹایا کریں تا لوگوں کو شکایات پیدا نہ ہوں اور اگر تاخیر ہو رہی ہے تو فریقین کو بتا دینا چاہئے تا ان کو برامحسوس نہ ہو۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک مرتبہ فرمایا کہ قیامت کے دن منصف حاکم اللہ کا محبوب اور غیر منصف حاکم خدا تعالیٰ سے دور ہو گا۔ پس اپنی ذمہ داروں کو تقویٰ اورعاجزی سے پوری کرنی چاہئیں ۔ اسی طرح اگر کوئی عہد یداران کے خلاف کوئی شکایت کرے تو آپ کے اندر بات سننے کا حوصلہ ہونا چاہئے اور اپنا جائزہ لینا چاہئے۔ اسی طرح جماعتی ممبران کو تقویٰ میں بڑھنے کی کوشش کرنی چاہئے اسی طرح انکو تقویٰ شعار عہدیداران بھی ملیں گے۔ آخر میں حضورِ انور نے دعا فرمائی کہ اللہ تعالیٰ کرے کہ ہمارا ہر کام اللہ کی رضا کے لئے ہو۔ ہم اس زمانے میں اللہ تعالیٰ کے بھیجے ہوئے کی جماعت میں شمولیت کا حق ادا کرنے والے ہوں۔ اور حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی جو توقعات ہیں ان پر پورا اترنے والے ہوں۔ فرمایا خدا چاہتا ہے کہ تم ایک ایسی جماعت بنو جو تقویٰ پر بڑھنے والی ہو۔ تمہاری مجلسوں میں ناپاکی اور ہنسی ٹھٹھے نہ ہوں۔ نیک دل اور پا ک خیال ہوکر زمین پر چلو۔ اللہ کرے کہ ہم اپنی حالتوں کو اس کے مطابق بناتے ہوئے اللہ کی رحمت کے سائےمیں آنے والے ہوں۔ آمین

By the grace of Allah, our Jamia’at are established in different countries where missionaries are being prepared. These are people who have dedicated themselves for faith and have fulfilled the promise of giving faith priority over worldly affairs. The need for missionaries is constantly rising; therefore parents, especially parents of waqf-e-nau children, should prepare their children for this purpose. Our international Jamiat are now established in Ghana, India, Pakistan, Canada, Germany, UK and Indonesia. All waqf-e-Nau boys should try to go to Jamia and become a missionary. Sometimes, it is seen that Missionaries and office bearers do not fully cooperate with each other and do not give each other the due respect. Missionaries should remember that they must be obedient to the person over them and must display exemplary obedience. Presidents and Umura should also respect the missionaries and work in cooperation and counsel with them. Our eventual goal is the same; to spiritually reform the members of Jama’at, to join them with Khilafat and spread oneness of God in this world. The Promised Messiah (as) has said that no Jama’at can truly become a Jama’at until the stronger ones help the weaker ones. Missionaries and Office bearers should work with this spirit in mind. If internal cooperation is missing, Satan causes much restlessness in that Jama’at. These issues are very rare, but I’m explaining them so that missionaries and office bearers are clear regarding these issues. They have to do educational and moral training of Jama’at together with humility. Respecting Waqifeen in Jama’at would make it easier to get future missionaries. Even though Allah turns people towards waqf, but this is part of human nature. If the youth see the Waqifeen being respected in Jama’at, they will also be drawn towards this. You should greet every Jama’at member with respect as was the Sunnah of the Holy Prophet (saw). You should consider Jama’at work as an honor for yourself and try to fulfill the expectations of the Khalifa of the time. Similarly, you should try to promptly resolve the matters of members of Jama’at, so that they do not feel neglected. They should be informed if there is a delay for any reason. The Holy Prophet (saw) once said that just rulers will be beloved of God on the Day of Judgment and unjust rulers will be far from His grace. Therefore, you should fulfill your responsibilities with Taqwa and humility. If anyone complains against you, you should have the courage to listen and self-reflect whether or not you have that weakness. Similarly, members of Jama’at should also increase themselves in righteousness, so that they are blessed with righteous office bearers. At the end, Huzur (aba) prayed that may we all work for the sake of pleasure of Allah and fulfill the wishes of the Promised Messiah (as). The Promised Messiah (as) has said that God wants that He should make you into such a Jama’at that you become a model of righteousness and virtue for the entire world. May Allah help us in transforming ourselves according to these instructions. Ameen.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
03-Mar-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)German (mp3)Portuguese (mp3)Russian (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Matrimonial Alliances and Issues
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Malayalam | Kannada | Indonesian
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

حضورِ انور نے فرمایا کہ رشتوں کے معاملات اور عائلی مسائل گھروں میں پریشانی کا باعث بنتے ہیں۔ اور ان وجوہات کی وجہ سے بعض اوقات اولاد بھی راہِ راست سے ہٹتی چلی جاتی ہے۔ بعض اوقات پڑھائی کی وجہ سے لڑکیوں کے رشتہ کو دیر سےکیا جا تا ہے اور بعض اوقات لڑکیوں کی سہیلیاں وغیرہ عورتوں کو ان ممالک میں حقوق کے نام پر غلط مشورے دیتی ہیں۔ بعض اوقات تو پاکستان سےآنے والی لڑکیاں بھی غلط خواہشات کرتی ہیں۔ اور ایسی ہی برائیاں بلکہ اس سے بڑھ کر لڑ کوں میں پائی جاتی ہیں۔ اور اس کی وجہ یہ ہےکہ قولِ سدید یعنی سیدھی بات نہیں کی جاتی۔ دونوں طرف سے غلطیاں ہوتی ہیں۔ بہر حال ان وجوہات کی بنا پر بچے اثر انداز ہوتے ہیں۔ بعض اوقات غلط توقعات رکھی جاتی ہیں مثلا نئے گھر کی خواہش۔ ماں باپ کی بیجا دخل اندازی ہوتی ہے۔ بعض اوقات غلط وجوہات کی وجہ سے لڑکیوں طعنہ دیا جاتا ہے مثلا رنگ یا قد کی وجہ سے یا ملازمت کے باعث۔ شکووں کا یہ سلسلہ دونوں طرف سے چلتا چلا جاتا ہے اور صرف بچگانہ باتیں ہوتی ہیں ۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ دین سے دوری ہے اور دنیا داری میں دلچسپی ہے۔ ہمیں دینی تعلیمات کی روشنی میں ہی اس کا حل تلاش کرنا ہوگا۔ ہم نے دین کو دنیا پر مقدم کرنے کا عہد کیاہے۔ اور خاص طور پر شادی کے معاملات میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کی کید کی ہے۔ مثلا فرمایا کہ شادی کے وقت خاندان، خوبصورتی، مال و دولت چھوڑ کر س بات کو ترجیح دینی چاہئے وہ یہ ہے کہ دینی عورت سے شادی کی جاے۔ پھر استخارہ کا بھی حکم ہے کہ رشتوں سے پہلے استخارہ کر لیا کرو اگر وہ رشتہ درست نہیں ہے تو اللہ تعالیٰ کوئی رو ک پیداا کر دے۔نکاح پر پڑھی جانے والی آیات پر ہمیشہ غور کر تے رہنا چاہئے کہ کس طرح تقویٰ کی نصیحت ہے، رحمی رشتہ داروں کا لحاظ رکھنے کی نصیحت ہے اور قولِ سدید کا حکم ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے بھی فرمایا ہے کہ رشتوں میں خا ندانوں کو نہیں دیکھنا چاہئے بلکہ تقویٰ کو دیکھنا چاہئے ۔ ہاں کفوکو دیکھنا چاہئے ۔ کفو کا مطلب ہے کہ حالات کو دیکھ لیا جائےاور مناسب جگہ پر رشتہ کیا ج جائے۔ حضور علیہ السلام نے یہ بھی فرمایا ہے کہ اگر کفو اپنے خاندان میں موجود ہو تو اسے رجیح دینی چاہئے لیکن یہ فرض نہیں ہے۔اسی طرح لڑکی دیکھنا یا لڑکیوں کے گھر جانا بھی سنتِ رسول سے ثابت ہے لیکن فضول باتوں میں ملوث نہیں ہونا چاہئے اور بلا وجہ بات کو لٹکانا بھی نہیں چاہئے ۔ لڑکیوں کو جذباتی تکلیف نہیں پہنچانی چاہئے ۔ بعض اوقات لڑکے کے علیحدہ گھر نہ ہونے کی وجہ سے مسئلہ بنتا ہے۔ اگر لڑکے کے حالات ایسے نہ ہوں تو لڑکی والوں کو صبر کرناچاہئے ۔ بعض اوقات لڑکے کے ماں باپ کے پریشر کی وجہ سے بغیر کسی وجہ کے علیحدہ گھر نہیں لیتے۔ اس بارہ میں اسلامی تعلیم یہ ہے کہ حضرت خلیفۃ المسیح الاول رضی اللہ عنہ نے فرمایا ہے کہ اسلام نے گھر علیحدہ ہو نے کی تلقین کی ہے۔ سو اگر ئی جائز مجبو ری نہ ہو توگھر علیحدہ ہونا چاہئے ۔ پھر حضرت خلیفۃ المسیح الاول نے فرمایا ہے کہ قرآن نے عَاشِرُوْھُنَّ بِالْمَعروف کا حکم دیا ہے یعنی احسن رنگ میں عورتوں کےساتھ رہو۔ اگر ئی برائی بھی دیکھو تو صبر کرو۔ پھر مردوں کی دوسری شادی کی خواہش کی وجہ سے بعض مسائل یداا ہوتے ہیں۔ اس کے متعلق بھی یاد رکھنا اہئے کہ ایسا مجبوری میں کرنا چاہئے ۔ صرف اپنی نفسانی اغراض پورا کرنے کیلئے ایسا کرنا غلط طرقہ کار ہے۔اللہ تعالیٰ تمام احمدیوں کو ہدایت دے کہ وہ تقویٰ اور دین کے مطابق ان مسائل حل کریں اور دنیا داری سے وہ بچتے چلے جائیں۔ حضورِ انور نے چار نمازِ جنازہ پڑھائے۔1۔ محمد نواز صاحب آف جرمنی۔ 2۔ مکرم سید رفیق صاحب آف یو کے۔ 3۔ ڈاکٹر مرزا لائق احمد صاحب۔4۴۔ امین اللہ صاحب آف امریکہ۔ انا للہ و انا الیہ راجعون۔

