In the Name of Allah, The Most Gracious, Ever Merciful.

Love for All, Hatred for None.

Browse Al Islam

[
APR
21
]

Friday Sermon: Conveying The True Teachings of Islam

Sermon Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at Head of the Ahmadiyya Muslim Community.
  • Urdu
  • Bulgarian
  • Swahili
  • Turkish


  • Urdu:

    Play

  • Bulgarian:

    Play

  • Swahili:

    Play

  • Turkish:

    Play


NOTE: Alislam Team takes full responsibility for any errors or miscommunication in this Synopsis of the Friday Sermon

  •  
]

Find by Keyword

Browse Friday Sermon by year:

http://khut.ba/21apr2017


Get Friday Sermon by email http://eepurl.com/b3r4RH
Verses Cited in this Friday Sermon:
Synopsis:
  • Accepting the Messiah of this age is a blessing of Allah upon us. After accepting him, we should try to increase in our faith and openly give the message of Islam. Though most are active, some people think that we shouldn’t mention Islam too much because of the conditions of Muslims today. Huzoor said that we should become even bolder at this time because this condition of Muslims is according to the prophecy of the Holy Prophet (saw). At this time, the Messiah and Mahdi was to be sent to revive true Islam. Therefore, there shouldn’t be any inferiority complex.
  • Some people have become too involved in worldliness in Western countries. We show good morals in society, but we are lacking in worship. We are lacking in mutual respect. The purpose of the Promised Messiah (as) wasn’t just to reform beliefs; it was also practical reform. As our message spreads, the world will keep a close eye on us. Therefore, we need practical reformation in us and remember the true purpose of Bai’at.
  • We should remember that 99% of Ahmadis have come to Western countries due to Jama’at and therefore all of you are silent preachers of Jama’at. He said that I’ve seen in Germany that Ahmadis have good relationships in society, but haven’t effectively given the message of Islam to local people.
  • People in the West generally are threatened by Islam and are even afraid to come to our functions. Therefore, our responsibility grows at this time. When people come to our functions, their perception totally changes about Islam. Huzoor gave many examples from recent functions in Germany how the sentiments of non-Muslims completely change about Islam and our Jama’at after attending our functions. This is because we have accepted the Promised Messiah (as). Therefore, it is our responsibility to spread his message and his books to all people.
  • Some youths think that they have become knowledgeable by reading old Islamic scholars and philosophers, but this shouldn’t be the case. You should increase your knowledge by reading the books of the Promised Messiah (as) who was the Hakm and Adl (judge and arbitrator) of this age. Huzoor especially gave the example of the book philosophy of the teachings of Islam that this book has completely changed many people and should be given to academics. True knowledge and philosophy can only be obtained from the books of the Promised Messiah (as) in this age.
