In the Name of Allah, The Most Gracious, Ever Merciful.

Love for All, Hatred for None.

Browse Al Islam

[
SEP
22
]

Friday Sermon: Essence of Quality Meetings and Ijtema gatherings

Sermon Delivered by Hazrat Mirza Masroor Ahmad at Head of the Ahmadiyya Muslim Community.
  • Urdu


  • Urdu:

    Play


NOTE: Alislam Team takes full responsibility for any errors or miscommunication in this Synopsis of the Friday Sermon

  •  
]

Find by Keyword

Browse Friday Sermon by year:

Synopsis:
  • Different kinds of gatherings take place in this world to achieve various purposes, For example governmental gatherings, business meetings etc. People sit and ponder over different matters. These gatherings are usually for worldly purposes and not for gaining the pleasure of Allah. Then there are also such gatherings which are religious gatherings and are held for the sake of Allah. They make plans and programs to win the pleasure of Allah. These gatherings are loved by God and their participants will be rewarded in this life and in the hereafter. A true believer should always be in search of trying to increase his spirituality.
  • In this age, we see that Muslims are acting opposite to this teaching of God. Their hearts are shattered, not united. Their mutual consultations and contracts are against Allah and His Messenger and contrary to the principles of Taqwa. Such actions of theirs demonstrate their lack of faith in Allah. Both the political and religious leaders of Muslims are acting in this manner. Therefore, it is our responsibility to not only increase ourselves in Taqwa, but also guide Muslims according to our capacity. We should tell them that such conduct will make you subservient of people in this world and you will become worthy of punishment from Allah.
  • We should also ponder over our own conditions. Remember that seeing the progress of Jama’at, Satan will never sit idle. Those people who participate in gatherings held against Nizam-e-Jama’at (administrative system of Jama’at) are in reality deceived by Satan. Sometimes, due to lack of understanding, these people do so out of their perceived sympathy for Jama’at. If any person has any complaint against any office bearer or against the Ameer of Jama’at, he should write to the Khalifatul Masih and leave the matter to him. There is no benefit of discussing these matters in private gatherings. However, one should continue to pray for these matters to be resolved.
  • The Holy Prophet (saw) and his servant in this age, the Promised Messiah (as), have explained for us the etiquettes of participation in gatherings. The Promised Messiah (as) says that our point of view is this that when one speaks, he should either make his point in entirety or stay silent. When you see Allah and His Messenger being mocked in any gathering, either leave swiftly or reply boldly. The third way is of hypocrisy where one continues to sit, somewhat agrees and also tries to partially respond. Huzoor (aba) said that Ahmadis should stay away from hypocrisy and demonstrate pride for Jama’at. We should tell people that if they have any complaints, they should either write to the Khalifa or stay silent.