In his Friday Sermon today, Huzur (aba) said that the matters of finding marriage partners and different matrimonial issues cause restlessness in homes. Due to this, the children also move away from the right path. Sometimes, the marriages of ladies are delayed due to education and sometimes, in the name of rights in these countries, women are given wrong advice by their friends. Huzur (aba) said even some girls coming from Pakistan fall into these errors. Such problems, even more so, are also found in men. The reason is that people don’t follow the Islamic command of always saying the simple, plain truth. Mistakes are committed on both sides which causes trouble and has negative impacts on children. Huzur (aba) said that sometimes there are wrong expectations such as of material things and parents get excessively involved in these matters. Sometimes, women are wrongly taunted for reasons such as her appearance or due to her employment. A long list of complaints comes out containing only petty matters. In summary, it is because of moving away from one’s faith and getting attracted to worldly things. It is imperative to find a solution of this from our faith. We have promised to give precedence to our faith over worldly matters. The Holy Prophet (sa) has advised us to especially practice this in matters of marriage. He said that instead of relying upon family status, wealth or beauty, you should prefer a faithful woman. We also have Istikhara prayer in this regard meaning asking Allah for goodness before deciding for a marriage proposal. We should always ponder upon the verses of Nikah which enjoins Taqwa, righteousness, looking after the relatives and always speaking the plain truth. The Promised Messiah (as) has also said that family status shouldn’t be looked upon in marriages, rather one should look at Taqwa. It is true that one should consider Kufw meaning compatibility. Huzur (aba) said that if a compatible and righteous marriage proposal exists within one’s family, then it should be preferred. However, this is not mandatory. Similarly, as per the instructions of the Holy Prophet (sa), it is allowed to see the woman before marriage and visit her household. However, there should not be any vein talk and the matter shouldn’t be prolonged unnecessarily. Women shouldn’t be given any emotional pain. Sometimes, the matter of the man having a separate house becomes an issue. If it is due to financial condition or any legitimate reason, then women should show patience. The Islamic teaching is that, barring any legitimate excuse, the newlywed couple should have a separate house. Hazrat Khalifatul-Masih I (ra) said that Quran has instructed men should live with them in a good manner. Even if you see weaknesses in women, you should show patience. Then some issues occur due to man’s wish of second marriage. This should only be done when there is a legitimate need. To do this to merely fulfil your desires is absolutely wrong. May Allah guide all Ahmadis to approach these matters with faith and righteousness and may they stay away from worldly attractions. Huzur (aba) led the following four funeral prayers: 1. Muhammad Nawaz Sahib of Germany. 2. Syed Rafiq Sahib of UK. 3. Dr. Mirza Laiq Ahmad Sahib of Pakistan. 4. AmeenUllah Khan Sahib of USA.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
24-Feb-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Kyrgyz (mp3)Portuguese (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Worship, Sadaqat and Istighfar
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Malayalam | Kannada | Indonesian
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | Powerpoint | PDF
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

حضورِ انور ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے فرمایا : آجکل دنیا میں ہر جگہ فتنہ و فساد برپا ہے اور مسلمانوں کو اس کا ذمہ دار ٹھہرایا جاتا ہے۔ یہ بھی درست ہے کہ بعض مسلم تنظیمیں ایسے کام بھی کر رہی ہیں لیکن یہ بھی حقیقت ہے کہ ایک منصوبہ بندی کے تحت ایسا کیا جا رہاہے۔ بیشک احمدیوں کو جاننے والے ہمیں ا من پسند تسلیم کرتے ہیں لیکن عام حالات میں ہم احمدی بھی اس کا نشانہ بنتے ہیں ۔ اور اسکی مثالیں ہم جرمنی، ہالینڈ اور امریکہ میں دیکھتے ہیں۔ اور اس کے ساتھ ساتھ مسلم ممالک میں بھی ہمیں مسیح موعود اور امام مہدی کوماننے کی وجہ سے دشمنی کا سامنا ہے۔ پاکستان میں تو یہ عام تھا ہی اب الجزائر میں بھی ایسے حالات پیدا ہو گئے ہیں اور احمدیوں کو جیلوںمیں ڈالا جا رہا ہے۔ ایسے حالات میں ہم احمدیوں کو کیا کرنا چاہئے؟ ان حالات میں اللہ تعالیٰ کے رحم کو کھینچنے کیلئے نماز اور دعا اور استغفار اور صدقات ہی ہمارے ہتھیار ہیں۔ عام طور پر لوگ اپنی دنیوی مصروفیات کے باعث استغفار اور صدقات کا حق ادا نہیں کرتے۔ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے کہ میں توبہ و استغفار قبول کرتا ہوں اور اس طرح تمہاری بےچینیاں دور کرتا ہوں۔ حضرت مسیح موعود نے فرمایا کہ صدقہ کا تعلق صدق سے ہے یعنی بندے کا خدا سے صدق اور سچا ئی کے تعلق کا اظہار ہے اور فرمایا کہ دعا سے دل میں سوز اور رقت پیدا ہوتی ہے۔ پس دعا اور توبہ سے دل میں ایک درد پیدا ہونا چاہئے اور ہماری توجہ اللہ تعالیٰ کی طرف ہونی چاہئے۔پھر ایک حدیث قدسی میں رسول صلى الله عليه وسلم نے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے کہ جب میرا بندہ ایک قدم میری طرف آتا ہے تو میں اسکی طرف دو قدم آتا ہوں ۔ جب بندہ چل کر میری طرف آتا ہے تو میں بھاگ کر اسکی طرف جاتا ہوں۔ پس دعاؤں کی قبولیت اور صدقات کی قبولیت پر ایمان ہونا چاہئے کہ اللہ تعالیٰ ا نکے ذریعہ مشکلات سے نکالتا ہے۔ حضرت مسیح موعود استغفار کے متعلق فرماتے ہیں کہ گناہ کا کیڑا انسان کے خون میں ملا ہوا ہے اور اس کا علاج استغفار ہے۔ استغفار یہ ہے کہ جو گناہ ہم کر چکے ہیں اللہ تعالیٰ ان کے بد اثرات سے دور رکھے اور جن گناہوں کی ہم میں طاقت ہے وہ ظہور پذیر ہی نہ ہوں اور اندر ہی جل جائیں۔ یاد رکھو کہ توبہ و استغفار سے اللہ تعالیٰ کا آ نےوالاعذاب ٹل جاتا ہے۔ تمام مذاہب اور ایک لاکھ چوبیس ہزار پیغمبروں سے یہ متفق ہے کہ صدقہ و دعا سے بلا ٹل جاتی ہے۔حضور انور نے فرمایا کہ ابھی تو ہم چھوٹے عذاب دیکھ رہے ہیں لیکن دنیا میں جو حالا ت پیدا ہو رہے ہیں اس وقت میں ہماری ذمہ داری ہے کہ اپنے ساتھ ساتھ دنیا کے حالات کیلئے بھی صدقہ و دعا کریں۔ آنحضرت صلى الله عليه وسلم نے فرمایا کہ نیکیوں پر عمل اور برائیوں سے دور رہنا بھی صدقہ ہے۔ فرمایا کہ آگ سے بچو خواہ آدھی کھجور صدقہ میں دو ۔ فرمایاکہ سچی توبہ کرنے والا ایسا ہے یسے اس نے گناہ کیا ہی نہیں۔ اپنے گناہوں سے توبہ کرو اور اللہ تعالیٰ سے ڈرتے رہو۔ اللہ تعالیٰ ہمیں توفیق عطا فرمائے ہم دعا کی حقیقت کو سمجھنے والے ہوں اور خالص ہو کر خدا کے سامنے جھکنے والے ہوں اپنے پچھلےگناہوں سے بخشش کریں اور آئندہ کیلئے اس سے بچیں ۔بلاؤں کو دور کرنے کیلئے صدقات دے و والے ہوں جو خدا کے ہاں مقبول ہوں اللہ تعالیٰ ہم کو ہمیشہ دشمن سے بچائے اور ان کے حملے ان پر الٹائے اور ہم ان میں شمار ہوں جو اس کاخوف دل میں رکھنے والے ہیں اور آنحضرت صلى الله عليه وسلم اور حضرت مسیح موعود کی دعاؤں کے وارث ہوں ۔ آمین آخر پر حضورِ انور نے ایک نو مبائع عرب خاتون سعداء برطاوی صاحبہ کا نمازِ جنازہ پڑھایا جو : ۱ جنوری ۷:۱۲ کو دمشق میں وفات پاگئیں ۔ انا للہ و انا الیہ راجعون۔