  • Once we have accepted him, there should be complete obedience and no unnecessary questions should be raised. This demonstrates lack of complete obedience. Accepting the decisions of the Messiah of this age is absolutely compulsory. All Ahmadis should read the literature of the Promised Messiah (as) and spread it among other people. The answer to each question is present, but it’s important to read the books of the Promised Messiah (as) and his Khulufa. We should all watch ourselves. Every gathering (internet etc.) that takes you away from God is shirk. Be regular in five daily prayers. I’ve seen some weakness here in this regard. When people request me for prayers, I ask them whether or not they pray regularly themselves. Unless one shows pain and anguish to remove his own difficulties, how can someone else demonstrate this pain? Pray yourself before asking others to pray for you. All weaknesses will vanish if you reform yourself. We should always seek forgiveness for our mistakes and sins. May Allah enable us to do so and may we be among those who truly understand the responsibilities of doing bai’at of the Promised Messiah (as).
  • تشہد و سورة فاتحہ کی تلاوت کے بعد حضور انور ایدہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا : حضرت مسیح موعود علیہ السلام کو ماننا ہم پر اللہ تعالیٰ کا ایک فضل ہے۔ آپکو ماننے کے بعد ہمیں اپنے ایمان اور یقین میں بڑھنا چاہئے اور کھل کر اسلام کا پیغام پہنچانا چاہئے۔ بعض لوگوں میں یہ خیال پیدا ہو جاتا ہے کہ مسلمانوں کے جو آجکل حالات ہیں اس وجہ سے زیادہ اسلام کے متعلق بات نہ کی جائے گو اکثر سستی نہیں دکھاتے۔ ایسے وقت میں تو ہم میں اور زیادہ جرأ ت پیدا ہونی چاہئے۔ مسلمانوں کا بگاڑ تو اسلام کی صداقت کا ثبوت ہے کیونکہ یہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی پیشگوئی کے مطابق ہےکہ اس وقت اسلام کے حقیقی پیغام کیلئے مسیح موعود کو اللہ تعالیٰ بھیجے گا ۔ ہم اس مسیح موعود ؑکو ماننے والے ہیں ۔اور اسی اسلام پر ہم عمل کرنے والے ہیں ۔پس کسی احساس کمتری کی ضرورت نہیں ۔
  • .اسی طرح بعض لوگ مغربی ممالک میں دنیا داری میں زیادہ ڈوب گئے ہیں۔ زبانی عہد تو کرتے ہیں لیکن حقیقت میں عمل اس سےمختلف ہیں ۔ یہاں سوسائٹی میں اخلاق تو اچھے ہیں لیکن عبادت کے معیاروں میں کمی ہے۔ آپسی عزت و احترام میں بھی کمی ہے۔حضرت مسیح موعود علیہ السلام کا مقصد صرف اعتقادی اصلاح نہ تھا بلکہ عملی اصلاح تھا ۔ جوں جوں ہماری مساجد بڑھ ر ہیں اورہماراپیغام پھیل رہا ہے اس سے دنیا کی تنقیدی نظر بھی ہم پر بڑھے گی۔ پس ضرورت ہے کہ عملی حالتوں میں بہتری پیدا کی جائے اوربیعت کے حقیقی مقاصد پر عمل کیا جائے۔