  • Once a companion asked the Holy Prophet (saw) to advise him. The Holy Prophet (saw) said to observe Taqwa and when you enter any gathering, stay there if they are discussing something good and leave it if you find the gathering to be repulsive. Another Hadith states that the Holy Prophet (saw) was asked that what kind of gatherings should we attend? He replied that you should go to such gatherings which remind you of Allah and the hereafter, and which increase your religious knowledge.
  • Therefore, the youth of our Jama’at and their parents should be especially careful that they do not participate in any such gathering which falls outside of limits set by Islam. The Promised Messiah (as) has said that we should always remember that one’s company and gatherings has gradual impact on him. For example, if one goes to liquor shop every day, a day will certainly come when he will also start consuming liquor. Huzoor said that by the grace of Allah, Jama’at organizes many gatherings, such as Ijlaas, Ijtima, Jalsa Salana etc, which are true Islamic gatherings. Therefore, we should participate in these gatherings and try to increase ourselves in Taqwa and righteousness. May Allah enable us to always stay away from harmful and sinful gatherings and keep us attached to Nizam-e-Jama’at and Khilfate-e-Ahmadiyya. Ameen
  • Huzoor also announced the funeral prayer in absentia of Respected Bilal Abdus Salaam of USA Jama’at.
  • دنیا میں بہت سی قسموں کی مجالس مختلف مقاصد کیلئے منعقد ہوتی ہیں۔ مثلا حکومتی مجالس، کاروباری مجالس وغیرہ۔ اور ان میں لوگ مل کر بیٹھتے اور سوچتے ہیں۔ یہ سب مجالس دنیا کیلئے ہوتی ہیں خدا کیلئے یا خدا تعالیٰ کی خوشنودی کیلئے نہیں ہوتیں۔ لیکن بعض ایسی مجالس بھی ہوتی ہیں جو دینی اغراض کیلئے ہوتی ہیں۔ لوگوں کو اللہ تعالیٰ کے قریب کرنے کیلئے ہوتی ہیں۔ ان مجالس کا مقصد صرف یہ ہوتا ہے کہ ہمارا جو کام بھی ہو اور جو پروگرام بھی بنائیں انکا مقصد اللہ تعالیٰ کی رضا ہو۔ ایسی مجالس خدا تعالیٰ کو پسند ہیں۔ اور ان میں شاملین کو اللہ تعالیٰ اس دنیا میں بھی اور آخرت میں بھی نوازتا ہے۔ بس ایک مومن کا کام ہے کہ وہ اس کوشش میں لگا رہے کہ ہم نے اپنی روحانیت میں کس طرح بڑھنا ہے۔
  • مسلمان اللہ تعالیٰ کے اس فرمان کے خلاف چل رہے ہیں۔ ان کے دل آپس میں پھٹے ہوئے ہیں۔ ان کے مشورے اور معاہدے تمام کے تمام اللہ تعالیٰ اور اس کے رسول کے خلاف ہیں اور تقویٰ کے خلاف ہیں۔ اور ان کے یہ کام ظاہر کرتے ہیں کہ انکا اللہ تعالیٰ پر ایمان ختم ہو گیا ہے۔ یہ حالت دونوں سیاسی اور مذہبی لیڈروں کی ہے۔ پس آج یہ ہماری ذمہ داری بنتی ہے کہ نہ صرف اپنے آپکو تقویٰ میں بڑھائیں بلکہ جس حد تک ممکن ہو مسلمانوں کو بھی سمجھانا چاہئے۔ ان کو بتانا چاہئے کہ یہ حالت تمہیں دنیا والوں کا بھی غلام بنا دیگی اور اللہ تعالیٰ سے بھی سزا پاؤ گے۔
  • پس ان باتوں کو ذہن میں رکھتے ہوئے ہمیں اپنا بھی جائزہ لینا چاہئے۔ یہ یاد رکھنا چاہئے کہ جماعت کی ترقی کو دیکھ کر شیطان کبھی بھی آرام سے نہیں بیٹھتا۔ پس وہ لوگ جو نظامِ جماعت کے خلاف مجالس میں شامل ہوتے ہیں وہ شیطان کے دھوکہ میں آ جاتے ہیں۔ یہ یاد رکھنا چاہئے کہ ان کی کم سمجھی کی وجہ سے اپنے خیال میں بعض دفعہ یہ لوگ جماعت کی ہمدردی کے خیال کے تحت ایسا کرتے ہیں۔ اگر کسی شخص کو عہدیداران یا امیر کے خلاف شکایت ہو تو خلیفہ وقت کو لکھ دینا چاہئے اور اس کے بعد خلیفۂ وقت پر چھوڑ دینا چاہئے کہ اس کے متعلق کیا کرنا ہے۔ مجالس میں ان باتوں کے ذکر سے کچھ فائدہ حاصل نہیں ہوتا۔ ہاں انسان کو ان امور کے متعلق دعا ضرور کرنی چاہئے۔
  • آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم اور آپکے غلامِ صادق حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے ہمیں سمجھایا ہے کہ کس طرح کی مجالس میں ہمیں شامل ہونا چاہئے۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام فرماتے ہیں کہ ہمارا مذہب تو یہ ہے کہ انسان بات کرے تو پوری کرے ورنہ خاموش رہے۔ جب دیکھو کہ کسی مجلس میں اللہ اور رسول کے خلاف ٹھٹھا ہو رہا ہے تو یا تو اٹھ کر چلے جاؤ یا کھول کر جواب دو۔ تیسرا طریق نفاق کا ہے یعنی مجلس میں بیٹھے بھی رہنا اور دبے دبے الفاظ میں جواب دینا۔ پس حضور نے فرمایا کہ احمدیوں کو نفاق سے بچنا چاہئے اور بےغیرتی نہیں دکھانی چاہئے۔ لوگوں کو بتانا چاہئے کہ اگر کوئی شکایت ہے تو خلیفہ ٔوقت کو لکھیں ورنہ خاموش رہیں۔
  • ایک مرتبہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم سے کسی نے پوچھا کہ مجھے کوئی نصیحت کریں۔ آپ نے فرمایا کہ اللہ کا تقویٰ اختیار کرو۔ اور جب تم کسی مجلس میں جاؤ اور وہ نیکی کی باتیں کر رہے ہو تو وہاں ٹھہرجاؤ اور اگر ایسی مجلس میں جاؤ جسے تم ناپسندیدہ پاؤ تو ایسی مجلس کو چھوڑ دو۔ پھر ایک اور حدیث میں آتا ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے دریافت کیا گیا کہ ہم کن لوگوں کی مجلس میں بیٹھیں۔ آپ نے فرمایا کہ ایسی مجالس جن سے خدا یاد آئے اور دینی علم میں اضافہ ہو اور آخرت کا خیال ذہن میں آئے۔
  • پس جماعتی نوجوانوں اور انکے والدین کو خاص طور پر اس طرف توجہ دینی چاہئے کہ وہ ایسی مجالس میں شامل نہ ہوں جو اسلام کی حدود سے باہر ہیں۔ حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے فرمایا ہے کہ انسان کو یاد رکھنا چاہئے کہ مجلس کا اثر آہستہ آہستہ انسان پر ہوتا رہتا ہے۔ مثلا اگر کوئی شخص روز شراب خانہ میں جائے تو ایک دن آئیگا کہ وہ شراب پی بھی لیگا۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ کے فضل سے جماعت کو مختلف پروگرام مثلا جلسہ ،اجتماع، اجلاس وغیرہ کو منعقد کرنے کا موقع ملتا ہے جو حقیقی رنگ میں اسلامی مجالس ہیں۔ پس ان مجالس میں زیادہ سے زیادہ شامل بھی ہونا چاہئے اور اللہ تعالیٰ کا تقویٰ اختیار کرتے ہوئے ان مجالس کا حق بھی ادا کرنا چاہئے۔ اللہ تعالیٰ ہمیں توفیق دے کہ ہمیشہ بری مجالس سے بچتے رہیں۔ اور ہمیشہ ہمیں نظامِ جماعت اور خلافتِ احمدیہ سے منسلک رکھے۔
  • حضور نے آخر پر مکرم بلال عبدالسلام صاحب آف امریکہ کے نمازِ جنازہ کا بھی اعلان فرمایا۔
About Friday Sermon

The Jumu'ah (Friday) prayer is one form of congregational worship in Islam. It takes place every Friday. Regular attendance at the Jumu'ah prayer is enjoined on the believer. According to a Saying of Muhammadsa this congregational prayer is twenty-five times more blessed than worship performed alone. (Bukhari)

Friday Sermons in the Quran

“O ye who believe! When the call is made for Prayer on Friday, hasten to the remembrance of Allah, and leave off all business. That is best for you, if you only knew.” more

Friday Sermons in the Hadith

“… (He who) offers the Prayers and listens quitely when the Imam stands up for sermon, will have his sins forgiven between that Friday and the next”(Bukhari)