After reciting Tashahud, Ta’wuz and Surah Fatiha Huzur (May Allah be his helper!) said: Today we see great unrest in the world and Muslims are largely held responsible. It is true that some Muslim organizations are responsible;however it’s also true that this is being done with an organized plan. Though the world recognizes Ahmadis as peaceful, but we also become a target in these conditions. We are seeing examples of this in Germany, Holland and America. And Ahmadis also face opposition in Muslim countries due to accepting the Promised Messiah (as). It is common in Pakistan, but now innocent Ahmadis are also being jailed in Algeria. What should we do in such conditions? To attract the mercy of Allah, we should turn to worship, sadaqat and Istighfaar. It is commonly seen that people don’t pay attention to these due to worldly engagements. Allah says in the Holy Quran: Know they not that Allah is He who accepts repentance from His servants and takes alms, and that Allah is He who is Oft-Returning with compassion, and is Merciful? (9: 104) The Promised Messiah (as) says that Sadqa comes from the word Sidq which means truthfulness represents a relationship of truthfulness with Allah and prayer creates extreme sorrow and distress in heart. So when we pray or do charity and seeking forgiveness, our full attention should be towards Allah. The Holy Prophet (sa) said in a Hadith-e-Qudsi that Allah says that when my servant takes one step towards me, I take two steps towards him. And when he walks towards me, I run towards him. So, we should have firm faith that Allah accepts our prayers and our Sadqa and charity and thus removes our difficulties and afflictions. The Promised Messiah (as) says that the source of sin is attached with each human. Istighfaar has two meanings; first, that we ask Allah to keep us safe from the evil effects of our sins. Secondly, we seek power from Him so that we do not commit any sins in future and do not act upon these forces of sin within us. Huzur (aba) said that we are merely seeing small punishments and afflictions in these days, but seeing what is happening around the world, it is the duty of our Jama’at to pray for ourselves as well as the entire world. The Holy Prophet (sa) said that doing good deeds and staying away from evil deeds is also Sadqa. He also said that save your selves from fire, even with half a date in Sadqa. A person who truly repents from his sins is like someone who hasn’t sinned, so repent from your sins and fear Allah. May Allah keep us in His protection and may we understand the reality of Prayer, Sadqa, Istighfar and Taubah Huzur (aba) also led the funeral prayer of a Nau Mubai Arab lady respected Saada Bartavi Sahiba who passed away on January 10, 2017 in Damascus

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
17-Feb-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Kyrgyz (mp3)Malayalam (mp3)Portuguese (mp3)Russian (mp3)Spanish (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: The Prophecy about Musleh Ma'ood
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Malayalam | Kannada
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu | Indonesian
Slide Deck: Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

آج کے خطبۂ جمعہ میں حضو ر انور ایدہ اللہ نے تشہد و تعوذ اور سورۃ الفاتحہ کی تلاوت کے بعد فرمایا کہ 20 فروری کا دن جماعت میں پیشگوئی مصلح موعود کے نام سے جانا جاتا ہے۔ یہ ایک عظیم الشان پیشگوئی تھی جس میں حضرت مسیح موعود علیہ السلام کو ایک عظیم بیٹے کے متعلق خبر دی گئی اور جماعت کی مصلح موعودؓ کے دور میں غیر معمولی ترقیات کی پیشگوئی تھی ۔پس یہ پیشگوئی حضرت مرزا بشیرالدین محمود احمدخلیفۃ المسیح الثانی رضی اللہ عنہ میں لفظاً لفظاً پوری ہوئی۔اور یہ پیشگوئی حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی صداقت کی بہت بڑی دلیل ہے۔ حضرت مصلح موعود رضی اللہ عنہ کو اللہ تعالیٰ نے 1914میں خلافت کا منصب عطا فرمایا۔ پیشگوئی مصلح موعود کے تمام نشانات آپ میں پورے ہوتے ہوئے نظر آتے تھے لیکن 1944سے پہلے آپ نے اعلان نہیں کیا کہ آپ ہی اس پیشگوئی کے مصداق ہیں۔ آپکا نقطہ نظر یہ تھا کہ اگر یہ پیشگوئی مجھ پر پوری ہو رہی ہے تو لوگ خود ہی جان لیں گے۔ 1944میں ایک رؤیا کی بنیاد پر آپ نے دعویٔ مصلح موعود کیا۔ آپ نے فرمایا کہ یہ گراں گزرتا ہے کہ میں اپنے متعلق رویا و کشوف بیان کروں لیکن بعض حالات کی وجہ سے ایسا کرنا ضروری ہے۔ 1944 میں آپکے دعویٰ کے بعد مخالفین نے اعتراضات بھی شروع کر دئے۔ 1945کے جلسہ سالانہ میں آپ نے فرمایا کہ جب سے میں نے دعویٰ کیا ہے مولوی محمد علی صاحب نے بے جا اعتراضات شروع کر دئے ہیں۔ فرمایا کہ ہم نے تو اللہ تعالیٰ کے الہام کی بنیاد پر دعویٰ رہے کیا ہے۔ مولوی صاحب کوئی الہام تو پیش نہیں کرتے اور اپنی طرف سے جھوٹے الزام لگا رہے ہیں۔ اس کے بعد حضو ر انور ایدہ اللہ بنصرہ العزیز نے حضرت مصلح موعود رضی اللہ عنہ کے اپنے منصب کے متعلق مختلف الہامات بیان کئے۔ مثلاً حضرت مصلح موعود رضی اللہ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں کہ مجھے ایک الہا م ہوا تھا جو میں نے حضرت مسیح موعود علیہ السلام کو بھی بتایا تھا اور آپ نے اس کو نوٹ بھی کر لیا تھا۔ اس الہا م کا ترجمہ یہ تھا یعنی وہ لوگ جو آپ کے پیچھے چلیں گے ا ن کو ا ن لوگوں پر فوقیت اور غلبہ دیا جائیگا جو آپ کا انکار کریں گے۔ انکار کرنے والوں سے مراد پیغامی یا لاہوری ہیں اور ایسا ہی ہوا کہ پہلے دن سے ہی مبائع احمدیوں کو پیغامیوں یا لاہوری جماعت پر غلبہ دیا گیا اور یہ غلبہ بڑھتاگیا۔ حضور انور نے بعض اور الہامات کا بھی ذکر فرمایا۔ آخر پرحضور انور ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے فرمایا کہ پیشگوئی مصلح موعود کے حوالے سے ایم ٹی اے پر بھی پروگرام آئیں گے اورجماعتوں میں بھی پروگرام کئے جائیں گے۔ تمام ممبرا ن جماعت کو ان پروگراموں میں زیادہ سے زیادہ شامل ہونا چاہئے۔

Huzur (aba) said that February 20th is known in Jama’at as Musleh Ma’ood Day. This refers to the great prophecy of the Promised Son and Reformer which was given to the Promised Messiah (as). As we know, this prophecy was fulfilled in the person of Hazrat Mirza Bashir-ud-Din Mahmud Ahmad (ra) and is a significant sign of the truthfulness of the Promised Messiah (as) in this age. Allah gave Hazrat Musleh Ma’ood (ra) the status of Khilafat in 1914. All the signs in the Prophecy of Musleh Ma’ood could be seen in him, but he did not make the announcement of being the Musleh Ma’ood. His stance was that if I am indeed the Musleh Maud and the signs are being fulfilled, then people will understand themselves. It was in 1944 when he announced to be Musleh Ma’ood based on a vision shown by Allah. He said it was difficult for him to mention visions and revelations about himself, but it had become necessary due to certain conditions. After his claim of being Musleh Ma’ood in 1944, his enemies raised many allegations. He said at the Jalsa of 1945 that since my claim, Maulvi Muhammad Ali sahib of has been raising allegations, even though I’ve based my claim on divine revelation. Instead of these allegations, Maulvi Muhammad Ali sahib should present his own revelations that he has received from Allah. Then Huzur (aba) presented various revelations of Hazrat Musleh Ma’ood regarding his own status. For example, Hazrat Musleh Ma’ood says that he was given a revelation which he mentioned to the Promised Messiah (as). The Promised Messiah (as) also noted this revelation in his notebook. This revelation means that people who will follow you will be given victory over those who reject you until the Day of Judgment. People who rejected him were the Ahl- e-Pegham or Lahori Ahmadis. They rejected him and the institution of Khilafat. The revelation was fulfilled because from the very first day, those who accepted Hazrat Musleh Ma’ood (ra) as a Khalifa remained dominant and victorious over those who rejected him. This dominance continues to increase by the day. Huzur (aba) also presented various other revelations of Hazrat Musleh Ma’ood (ra). Huzur said that all Ahmadis should try to watch various programs about the prophecy of Musleh Ma’ood which will be aired on MTA during these days and participate in different programs which will also be organized in Jama’ats worldwide. Hazrat Musleh Ma’ood (ra) as a Khalifa remained dominant and victorious over those who rejected him. This dominion continues to increase by day. Huzur (aba) also presented various other revelations of Hazrat Musleh Ma’ood (ra). Huzur said that all Ahmadis should try to watch various programs about the prophecy of Musleh Ma’ood which will be aired on MTA during these days and participate in different programs which will also be organized in Jama’ats worldwide.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
10-Feb-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Portuguese (mp3)Pushto (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: IslamAhmadiyyat: The Path to Spiritual Evolution
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Malayalam | Kannada | Indonesian
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