  • یاد رکھیں کہ مغربی ممالک میں 99 فیصد احمدی جماعت کی وجہ سے آئے ہیں اور یوں آپ سب جماعت کے خاموش مبلغ بھی ہیں۔حضور نے فرمایا کہ میں نے جرمنی میں دیکھا ہے کہ احمدیوں کے معاشرہ کے افراد کے ساتھ تعلق تو اچھا ہے لیکن ان کو اسلام کا پیغام پوری طرح نہیں دیا گیا۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ مغربی ممالک کے لوگوں میں اسلام سے ایک خطرہ پایا جاتا ہے اور لوگ عمومی طور پرہمارے فنکشنز میں آنے سے بھی خوفزدہ ہوتے ہیں۔ اس لئے ہماری ذمہ داری اور بڑر جاتی ہے۔ فرمایا کہ جب لوگ ہمارے فنکشنزپر آتے ہیں تو ان کا اسلام کے متعلق تصور بدل جاتا ہے۔اور اکثر کہتے ہیں کہ ہماری سوچیں بالکل غلط تھیں ۔ہم کو اب پتا چلا کہ اسلام ایک پر امن مذہب ہے محبت پھیلاننے والا مذہب ہے ۔ حضورِ انور نے جرمنی میں بعض حالیہ فنکشنز میں اس کی بعض مثالیں بھی پیش کیں۔
  • فرمایا: ہمارے بعض نوجوانوں کا خیال ہے کہ شائد پرانے اماموں اور اولیاء کے ذکر پڑھ کے ان کا علم بڑھ گیا ہے ۔ان کو پڑھ کے یہ نہ سمجھیں کہ آپ عالم بن گئے ۔ حضرت مسیح موعود کی کتب پڑھ کے اپنا علم بڑھائیں ۔آپ ؑاس زمانہ کے حکم و عدل بن کر آئے تھے۔ہمیں یہ بات ہر وقت اپنے سامنے رکھنی چاہیے ۔اس لئے یہ نہ سمجھیں کہ دوسروں کی کتابیں پڑھ کر آپ عالم بن گئے۔عالم بننا ہے تو حضرت مسیح موعودؑ کی کتابیں پڑھیں۔ فرمایا کہ خاص طور پر اسلامی اصول کی فلاسفی ایسی کتاب ہے جسے پڑھ کو بہت سے لوگوں کی حالت بدل جاتی ہے ۔ اس زمانہ میں حقیقی علم اور فلاسفی حضرت مسیح موعود علیہ السلام کی تعلیمات سے مل سکتی ہے۔ جب ایک دفعہ حضرت مسیح موعود علیہ السلام کو مان لیا ہے تو پوری اطاعت ہونی چاہئے۔ بلا وجہ کے سوالات نہیں ہونے چاہئیں اس سے کامل اطاعت ظاہر نہیں ہوتی مگر جب دوسرے لوگ سوال کرتے ہیں تو پھر جواب پر ایمان لانے والوں کی تسلی ہو جاتی ہے ۔ اور اس زمانہ میں حضرت مسیح موعود علیہ السلام کے فیصلوں کو ہی ماننا ضروری ہے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام کا جو لٹریچر ہے وہ ہر احمدی کوخود بھی پڑھنا چاہئے اور لوگوں میں بھی پھیلانا بھی چاہئے۔ ہر سوال کا جواب موجود ہے اور اس کیلئے حضرت مسیح موعود علیہ السلام اورآپکے خلفاء کی کتب کا مطالعہ کرنا چاہئے۔
  • فرمایا کہ گہرائی سے اپنے جائزہ لینے کی ضرورت ہے ۔ یاد رکھیں کوئی مجلس ہو انٹر نیٹ ہے اور جو نمازوں اور عبادت سے غافل کر رہی وہ مشرکانہ مجلس ہے ۔پانچ وقت کی نمازوں کو قائم کرو ۔میں نے جائزہ لیا اس میں بہت کمزوری نظر آر ہی ہے ۔دعا کے لئےکہتے ہیں تو پوچھو خود باقاعدہ نماز پڑھ رہے ہو تو جواب نفی میں ہوتا ہے ۔پس اگر دعا کے لئے کہنے والے اپنے اندر اور اپنی تکلیف کو دور کرنے کے لئے کوشش نہیں کرتے تو دوسرے کو یہ درد کس طرح پیدا ہو سکتا ہے ۔خود بھی دعا کریں تو دوسروں کی دعا بھی مدد کرتی ہے ۔ ۔اپنی اصلاح کر لیں گے تو باقی برائیاں دور ہو جائیں گی ۔ پس ہمیشہ اپنی کو تا ہیوں اور غلطیوں کے لئے استغفار کرتے رہنا چاہیے ۔اللہ تعالی ہم سب کو اس کی توفیق دے اور ہم حقیقت میں حضرت مسیح موعود کی بیعت کا حق ادا کرنےوالے ہوں ۔آمین
About Friday Sermon

The Jumu'ah (Friday) prayer is one form of congregational worship in Islam. It takes place every Friday. Regular attendance at the Jumu'ah prayer is enjoined on the believer. According to a Saying of Muhammadsa this congregational prayer is twenty-five times more blessed than worship performed alone. (Bukhari)

Friday Sermons in the Quran

“O ye who believe! When the call is made for Prayer on Friday, hasten to the remembrance of Allah, and leave off all business. That is best for you, if you only knew.” more

Friday Sermons in the Hadith

“… (He who) offers the Prayers and listens quitely when the Imam stands up for sermon, will have his sins forgiven between that Friday and the next”(Bukhari)