حضرت خلیفۃ المسیح نے فرمایا: انسان آج دنیاداری میں بڑھتا جا رہا ہے اور دنیوی کاموں میں ایک دوڑ لگی ہوئی ہے۔ اللہ تعالیٰ کو اور دنیا کو ثانوی حیثیت د ی ہوئی ہے بلکہ بہت سے ہیں جو خدا کی ذات کے ہی منکر ہو گئے ہیں۔ لیکن ایسے بھی ہیں جو خدا کی تلاش میں ہیں اور اس سے ایک تعلق پیداکرنا چاہتے ہیں۔ یہ لوگ سچے دین کی تلاش میں ہیں اور اس کیلئے کوشش کرتے ہیں اور دعائیں کرتے ہیں۔ ایسے لوگوں کی اللہ تعالیٰ بھی راہنمائی کرتا ہے اور سیدھا راستہ دکھاتا ہے۔ اس زمانہ میں اللہ تعالیٰ تک پہنچنے کیلئے اپنے وعدہ کے مطابق اللہ تعالیٰ نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے عاشقِ صادق کو مسیح اور امام مہدی بنا کر بھیجا ہے اور اس طرح دنیا کی راہنمائی کے سامان کئے ہیں۔ ہر روز دنیا میں ایسے واقعات ہو رہے ہیں جن سے نہ صرف نئےلوگ اس جماعت میں داخل ہو رہے ہیں بلکہ پرانے احمدیوں کیلئے بھی ازدادِ ایمان کا موجب بن رہے ہیں۔ گیمبیا کی ایک خاتون کا واقعہ حضورِ انور نے بیان کیا۔ 10سال سے وہ پاؤں کی تکلیف میں تھیں۔ ہر قسم کےعلاج کو باوجود بیماری نہ جاتی تھی۔ ایک بار وہ اعلاج کیلئے ایک دور جگہ گئیں تو وہاں پر انھوں نے خطبۂ جمعہ سن لیا۔ جب وہ گاؤں واپس آئیں تو کچھ عرصہ بعد خواب میں انھیں بتایا گیا کہ جس کا خطبہ سنا ہے اس کے پیچھے چلو کیونکہ وہ ہدایت کا راستہ دکھا رہا ہے۔ چنانچہ انھوں نے بیعت کر لی اور اس کے کچھ عرصہ بعد ہی ان کے پاؤں کی تکلیف بھی جاتی رہی اور اب وہ پورے گاؤں میں جماعت احمدیہ کی تبلیغ کرتی ہیں۔ برکینا فاسو کے ایک شخص کا واقعہ بیان کیا جنھوں نے جلسہ جرمنی کے بعد احمدیت قبول کی۔ وہ کہتے ہیں کہ ایک عرصہ سے میں جماعت کا ریڈیو سنتا تھا ۔ باوجود غیر احمدی ہونے کے احمدیوں سے رابطہ بھی تھا اور جب وہ میر ے گاؤں آئے تو تبلیغ میں بھی ان کی مدد کرتا۔ کچھ مولوی ان کے پاس آئے اور کہا کہ ان سے تعلق کاٹ دو کیونکہ وہ لوگ آپکا ایمان خراب کریں گے۔ وہ کہتے ہیں کہ اس کے بعد میں نے احمدیوں سے تعلق توڑ دیا۔ کچھ عرصہ بعد کہتے ہیں کہ میں ایک سفر سے واپس آ رہا تھا تو ایک گاؤں میں نماز کےلئے رکا۔ وضو کے دوران ایک شخص کو سنا کہ یہ احمدی گاؤں ہے۔ چنانچہ میں نے وضو کو لمبا کر دیا اور باجماعت نمازکے بعد اپنی نماز ادا کی۔ اس کے بعد کہتے ہیں کہ میں نے خواب میں دیکھا کہ بہت بڑا ہجوم ہے اور میں ہجوم کے اندر لوگوں کو ہٹا رہا ہوں۔ اندر ایک شخص ہے جس کے ارد گرد ہزاروں لوگ کھڑے ہیں ۔ میں نے کسی سے پوچھا کہ ہ کون شخص ہے تو بتایا گیا کہ ہ وہی ہیں جن سےمولوی آپکو روک رہے ہیں۔ کہتے ہیں کہ میں نے میشن ہاؤس کال کی کہ بیعت کے لئے آنا چاہتاہوں۔ جس دن مربی صاب نے آنے کیلئے کہا میں اس دن پہنچا تو دیکھا کہ لوگ ٹی وی پر کچھ دیکھ رہے تھے۔ جب میں نے ٹی وی دیکھا تو وہی منظر تھا جو میں نے خواب میں دیکھاتھا۔ مربی صاب سے پوچھا گیا تو انھوں نے کہا کہ ہمار ےخلیفہ جلسہ جرمنی سے خطاب کر رہے ہیں۔ اس شخص نے کہا کہ فوراً میریبیعت لے لیں۔ خدا کی قسم یہ وہی نظارہ ہے جو میں نے خواب میں دیکھا تھا۔ موصوف اب اہل و عیال سمیت ا احمدی ہو ئے ہیں اوردوسروں کو بھی تبلیغ کر رہے ہیں۔ حضرت خلیفۃ المسیح نے فرمایا: آج دنیا کو اگر کوئی اسلام سکھا سکتا ہے تو وہی سکھا سکتا ہے جس نے حضرت مسیح موعود ؑکو مانا ہو۔ کہنے کو تو بہت سے ادار ے ہیں جو خدمت اسلام کا دعویٰ کرتے ہیں۔لیکن ان کے اپنے مقاصد ہوتے ہیں۔ یہ کام اب مسیح موعود ؑکے غلاموں کا ہی ہے۔ اللہ تعالیٰ ہم سب کواس کی توفیق عطا فرمائے۔ اللہ تعالیٰ نئے احمدیوں کو ایمان میں بڑھاتا چلا جائے۔ اور جو پیدائشی احمدی ہیں ہمیں بھی ایمان میں مضبوطی عطا کر ۔ آمین۔

There is a huge rush in the world and mankind is busy in attaining worldly desires. There are plenty people in the world who decline the existence of God and His Prophet(saw). They believe that God and religion is a vain desire. But there are people who are looking for God and want to create an everlasting bond with Him. These people are in search for the true religion and praying constantly to find it. These are the people whom Allah guides and shows them the right path. In this age according to God’s promise, he sent the Messiah and Mahdi under the subservience and leadership of Holy Prophet (sa). Each day there are countless examples of people entering the Jama’at and this allows the faith of old Ahmadis to increase. Huzoor (aba) mentioned an incident of an old lady from Gambia. She was suffering from severe issues related to her feet. She tried every medicine and every type of treatment but there was no cure. Once for her cure she travelled far and at one place she listen to Huzoor (aba) Friday sermon on MTA. When she returned back to her village she was told in her dream to follow and listen to the person whom you saw on TV because that is the right and true path. Hence, she accepted Ahmadiyyat and shortly after that the issues with her feet also resolved. Now she is an active member in her village doing tabligh. Huzoor (aba) narrated several incidents in his Friday Sermon that show how God is guiding people Himself towards accepting Ahmadiyyat. There is an incident of a man from Burkina Faso. He accepted Ahmadiyyat after Jalsa Germany. He says that even though he wasn’t an Ahmadi, he used to listen to the Ahmadiyya radio and had a good relationship with Ahmadis. When the Muslim clerics found out, they told him to not have any relationship with Ahmadis as this will destroy his faith. He listened to them and stopped talking to Ahmadis. He says, after sometime, while he was on a journey, he stopped at a mosque to pray. While he was doing wudu (ablution), someone mentioned that this is an Ahmadi village. Therefore, he delayed his wuzu (ablution) and performed his own prayer. He says that he saw a dream that night where he saw a big crowd. He removed people from his way and saw a man standing in the middle with thousands around him. When he asked about this man, he was told in his dream that this is the same person whom the clerics have told you to stay away from. Therefore, he called the local Ahmadi mosque to do Bai’at He says when he reached the mosque, he saw that all people were watching the TV. What he saw on TV astonished him because it was the same scene he had seen in his dream. He asked the local Ahmadi Imam, who told him that this is our Caliph who is addressing the annual convention of Germany. He replied that accept my Bai’at right away – By God, this is the same scene I was showed in my dream. Huzoor (aba) said that today it is only Ahmadis who can teach Islam to the rest of the world. They have accepted the Messiah and Mahdi. There may be many organizations who claim to teach Islam, but in reality, they all serve personal goals. This work now belongs to the servants of the Messiah and Mahdi. May Allah enable us to carry out our responsibilities.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
03-Feb-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Portuguese (mp3)Russian (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)

Title: The Purpose of Jalsa Salana
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Malayalam | Kannada | Indonesian
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu
Slide Deck: Powerpoint | Powerpoint | PDF
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

تشہد و سورة فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور ایدہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا :آج بنگلہ دیش کا اور سیرالیون کےجلسوں کا آغاز ہو رہا ہے۔اللہ تعالیٰ کے فضل سے بنگلہ دیش کی جماعت بڑی مخلص جماعت ہے۔ یہاں احمدی سختیاں بھی برداشت کر رہے ہیں لیکن وہ اپنےایمان پر پکے ہیں ۔اللہ تعالیٰ ان جلسوں کو بابرکت فرمائے۔ ہمیں ان جلسوں کی حقیقی روح اور مقصد کو یاد رکھنا چاہئے جس کو حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے بیان فرمایا ہے۔مثلا فًرمایا کہ جلسہ کا مقصد یہ ہے کہ زہد و تقویٰ پیدا ہو۔ پھر فرمایا کہ ایک مقصد یہ ہے کہ خدا تعالیٰ کا خوف دل میں پیدا ہو یعنی اپنے محبوب کی ناراضگی کاخوف ہو۔ پھر فرمایا کہ ایک مقصد یہ ہے کہ ایک دوسرے سے محبت اور بھائی چارہ پیدا ہو۔ اسی طرح اعلیٰ اخلاق کا نمونہ بھی جلسوں کاایک مقصد ہے تا دنیا کو پتہ چلے کہ اگر کسی نے حقیقی اسلام کا نمونہ دیکھنا ہے تو احمدی مسلمانوں کو دیکھو۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام فرماے ہیں کہ تقوی کا طلب ہے ادنیٰ ادنیٰ بدیوں سے بھی پرہیز کرنا لیکن یاد رکھو کہ تقویٰ اور نیکی صرف بدی سے ہی بچنے کا نام نہیں ہے۔ اصل اور حقیقی نیکی یہ ہے کہ بنی نوع انسان کی خدمت کرے اور اللہ تعالیٰ کی خاطر کامل وفا دکھائے۔ اللہ تعالیٰ قرآن کریم میں فرماتا ہے: اِنَّ اللہ مَعَ الَّذِیْنَ اتَّقُوا وَ الَّذِیْنَ ھُمْ مُحْسِنُون ۔یعنی اللہ ان کےساتھ ہے جو بدی سے دور رہتے ہیں اور اس کے ساتھ نیکیاں بھی کرتے ہیں۔ دعا کی حقیقت کے متعلق حضرت مسیح موعود علیہ السلام کے ایک اقتباس کو حضور انور نے اس طرح بیان فرمایا کہ دعا ایک ایسا پانی ہے جو اندرونی غلاظتوں کو دھو دیتا ہے۔ ایسی دعا جو دل سےنکلے جو کبھی خدا کے سامنے کھڑی ہوتی ہے اور کبھی رکوع کرتی ہے اورکبھی سجدہ کرتی ہے۔ یہی نماز ہے جو خدا کو ملاتی ہے یعنی ایسی نماز جس کے بعد انسانی روح خدا کی طرف جھک جائے۔ ظاہری رکوع اور سجود کا کوئی فائدہ نہیں جب تک یہ کوشش نہ ہو کہ روح بھی اس کا کچھ حصہ لے اور اس فضل کو حاصل کرنے کیلئے بھی اللہ تعالیٰ ہی سے دعا کرنی چاہئے۔ اللہ کرے کہ تمام احمدی تقویٰ کا حقیقی فہم حاصل کرنے والے ہوں اور اصل نمازیں اور خدا کی عبادت ہمیں حاصل ہو۔ اللہ تعالیٰ ہمیں اس کی توفیق عطا فرمائے۔ آمین

Today, Jalsa Salana of Bangladesh and Sierra Leona Jama’at are starting. By the grace of God, Bangladesh Jama’at is very strong in faith despite facing much persecution. May Allah continue to increase them in faith and bless both of these conventions immensely. We should always remember the true purpose of these conventions as stated by the Promised Messiah(as) is to instill Taqwa and righteousness in us. Other gains made at The Jalsa are to instill the fear of God in our hearts, to increase love and affection for fellow Ahmadi brothers and sisters and remove malice from our hearts and to showcase true Islamic morals so that the world should know that it is Ahmadis today who truly illustrate the teachings of Islam in themselves. The Promised Messiah (as) said that Taqwa means to stay away from all paths or sources of evil. But remember that Taqwa or righteousness doesn’t only mean staying away from evil. True righteousness is to serve humanity and show complete dedication to God. This is why Allah has said in the Holy Quran "Verily, Allah is with those who are righteous and those who do good." (16:129) Pertaining to prayers The Promised Messiah(as) states that true prayer is like the spiritual water which erases all inner impurities. Such is the prayer that when it is done properly comes from a person’s heart. Doing this man stands in front of Allah in worship, sometimes does Ruku and prostrates in front of Allah. This in fact is the true prayer or Salat which makes man move closer to God. Physical acts of worship are not useful if our soul also does not participate in this prayer. This is only possible by the grace of God, for which again we need to turn to Allah and pray for His mercy. All Ahmadis need to understand the true essence of Taqwa and prayer and reality of worship of God. May Allah enable us to do so.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
27-Jan-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Portuguese (mp3)Pushto (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Salat and its etiquette
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Malayalam | Kannada | Indonesian
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu | Telugu
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

حضور انور ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے فرمایا کہ گزشتہ خطبہ میں نماز کی طرف توجہ دلائی گئی تھی جس کے بعد احمدیوں کے بہت سےخط موصول ہوئے جس میں انفرادی طور پر اور ذیلی تنظیموک نے بھی اپنی اصلاح کا وعدہ کیا ہے۔ ہمیشہ یاد رکھنا چاہئے کہ ہر چیز کےاعلیٰ نتائج کیلئے مستقل مزاجی ضروری ہے۔ یہ انسانی فطرت ہے کہ کام کے شروع میں بہت جوش ہوتا ہے اور پھر آہستہ آہستہ سستی پیدا ہوتی ہے۔ نظام کو کبھی سست نہیں ہونا چاہئے کیونکہ جماعت کے افراد کی اصلاح اس پر منحصر ہے۔اس لئے عبادت کے پہلو میں مستقل ترقی ہونی چاہئے ۔ حضور نے فرمایا کہ بعض لوگو ں کا یہ حال ہے کہ اگر ان کو نماز کی طرف توجہ دلائی جائے تو وہ غصہ کرتے ہیں اور کہتے ہیں کہ یہ انسا ن اور خدا کا معاملہ ہے۔ انکو یہ یاد رکھنا چاہیئے کہ بیشک بندہ اور خدا کا معاملہ ہے لیکن توجہ دلانا بہرحال نظام کا کام ہے اور بیویوں کا کام ہے اور ان کی ذمہ داری ہے۔ اس لئے ایسی سوچ بہرحال غلط ہے۔ فرمایا کہ میں حضرت مسیح موعود علیہ السلام کے حوالہ سے بعض ایسی فقہی باتیں نماز کے متعلق پیش کروں گا جن کے بارہ میں لوگ پوچھتے ہیں۔ مختلف فرقوں سے لوگ جماعت میں داخل ہوتے ہیں لیکن حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے بطور حکم و عدل ان باتوں کافیصلہ کیا ہے۔ مثلا رفع یدین کی بات ہے یعنی ہر رکعت میں ہاتھ کانوں کو لگانا۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ اس میں کوئی حرج نہیں اور حدیث میں بھی دونوں طریق ملتے ہیں۔ اگر کوئی کرے تو لڑنے کی ضرورت نہیں۔ مگر خود اسِکو باقاعدہ طور پر نہیں اپنایا۔ پھر فاتحہ خلفِ امام کاہے یعنی امام کے پیچھے سور فاتحہ پڑھنا حضرت مسیح موعود علیہ السلام سے باقاعدہ طور پر ثابت ہے۔فرمایا کہ یہ ضروری ہے لیکن اگر کوئی خاموشی سے تلاوت سنے اور نہ پڑھے تو اس کی بھی نماز ہو جاتی ہے۔ رکوع اور سجود چونکہ انکساری اور تذلل کے مقام ہیں اس لئے ان میں قرآنی دعاؤں کو نہیں پڑھنا چاہئے۔ حدیث سے ثابت ہے کہ رکوع میں اگر کوئی شامل ہو جاتا ہے تو س اس کی وہ رکعت ہو جاتی ہے۔اگر امام عصر کی نماز پڑھا رہاہے اور ایسا شخص آ جائے جس نے ظہر نہیں پڑھی تو اسے ظہر پہلے پڑھنی چاہئے۔ یعنی نمازوں کی ترتیب برقرار رکھنا زیادہ ضروری ہے۔ اگر معلوم نہ ہو اور وہ جماعت میں شامل ہو جائے تو اس کی بھی وہی نماز ہو گی جو امام پڑھا رہا ہےاور جو رہ گئی ہے وہ پھر بعد میں پڑھ لے۔ چونکہ حضرت مسیح موعود علیہ السلام سنتیں گھر پر پڑھتے تھے اس لئے بعض لوگوں نے سمجھ لیا کہ شاید سنتیں پڑھنا ضروری نہیں۔ حضرت خلیفہ اول رضی اللہ نے فرمایا کہ یاد رکھنا چاہئے کہ حضور علیہ السلام گھر پر سنتیں ادا کرتے تھے۔ اس کی گواہی حضرت مرزابشیر الدین محمود احمد رضی اللہ عنہ اور دوسرے اشخاص نے بھی دی۔حضرت مسیح موعود ؑنے ایسے لوگوک کے پیچھے نماز پڑھنے سے منع فرمایا ہے جو آپؑ کی تکذیب و تکفیر کرتے ہیں اور اسی طرح جو لوگ خاموش ہیں یعنی نہ تصدیق کرتے ہیں اور نہ تکفیر ا ن کے پیچھے بھی نماز پڑھنے سےمنع کیا ہے۔ آخر پر حضورِ انور نےالجزائر کی جماعت کیلئے دعا کی درخواست کی جہاں پولیس اور حکومت کی طرف سےاحمدیوں پر جھوٹے مقدمےدرج کئے جا رہے ہیں۔ اللہ تعالیٰ تمام احمدیوں کو ا ن کے شر سے بچائے۔ آمین۔

Huzoor (May Allah be his Helper) said that after I spoke about Salat in previous sermon, many Ahmadis and auxiliary organizations have written to me and promised to bring about reform. We should remember that a constant effort is needed by the entire Nizaam or system of Jama’at in this regard. It is especially the duty of Lajna Imaillah that they should inculcate the habit of regularly offering salat with children and also encouraging their spouses to pray and pray in congregation. Some people become angry and irritated when advised about prayers and say that this matter is between me and God. No doubt the matter is between you and God, but it is the responsibility of Jama’at and your spouses to encourage you and advise you to be regular in prayers. I will present some matters of fiqah or jurisprudence about Namaz as given by the Promised Messiah (may peace be on him). Muslims enter this Jama’at from different sects. As Hakm and Adl or arbitrator and judge, the Promised Messiah (may peace be on him)) has decided these matters for us. About Rafa Yadain meaning raising your hands to ears in every Rakat, there is no problem in it as it is substantiated from ahadith. The Promised Messiah ( may peace be on him) did not do this. Reciting Surah Fatihah behind the Imam is an approved practice and is better than not reciting Reading Bimillah out loud before reciting the Surah in salat and saying Ameen out loud after Surah Fatihah was not adopted by the Promised Messiah (may peace be on him). There is nothing wrong with doing so. Reciting Quranic prayers in Ruku and Sujud should not be done even though these are positions of extreme humility. It was not the practice of The Prophet (peace be upon him) .Quranic verses have an exalted status. It was asked whether a Rakat should be counted if one joins in Ruku. The Promised Messiah (peace be on him) said that my personal inclination is that there is no prayer without Fatihah.But if one gets late despite trying and joins Ruku, his Rakat would be counted as this is stated in ahadith. If the Imam is leading Asr prayer and a person comes who hasn’t yet read Zuhr prayer, then he should first read Zuhr prayer – meaning it is preferable to keep the order of prayers. If the follower doesn’t know which prayer is being lead, then his prayer would be that of the Imam. He should read his own missed prayer afterwards. Meaning if he accidentally reads Asr prayer with the Imam first without Zuhr first, then he should do Zuhr prayer afterwards. Because the Promised Messiah (peace be on him) used to offer Sunnat prayers at home, some people misunderstood that they may not be mandatory. Hazrat Khalifatul-Masih I (may Allah be pleased with him)) clarified this matter that he offered all his Sunnat prayers at home and Mirza Bashir-ud-Din Mahmood Ahmad (may Allah be pleased with him) and other members confirmed this as well. The Promised Messiah (may peace be on him) forbade to read prayer behind any such person who declares the Promised Messiah (may peace be on him) as a Kafir or a liar. Your Imam should be from amongst yourselves. It is also forbidden to pray behind a person who stays quiet in this regard, meaning he neither believes in the Promised Messiah (peace be on him)) nor declares him false. At the end, Huzoor (may Allah be his Helper) asked all Ahmadis to pray for the Ahmadis of Algeria. May Allah keep all Ahmadis safe and under His protection .Ameen.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
20-Jan-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Portuguese (mp3)Russian (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)

Title: The Virtues of Congregational Salat
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Malayalam | Kannada
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu | Telugu | Indonesian
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

حضور نے فرمایا کہ نماز کی فرضیت کے متعلق ہم سب جانتے ہیں۔ قرآنِ کریم میں اللہ تعالیٰ نے اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نےبھی اس طرف توجہ دلائی ہے۔ حدیث میں ہے کہ نماز کو ترک کرنا انسان کو کفر کے قریب کر دیتا ہے۔ اسی طرح فرمایا کہ قیامت کےدن جس چیز کا سب سے پہلے حساب لیا جائیگا وہ نماز ہے۔ اسی طرح فرمایا کہ بچوں کو ۷ سال کی عمر میں نمازوں کی تلقین کرو اور ۱۰ سال تک ان کو اسکا پابند کرو۔ یاد رکھنا چاہئے کہ اگر والدین ہی نماز میں باقاعدہ نہ ہوں تو بچوں پر برا اثر ڈلے گا۔ اس زمانہ میں اللہ تعالیٰ نے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے عاشقِ صادق کو بھیجا ہے جنہوں نے نماز کی حقیقت سے ہمیں آگاہ فرمایاہے۔ اگر ہم حضرت مسیح موعود علیہ السلام کو تو مانیں لیکن بنیادی عبادات مثلا نماز وغیرہ میں کمزوری دکھائیں تو ہم کس طرح دعو یٰ کر سکتے ہیں کہ ہم نے آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے حکم کے طابق مسیح موعود کو مانا ہے۔ حقیقی طور پر ہم احمدی ہونے کا حق اس وقت ادا کر سکیں گے جب ہم اپنی نمازوں سے روحانی مزہ اٹھانا شروع کر دیں گے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے نماز میں لذت کے متعلق فرمایا کہ میں دیکھتا ہوں کہ ایک شرابی کو جب مزہ حاصل نہیں ہوتا تو وہ شراب پیتا چلا جاتا ہے یہاں تک کہ اس کو نشہ آ جاتا ہے۔ ایک عقلمندشخص اس سے فائدہ اٹھاسکتا ہے۔ مطلب کہ نماز میں دوام یعنی باقاعدگی پیداکر ےیعنی کہ پڑھتا جاے اور چھوڑے نہیں یہاں تک کہ روحانی حظ حاصل ہو۔ پھر فرمایا کہ ایک خلوص اور جوش کے ساتھ اس میں لگا رہے تو میں یقین رکھتا ہوں کہ وہ لذت حاصل ہوجائیگی۔ حضور نے فرمایا پس حضرت مسیح موعودؑ نے ہمارے لئے ٹارگٹ رکھا ہے کہ اپنی نمازوں کے اس روحانی درجہ پر لے جائیں کہ یہ روحانی سرور حاصل ہو۔ حضورِ انور ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے نماز با جماعت کی اہمیت بھی عیاں کیں۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ نمازباجماعت میں خدا تعالیٰ نے زیادہ اجر رکھاہے۔ اس سے مومنین میں وحدت بھی پیداہوتی ہے اور ایک دوسر ےکے انوار بھی جذب کرتے ہیں یعنی کمزور ایمان والےدوسروں سے فائدہ اٹھاتے ہیں۔ حضورِ انور نے پاکستان کے خدام احمدیوں کو خصوصا اور عام احمدیوں کو عموما نصیحت فرمائی کہ کامیابیاں حاصل کرنے کیلئے نمازوں میں پابندی ضرورع ہے۔وہ احمدی جو ہجرت کر کے باہر کے ملکوں میں آگئے ہیں انکو خاص طور پر خدا تعالیٰ کا شکر بجا لاتے ہوے نمازوں میں پابندی اختیار کرنی چاہئے۔ اللہ تعالیٰ نے کہیں نہیں فرمایا کہ تم بیشک میر ےحقوق ادا نہ کرو چونکہ تم نے مسیح موعود کو مان لیا ہےاس لئے تم ضرور کامیاب ہو جاؤ گے۔ اگر ایسا رویہ ہے تو یہ تو خدا تعالیٰ کا امتحان لینے والی بات ہے۔ اسی طرح حضور نے فرمایا کہ نظام کو نماز کی طرف توجہ دلاتے رہنا چاہئے اور دوسری ترجیحات مثلا مالی نظام کی نسبت نمازوں کی طرفزیادہ توجہ دلای چاہئے۔ اگر نمازوں میں لوگ پابند ہو جائیں تو تو مالی نظام تو ایک طرف باقی شعبہ جات بھی خود بخود درست ہو جائیں گے۔ حضور نے فرمایا کہ آجکل کے حالات میں جب جنگ کا خطرہ ہے تو بہت لوگ لکھتے ہیں کہ کیا ہو گا اور ایسے حالات میں کیا کریں ۔ فرمایا کہ جیسا کہ حضرت مسیح موعود علیہ الام ک نے فرمایا ہے کہ خدائے ذو العجائب سے پیار کرنا ہو گا اور اسکا یہی طریق ہے کہ اپنی نمازوں میں پابند بنیں۔ حضور نے فرمایا کہ مغربی ممالک میں آ کر بعض احمدی بھی ادھر کے لوگوں کی طرح خدا کو بھول جاتے ہیں یا گمان کرتے ہیں کہ ہم دوتین نمازیں بھی پڑھ لیں تو ہم بہتر ہیں۔ فرمایا کہ ہماری کامیابی اسی میں ہے کہ اسلام کی مکمل تعلیم پر عمل کریں اور اسی طرح ہم اپنےآپکو برائیوں سے دور رکھ سکتے ہیں۔ حضورِ انور ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے نماز کے متعلق حضرت مسیح موعود علیہ السلام کے متعدد دیگر اقتباسات بھی پیش کئے ۔ فرمایاکہ اللہ تعالیٰ ہمیں نمازوں کی حفاظت کی توفیق عطا فرمائے ، ہم کبھی سستی نہ دکھائیں ، ہماری نمازوں میں اللہ تعالیٰ ایک روحانی لذت پیدا کر دے ۔ آمین۔

Today’s Friday sermon was delivered by Khalifatul Masih V (may Allah be his Helper) from Baitul Futuh mosque, London. After Tashahhud and Surah Fatihah Huzoor (May Allah be his Helper) saidthat we all know that salat or prayers have been made mandatory by Allah in the Holy Quran and by the Holy Prophet ( peace be upon him). The Holy Prophet (peace be upon him) said that not saying salat takes one closer to disbelief and is tantamount to shirk. Similarly, The Prophet ( peace be upon him) said that the first matter to be questioned on the day of Judgment will be Salat. The Holy Prophet (Peace be upon him) said to advise children to offer Salat when they are seven years old and make them regular by the age of ten. Parents should remember that their children will be badly affected if the parents themselves aren’t regular in their salat. In this age, the Promised Messiah (peace be on him)) has given us the true understanding of prayers and salat. If we show weakness in this regard, how can we claim that we are the true followers. We can only be true Ahmadis when we start to acquire a spiritual pleasure in our salat The Promised Messiah (peace be on him) says in this regard that an alcoholic continues to drink and does not stop until he has become fully intoxicated. A wise believer can take heed from this. You should adopt regularity in your prayers and salat and continue to offer them with full attention until you achieve that spiritual high. If you persist in this way with your full attention and efforts, Allah will grant you this reward of prayers and salat. With regards to the importance of congregational salat the Promised Messiah (peace be on him) states that Allah has placed more reward in prayers done in congregation. Prayers and salat in congregation are a source of unity among believers and also strengthen those who are weak in faith. This is so because believers have the ability to be affected by the righteousness and piety of fellow believers during prayers and salat in congregation. Huzoor (may Allah be his Helper)) advised Ahmadis worldwide, in particular the Khuddam-ul-Ahmadiyya of Pakistan, that prayers and salat is essential for our success. Those who have migrated out of Pakistan should be especially regular in prayers and salat to be thankful to Allah for his blessings. Allah has never said that accepting the Promised Messiah (peace be on him) is enough for you –even if you do not fulfil my rights, you will continue to receive success from me. If we think along these lines, it is as if we want to test God. Nizam-e-Jama’at should continuously remind Jama’at members about prayers and salat in addition to other necessary reminders like financial sacrifices. If people become regular in prayers and salat, all other departments will become active on their own especially the department of finance. In today’s conditions where world war seems imminent, many people ask what will happen and what should they do? The Promised Messiah (peace be on him) has said you should love your God and the best way of doing so is through prayers and salat. After migrating to Western countries, some Ahmadis forget God like the locals here or they think that even if we offer salat two or three times a day, we are still better. We should remember that our success lies in acting upon the complete teachings of Islam and this is the way to stay away from evils of this society as well. Huzoor (may Allah be his Helper) also presented various other quotations of the Promised Messiah (peace be on him) regarding the reality of prayer and its benefits. May Allah enable us to safeguard our salat, may we never show slackness, and may He grant us the true spiritual pleasure of prayers and salat

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
13-Jan-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)Indonesian (mp3)Portuguese (mp3)Russian (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)

Title: Striving for Moral Excellence: The Islamic Teachings
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Telugu | Persian | Malayalam | Kannada
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu | Telugu | Indonesian
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

بعض لوگ سمجھتے ہیں کہ مذہب بوجھ ہے اور یہ ان کی آزادی پر پابندی لگاتا ہے حالانکہ اللہ تعالیٰ قرآن کریم میں فرماتا ہے: وما جعل من دین حرج یعنی دین کی تعلیم میں کوئی تنگی کا پہلو نہیں رکھا گیا۔ دین کا تو مقصد ہی ہر قسم کی مشکلات سے بچانا ہے یعنی دینِ اسلام میں کوئی ایسا حکم نہیں جو تمہیں مشکل میں ڈالے ، بعض باتیں بظاہر چھوٹی لگتی ہیں لیکن وقت کے ساتھ ساتھ ان کے نتائج انتہائی بھیانک صورت اختیار کر لیتے ہیں ۔ اس زمانہ میں ہم دیکھتے ہیں کہ فیشن کے نام پر ننگ مرد و عورتوں میں عام ہو رہا ہے اور ظاہر ہے کہ اسکا اثر ہمارے بچوں پر بھی ہو گا۔احمدی بچیاں ہیں جو سوال کرتی ہیں کہ کیوں ہم بھی ان ممالک میں غیر مسلم عورتوں جیسے کپڑے نہیں پہن سکتے۔ پہلی بات تو یہ ہے کہ اگر ہم نے دین پر قائم رہنا ہے تو دین پر عمل بھی کرنا ہو گا۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ حیا ایمان کا حصہ ہے۔ پس حیا دار لباس اور پردہ ہمارے ایمان کو بچانے کیلئے ضروری ہے ۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے ایک جگہ فرمایا ہے کہ یورپ میں رائج عورتوں کی آزادی کی وجہ سے فسق و فجور ہر جگہ پھیل گیا ہے اور مرد بے لگام گھوڑوں کی طرح ہو گئے ہیں۔ فرمایا کہ آجکل کے معاشرے میں جو برائیاں ہمیں نظر آ رہی ہیں یہ حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی ایک ایک بات کو سچ ثابت کرتی ہیں،اس لئے ہر احمدی کو اسلامی تعلیم پر عمل کرنے کی کوشش کرنی چاہئے۔ اسی طرح ہماری نسلیں ان برائیوں سے بچ سکتی ہیں۔ حضور نے فرمایا کہ ایک بچی نے مجھے لکھا کہ بینک میں ایک اچھی نوکری ملنے کی امید ہے۔ اگر یہاں پر حجاب پہننے کی اجازت نہ ہو تو کیا میں حجاب کے بغیر نوکری کر سکتی ہوں۔ فرمایا کہ بہت سی احمدی خواتین کے ایسے ہی سوال ہوتے ہیں، ڈاکٹروں کے بعض کام باقاعدہ پردہ میں نہیں ہو سکتے۔ اسی طرح ریسرچ کرنے والیاں اگر ریسرچ کر رہی ہیں تو لیب والے کپڑےپہن سکتی ہیں۔ بینک کی نوکری کوئی ایسی نوکری نہیں ہے جس سے انسانیت کی خدمت ہو رہی ہو۔ عام نوکری کیلئے حجاب اتارنے کی اجازت نہیں دی جا سکتی۔ ہمیشہ یاد رکھنا چاہئے کہ حیا کے لئے حیا دار لباس ضروری ہے۔ حضور نے فرمایا فرمایا کہ اسلام مخالف طاقتیں آزادیٔ اظہار کے نام پر بڑی کوش کر رہی ہیں کہ مذہب کی تعلیمات کو ایک طرف رکھ دیا جائے۔لیکن ہمیں یاد رکھنا چاہئے کہ اس زمانہ میں حقیقی مذہب کی خدمت کی ذمہ داری حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی جماعت کو سونپی گئی ہے۔ ہم نے لڑائی نہیں کرنی لیکن حکمت کے ساتھ ان سے نبٹنا ہے۔ ہمیں دعا بھی کرنی چاہئے کہ اللہ تعالیٰ ہماری مدد بھی فرمائے۔اگر ہم سچائی پر قائم ہیں اور یقینا ہیں تو ایک دن ہم کامیاب ہونگے ۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام کے زمانہ میں تلوار کا جہاد نہیں ہے بلکہ نفس کا جہاد ہے۔ اس لئے مغربی ممالک میں رہنے والے احمدیوں کو ملکی خدمت کیلئے آگے بڑھنا چاہئے اور جب یہ ہو گا تو خود بخود ان شیطانی طاقتوں کا منہ بند ہو جائیگا۔ ہمیں یاد رکھنا چاہئے کہ یہ زمانہ بہت خطرناک زمانہ ہے۔ اگر ہم نے اپنی مذہبی تعلیمات کو قائم نہ رکھا تو پھر ہمارے بچنے کی کوئی ضمانت نہیں ۔ یہ نہ سمجھیں کہ ان ترقی یافتہ قوموں کی ترقی میں ہی ہماری کامیابی ہے۔ اب جو ان کے اخلاق کی حالت ہے وہ ان کے زوال کی طرف لے جا رہی ہیں اس لئے اب انسا نی ہمدردی کے تحت ہمیں ان کی راہنمائی کرنی ہے۔ اس کے بعد حضورِ انور ایدہ اللہ تعالی نے اسلامی پردہ کی تعلیم کو تفصیل سے بیان کیا کہ مسلمان مردوں اور عورتوں کیلئے پردہ لے لحاظ سے اسلام نے کیا کیا احکامات جاری کئے ہیں اور ان احکامات میں کیا حکمت ہے۔ پس ہر قسم کی بے پردگی سے بچیں۔مثلاً مرد وعورت جو نامحرم ہیں وہ آپس میں دوستی سے بچیں۔ غض بصر سے کام لیں اور عورتیں پردہ کا خیال رکھیں، آخر پر حضرت خلیفۃ المسیح نے فرمایا ۔اللہ کرے کہ ہم سب حیا کے اعلیٰ معیار قائم کرنے والے اور اسلامی احکام کی ہر طرح سے پابندی کرنے والے ہوں۔ آمین

Some people claim that religion limits their personal freedoms. In the Holy Quran, Allah has said وما جعل من دین حرج which means that Allah has not made anything outstandingly difficult in the matters of religion. The very purpose of religion is to remove our troubles and difficulties. Some matters seem small, but produce horrific results if left unchecked. For example, in this age, we see that nudity or nakedness has become common among men and women. It is natural that this also impacts our children. There are Ahmadi women who question that why can’t we dress like the women of these societies? Firstly, we should remember that if we want to stay on our faith, then we must follow its teachings. The Holy Prophet(saw) has taught us that Haya or modesty is part of faith. About Pardah, the Promised Messiah(as) said that these days people are supporting the European ideas of freedom of men and women. In reality, due to such freedoms of women, sin has become widespread and men have become like wild animals. Hudhur(aba) said that looking at vices in society today, each word of the Promised Messiah(as) is being proved to be true. Therefore, to safeguard ourselves and our children, Ahmadis should follow the teachings of Islam in their entirety. Huzur said that an Ahmadi girl wrote to me to seek permission if she can work in a bank without her Hijab. In reality, many Ahmadi girls and women have such questions. Huzur said that I had given a limited permission, but it was only for doctors and such girls who are in research. Sometimes, the doctors and researchers in a lab cannot fully function with traditional purdah and their own clothing is also loose. A job in a bank isn’t for the service of mankind and therefore such an exception cannot be made. We should always remember that modest dressing is important and vital for having modesty. Hudhur said that in the name of freedom of expression, the opposing forces are trying their best to do away with the teachings of religion. But we should remember that the community of the Promised Messiah(as) has been given the responsibility to serve the true faith in this age. We are not going to fight them, rather deal with them with wisdom. We should also pray that may Allah help us. If we are upon truth and we certainly are, then know that we will be victorious. The Jihad in this age isn’t of sword, rather against one’s self. Ahmadis living in Western nations should come forward to serve their countries. When this happens, such satanic forces will automatically vanish away. We should know that these are dangerous times and we cannot be saved if we let go of our moral and religious teachings. Do not think that our progress is linked with the progress of these nations. Their morals are now such that it will bring about their downfall, Therefore, out of sympathy, we should guide them according to our teachings. Hudhur explained in detail the teachings of Pardah in Islam for both men and women and the wisdom behind each commandment. It is important for men to observe the Pardah of eyes meaning lowering their gaze in front of women and important for women to observe Pardah from all men who are non-Mahram or not directly related to her. May Allah enable all of us to follow the teachings of Islam.

Date
Video
Audio
Title, Summaries & Text
06-Jan-2017   Urdu (mp3)English (mp3)Albanian (mp3)Arabic (mp3)Bengali (mp3)Bosnian (mp3)Bulgarian (mp3)French (mp3)German (mp3)Indonesian (mp3)Malayalam (mp3)Portuguese (mp3)Russian (mp3)Sindhi (mp3)Spanish (mp3)Swahili (mp3)Tamil (mp3)Turkish (mp3)Uzbek (mp3)

Title: Waqfe Jadid 2017
Delivered by: Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at
Summary: English | Malayalam | Kannada | Indonesian
Summary by Wakil Ala: English
Full Text: Urdu | Telugu | Bengali
Slide Deck: Powerpoint | PDF Powerpoint |
Other Languages: Arabic | Bosnian | French

Synopsis

حضورِ انور ایدہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا کہ انسان دنیا میں مختلف مقاصد کیلئے مال خرچ کرتا ہے لیکن آج دنیا میں صرف جماعت احمدیہ ہےجو پوری دنیا میں ایک مقصد کیلئے اپنے اموال پیش کر ہی ہے اور وہ مقصد بھی دینی مقصد ہے۔ یہ جماعت مسیح موعود علیہ السلام کی جماعت ہے جو اسلام کی ترقی کیلئے اپنا مال خرچ کر رہی ہے۔ کیونکہ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے اپنی جماعت کو مالی قربانی کا حقیقی ادراک عطا فرمایا ہے۔ حضور علیہ السلام نے ایک جگہ پر فرمایا کہ میں بار بار تاکید کرتا ہوں کہ مالی قربانی کرو۔ یہ خدا تعالیٰ کے حکم میں سے ہے۔ اس وقت اسلام مظلوم ہے۔ جب یہ حالت ہو گئی ہے تو کیا ہم اسلام کیلئے قدم نہ اٹھائیں۔ اسی غرض کیلئے تو خدا تعالیٰ نے اس جماعت کو قائم کیا ہے۔ فرمایا کہ یہ خدا کا وعدہ ہے جو شخص اللہ کیلئے دیگا دنیا میں ہی خدا اسے بہت کچھ دیگا اور آخرت میں بھی اجر پائیگا۔ یقینا آپکے صحابہ نے اس بات کو سمجھا اور اپنے اموال کو ان مقاصد کیلئے پیش کیا اور انکا ذکر بھی حضور علیہ السلام نے متعدد جگہ پر فرمایا ہے۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ اس جماعت میں مالی قربانی اب نہایت مستحکم ہو چکی ہے اور نئے آنے والے بھی حیرت انگیز قربانیاں کر رہے ہیں۔ وہ اس قرآنی تعلیم پر عمل کرتے ہیں کہ یعنی یہ وہ لوگ ہیں جو اپنے اموال اللہ کی رضا کی خاطر چاہتے ہوئے خرچ کرتے ہیں۔ فرمایا کہ غریب لوگوں کی قربانی بھی جماعتی ترقی کیلئے بیشمار پھل لاتی ہے اور دنیا حیران ہوتی ہے کہ ان وسائل سے ہم اتنا کام کیسے کر لیتے ہیں۔ جب مقصد اللہ کی رضا ہو تو پھل بھی بہت لگتے ہیں۔ حضورِ انور ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے دنیا بھر کے مختلف احمدیوں کی مثالیں پیش کیں کہ کس طر ح وہ اللہ کی راہ میں مالی قربانی کر تے ہوئے اللہ تعالیٰ کے فضلوں کے وارث بن رہے ہیں۔ حضرت خلیفۃ المسیح نے فرمایا کہ روز ہم دیکھ رہے ہیں کہ حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی جماعت کو اللہ تعالیٰ نئے لوگ عطا کر رہا اور وہ اپنی قربانیوں میں بڑھتے جارہے ہیں۔ لیکن اس کے ساتھ ان لوگوں کیلئے فکر کا مقام بھی ہے جو آسائش میں رہتے ہیں، امیر ملکوں میں رہتے ہیں اور باوجود اسکے ان کی قربانیاں معمولی ہوتی ہیں۔ ان لوگو ں کو قربانیاں دینی چاہئیں اور اس میں بڑھنا چاہئے۔ حضور نے فرمایا کہ جیسے کہ عام طریق ہے، میں آج وقف جدید کے ساٹھویں سال کا اعلان کرتا ہوں۔ اس سال کل آمد ۸۰ لاکھ۲۰ ہزار پاؤنڈ ہے جو گزشتہ سال سے تقریبا ۱۲ ہزار پاؤنڈ زیادہ ہے۔ پاکستان پہلے نمبر پر ہے جس کے بعد ہے یو کے، جرمنی، امریکہ،کینڈا ،ہندوستان، آسٹریلیا ، پھر مشرقِ وسطیٰ کی ایک جماعت ہے، پھر انڈونیشیا ، پھر مشرقِ وسطیٰ کی ایک جماعت ہے اور دسویں نمبرپر گھانا ہے۔ کل ۱۳ لاکھ ۴۰ ہزار لوگوں نے اس سال وقفِ جدید میں شمولیت کی جو پچھلے سال سے ایک لاکھ ۵ ہزار زیادہ ہے۔حضور نے دعا فرمائی کہ اللہ تعالیٰ ان تمام قربانیاں کرنے والوں کی قربانی قبول فرمائے اور مزید بڑھنے کی توفیق عطا فرمائے۔ آمین۔ آخر پر حضورِ انور نے دو نمازِ جنازہ غائب کا اعلان فرمایا۔ مکرمہ اسمہ طاہرہ صاحبہ آف کینڈا جو حضورِ انور ایدہ اللہ کی ممانی تھیں اورمکرم چوہدری حمید نصر اللہ خان صاحب آف لاہور پاکستان جنھوں نے جماعت کیلئے بیشمار خدمات پیش یں ۔حضورِ انور نے ان کےبیشمار اوصافِ کریمہ کا بھی ذکر فرمایا۔انا للہ و انا الیہ راجعون۔

In his Friday Sermon, Huzoor(aba) said that people spend their wealth for various purposes in this world. Today, there is only one community who is spending their wealth for one religious goal throughout the world. This is the community of the Promised Messiah(as) who is spending its wealth for the sake of Islam. The reason is that the Promised Messiah(as) gave his community the true understanding of financial sacrifices in the way of Allah. The Promised Messiah(as) at one point stated that I urge you again and again to sacrifice your wealth. This is per the commandment of Allah. Islam at this time is oppressed and being attacked. When such is the case, should we not make efforts for the sake of Islam? This is the reason that Allah established this Jama’at. It is the promise of Allah that whosoever sacrifices his wealth, Allah will bless him greatly in the world and he will see his reward in the hereafter. Huzoor(aba) said that surely the companions of the Promised Messiah(as) understood the concept of financial sacrifices and have been mentioned various times by the Promised Messiah(as). And it is astonishing to see how the new comers are also sacrificing greatly in this way. They are following this teaching of the Holy Quran that these are such people who spend their wealth to attain the pleasure of Allah. Huzoor(aba) said that the sacrifices of poor people bring great fruits for Jama’at and the world is left astounded how we are able to achieve so much with such limited resources. If the purpose is to achieve the pleasure of God, then the blessings are plenty as well. Huzoor(aba) presented various examples and incidents of financial sacrifices of Ahmadis of various countries that how Ahmadis are reaping the blessings of Allah through financial sacrifices. Huzoor(aba) said that we are seeing every day that Allah is granting new people to the community of the Promised Messiah(as) who are increasing in financial sacrifices. This is also a moment of reflection for those Ahmadis who, despite being prosperous and living in developed countries, do not actively participate in financial sacrifices. Huzoor(aba) said that such people should present financial sacrifices and should seek to increase them. Then Huzoor(aba) said that as per usual custom, today I’m announcing the 60th year of Waqf-e-Jadid. The total income of this year was 8 million, 20 thousand pounds which was 12 thousand more than the previous year. Pakistan held its first position, followed by UK, Germany, America, Canada, India, Australia, a Middle-Eastern Jama’at, Indonesia, another Middle-Eastern Jama’at and Ghana at the 10th position. A total of 1,340,000 participated in Waqf-e-Jadid which was 105,000 more than the previous year. Huzoor(aba) prayed that may Allah accept the sacrifices of all Ahmadis and may he enable us and all Ahmadis to further increase in our financial sacrifices in the way of Allah. Ameen. At the end, Huzoor(aba) announced the funeral prayer in absentia of 2 individuals. Mukarramah Asma Tahira Sahiba of Canada Jama’at who was an Aunt of Hazrat Khalifatul-Masih V(aba) and Mukarram Chaudhry Hameed Nasrullah Khan Sahib of Lahore, Pakistan, who served Jama’at in various capacities for an extensive period. Huzoor(aba) mentioned a few of their many admirable qualities.